الجوہرہ بنت مساعد الجلوی

موسیٰ بن جلووی بن ترکی بن عبد اللہ بن محمد بن سعود

الجوہرہ بنت مساعد الجلوی
شریک حیاتابن سعود
نسل
مکمل نام
الجوہرہ بنت مساعد بن جلوی بن ترکی بن عبدلاللہ بن محمد بن سعود
خاندانآل سعود
والدمساعد بن جلوی بن ترکی بن عبداللہ بن محمد بن سعود
والدہحساء بنت عبداللہ بن ترکی الترکی
پیدائش1891
وفات1919ء (عمر 27–28)
ریاض

الجوارہ بنت مساعد بن جلوی آل سعود (1891–1919) ابن سعود کی شریک حیات میں سے ایک تھیں۔ وہ شاہ خالد کی والدہ تھیں ۔ شاہ خالد سعودی عرب کے چوتھے حکمران شہزادہ محمد اور شہزادی تھیں۔ ابن سعود نے 1951 میں اعتراف کیا کہ اس نے متعدد شادیاں کیں لیکن اس کے باوجود الجوہرہ بنت مساعد ہی اس کی واحد محبت تھی۔

پس منظرترميم

الجوہرہ بنت مساعد کا تعلق الجیلوس سے تھا ، [1] جو آل سعود کی ایک شاخ تھی۔ آل جلوی کا خاندان آل سعود کے لیے اس لیے اہم ہے کہ وہ ابن سعود کے دادا فیصل بن ترکئی آل سعود کے چھوٹے بھائی کی اولاد ہیں۔ الجیلوس کی جڑیں شہزادہ جلووی بن ترکی بن عبد اللہ کی طرف مائل ہیں ، جنھوں نے 1700 کی دہائی کے اواخر میں اونیزہ کے گورنر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔ [2] [3]

مزید برآں ، الجیلو کے ارکان نے نے آل سعود کے ساتھ شادیاں کیں۔ [4] خاص طور پر ، شاہ فیصل کی شریک حیات ، شاہ فہد ، شاہ عبداللہ ، شہزادہ سلطان اور شہزادہ نایف سبھی جلووی قبیلے کے رکن تھے۔ [5]

ابتدائی زندگیترميم

الجوہرہ 1891 میں پیدا ہوئیں۔ [6] وہ فیصل بن ترکی آل سعود کے بھتیجے موسیٰ کی بیٹی تھی۔ اس کی والدہ حسینہ بنت عبد اللہ بن ترکی الترکی تھیں۔ الجوہرہ کے پھوپھی دادا جلوی بن ترکی بن عبد اللہ تھے جو ترکی بن عبد اللہ اور نورا بنت احمد السدری کا بیٹا تھا جو شاہ عبد العزیز کی والدہ سارہ بنت احمد السدری کی بہن تھیں۔ [7]

الجوہرہ کا بھائی ، عبد العزیز بن مساعد ، صوبہ حائل کا سابقہ گورنر تھا۔ [2] عبد العزیز بن مساعد کے شریک حیات میں سے ایک شاہ عبد العزیز ، حسینہ بنت عبد الرحمن کی بہن تھی۔ [6] ان کا کوئی بچہ نہیں تھا۔ عبد العزیز بن مساعد کی بیٹی ، الجوہرہ بنت عبد العزیز ، مرحوم شہزادہ نایف کی اہلیہ اور سعودی عرب کے سابق ولی عہد شہزادہ سعود اور شہزادہ محمد کی والدہ تھیں۔ ایک اور بیٹی ، النود بنت عبد العزیز ، بادشاہ فہد کی پہلی بیوی تھی۔

شادیترميم

الجوہرہ بنت مساعد اور ابن سعود کی شادی ابن سعود کی والدہ سارہ بنت احمد نے کی تھی۔ ان کی شادی 1908 میں ہوئی تھی جب وہ سترہ سال کی تھی۔ [2] [6] وہ شاہ ابن سعود کی چوتھی شریک حیات تھیں۔ [7] [8] یہ آل سعود کے کسی بھی رکن یا قریبی رشتے دار سے ابن سعود کی اکلوتی شادی تھی۔ [9] [10]

موتترميم

الجوہرہ ہسپانوی فلو میں مبتلا ہو کر ریاض میں فوت ہو گئیں۔اسی وبا کی وجہ سے ابن سعود کے بڑے بیٹے ترکی اول بن عبدالعزیز آل سعودبھی ہلاک ہوئے تھے۔ [8] [11] اس کی موت کی اطلاع ابن سعود کو دکھی کر گئی اور وہ بہت افسردہ ہوا۔ [2] [12] اس نے ہفتوں تک غم منایا اور محل میں واقع اپنے کمرے میں بند ہو گیا ۔ ابن سعود کی بہن نورہ کے علاوہ کسی کو کمرے میں داخل ہونے کی اجازت نہیں تھی۔ اس کے سامان کو بھی چھونا بھی منع کر دیا گیا اور اس کی نوکرانییاں محل میں ہی رہتی تھیں۔

ابن سعود اپنی زندگی کے اختتام تک صبح کی نماز کے بعد ہر جمعہ کو الجوہرہ کی قبر پر جاتے تھے۔ اپنے دوستوں سے نجی ملاقاتوں میں اس نے اس کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ حکمرانی قائم کرنے کے مشکل وقت میں ان کے لیے ایک بہت بڑی ساتھی تھیں۔ [10]

حوالہ جاتترميم

  1. Helen Chapin Metz (1992). "Saudi Arabia: A Country Study". اخذ شدہ بتاریخ 09 مئی 2012. 
  2. ^ ا ب پ ت "Al Jawhara bint Musaed bin Jiluwi Al Jiluwi". Datarabia. اخذ شدہ بتاریخ 06 اگست 2012. 
  3. J. E. Peterson (15 March 2020). Historical Dictionary of Saudi Arabia. Rowman & Littlefield. صفحہ 138. ISBN 978-1-5381-1980-8. 
  4. Joshua Teitelbaum (1 November 2011). "Saudi Succession and Stability" (PDF). BESA Center Perspectives. 14 جون 2012 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 اپریل 2012. 
  5. Mordechai Abir (1988). Saudi Arabia in the Oil Era: Regime and Elites: Conflict and Collaboration. Kent: Croom Helm. ISBN 9780709951292. 
  6. ^ ا ب پ Yousef Othman Al Huzaim. An Exceptional Woman Wife of a King. Darussalam Publishers. صفحہ 7. GGKEY:D6ZEE3WS95S. 
  7. ^ ا ب "Biography of King Khalid". King Khalid Foundation (بزبان عربی). صفحہ 2. 09 جولا‎ئی 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2020. 
  8. ^ ا ب Mark Weston (2008). Prophets and Princes: Saudi Arabia from Muhammad to the Present. John Wiley & Sons. صفحہ 128. ISBN 978-0-470-18257-4. 
  9. Michael Herb (1999). All in the family. Albany: State University of New York Press. صفحہ 102. ISBN 0-7914-4168-7. 
  10. ^ ا ب Leslie McLoughlin (21 January 1993). Ibn Saud: Founder of A Kingdom. Palgrave Macmillan UK. صفحہ 34. ISBN 978-1-349-22578-1. 
  11. Jennifer Reed (2009). The Saudi Royal Family. Infobase Publishing. صفحہ 30. ISBN 978-1-4381-0476-8. 
  12. "King Abdulaziz' Noble Character" (PDF). Islam House. اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2012.