پری شان خٹک

ادیب، شاعر، ماہرِ تعلیم، محقق، مترجم

پروفیسر پری شان خٹک ((انگریزی: Pareshan Khattak)، (پیدائش: 10 دسمبر، 1932ء - وفات: 16 اپریل، 2009ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے پشتو اور اردو کے ممتاز ادیب، شاعر، ماہرِ تعلیم، محقق، مترجم، اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئرمین، گومل یونیورسٹی اور آزاد جموں و کشمیر یونیورسٹی کے وائس چانسلر، یونیورسٹی گرانٹس کمیشن کے چیئرمین اوروزیراعظم آزادکشمیرکے مشیر تھے۔

پری شان خٹک
پیدائشمحمد غمی خان
10 دسمبر 1932ء
ضلع کرک، صوبہ سرحد، موجودہ پاکستان
وفات16 اپریل 2009ء (76 سال)

اسلام آباد، پاکستان
قلمی نامپری شان خٹک
پیشہادیب، محقق، ماہرِ تعلیم، مترجم
زبانپشتو، اردو
نسلپشتون
شہریتFlag of پاکستانپاکستانی
تعلیمایم اے (تاریخ)، ایم اے (پشتو ادب)
مادر علمیپشاور یونیورسٹی
اصنافشاعری، تحقیق، تعلیم، ترجمہ
نمایاں کاماُردو اور پشتو کے مشترک الفاظ
پشتون کون
دیوان ِ خوشحال خان خٹک (اردو ترجمہ)
اہم اعزازاتستارہ امتیاز
تمغا امتیاز

حالات زندگیترميم

پروفیسر پری شان خٹک 10 دسمبر، 1932ء کو موجودہ پاکستان میں صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع کرک کے علاقہ سونترہ غنڈی میرخان خیل میں پیدا ہوئے۔ ان کا اصل نام محمد غمی جان تھا[1][2]۔ انہوں نے پشاور یونیورسٹی سے تاریخ اور پشتو ادب میں ایم اے کی ڈگریاں حاصل کیں اور پشاور یونیورسٹی سے بطور لیکچرر اپنی عملی زندگی کا آغاز کیا جہاں وہ پشاور یونیورسٹی کے شعبہ پشتو کے چیئرمیں مقرر ہوئے۔ 1980ء میں جامعہ گومل ڈیرہ اسماعیل خان اور 1989ء میں آزاد جموں و کشمیر یونیورسٹی مظفرآباد کے وائس چانسلر بنائے گئے۔ اسی دوراں وہ اکادمی ادبیات پاکستان کے چیئر بھی رہے۔[2]

ادبی خدماتترميم

پروفیسر پری شان خٹک 50 سے زیادہ کتابوں کے مصنف اور مؤلف تھے۔[2] ان کی تصانیف میں اُردو اور پشتو کے مشترک الفاظ، پشتون قوم، دیوان ِ خوشحال خان خٹک (اردو ترجمہ) اور تنقیدی مضامین سرِ فہرست ہیں۔[1]

سرکاری / ثقافتی / تعلیمی اداروں سے وابستگیترميم

تصانیفترميم

  • دیوان ِ خوشحال خان خٹک (اردو ترجمہ)
  • اُردو اور پشتو کے مشترک الفاظ
  • پشتون قوم
  • تنقیدی مضامین
  • خوش حال نامہ
  • لسانی رابطہ (اردو، سندھی، پشتو، پنجابی اور بلوچی کے مشترک الفاظ)

اعزازاتترميم

حکومت پاکستان نے پروفیسر پری شان خٹک کو ان کی ادبی خدمات کے اعتراف کے اعتراف میں ستارہ امتیاز اور تمغا امتیاز عطا کیا۔[2]

وفاتترميم

پروفیسر پری شان خٹک 16 اپریل، 2009ء اسلام آباد، پاکستان میں وفات پاگئے۔ وہ پشاور کے حیات آباد کے قبرستان میں سپردِ خاک ہوئے۔[1][2]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ پروفیسر پری شان خٹک، سوانح و تصانیف ویب، پاکستان
  2. ^ ا ب پ ت ٹ ص 1028، پاکستان کرونیکل، عقیل عباس جعفری، ورثہ / فضلی سنز، کراچی، 2010ء