اویغورنسل کشی سے مراد انسانی حقوق کی وہ خلاف ورزیاں ہیں جس کا ارتکاب چین کی حکومت سنکیانگ میں اویغور باشندوں اور دیگر نسلی اور مذہبی اقلیتوں کے خلاف کررہی ہے۔ 2014 سے چینی کمیونسٹ پارٹی (سی سی پی) کی زیر قیادت چینی حکومت نے سی سی پی کے جنرل سیکرٹری شی جن پنگ انتظامیہ کے دوران ایسی پالیسیوں پر عمل پیرا ہے جس میں ایک اندازے کے مطابق 10 لاکھ سے زائد مسلمانوں (جن میں اکثریت اویغور ہیں) کو بغیر کسی قانونی کارروائی کے حراستی کیمپوں میں قید کر رکھا ہے۔ قانونی عمل [1] دوسری جنگ عظیم کے بعد نسلی اور مذہبی اقلیتوں کی یہ سب سے بڑی حراست ہے۔ ہزاروں مساجد کو تباہ یا نقصان پہنچایا گیا ہے اور لاکھوں بچوں کو زبردستی ان کے والدین سے جدا کر کے بورڈنگ سکولوں میں بھیج دیا گیا ہے۔

حکومت کی پالیسیوں میں ریاست سے تصدیق شدہ حراستی کیمپوں میں اویغور باشندوں کی مانی حراست، جبری مشقت، اویغور مذہبی رسومات کی حوصلہ شکنی، سیاسی اعتقاد سازی، شدید ناروا سلوک، [2] جبری نس بندی، [3] جبری مانع حمل، [4] اور جبری اسقاط حمل وغیرہ شامل ہیں۔[5] چینی حکومت کے اعدادوشمار کے مطابق 2015 سے 2018 تک ہوتان اور کاشغر کے زیادہ تر اویغور علاقوں میں شرح پیدائش میں 60 فیصد سے زیادہ کمی واقع ہوئی ہے۔ اسی عرصے میں پورے ملک میں شرح پیدائش 9.69 فیصد کم ہوئی، جو کہ 12.07 سے 10.9 فی 1000 افراد پر آ گئی۔ [6] چینی حکام نے تسلیم کیا ہے کہ سنکیانگ میں 2018 میں شرح پیدائش تقریباً ایک تہائی کم ہوئی لیکن جبری نس بندی اور نسل کشی کی خبروں کی تردید کی۔ سنکیانگ میں شرح پیدائش 2019 میں مزید 24 فیصد گر گئی (ملک بھر میں 4.2 فیصد کی کمی کے مقابلے)۔ [3]

پہلے پہل توان اقدامات کو جبری انجذاب سنکیانگ اور نسلی ثقافتی نسل کشی کے طور پردیکھا گیا لیکن جب مزید تفصیلات سامنے آئیں تو کچھ حکومتوں، کارکنوں، آزاد این جی اوز، انسانی حقوق کے ماہرین، اور ماہرین تعلیم نے اسے نسل کشی قرار دیا۔ [7] [8]

بین الاقوامی ردعمل مختلف ہے۔ اقوام متحدہ کے بعض رکن ممالک نے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کو چین کی پالیسیوں کی مذمت کرتے ہوئے بیانات جاری کیے جبکہ دیگر نے چین کی پالیسیوں کی حمایت کی۔ دسمبر 2020 میں بین الاقوامی فوجداری عدالت نے دائرہ اختیار کی بنیادوں پر چین کے خلاف تحقیقات کرنے سے انکار کر دیا۔ [9] ریاستہائے متحدہ پہلا ملک تھا جس نے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو 19 جنوری 2021 کو اپنی تحقیقات کا اعلان کرتے ہوئے کیا نسل کشی قرار دیا۔ متعدد ممالک کی مقننہ نے چین کے اقدامات کو نسل کشی قرار دینے والی غیر پابند تجاویز منظور کی ہیں، جن میں کینیڈا کا ہاؤس آف کامنز، [10] ڈچ پارلیمنٹ ، برطانیہ کا ہاؤس آف کامنز [11] اور لیتھوانیا کا سیماس شامل ہیں۔ دیگر پارلیمانوں جیسے کہ نیوزی لینڈ ، بیلجیئم ، اور جمہوریہ چیک نے چینی حکومت کی طرف سے اویغوروں کے ساتھ سلوک کو "انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں" یا انسانیت کے خلاف جرائم قرار دیتے ہوئے مذمت کی ۔

پس منظرترميم

 
چین کے سنکیانگ کے شہر کاشغر سے تعلق رکھنے والا ایغور شخص۔

اویغور شناختترميم

سنکیانگ تنازعہترميم

امپیریل چینترميم

ریپبلکن دور (1912–1949)ترميم

عوامی جمہوریہ چین (1949–)ترميم

 
سنکیانگ اور اس کی اندرونی اور بیرونی سرحدوں کا موجودہ دور کا نقشہ

حکومتی پالیسیاںترميم

 
سنکیانگ پولیس میں سال کے حساب سے نوکریوں کے اشتہارات
 
سنکیانگ میں "دوبارہ تعلیم" سے متعلق سرکاری پروکیورمنٹ بولیوں کی تعداد

ابتدائی "پرتشدد دہشت گردی کے خلاف اسٹرائیک ہارڈ مہم"ترميم

2017 سے ضابطے۔ترميم

پروپیگنڈا مہمترميم

انسداد دہشت گردی کا جوازترميم

ثقافتی اثراتترميم

 
ٹویوک میں مسجد، سنکیانگ (2005)

تعلیمترميم

علماء اور مذہبی شخصیات کی حراستترميم

 
اویغور ماہر اقتصادیات الہام توہتی

قبرستانترميم

شادیترميم

لباسترميم

 
سنکیانگ میں حجاب پہنے ایک اویغور خاتون

بچوں کے نامترميم

انسانی حقوق کی خلاف ورزیاںترميم

حراستی کیمپوں کے اندرترميم

بڑے پیمانے پر حراستترميم

اذیتترميم

 
مہری گل ترسن ، سنکیانگ کے حراستی کیمپوں کا ایک سابق زیر حراست

لازمی نس بندی اور مانع حملترميم

برین واشنگترميم

جبری مشقتترميم

طبی تجرباتترميم

منظم اجتماعی عصمت دری اور جنسی تشددترميم

حراستی کیمپوں کے باہرترميم

IUDs اور پیدائشی کنٹرولترميم

زبردستی صحبت، ساتھ سونا، عصمت دری، اور اسقاط حملترميم

اعضاء کی کٹائیترميم

جبری مشقتترميم

چین سے باہرترميم

بائیو میٹرک اور سرویلنس ٹیکنالوجی کا استعمالترميم

بائیو میٹرک ڈیٹاترميم

کاروں کی GPS ٹریکنگترميم

بدسلوکی کی درجہ بندیترميم

 
چائنا کیبلز کے صفحات

نسل کشی یا ثقافتی نسل کشی۔ترميم

نسل کشیترميم

بین الاقوامی ردعملترميم

غیر ملکی تنظیموں کے رد عملترميم

اقوام متحدہ میں ردعملترميم

 
مشرقی ترکستان کے جھنڈے کے ساتھ اقوام متحدہ میں مظاہرین

یورپی یونین پر ردعملترميم

ملک کے لحاظ سے ردعملترميم

افریقہترميم

امریکہترميم

کینیڈاترميم
ریاستہائے متحدہترميم

ایشیاترميم

مشرق وسطیترميم
سوویت کے بعد کی ریاستیں۔ترميم
جنوبی ایشیاترميم
جنوب مشرقی ایشیاترميم
ترکیترميم

یورپترميم

جمہوریہ چیکترميم
فرانسترميم
فن لینڈترميم
لتھوانیاترميم
نیدرلینڈزترميم
 
ایمسٹرڈیم ، نیدرلینڈز میں 5 فروری 2011 کو اویغور نواز احتجاج
یوکرینترميم
متحدہ سلطنت یونائیٹڈ کنگڈمترميم

اوشیاناترميم

آسٹریلیاترميم
نیوزی لینڈترميم

دوسرے رد عملترميم

غیر سرکاری تنظیمیں اور تحقیقی ادارےترميم

اویغور ٹریبونلترميم

مذہبی گروہترميم

احتجاجترميم

 
25 ستمبر 2015 کو وائٹ ہاؤس کے قریب ایغور انسانی حقوق کا مظاہرہ

انکارترميم

نیزدیکھیںترميم

نوٹسترميم

  1. "UN: Unprecedented Joint Call for China to End Xinjiang Abuses". نگہبان حقوق انسانی. 10 July 2019. 17 دسمبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2020. 
  2. "Responsibility of States under International Law to Uyghurs and other Turkic Muslims in Xinjiang, China" (PDF). Bar Human Rights Committee. 21 ستمبر 2020 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2020. 
  3. ^ ا ب
  4. "China Forces Birth Control on Uighurs to Suppress Population". وائس آف امریکا. 
  5. "China: Uighur women reportedly sterilized in attempt to suppress population". ڈوئچے ویلے. 1 July 2020. اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2021. 
  6. "Birth rate, crude (per 1,000 people) - China". The World Bank. اخذ شدہ بتاریخ 02 جنوری 2021. 
  7. Alecci، Scilla (14 October 2020). "British lawmakers call for sanctions over Uighur human rights abuses". International Consortium of Investigative Journalists. اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2020. 
  8. Piotrowicz، Ryszard (14 July 2020). "Legal expert: forced birth control of Uighur women is genocide – can China be put on trial?". The Conversation. اخذ شدہ بتاریخ 05 ستمبر 2021. 
  9. "Report on Preliminary Examination Activities 2020" (PDF). بین الاقوامی عدالت جرائم. 14 December 2020. اخذ شدہ بتاریخ 19 دسمبر 2020. 
  10. Ryan Patrick Jones (22 February 2021). "MPs vote to label China's persecution of Uighurs a genocide". Canadian Broadcasting Corporation. اخذ شدہ بتاریخ February 25, 2021. A substantial majority of MPs — including most Liberals who participated — voted in favour of a Conservative motion that says China's actions in its western Xinjiang region meet the definition of genocide set out in the 1948 United Nations Genocide Convention. ... The final tally was 266 in favour and zero opposed. Two MPs formally abstained. 
  11. Hefffer، Greg (22 April 2021). "House of Commons declares Uighurs are being subjected to genocide in China". Sky News. اخذ شدہ بتاریخ 22 اپریل 2021.