صومالیہ، سرکاری طور پر وفاقی جمہوریہ صومالیہ (صومالی: Jamhuuriyadda Federaalka Soomaaliya; عربی: جمهورية الصومال الفيدرالية)، قرن افریقہ کا ایک ملک ہے۔صومالیہ ایک مسلم اکثریت والا ملک ہے۔ نام کا مطلب دودھ سے بھرا ہوا پیالہ ہے۔ صومالیہ کے شمال مغرب میں جبوتی، جنوب مغرب میں کینیا، شمال میں خلیج عدن اور یمن، مشرق میں بحرِ ہند اور مغرب میں ایتھوپیا واقع ہیں۔ صومالیہ کے پاس افریقہ کی سرزمین پر سب سے لمبی ساحلی پٹی ہے۔ یہ خطہ بنیادی طور پر سطح مرتفع، میدانی علاقوں اور پہاڑی علاقوں پر مشتمل ہے۔ گرم حالات، سال بھر وقفے وقفے سے مون سون ہواؤں اور بے قاعدہ بارشوں کے ساتھ غالب رہتے ہیں۔ صومالیہ کی آبادی تخمینہ لگ ایک کروڑ اکہتر لاکھ ہے۔ دار الحکومت موغادیشو ہے۔ ہرگیسہ دوسرا بڑا شہر ہے۔ اسے افریقہ کا سب سے زیادہ ثقافتی طور پر یکساں ملک قرار دیا گیا ہے۔ اس کے تقریباً 85 فیصد باشندے نسلی صومالی ہیں، جو تاریخی طور پر ملک کے شمال میں آباد ہیں۔ نسلی اقلیتیں زیادہ تر جنوب میں مرکوز ہیں۔صومالیہ کی سرکاری زبانیں صومالی اور عربی ہیں۔ ملک میں زیادہ تر لوگ مسلمان ہیں اور باقی اقلیت عیسائیوں وغیرہ پر مشتمل ہے۔

صومالیہ
صومالیہ
صومالیہ
پرچم
صومالیہ
صومالیہ
نشان

 

ترانہ:
زمین و آبادی
متناسقات 6°N 47°E / 6°N 47°E / 6; 47  ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1]
بلند مقام
پست مقام
رقبہ
دارالحکومت موغادیشو[2]  ویکی ڈیٹا پر (P36) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سرکاری زبان صومالی زبان،  عربی  ویکی ڈیٹا پر (P37) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آبادی
حکمران
طرز حکمرانی وفاقی جمہوریہ  ویکی ڈیٹا پر (P122) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعلی ترین منصب حسن شیخ محمود (15 مئی 2022–)  ویکی ڈیٹا پر (P35) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قیام اور اقتدار
تاریخ
یوم تاسیس 1960  ویکی ڈیٹا پر (P571) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عمر کی حدبندیاں
شادی کی کم از کم عمر
شرح بے روزگاری
دیگر اعداد و شمار
منطقۂ وقت متناسق عالمی وقت+03:00  ویکی ڈیٹا پر (P421) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ٹریفک سمت دائیں  ویکی ڈیٹا پر (P1622) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ڈومین نیم so.  ویکی ڈیٹا پر (P78) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آیزو 3166-1 الفا-2 SO  ویکی ڈیٹا پر (P297) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بین الاقوامی فون کوڈ +252  ویکی ڈیٹا پر (P474) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Map

اقوام متحدہ نے 5 ستمبر 2011ء بروزِ پیر یہ انکشاف کیا ہے کہ 60 برس کے درمیاں صومالیہ سخت قحط کا سامنا کر رہا ہے اور 40 لاکھ افراد فاقہ کے شکار ہیں۔ سات ماہ قبل فاقہ زدوں کی تعداد 24 لاکھ تھی۔ ہزاروں کی جان بحق ہو گئی۔ اس میں بچّوں کی تعداد نصف کے قریب ہے۔ ملک کے چھ خطّوں میں کھانا ہی نہیں ملتا۔ قحط کی سب سے بڑی وجہ سخت خشک سالی ہے۔2022 سے اب تک ان کے 70 فیصد علاقے الشباب نے فتح کرلیے ہیں۔

تاریخ ترمیم

صومالیہ ممکنہ طور پر اپنے مقام کی وجہ سے ابتدائی انسانوں کے ذریعہ آباد ہونے والی پہلی زمینوں میں سے ایک تھا۔ شکار جمع کرنے والے جو بعد میں افریقہ ہجرت کر گئے تھے ممکنہ طور پر اپنی ہجرت سے پہلے یہاں آباد  تھے۔ پتھر کے زمانے میں یہاں دوئی اور ہرگیسی ثقافتیں پروان چڑھیں۔ قرن افریقہ میں تدفین کے رواج کا سب سے پرانا ثبوت صومالیہ کے قبرستانوں سے ملتا ہے جو چار ہزار سال قبل مسیح کا ہے۔ شمال میں جلیلو سائٹ سے ملنے والے پتھر کے اوزاروں کو بھی سنہ 1909ء میں مشرق اور مغرب کے درمیان پیلیوتھک کے دور کے آثار قدیمہ کی عالمگیریت کا مظاہرہ کرنے والے اہم نمونے کے طور پر نمایاں کیا گیا۔

جغرافیہ ترمیم

صومالیہ کی سرحد مغرب میں ایتھوپیا، شمال میں خلیج عدن، مشرق میں بحیرہ صومالی اور گاردافوئی چینل اور جنوب مغرب میں کینیا سے ملتی ہے۔ 637,657 مربع کلومیٹر کے رقبے کے ساتھ، صومالیہ کا خطہ بنیادی طور پر سطح مرتفع، میدانی اور پہاڑی علاقوں پر مشتمل ہے۔ اس کی ساحلی پٹی کی لمبائی 3,333 کلومیٹر سے زیادہ ہے، جو مین لینڈ افریقہ کی سب سے لمبی ساحلی پٹی ہے۔ اسے "جھکے ہوئے نمبر 7 " کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ شمال میں، اوگو پہاڑوں کے ناہموار مشرق-مغربی سلسلے خلیج عدن کے ساحل سے مختلف فاصلے پر واقع ہیں۔ وقفے وقفے سے مون سون ہواؤں اور بے قاعدہ بارشوں کے ساتھ گرم موسمی حالات سال بھر غالب رہتے ہیں۔

ارضیات قیمتی معدنی ذخائر کی موجودگی کا پتہ دیتی ہے۔ صومالیہ سیشلز سے صومالی سمندر کے ذریعے الگ ہے اور گارڈافوئی چینل کے ذریعے سوکوٹرا سے الگ ہے۔

 
شمالی صومالیہ کے کوہستانی سلسلے کی چوٹی
 
قدیم اریگاوو میں ایک راستہ
 
هرگيسا میں داہابشل بینک کی عمارت
 
ہرگیسیہ انٹرنیشنل ایرپورٹ،هرگیسیہ.
 
صومالی ہرن
 
دریائے جبّہ کا منظر

سیاست اور حکومت ترمیم

صومالیہ ایک پارلیمانی نمائندہ جمہوری جمہوریہ ہے۔ صومالیہ کا صدر، مملکت کا سربراہ اور صومالی مسلح افواج کا کمانڈر انچیف ہوتا ہے اور حکومت کے سربراہ کے طور پر کام کرنے کے لیے ایک وزیر اعظم کا انتخاب کرتا ہے۔ صومالیہ کی وفاقی پارلیمان صومالیہ کی قومی پارلیمان ہے۔ دو ایوانوں والی قومی مقننہ ہاؤس آف دی پیپل (ایوان زیریں) اور سینیٹ (ایوان بالا) پر مشتمل ہوتی ہے، جن کے ارکان چار سال کی مدت کے لیے منتخب ہوتے ہیں۔ پارلیمنٹ صدر، پارلیمنٹ کے اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کا انتخاب کرتی ہے۔ اسے قوانین کو پاس کرنے اور ویٹو کرنے کا اختیار بھی حاصل ہے۔ صومالیہ کی عدلیہ کی تعریف وفاقی جمہوریہ صومالیہ کے عارضی آئین کے ذریعے کی گئی ہے جو 1 اگست 2012ء کو موغادیشو میں ایک قومی آئینی اسمبلی کی طرف سے اپنایا گیا، یہ دستاویز ماہرین کی ایک کمیٹی نے تیار کی تھی جس کی سربراہی اٹارنی اور وفاقی پارلیمنٹ کے سپیکر محمد عثمان جواری کر رہے تھے۔ یہ وفاقی جمہوریہ کے وجود کی قانونی بنیاد اور قانونی اختیار کا ذریعہ فراہم کرتا ہے۔

قومی عدالت کا ڈھانچہ تین درجوں میں منظم ہے: آئینی عدالت، وفاقی حکومت کی سطح کی عدالتیں اور ریاستی سطح کی عدالتیں۔ ایک نو رکنی جوڈیشل سروس کمیشن عدلیہ کے کسی بھی وفاقی درجے کے رکن کا تقرر کرتا ہے۔ یہ آئینی عدالت کے ممکنہ ججوں کا انتخاب بھی کرتا ہے اور منظوری کے لیے وفاقی پارلیمان کے ایوان میں پیش کرتا ہے۔ اگر توثیق ہو جائے تو صدر امیدوار کو آئینی عدالت کا جج مقرر کرتا ہے۔ پانچ رکنی آئینی عدالت مختلف وفاقی اور ذیلی قومی معاملات کے علاوہ آئین سے متعلق امور کا فیصلہ کرتی ہے۔ صومالی قانون تین مختلف نظاموں کے مرکب سے اخذ کیا گیا ہے: سول قانون، اسلامی قانون اور رواجی قانون۔ سنہ 1991ء میں صومالیہ کی تباہی کے بعد، صومالی لینڈ کی حکومت، جس نے خود کو صومالیہ کا ایک ملک اور حکومت قرار دیا ہے، کے درمیان کوئی تعلقات یا کوئی رابطہ نہیں ہے۔

معیشت ترمیم

سی آئی اے اور صومالیہ کے مرکزی بینک کے مطابق، شہری بے امنی کا سامنا کرنے کے باوجود، صومالیہ نے ایک صحت مند غیر رسمی معیشت کو برقرار رکھا ہے، جس کی بنیاد بنیادی طور پر مویشیوں، ترسیلات زر کی کمپنیوں اور ٹیلی کمیونیکیشن پر ہے۔ رسمی سرکاری اعدادوشمار کی کمی اور حالیہ خانہ جنگی کی وجہ سے، معیشت کے حجم یا نمو کا اندازہ لگانا مشکل ہے۔ سنہ 1994ء کے لیے، سی آئی اے نے جی ڈی پی کا تخمینہ 3.3 بلین امریکی ڈالر لگایا تھا۔ سنہ 2001ء میں اس کا تخمینہ 4.1 بلین امریکی ڈالر تھا۔ سنہ 2009ء تک، سی آئی اے نے تخمینہ لگایا کہ جی ڈی پی بڑھ کر 5.731 بلین امریکی ڈالر ہو گئی ہے جس کی متوقع حقیقی شرح نمو 2.6 فیصد ہے۔ سنہ 2007ء کی برٹش چیمبرز آف کامرس کی رپورٹ کے مطابق، پرائیویٹ سیکٹر میں بھی اضافہ ہوا، خاص طور پر سروس سیکٹر میں۔ خانہ جنگی سے پہلے کے دور کے برعکس جب زیادہ تر خدمات اور صنعتی شعبے حکومت کے زیر انتظام تھے، تجارتی سرگرمیوں میں کافی، غیر پیمائش کے باوجود، نجی سرمایہ کاری ہوئی ہے۔ اس کی مالی اعانت بڑے پیمانے پر صومالی باشندوں نے کی ہے اور اس میں تجارت اور مارکیٹنگ، رقم کی منتقلی کی خدمات، نقل و حمل، مواصلات، ماہی گیری کا سامان، ایئر لائنز، ٹیلی کمیونیکیشن، تعلیم، صحت، تعمیرات اور ہوٹل شامل ہیں۔ آزاد خیال ماہر معاشیات پیٹر لیسن اس بڑھتی ہوئی اقتصادی سرگرمی کا دار و مدار صومالی روایتی قانون (جسے Xeer کہا جاتا ہے) سے منسوب کرتے ہیں، جس کے بارے میں وہ کہتے ہیں کہ کاروبار چلانے کے لیے ایک مستحکم ماحول فراہم کرتا ہے۔

بیرونی روابط ترمیم

  • "Somalia"۔ کتاب عالمی حقائق۔ سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی 
  • کرلی (ڈی موز پر مبنی) پر صومالیہ
  • صومالیہ کا پروفائل بی بی سی نیوز سے
  • ویکیمیڈیا نقشہ نامہ Somalia
  •   Somalia سفری راہنما منجانب ویکی سفر
  • Cal Madow mendigunea, سناج
  • Xebeli ibaia
  • Iparraldeko basamortua
  • Laag aintzira, Bari
  1.     "صفحہ صومالیہ في خريطة الشارع المفتوحة"۔ OpenStreetMap۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 فروری 2024ء 
  2. https://encyklopedia.pwn.pl/haslo/Somalia;4169147.html