محمد بن ابراہیم آل الشیخ

محمد ابن ابراہیم الشیخ (ولادت: 1893ء – وفات: 1969ء) 1953ء سے لے کر 1969ء میں اپنی وفات تک سعودی عرب کے عظیم الشان مفتی یا ملک کا سب سے بڑا مذہبی اختیار حاصل تھا۔

محمد بن ابراہیم آل الشیخ
(عربی میں: محمد بن إبراهيم آل الشيخ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مفتی اعظم سعودی عرب
مدت منصب
1953 – 1969
حکمران عبد العزیز بن عبد الرحمن آل سعود
سعود بن عبدالعزیز آل سعود
فیصل بن عبدالعزیز آل سعود
Fleche-defaut-droite-gris-32.png  
عبد العزیز بن باز Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش 24 جولا‎ئی 1893[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ریاض  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 3 دسمبر 1969 (76 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ریاض  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عارضہ اندھا پن  ویکی ڈیٹا پر (P1050) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان آل الشیخ  ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ استاد جامعہ،  قاضی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان عربی  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

پس منظرترميم

محمد ابن ابراہیم آل شیخ 1893ء میں پیدا ہوئے۔ سعودی مذہبی اسکالرز، مشہور خاندان الشیخ شیخ، محمد بن عبد الوہاب کی اولاد سے ہیں۔[2]

عظیم الشان مفتی کے کردارترميم

محمد ابن ابراہیم الشیخ 1953ء سے 1969ء تک سعودی عرب کے گرینڈ مفتی کی حیثیت سے،[3] انھوں نے 1950ء اور 1960ء کی دہائی میں سعودی مذہبی پالیسی پر غلبہ حاصل کیا۔[4][5] ان کی وفات 1969ء میں ہوئی۔[2]

دوسرے کردارترميم

محمد ابن ابراہیم الشیخ نے رابطہ عالم اسلامی کی حلقہ بند کونسل کے صدر کی حیثیت سے خدمات انجام دیا ہے۔

خاندانترميم

محمد ابن ابراہیم الشیخ ابراہیم ابن محمد الشیخ کے والد تھے، [5] جو 1975ء سے 1990ء تک سعودی وزیر انصاف تھے[6] [7] اور عبد اللہ ابن محمد الشیخ شیخ، [8] جو 1993ء سے 2009ء تک سعودی وزیر انصاف تھے۔

حوالہ جاتترميم

  1. General Diamond Catalogue ID: https://opac.diamond-ils.org/agent/53579 — بنام: Muḥammad ibn Ibrāhīm Āl al-Shaykh
  2. ^ ا ب Commins، David Dean (2006). The Wahhabi mission and Saudi Arabia. صفحہ 210. ISBN 1-84511-080-3. 
  3. Hatina، Meir (2008). Guardians of faith in modern times: ʻulamaʼ in the Middle East. صفحہ 221. ISBN 978-90-04-16953-1. 
  4. Amin، Camron Michael؛ Fortna, Benjamin C.؛ Frierson, Elizabeth Brown (2006). The modern Middle East: a sourcebook for history. صفحہ 270. ISBN 978-0-19-926209-0.  He was one of King Faisal's closest advisers and had decisively intervened in the dispute between Faisal and King Saud, which led to the latter's abdication.
  5. ^ ا ب Gold، Dore (2004). Hatred's kingdom: how Saudi Arabia supports the new global terrorism. صفحہ 76,80–81. ISBN 978-0-89526-061-1. 
  6. Baamir، Abdulrahman Yahya (2010). Shari'a Law in Commercial and Banking Arbitration. صفحہ 29 (n. 87). ISBN 978-1-4094-0377-7. 
  7. Long، David E. (1976). Saudi Arabia. صفحہ 41. ISBN 0-8039-0660-9. ; Who's who in Saudi Arabia 1983-1984, Volume 3. Jeddah: Tihama. 1984. صفحہ 32. 
  8. "H.E Dr. Abdullah Bin Mohammed Bin Ibrahim Al-Sheikh". Majlis ash-Shura, Government of Saudi Arabia. 15 دسمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2011.