جہانگیر خانزادہ

پاکستانی سیاست دان

جہانگیر خانزادہ ایک پاکستانی سیاست دان ہیں جو اگست 2018 سے پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے رکن ہیں۔ اس سے قبل وہ اکتوبر 2015 سے مئی 2018 تک پنجاب اسمبلی کے رکن رہے۔

جہانگیر خانزادہ
مناصب
رکن پنجاب صوبائی اسمبلی[1]   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن سنہ
15 اگست 2018 
حلقہ انتخاب پی پی-2 
پارلیمانی مدت 17 ویں صوبائی اسمبلی پنجاب 
معلومات شخصیت
پیدائش 8 جولا‎ئی 1977 (46 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اٹک  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن)  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد شجاع خانزادہ  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابتدائی زندگی اور تعلیمترميم

جہانگیر خانزادہ 8 جولائی 1977ء کو شجاع خانزادہ کے گھر پیدا ہوئے۔[2]

انہوں نے مارکیٹنگ میں ماسٹر آف بزنس ایڈمنسٹریشن کی ڈگری 2000 میں پریسٹن یونیورسٹی ، اسلام آباد سے حاصل کی۔

جہانگیر کے پاس برطانوی شہریت بھی ہے۔[3]

عملی زندگیترميم

بزنس گریجویٹ ہونے کے ناطے انہوں نے 2007ء سے 2015ء کے دوران سلک بینک کے نائب صدر کے طور پر خدمات انجام دیں۔

سیاسی زندگیترميم

ایک سیاست دان جو کہ 2015ء سے 2018ء کے دوران رکن صوبائی اسمبلی پنجاب رہے ضمنی انتخابات میں منتخب ہونے کے بعد یہ نشست 2015ء میں اپنے والد کے خودکش حملے میں قتل ہونے کی وجہ سے خالی ہوئی تھی۔ امور اور کھیل؛ بطور وائس چیئرمین، ٹریفک ریفارمز پنجاب؛ ممبر، کابینہ کمیٹی برائے امن و امان؛ اور 2016ء سے 2018ء کے دوران پنجاب سیف سٹیز اتھارٹی کی کمیٹی کے ممبر کی حیثیت سے۔ وہ عام انتخابات 2018ء میں دوسری مدت کے لیے پنجاب اسمبلی میں واپس آئے ہیں۔ وہ سرکاری دوروں پر برطانیہ، چین، ترکی، اردن، فلسطین، آذربائیجان اور جنوبی کوریا جا چکے ہیں۔ ان کے والد بھی 2002ء سے 2015ء کے دوران مسلسل تین بار رکن پنجاب اسمبلی رہے اور 2002ء سے 2007ء کے دوران وزیر اعلیٰ پنجاب کے معاون خصوصی، وزیر برائے CMIT اور I&C، چیئرمین، وزیر اعلیٰ کی ٹاسک فورس برائے زراعت اور پولیس ٹریننگ ریفارمز کے دوران کام کیا۔ 2008ء سے 2013ء انہوں نے 16 اگست 2015ء کو اپنے قتل تک 2014ء سے 2015ء کے دوران وزیر برائے تحفظ ماحولیات اور وزیر داخلہ کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔ مسٹر جہانگیر خانزادہ کے پردادا، کیپٹن عجب خان نے بھی 1926ء کے دوران بھارتی قانون ساز اسمبلی کے رکن کے طور پر خدمات انجام دیں۔ پنجاب اسمبلی 2002ء سے 2015ء کے دوران لگاتار تین مدتوں تک اور وزیر اعلیٰ پنجاب کے معاون خصوصی، 2002-07 کے دوران وزیر برائے سی ایم آئی ٹی اور آئی اینڈ سی، 2008ء سے 2013ء کے دوران زراعت اور پولیس ٹریننگ ریفارمز پر وزیر اعلیٰ کی ٹاسک فورسز کے چیئرمین کے طور پر کام کیا۔ انہوں نے 16 اگست 2015ء کو اپنے قتل تک 2014ء سے 2015ء کے دوران وزیر برائے تحفظ ماحولیات اور وزیر داخلہ کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔ مسٹر جہانگیر خانزادہ کے پردادا، کیپٹن عجب خان نے بھی 1926ء کے دوران بھارتی قانون ساز اسمبلی کے رکن کے طور پر خدمات انجام دیں۔ پنجاب اسمبلی 2002ء سے 2015ء کے دوران لگاتار تین مدتوں تک اور وزیر اعلیٰ پنجاب کے معاون خصوصی، 2002ء سے 2007ء کے دوران وزیر برائے سی ایم آئی ٹی اور آئی اینڈ سی، 2008ء سے 2013ء کے دوران زراعت اور پولیس ٹریننگ ریفارمز پر وزیر اعلیٰ کی ٹاسک فورسز کے چیئرمین کے طور پر کام کیا۔ انہوں نے 16 اگست 2015ء کو اپنے قتل تک 2014ء سے 2015ء کے دوران وزیر برائے تحفظ ماحولیات اور وزیر داخلہ کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔ مسٹر جہانگیر خانزادہ کے پردادا، کیپٹن عجب خان نے بھی 1926ء کے دوران بھارتی قانون ساز اسمبلی کے رکن کے طور پر خدمات انجام دیں

اکتوبر 2015ء میں ہونے والے ضمنی انتخاب میں حلقہ پی پی 16 (اٹک II) سے وہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کے امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے تھے۔[4][5] نومبر 2016 میں، انہیں وزیر اعلی شہباز شریف کی صوبائی کابینہ میں شامل کیا گیا اور انہیں صوبائی وزیر برائے یوتھ امور اور کھیل بنا دیا گیا۔

جہانگیر خانزادہ 2018 کے پاکستانی عام انتخابات میں حلقہ پی پی 2 (اٹک II) سے مسلم لیگ (ن) کے امیدوار کے طور پر پنجاب کی صوبائی اسمبلی کے لیے دوبارہ منتخب ہوئے تھے۔[6]

حوالہ جاتترميم

  1. https://www.pap.gov.pk/members/profile/en/21/1258
  2. "Punjab Assembly". www.pap.gov.pk. 14 جون 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2018. 
  3. https://www.pakistantoday.com.pk/2018/06/21/pml-n-pti-ppp-to-suffer-as-fia-dubs-their-major-candidates-as-dual-nationals/
  4. "PP-16 by-elections: Jahangir Khanzada cruises to electoral victory - The Express Tribune". The Express Tribune. 7 October 2015. 05 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2018. 
  5. "Jahangir Khanzada wins Attock by-polls". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). 01 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2018. 
  6. "Pakistan election 2018 results: National and provincial assemblies". Samaa TV. 29 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 ستمبر 2018.