مرکزی مینیو کھولیں

چاند بی بی (1550–1599 CE)، چاند خاتون یا چاند سلطانہ کے نام سے بھی جانی جاتی ہیں۔ یہ ہندوستانی خاتون، بیجاپور سلطنت (1580–90) اور احمد نگر سلطنت (1596–99) کی ملکہ یا سلطانہ رہ چکی ہیں۔ ۔[1] چاند بی بی احمد نگر سلطنت کی دفاع کے لیے، مگلیہ سلطان اکبر سے جنگ کے لیے مہشور ہیں۔

چاند بی بی سلطان
بیجاپور اور احمد نگر کی سلطانہ
Chandbibi1800.jpg
چاند بی بی - گھوڑے پر سوار 18ویں صدی کی مصوری
شریک حیات علی عادل شاہ اول
والد حسین نظامی شاہ اول
پیدائش 1550 CE
وفات 1599 CE
مذہب اسلام

حسین نظام شاہ احمد نگر دکن کی لڑکی تھی۔ مروجہ علوم کی تکمیل کے بعد سپہ گری کی تربیت حاصل کی۔ اس کی شادی علی عادل شاہ مردان والیے بیجاپور سے ہوئی۔ باوجود پردہ نشین ہونے کے جب کبھی میدان جنگ میں آتی تو بڑے بڑے شیر مردوں کا پتہ پانی کر دیتی۔ اکبر اعظم نے شہزادہ مراد کو احمد نگر کی تسخیر کے لیے بھیجا لیکن شیردل خاتون نے اس کو 1595ء میں بے نیل مرام واپس ہوجانے پر مجبور کر دیا۔ دوسرے سال دانیال فوج سے گوداوری کے کنارے پر زبردست مقابلہ کیا۔ بالآخر 1598ء میں اکبر مقابلے پر آیا۔ احمد نگر کے قلعدار حمید خاں کی سازش اور غداری کی وجہ سے سپاہیوں نے اس بہادر خاتون کو محل کے اندر گھس کر بے خبری میں قتل کر دیا اور 1600ء میں اکبر کا قبضہ احمد نگر پر ہو گیا۔

ابلاغ میں چاند بی بیترميم

  • 1936 میں ایک ہندی فلم بنی جس کا نام “سلطانہ چاند بی بی“ -
  • مشحور مصنف اسلم راہی ایم اے کی تاریخی کتاب چاند بی بی.[2]

حوالہ جاتترميم

  1. "Women In Power: 1570–1600"۔ مورخہ 2006-12-19 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2006-12-24۔
  2. https://quranwahadith.com/product/chand-bibi/

بیرونی روابطترميم