مرکزی مینیو کھولیں

وحید قریشی

محقق، نقاد، شاعر، ماہرِ اقبالیات
وحید قریشی
معلومات شخصیت
پیدائش 14 فروری 1925  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
میانوالی،  برطانوی پنجاب  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 17 اکتوبر 2009 (84 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لاہور،  پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
مدفن سمن آباد،  لاہور  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام دفن (P119) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی گورنمنٹ کالج لاہور  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
تعلیمی اسناد پی ایچ ڈی،  ڈاکٹر آف لیٹرز  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیمی اسناد (P512) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ماہرِ لسانیات،  ادبی تنقید نگار،  شاعر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل اردو ادب،  ادبی تنقید،  لسانيات،  غالبیات،  سوانح  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
ملازمت اورینٹل کالج لاہور،  گورنمنٹ کالج لاہور،  اقبال اکادمی پاکستان،  ادارہ فروغ قومی زبان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں نوکری (P108) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
P literature.svg باب ادب

پروفیسر ڈاکٹر وحید قریشی (انگریزی: Waheed Qureshi )، (پیدائش: 14 فروری، 1925ء - وفات: 17 اکتوبر، 2009ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے نامور نقاد، محقق، شاعر، ماہرِ لسانیات، معلم، ماہرِ اقبالیات اور پروفیسر ایمریطس تھے۔

فہرست

حالات زندگیترميم

ڈاکٹر وحید قریشی 14 فروری، 1925ء کو میانوالی، برطانوی ہندوستان موجودہ پاکستان میں پیدا ہوئے۔[1][2] ان کا پیدائشی نام عبد الوحید تھا۔ انہوں نے ساہیوال، گوجرانوالہ اور لاہور کے مختلف تعلیمی اداروں میں تعلیم حاصل کی۔ فارسی اور تاریخ میں ایم اے کی ڈگریاں حاصل کیں۔ کلاسیکی فارسی نثر میں پی ایچ ڈی اور میر حسن اور ان کی شاعری کے عنوان سے مقالہ لکھ کر ڈی لٹ کی ڈگری حاصل کی۔[3]

ملازمتترميم

1963ء میں جامعہ پنجاب اورینٹل کالج لاہور میں لیکچرار مقرر ہوئے۔ 1983ء میں مقتدرہ قومی زبان (موجودہ ادارہ فروغ قومی زبان) مقرر ہوئے۔ اس کے علاوہ اقبال اکادمی، بزمِ اقبال اور مغربی پاکستان اردو اکیڈمی سے بھی وابستہ رہے۔ستمبر 2003ء سے اپنی وفات تک وہ گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور میں پروفیسر ایمریطس کے فرائض انجام دیتے رہے۔[3]

تصانیفترميم

ڈاکٹر وحید قریشی نے تحقیق، تنقید، اقبالیات، لسانیات اور شاعری میں تصانیف یادگار چھوڑیں۔ ان کی تصانیف کی فہرست مندرجہ ذیل ہے:

  • انشائی ادب
  • 1965ء کے بہترین مقالے
  • پنجاب میں اُردو (مرتب)
  • قرآن حکیم کی روشنی مین تعلیم
  • تعلیم کے بنیادی مباحث
  • اقبال اور نظریہ وطنیت
  • اساسیات ِ اقبال
  • نقد ِجاں (شاعری)
  • مطالعہ حالی
  • میر حسن اور ان کا زمانہ
  • کلاسیکی اَدب کا تحقیقی مطالعہ
  • تنقیدی مطالعے
  • جدیدیت کی تلاش میں
  • افسانوی اَدب
  • شبلی کی حیات ِ معاشقہ
  • اُردو کا بہترین انشائی ادب
  • یارنامہ
  • افسانوی ادب
  • ادب پارے
  • باغ و بہار:ایک تجزیہ
  • نذر ِ غالب
  • اُردو نثر کے میلانات
  • منتخب مقالات:اقبال ریویو
  • مطالعہ ادبیات فارسی
  • پاکستانی قومیت کی تشکیلِ نو
  • الواح (شاعری)
  • ڈھلتی عمر کے نوحے (شاعری)
  • اردو ادب کا ارتقا:ایک جائزه
  • مقدمہ شعر و شاعری (مرتب)
  • پاکستان کی نظریاتی بنیادیں
  • قائد اعظم اور تحریک ِ پاکستان
  • دیوان ِ سودا (مرتب)
  • انتخاب دیوان سودا
  • مثنوی سحرالبیان
  • دیوان آتش: تجزیہ اور تنقید
  • مثنویات میر حسن
  • دیوان جہاندار
  • مقالاتِ تحقیق
  • نامۂ عشق
  • ارمغانِ ایران
  • ارمغانِ لاہور
  • عمل صالح
  • صحیفہ غالب
  • توضیحی کتابیاِ ابلاغیات
  • علامہ اقبال کی تاریخِ ولادت (ایک مطالعہ)
  • دربارِ ملی
  • ثواقب المناقب
  • قواعد و انشا

ڈاکٹر وحید قریشی کے فن اور شخصیت پرتحقیقی مقالاتترميم

ڈاکٹر وحید قریشی کی ادبی و تحقیقی خدمات (پی ایچ ڈی مقالہ)، روبینہ ناز، نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز اسلام آباد، 2008ء

اعزازاتترميم

حکومت پاکستان نے ڈاکٹر وحید قرشی کی ادبی و تعلیمی خدمات کے اعتراف طور پر صدارتی اعزاز برائے حسن کارکردگی عطا کیا۔[2]

وفاتترميم

ڈاکٹر وحید قریشی 17 اکتوبر، 2009ء کو لاہور، پاکستان میں وفات پاگئے۔ وہ لاہور کے سمن آباد کے قبرستان میں سپردِ خاک ہوئے۔[1][2]

حوالہ جاتترميم