شیخ محمد اقبال

فارسی زبان و ادب کے ممتاز عالم، محقق، مترجم اور ماہر تعلیم

پروفیسر ڈاکٹر شیخ محمد اقبال (پیدائش: 19 اکتوبر، 1894ء - وفات : 21 مئی، 1948ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے فارسی زبان و ادب کے ممتاز عالم، محقق، مترجم اور ماہر تعلیم تھے۔ وہ ممتاز مصنف پروفیسر ڈاکٹر داؤد رہبر کے والد تھے۔

شیخ محمد اقبال
معلومات شخصیت
پیدائش 19 اکتوبر 1894ء   ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جالندھر ،  برطانوی ہند   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 21 مئی 1948ء (54 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لاہور   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن ماڈل ٹاؤن قبرستان   ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت برطانوی ہند
پاکستان   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد داؤد رہبر   ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی علی گڑھ مسلم یونیورسٹی
جامعہ کیمبرج   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد پی ایچ ڈی ،  ایم اے   ویکی ڈیٹا پر (P512) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مترجم ،  ماہر تعلیم ،  پروفیسر ،  محقق   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو ،  فارسی   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت اورینٹل کالج لاہور   ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
باب ادب

حالات زندگی ترمیم

ڈاکٹر شیخ محمد اقبال 19 اکتوبر، 1894ء کو جالندھر، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے عربی میں ایم اے کی سند حاصل کی اور پھر اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لیے جامعہ کیمبرج میں داخلہ لیا، جہاں انھوں نے مشہور برطانوی مستشرق پروفیسر ایڈرڈ گرینول براؤن کی نگرانی میں فارسی میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔ وہ 1922ء میں اورینٹل کالج لاہور سے وابستہ ہوئے، پھر فارسی کے شعبۂ صدر اور پرنسپل کے عہدوں پر فائز رہے۔ انھوں نے کئی اہم کتابیں کو مدون کیا اور کئی اہم کتابوں کے تراجم کیے۔[1] ڈاکٹر شیخ محمد اقبال نامور دانشور پروفیسر ڈاکٹر داؤد رہبر کے والد اور مشہور صداکار ضیاء محی الدین کے تایا تھے۔[1]

وفات ترمیم

ڈاکٹر شیخ محمد اقبال 21 مئی، 1948ء میں لاہور، پاکستان میں انتقال کر گئے۔ وہ لاہور میں ماڈل ٹاؤن کے قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔[1]

حوالہ جات ترمیم

  1. ^ ا ب پ عقیل عباس جعفری: پاکستان کرونیکل، ورثہ / فضلی سنز، کراچی، 2010ء، ص 19