راجا راؤ انگریزی زبان میں ناول اور مختصر کہانیاں لکھنے والی بھارتی مصنف تھے جہنوں نے ما بعد الطبیعیات پر لکھا ہے۔ اُنہیں 1964ء میں ساہتہ اکیڈمی ایوارڈ سے بھی نوازا گیا[1]۔ اُنہوں نے مختلف انواع کے ادب میں کام کیا ہے۔ اُن کا بھارت میں انگریزی ادب میں بہت کام ہے[2]۔

راجہ راؤ
Raja Rao.jpg
پیدائش8 نومبر 1908(1908-11-08)
ہاسن, میسور, بھارت
وفات8 جولائی 2006(2006-70-08) (عمر  97 سال)
آسٹن، ٹیکساس, امریکہ
پیشہWriter and professor
زبانEnglish, French, Kannada
مادر علمیجامعہ عثمانیہ, مدراس یونیورسٹی, University of Montpellier, Sorbonne
دور1938–1998
اصنافناول، مختصر کہانی، مضامین
نمایاں کامKanthapura (1938)
The Serpent and the Rope (1960)
اہم اعزازات
ویب سائٹ
www.therajaraoendowment.org

باب ادب

سرگزشتترميم

ابتدائی زندگیترميم

راجا راؤ 8 نومبر 1908ء کو میسور کے شہر ہاسن میں سمارت سوتر براہمن خاندان میں پیدا ہوئے۔ وہ اپنے 9 بہن بھائیوں میں سب سے بڑے تھے۔ اُن کے سات بہنیں اور ایک بھائی تھا۔ اُن کے والد نظام کالج حیدرآباد، دکن میں کرناٹک کی مقامی زبان کنڑا زبان پڑھاتے تھے۔ جب وہ چار سال کے تھے تو اُن کی والدہ کا انتقال ہو گیا تھا۔

والدہ کے انتقال نے اُن پر بحثیت ناول نگار بہت اثر چھوڑا۔ والدہ کی کمی اور یتیمی اکثر اُن کی تحریروں کے موضوعات رہے ہیں۔ اُن کی زندگی پر اثرانداز ہونے والی ایک اور شخصیت اُن کے دادا تھے جن کے ساتھ وہ ہاسن میں رہے۔ اُنہوں نے ایک مسلم اسکول سے تعلیم حاصل کی۔ بعد ازاں اُنہوں نے نظام کالج اور جامعہ عثمانیہ سے احمد علی کے دوست بنے جو بعد میں پاکستان کے مصنف بنے۔ اُنہوں نے فرانسیسی زبان اور ادب سیکھنا شروع کیا۔ فارغ التحصیل ہونے کے بعد وہ مدراس یونیورسٹی چلے گئے اور انگریزی اور تاریخ کی تعلیم حاصل کی۔ پھر وہ جامعہ مونٹپیلر فرانس چلے گئے اور آئریش ادب پر ہندوستانی ادب کے اثرات کا مطالعہ کیا۔ اُنہوں نے فرانسیسی زبان پڑھانے والی کیملی مولی سے 1931ء میں شادی کی جو صرف 1939ء تک چل سکی۔اپنی شادی کے ٹوٹنے کا ذکر اُنہوں نے اپنی ایک تحریر میں کیا۔ اُن کی پہلی تحریر فرانسیسی اور انگریزی میں شائع ہوئی۔ اِس دوران اُنہوں نے کنڑا میں چار مضامیں بھی لکھے۔

قومی ناول نگارترميم

1939ء میں وہ بھارت واپس آگئے اور اقبال سنگھ کے ساتھ جدید بھارتی نظریات پر رام موہن رائے سے جواہر لعل نہرو تک پر کام کیا۔اُنہوں نے 1942ء کی ہندوستان چھوڑ دو تحریک میں بھی حصہ لیا۔ پھر اُنہوں نے احمد علی کے ساتھ ممبئی سے ایک جرنل ٹومارہ کے نام سے مرتب کیا۔ اُن کی قوم پرست تحریک کا اثر اُن کی پہلی دو کتابوں میں بھی ملتا ہے۔

آخری ایامترميم

پھر وہ امریکا منتقل ہو گئے اور جامعہ ٹیکساس، آسٹن میں 1966ء سے 1986ء تک فلاسفی کے پروفیسر رہے۔ 1965ء میں اُنہوں نے امریکی اداکارہ کیتھرین جونز سے شادی کی جس کا اختتام بھی طلاق پر ہوا۔ 1986ء میں اُنہوں نے سوزان ویگھٹ سے شادی کی جو 1970 کی دہائی میں اُن کی اسٹوڈنٹ تھیں۔

8 جولائی 2006ء کو آسٹن ٹیکساس میں حرکت قلب بند ہو جانے سے اُن کا 97 سال کی عمر میں انتقال ہو گیا[3][4][5]۔

اعزازاتترميم

حوالہ جاتترميم

  1. "Conferred Sahitya Akademi Award in 1964". 
  2. "University of Texas acquires Raja Rao's archive". The Hindu. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2016. 
  3. "Noted author Raja Rao passes away". The Indian Express. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 جولا‎ئی 2006. 
  4. "Raja Rao passes away". Chennai, India: دی ہندو. 9 July 2006. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2006. 
  5. Alterno، Letizia (17 July 2006). "Raja Rao: An Indian writer using mysticism to explore the spiritual unity of east and west". London: دی گارڈین. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2017. 
  6. "Padma Awards" (PDF). Ministry of Home Affairs, Government of India. 2015. اخذ شدہ بتاریخ July 21, 2015. 

بیرونی روابطترميم