ابو سہل مسیحی گرگانی

فارسی طبیب

ابو سہل عیسیٰ ابن یحییٰ المسیحی گرگانی (پیدائش: 960ء – وفات: 1010ء) فارسی النسل طبیب، شاعر، ماہرفلکیات، ریاضی دان، فلسفی تھا۔ ابوسہل خراسان میں ابو ریحان البیرونی کا ہم عصر تھا۔ ابن سینا ابوسہل کے مشہور شاگردوں میں سے ہے۔

ابو سہل مسیحی گرگانی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 970  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
گرگان  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات سنہ 1010 (39–40 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Black flag.svg دولت عباسیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ماہر فلکیات،  طبیب،  شاعر،  فلسفی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل طب،  فلکیات،  فلسفہ،  شاعری  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ابوسہل کا شاگرد ابن سینا

ابتدائی حالاتترميم

ابو سہل کی پیدائشسریانی راسخ الاعتقاد کلیسیا سے تعلق رکھنے والے ایک مسیحی گھرانے میں ہوئی۔ بعد ازاں ابوسہل نے بغداد میں طب کی تعلیم حاصل کی۔ وہ ایک مختصر عرصہ خراسان اور خوارزم کے شاہی خاندانوں سے وابستہ رہا۔ ابن سینا علم طب میں ابوسہل کا شاگرد تھا۔ ابوسہل نے کسی کلیسیا سے تعلیم حاصل نہیں کی۔

آخری دور اور وفاتترميم

1010ء میں سلطان محمود غزنوی نے ابن سینا اور اُن کے ہمراہ متعدد علما کو غزنی طلب کیا۔ اِس طلبی کے پیچھے یہ وجہ کارفرماء رہی کہ یہ علما فلسفہ کی تعلیم دیتے تھے جسے اُس عہد میں بدعت کے طور پر متعارف کروایا گیا۔ بیشتر علما خراسان سے فرار ہو گئے جبکہ ابوسہل نے ابن سینا کے ہمراہ خراسان سے نکل کر مغربی ایران کی طرف سفر کرنا شروع کیا۔ صوبہ مازندران کے قریب صحرا میں ریت کے طوفان میں ابوسہل لاپتہ ہو گیا اور دوبارہ اُس کا کوئی سراغ نہ مل سکا۔ اُس وقت اُس کی عمر 50 سال کے قریب تھی۔[1]

تصانیفترميم

ابوسہل پیدائشی طور پر عربی النسل نہیں تھا بلکہ اُس کی مادری زبان سریانی زبان تھی جس میں اُس نے اپنی بیشتر تصانیف تحریر کیں۔ ابن ابی اصیبعہ کے مطابق وہ عربی زبان پر مکمل عبور رکھتا تھا لیکن سریانی زبان کو ترجیح دی۔

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم