احمد یاسین

شیخ احمد یاسینshaikh Ahmad yaseen

احمد یاسین (پیدائش:1938ء، انتقال:22 مارچ 2004ء) فلسطین کی مزاحمتی تحریک حماس کے بانی اور روحانی پیشوا تھے۔ انھوں نے 1987ء میں عبدالعزیز الرنتیسی کے ساتھ مل کر حماس تشکیل دی۔

فضیلۃ الشیخ   ویکی ڈیٹا پر (P511) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
احمد یاسین
(عربی میں: أحمد إسماعيل ياسين ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
 

معلومات شخصیت
پیدائش 28 جون 1936ء [1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
الجورہ، یروشلم   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 22 مارچ 2004ء (68 سال)[2][1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
غزہ شہر   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات سیاسی قتل   ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن شیخ رضوان   ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت ریاستِ فلسطین
انتداب فلسطین (1936–1948)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت اخوان المسلمون   ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن حماس   ویکی ڈیٹا پر (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعداد اولاد
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ الازہر   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ فعالیت پسند ،  سیاست دان ،  عالم مذہب ،  معلم ،  واعظ   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی [3]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مؤثر عزالدین القسام ،  حسن البنا [4]،  سید قطب [5]،  الحاج مفتی اعظم امین الحسینی   ویکی ڈیٹا پر (P737) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابتدائی زندگی

ترمیم

شیخ احمد یاسین 1938ء میں پیدا ہوئے۔ اُس وقت فلسطین پر برطانیہ کی حکمرانی میں تھا اس وقت سے ہی ان کے تمام نظریات اور تصورات اس توہین و حزیمت پر استوار ہونے لگے جس کا فلسطینیوں کو شکست کے بعد سامنا تھا۔

بچپن میں ایک حادثہ کے نتیجہ میں وہ چلنے پھرنے سے معذور ہو گئے تھے جس کے بعد انھوں نے اپنی زندگی اسلامی تعلیمات کے لیے وقف کر دی تھی۔

انھوں نے مصر کے دار الحکومت قاہرہ میں تعلیم حاصل۔ قاہرہ اس وقت ’اخوان المسلمون‘ کا مرکز تھا۔ یہ دنیائے عرب کی پہلی اسلامی سیاسی تحریک تھی۔

یہیں پر ان کا یہ عقیدہ راسخ ہوتا چلا گیا کہ فلسطین اسلامی سرزمین ہے اور کسی بھی عرب رہنما کو یہ حق حاصل نہیں کہ وہ اس کے کسی بھی حصہ سے دستبردار ہو۔

اگرچہ فلسطینی انتظامیہ سمیت عرب رہنماؤں سے ان کے تعلقات استوار رہے تاہم ان کا یہ راسخ عقیدہ تھا کہ "نام نہاد امن کا راستہ امن نہیں ہے اور نہ ہی امن جہاد اور مزاحمت کا متبادل ہو سکتا ہے "۔

حماس کا قیام

ترمیم

دبلے پتلے جسم کے مالک شیخ یاسین کی نظر بھی انتہائی کمزور تھی اور وہ انتہائی دھیمی آواز میں گفتگو کیا کرتے تھے لیکن اس کے باوجود وہ ان تمام فلسطینیوں کی امیدوں کا مرکز تھے جو اس تصور سے مایوس ہو چکے ہیں کہ امن ان کی زندگیوں میں کوئی تبدیلی لا سکتا ہے۔شیخ یاسین کو سب سے پہلے 1987ء میں عالمی شہرت ملی جب وہ انتفاضہ اول کے موقع پر سامنے آئے۔اس وقت فلسطینی اسلامی تحریک نے حماس نام اختیار کیا جس کے معنی جوش و جذبہ کے ہیں اور شیخ یاسین اس کے روحانی قائد چنا 1998 ء میں اسرائیلی فوج سے تعاون کرنے والے فلسطینیوں کے قتل کا حکم دینے کی پاداش میں اسرائیل نے انھیں عمر قید کی سزا سنائی تھی۔1997ء میں انھیں ان دو اسرائیلی ایجنٹوں کے بدلے رہا کر دیا گیا تھا جن پر اردن میں فلسطینی رہنماؤں کو قتل کرنے کا الزام تھا تاہم اسیری کے ان دنوں میں ان کی مقبولیت میں بے پناہ اضافہ ہوا اور وہ فلسطین کی جہادی مزاحمت کی علامت بن گئے۔وہ اردن میں ہونے والی عقبہ سربراہ ملاقات اور مذاکرات کے نتائج سے بھی مطمئن نہیں تھے۔ اس ملاقات میں امریکہ، اسرائیل اور فلسطینی رہنماؤں نے ایک دوسرے سے ملاقاتیں کی تھیں اور اس سربراہ کانفرنس کی خاص بات یہ تھی کہ اس میں اس وقت کے فلسطینی وزیر اعظم محمود عباس نے تشدد کو ختم کرنے کے عزم کا اظہار کیا تھا۔اسرائیل ان سے شدید نفرت کااظہار کرتا رہا ہے بلکہ انھیں فلسطینیوں کا اسامہ بن لادن قرار دیتا ہے۔

شہادت

ترمیم

شیخ ستمبر 2003ء میں ایک قاتلانہ حملے میں زخمی ہوئے۔ تاہم 22 مارچ 2004ء کو اسرائیل کے ایک گن شپ ہیلی کاپٹر کے میزائل حملے میں جاں بحق ہو گئے۔ اس وقت آپ نماز فجر کی ادائیگی کے لیے جا رہے تھے۔ حملے میں ان کے دونوں محافظین سمیت 10 دیگر افراد بھی جاں بحق اور شیخ یاسین کے دو صاحبزادوں سمیت 12 سے زائد افراد زخمی ہوئے۔

عالمی رد عمل

ترمیم

اقوام متحدہ کے اُس وقت کے معتمد عام کوفی عنان نے اسرائیل کے اس اقدام کی شدید مخالفت کی۔ اقوام متحدہ کے ہائی کمیشن برائے انسانی حقوق نے ان کے قتل کے خلاف قرارداد منظور کی جو چین، بھارت، انڈونیشیا، روس اور جنوبی افریقا سمیت 31 ممالک کی حمایت سے منظور ہوئی۔ مخالفت میں دو رائے آئیں جبکہ 18 ارکان غیر حاضر رہے۔ عرب لیگ اور افریقی یونین نے بھی ان کے قتل کی مذمت کی۔ برطانیہ اور امریکہ کا رد عمل یہ رہا "اسرائیل کو اپنے تحفظ کا حق حاصل ہے لیکن وہ اس واقعے کی مذمت کرتے ہیں " جبکہ عراق میں اس وقت کے امریکی سفیر جان نیگروپونٹے نے یاسین کو ایک "دہشت گرد" تنظیم کا سربراہ قرار دیا۔اسرائیل کے اس وقت کے وزیر دفاع شاؤل موفاز نے انھیں "فلسطینی بن لادن" قرار دیا جبکہ حزب اختلاف کے سربراہ شمعون پیریز کا کہنا تھا کہ وہ نہیں سمجھتے کہ رہنماؤں کو قتل کرنے سے دہشت گردی ختم کی جا سکتی ہے، یہ ایک غلط فیصلہ تھا۔ان کے قتل پر فلسطینی اتھارٹی نے تین روزہ قومی سوگ کا اعلان کیا اور رملہ میں یاسر عرفات کی رہائش گاہ پر فلسطینی پرچم سرنگوں رہا۔حماس کے رہنما اسماعیل ہانیہ نے کہا کہ "شیخ یاسین اس وقت کے منتظر تھے کہ انھیں شہادت ملے، ایریل شیرون نے اپنے لیے جہنم کا دروازہ کھول دیا ہے "غزہ میں ان کی نمازہ جنازہ میں دو لاکھ افراد نے شرکت کی۔اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے یاسین کے قتل کی مذمت کے حوالے سے قرارداد پیش کی جسے امریکا نے ویٹو کر دیا۔

شیخ احمد یاسین کا مشہور قول یہ ہے :

ہم نے اس راہ کا انتخاب کیا ہے جس کا اختتام فتح یا شہادت ہے

عبد العزیز رنتیسی کو ان کی جگہ حماس کا قائد قرار دیا گیا جو 17 اپریل 2004ء کو اسرائیل کے دوسرے حملے میں جاں بحق ہوئے۔

  1. ^ ا ب فائنڈ اے گریو میموریل شناخت کنندہ: https://www.findagrave.com/memorial/8552745 — بنام: Sheik Ahmed Yassin — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  2. دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Shaykh-Ahmad-Yasin — بنام: Sheikh. Ahmed Yassin — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  3. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb14515305j — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  4. https://www.ikhwanonline.com/article/239076
  5. https://www.dostor.org/2967742