محمد شفیع دیوبندی


مفتی محمد شفیع عثمانی تحریک پاکستان کے ایک اہم رہنما اور مفتی اعظم پاکستان تھے۔ آپ نے مولانا شبیر آحمد عثمانی کی دعوت پر اپنا آبائی وطن دیوبند چھوڑ کر پاکستان ہجرت کی۔ آپ کا شمار دارالعلوم دیوبند کے اہم اساتذہ میں ہوتا تھا۔ پاکستان آکر سب سے سے پہلے پاکستان میں دستور سازی کے عمل میں شریک ہوئے اور قائد اعظم کے وعدوں کے مطابق پاکستان میں نفاذ شریعت کے لیے راہ ہموار کیں۔ آپ نے کراچی کے علاقے کورنگی میں ایک وسیع و عریض مدرسہ جامع دارالعلوم کراچی قائم کیا جو آج پاکستان کا سب سے بڑا دینی مدرسہ ہے۔ آپ کے تلامذہ میں مولانا محمد صدیق شاہ قابل ذکر ہیں

محمد شفیع عثمانی
معلومات شخصیت
پیدائش 25 جنوری 1897  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیوبند
وفات 6 اکتوبر 1976 (79 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب دیوبندی
اولاد مفتی رفیع عثمانی،  محمد تقی عثمانی  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی دارالعلوم دیوبند
تلمیذ خاص عبدالحق بلوچ،  سید سیاح الدین کاکاخیل  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مذہبی رہنما  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو[1]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مفتی محمد شفیع بن محمد  یاسین عثمانی دیوبندی 1897 میں پیدا ہوئے۔ دار العلوم دیوبند میں مدرس رہے۔ 1943ء میں جامعہ سے استعفیٰ دے کر تحریکِ پاکستان میں حصہ لیا۔1951ء میں کراچی میں دار العلوم بنایا۔ تفسیر معارف القران  مشہور تصنیف ہے۔ 1976ء  میں انتقال ہوا۔

تصانیفترميم

  • معارف القرآن
  • دل کی دنیا

حوالہ جاتترميم

  1. Identifiants et Référentiels — اخذ شدہ بتاریخ: 11 مئی 2020 — ناشر: Bibliographic Agency for Higher Education