عراق ایشیا کا ایک اہم عرب اور مسلمان ملک ہے، سرکاری طور پر جمہوریہ عراق، مشرق وسطی کا ایک ملک ہے۔ یہ ایک وفاقی پارلیمانی جمہوریہ ہے جو انیس صوبوں پر مشتمل ہے۔یہ قدیم میسوپوٹیمیا (مابین النھرین) کے کچھ صحرائی علاقوں اور مزید کچھ علاقوں پر مشتمل ہے۔ تیل کے ذخائر میں دنیا میں دوسرے نمبر پر ہے۔ اس کے جنوب میں کویت اور سعودی عرب، مغرب میں اردن، شمال مغرب میں شام، شمال میں ترکی اور مشرق میں ایران (کردستان علاقہ) ہے۔ اسے ایک محدود سمندری رسائی بھی حاصل ہے جو خلیج فارس کے ساحل ام قصر پر ہے جو بصرہ سے قریب ہے۔ عراق دنیا کے قدیم ترین ممالک میں شامل ہے جس نے کئی تہذیبوں کو جنم دیا ہے۔ فلسطین کی طرح اسے انبیا کی سرزمین کہا جاتا ہے۔ عراق، سلطنت فارس کا حصہ تھا اور یہ خلیفہ ثانی، حضرت عمر رضی اللہ تعالی عنہ کے دور خلافت میں اسلامی لشکر کے ہاتھوں فتح ہوا۔ دار الحکومت اور سب سے بڑا شہر بغداد ہے۔ زیادہ تر عراقی مسلمان ہیں۔ اقلیتی عقائد میں عیسائی، یزدی اور زرتشتی مذاہب شامل ہیں۔ عراق کی سرکاری زبانیں عربی اور کرد ہیں۔ دوسری زبانیں بھی مخصوص علاقوں میں بولی جاتی ہیں جیسے ترکی (ترکمان)، سورت (آشوری) اور آرمینیائی۔ عراق دنیا کا تینتیسواں سب سے زیادہ آبادی والا ملک ہے۔

عراق
عراق
عراق
پرچم
عراق
عراق
نشان

 

ترانہ:   موطنی   ویکی ڈیٹا پر (P85) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زمین و آبادی
متناسقات 33°N 43°E / 33°N 43°E / 33; 43   ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1]
رقبہ
دارالحکومت بغداد   ویکی ڈیٹا پر (P36) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سرکاری زبان عربی [2]،  کردی زبان [2]  ویکی ڈیٹا پر (P37) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آبادی
حکمران
طرز حکمرانی وفاقی جمہوریہ ،  وفاق   ویکی ڈیٹا پر (P122) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعلی ترین منصب عبد اللطیف رشید (17 اکتوبر 2022–)  ویکی ڈیٹا پر (P35) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سربراہ حکومت محمد شیاع السودانی (27 اکتوبر 2022–)  ویکی ڈیٹا پر (P6) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قیام اور اقتدار
تاریخ
یوم تاسیس 1932  ویکی ڈیٹا پر (P571) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عمر کی حدبندیاں
شادی کی کم از کم عمر
شرح بے روزگاری
دیگر اعداد و شمار
منطقۂ وقت متناسق عالمی وقت+03:00 (معیاری وقت )
متناسق عالمی وقت+04:00 (روشنیروز بچتی وقت )  ویکی ڈیٹا پر (P421) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ٹریفک سمت دائیں [3]  ویکی ڈیٹا پر (P1622) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ڈومین نیم iq.   ویکی ڈیٹا پر (P78) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سرکاری ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آیزو 3166-1 الفا-2 IQ  ویکی ڈیٹا پر (P297) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بین الاقوامی فون کوڈ +964  ویکی ڈیٹا پر (P474) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Map

2003ء میں اس پر امریکا نے قبضہ کر لیا تھا۔ اس کی غالب اکثریت مسلمانوں پر مشتمل ہے البتہ کافی تعداد میں مسیحی بھی ہیں۔ اس کا دار الحکومت بغداد ہے جو اس کا سب سے بڑا شہر ہے۔ اس کے علاوہ نجف، کوفہ، بصرہ، کربلا، سامرا، موصل اور کرکوک اس کے مشہور شہر ہیں۔ دریائے دجلہ اور فرات اس کے مشہور دریا ہیں۔ ان کے درمیان میں کی وادی انتہائی زرخیز ہے اور اس میں سات سے نو ہزار سال سے بھی پرانے آثار ملتے ہیں۔ سمیری، اکادی، اسیریا اور بابل کی تہذیبیں اسی علاقے میں پروان چڑھیں اور فنا ہوئیں۔

سن 2020 ء میں جمہوریہ عراق کی آبادی کا تخمینہ تقریباً 40,150,000 افراد لگایا گیا تھا، جس میں مردوں کی آبادی 50.50 فیصد اور خواتین کی آبادی 49.5 فیصد ہے۔  آبادی کا تناسب 75 فیصد عرب اور 15 فیصد کرد ہیں، جب کہ بقیہ 10 فیصد آشوری، ترکمان اور دیگر اقلیتیں ہیں۔ عراق کی اکثریتی آبادی کا مذہب اسلام ہے اور یہ آبادی کا 95 فیصد ہے۔ مذہبی اقلیتیں آبادی کا 5 فیصد ہیں، جو زیادہ تر آشوری عیسائی ہیں۔ دیگر مذاہب میں ماندیت ، یزدیت، یہودیت، مجوسیت اور بہائی ازم ہیں۔ عراق کی نسلوں کا تعلق عرب، کرد، ترکمان، آشوری، یہودی، آرمینیائی، روما اور دیگر سے ہیں۔

چھ ہزار  قبل مسیح سے عراق کے دجلہ اور دریائے فرات کے درمیان کے زرخیز میدانی میدان، جسے میسوپوٹیمیا کہا جاتا تھا،  نے سمیری، اکادی اور آشوری دور کے قدیم ترین شہروں، تہذیبوں اور سلطنتوں کو جنم دیا۔ میسوپوٹیمیا ایک "تہذیب کا گہوارہ" تھا جس نے تحریری نظام، ریاضی، وقت کا نظام، تقویم، علم نجوم اور قانون میثاق کو دیکھا۔ بعد میں، عباسی خلافت کے دور میں، بغداد دار الحکومت اور سب سے بڑا شہر بن گیا۔ اسلامی سنہری دور کے دوران، یہ شہر ایک اہم ثقافتی اور فکری مرکز میں تبدیل ہوا اور اس نے اپنے تعلیمی اداروں بشمول دارالحکمہ  کے لیے دنیا بھر میں شہرت حاصل کی ۔ یہ شہر سنہ 1258ء میں بغداد کے محاصرے کے دوران منگول سلطنت کے ہاتھوں بڑی حد تک تباہ ہو گیا۔

حضرت نوح علیہ السلام، حضرت ابراھیم علیہ السلام اور حضرت خضر علیہ السلام کا تعلق اسی علاقے سے تھا اور بروایتے حضرت آدم علیہ السلام نے بھی اس کے شہر قرنہ کو اپنا وطن بنایا تھا۔ 2003ء میں اس پر امریکا نے قبضہ کر لیا تھا۔ اس کی غالب اکثریت مسلمانوں پر مشتمل ہے البتہ کافی تعداد میں مسیحی بھی ہیں۔ اس کا دار الحکومت بغداد ہے جو اس کا سب سے بڑا شہر ہے۔ اس کے علاوہ نجف، کوفہ، بصرہ، کربلا، سامرا، موصل اور کرکوک اس کے مشہور شہر ہیں۔ دریائے دجلہ اور فرات اس کے مشہور دریا ہیں۔ ان کے درمیان میں کی وادی انتہائی زرخیز ہے اور اس میں سات سے نو ہزار سال سے بھی پرانے آثار ملتے ہیں۔ سمیری، اکادی، اسیریا اور بابل کی تہذیبیں اسی علاقے میں پروان چڑھیں اور فنا ہوئیں۔

حضرت ابراہیم علیہ السلام عراق میں پیدا ہوئے اور یہ بہت سے انبیا کی سرزمین ہے جیسے یونس، حزقیل، دانیال، عزیر ، نحم ، حنینہ (عربی میں حنین) ، آدم ، نوح ، ہود، صالح ، ذوالکفل ، سلیمان، اور ایوب وغیرہ اور مسلمانوں کے بہت سے امام جن میں جیسے کہ امام علی ، امام حسین ، ان کے بھائی عباس بن علی ، محمد بن حسن مہدی عبد القادر جیلانی ، امام ابو حنیفہ النعمان اور بہت سے مزارات موجود ہیں۔ جغرافیائی طور پر، خلیج عرب دنیا کے لیے عراق کا واحد سمندری راستہ ہے، کیونکہ عراق کے سمندری ساحل کی لمبائی تقریباً 58 کلومیٹر ہے اور بصرہ میں ام قصر کی بندرگاہ خلیج کی عراقی بندرگاہوں میں سے ایک اہم ترین بندرگاہ ہے۔ [4] دجلہ اور فرات کے دریا شمالی عراق سے اس کے جنوب میں گزرتے ہیں، جو میسوپوٹیمیا پر دنیا کے پہلے تہذیبی مراکز کے ظہور کی بنیاد تھے، جو پوری تاریخ میں اور 8000 سال کے عرصے کے دوران پیدا ہوئے۔ میسوپوٹیمیا کی تہذیب کی طرف سے تیار کردہ مصنوعات میں سمیری باشندوں کے خطوط کی ایجاد تھی۔ [5] اور بنی نوع انسان کی تاریخ میں پہلے تحریری قوانین کا نفاذ، جس میں تاریخی ذرائع میں ضابطہ حمورابی کے نام سے جانا جاتا ہے اور یہ امکان ہے کہ عراق میں دنیا کا پہلا عجائب گھر تھا جو 530

قبل مسیح میں بنایا گیا۔ [6] [7] [8] [9]

جدید عراق کی تاریخ سنہ 1920ء سے شروع ہوتی ہے، جب میسوپوٹیمیا کے لیے برطانوی مینڈیٹ لیگ آف نیشنز کے اختیار کے تحت تشکیل دیا گیا تھا۔ ہاشمی خاندان کے شہزادہ فیصل کی قیادت میں سنہ 1921ء میں برطانوی حمایت یافتہ بادشاہت قائم ہوئی۔ سنہ 1932ء میں ہاشمی بادشاہت نے برطانیہ سے آزادی حاصل کی۔ سنہ 1958ء میں عبد الکریم قاسم کی زیر قیادت، بادشاہت کا تختہ الٹ دیا گیا اور عراقی جمہوریہ تشکیل دی گئی۔ عراق پر سنہ 1968ء سے 2003 تک عرب سوشلسٹ بعث پارٹی کی حکومت رہی، جس کی قیادت احمد حسن البکر اور پھر صدام حسین نے ایک جماعتی ریاست کے طور پر کی۔ عراق نے سنہ 1980ء میں ایران پر حملہ کیا، جس سے ایک طویل جنگ کا آغاز ہوا جو سنہ 1988ء میں ختم ہوئی، جس میں دونوں فریقوں کو تباہ کن نقصان پہنچا۔ سنہ 1990ء میں، عراق نے کویت پر حملہ کیا، جس کی وجہ سے عالمی سطح پر اس کی مذمت کی گئی اور امریکا کی زیر قیادت بین الاقوامی اتحاد کی جانب سے ایک فوجی مہم چلائی گئی جس نے عراقی افواج کو کویت سے نکال دیا۔ "دہشت گردی کے خلاف عالمی جنگ" کے ایک حصے کے طور پر ایک اور امریکی زیرقیادت اتحاد کی جانب سے سنہ 2003ء میں شروع کیے گئے حملے کے نتیجے میں بعثی عراق کو شکست ہوئی اور صدام حسین کو پھانسی دے دی گئی۔ عارضی اتھارٹی کی پالیسیوں سے عدم اطمینان نے امریکا مخالف شورش کو جنم دیا، جو فرقہ وارانہ خانہ جنگی میں تبدیل ہو گئی۔ سنہ 2005ء میں، نیا آئین اپنایا گیا اور عراق میں کثیر الجماعتی پارلیمانی انتخابات منعقد ہوئے۔ عراق سے امریکی فوجیوں کا انخلاء سنہ 2008ء میں شروع ہوا اور امریکی قبضہ سرکاری طور پر سنہ 2011ء میں ختم ہوا۔ نوری المالکی کی شیعہ حکومت کی مسلسل جبر اور فرقہ وارانہ پالیسیاں 2012- .2013 میں عراقی مظاہروں کا سبب بنیں، جس کے بعد بعثی اور سنی ملیشیا کے اتحاد نے سنہ 2013ء کی انبار مہم کے دوران ہتھیار اٹھا لیے۔ اس مہم کا عروج شمالی عراق میں اسلامک اسٹیٹ گروپ، دولت اسلامیہ عراق و شام (داعش)  کی طرف سے حملہ تھا جس نے اس کی تیزی سے علاقائی توسیع کی نشان دہی کی، جس سے عراق میں جنگ لڑنے کے لیے امریکی فوجیوں کی واپسی پر اکسایا گیا، جو 2017 تک جاری رہی۔ ایران نے سنہ 2014ء کے بعد سے عراق میں فرقہ وارانہ جماعتوں اور خمینی ملیشیا گروپوں کے ذریعے مداخلت کی۔ اس کا اثر و رسوخ عراق میں وسیع پیمانے پر احتجاج کو متحرک کرتا ہے۔

عراق ایک وفاقی پارلیمانی جمہوریہ ہے۔ صدر ریاست کا سربراہ ہوتا ہے اور وزیر اعظم حکومت کا سربراہ ہوتا ہے اور آئین دو ادارے، نمائندوں کی انجمن  اور کونسل آف یونین فراہم کرتا ہے۔ عدلیہ، انتظامیہ اور مقننہ سے آزاد اور خود مختار ہے۔ عراق کو ایک ابھرتی ہوئی درمیانی طاقت اور ایک اسٹریٹجک مقام  سمجھا جاتا ہے۔ یہ اقوام متحدہ اور اوپیک OPEC کے ساتھ ساتھ عرب لیگ، اسلامی ممالک کی تنظیم OIC، غیر وابستہ تحریک اور IMF کا بانی رکن ہے۔ سنہ 1920ء سے 2005ء تک، عراق نے اہم اقتصادی اور فوجی ترقی اور جنگوں سمیت مختصر عدم استحکام کا تجربہ کیا۔

مختصر تاریخ

ترمیم

قبل از تاریخ

ترمیم

عراق قدیم ترین انسانوں کی رہائش گاہ تھی۔ طوفانِ نوح یہیں پر آیا تھا۔ عراق سے ملنے والے آثارِ قدیمہ ثابت کرتے ہیں کہ زمانہ قبل از تاریخ میں بھی یہاں کے لوگ باقاعدہ زبان، ثقافت اور مذہب رکھتے تھے۔ عراق کے شمال مشرق میں شانیدر کے غاروں سے ملنے والے نیاندرتھال انسان کے ڈھانچوں سے، جو پچاس سے ساٹھ ہزار سال پرانے ہیں، یہ پتہ چلتا ہے کہ وہ بولنے کی صلاحیت رکھتے تھے اور رسومات ادا کیا کرتے تھے مثلاً اپنے مردے پھولوں کے ساتھ دفناتے تھے۔[10]

زمانہ قدیم

ترمیم
 
حدیدہ ، الانبار میں دریائے فرات
 
میسوپوٹیمیا دوسرے ہزار سال قبل مسیح کے دوران -- سال 2000 قبل مسیح سے 1000 قبل مسیح کے درمیان۔ ایم
 
4500 قبل مسیح اور 1900 قبل مسیح کے درمیان سمیری تہذیب ۔ ایم۔

عراق کو پہلی انسانی تہذیب کی آماجگاہ سمجھا جاتا ہے۔ عراق کا قدیم نام میسوپوٹیمیا ہے۔ مگر یہ وہ نام ہے جو یونانیوں نے انھیں دیا تھا جس کا مطلب یونانی زبان میں ،دریاووں کے درمیان، کے ہیں چونکہ یہ تہذیب دریائے دجلہ اور دریائے فرات کے درمیان میں پروان چڑھی۔ اسے ہم تہذیب مابین النھرین یا بلاد الرافدين کہتے ہیں۔ یہ علاقہ سمیریا، اکادی، اسیریائی، کلدانی، ساسانی اور بابل کی تہذیبوں کا مرکز تھا جو پانچ ہزار سال قبل از مسیح باقی دنیا میں بھی نفوذ کر گیا۔ انھوں نے دینا کو لکھنا سکھایا اور ابتدائی ریاضیات، فلسفہ اور سائنسی علوم کے اصول دیے۔ اکادی سلطنت لبنان کے ساحلوں تک پھیلی ہوئی تھی۔ لبنان وہ علاقہ ہے جس نے ابتدائی حروف بنائے اور سمندری جہاز رانی کی ابتدا کی۔ اکادیوں کے بعد سمیریوں اور اس کے بعد بابل کی تہذیب نے فروغ پایا۔ بابل کی تہذیب میں حمورابی کی بادشاہت میں انھوں نے دنیا کو شہریت کے ابتدائی قوانین دیے۔ چھٹی صدی قبل مسیح میں یہ علاقہ اگلے چار سو سال کے لیے سائرس اعظم کی سلطنتِ فارس کا حصہ بن گیا۔ جس کے بعد سکندر اعظم نے یہ علاقہ فتح کیا جو دو سو سال کے لیے یونانی سلطنت کے زیرِنگیں رہا۔ سکندر کے بعد ایرانیوں نے ساتویں صدی عیسوی تک راج کیا۔

خلافت راشدہ

ترمیم

خلافت راشدہ میں عراق ساسانی سلطنت کا حصہ تھی۔ سلطنت، اسلامی خلافت کی سرحدوں تک شروع ہوئی جسے اسلامی فتح فارس کہا جاتا ہے اور اس کا آغاز سلطنت کے سیاسی اور اقتصادی مرکز عراق پر مسلمانوں کے حملے کی فتوحات سے ہوا [11] سنہ 11 ہجری بمطابق 633 عیسوی میں خالد بن الولید کی قیادت میں عراق پر حملہ کیا اور فتح حاصل کی ۔ اس فتح کے بعد خالد بن الولید کو رومی محاذ پر بھیجا گیا تو مسلمانوں پر فارسیوں نے حملہ کیا جس کی وجہ سے انھیں نقصان اٹھانا پڑا۔ [12] خلیفہ دوم سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کے دور میں فتوحات کی دوسری لہر سعد ابن ابی وقاص کی قیادت میں سنہ 14 ہجری بمطابق 636 عیسوی میں شروع ہوئی، چنانچہ فیصلہ کن فتح سنہ 636 عیسوی میں جنگ قادسیہ کی صورت میں ہوئی اور سعد ابن ابی وقاص نے عراق پر حکومت کی۔ خلیفہ عمر بن الخطاب کے دور میں بصرہ اور کوفہ شہر تعمیر ہوئے۔ جنگ جمل کے بعد، امام علی نے خلافت کے دار الحکومت کو مدینہ سے کوفہ منتقل کر دیا کیونکہ اس وقت اسلامی ریاست کی سرزمین کے وسط میں یہ مقام تھا۔ [13] اور عراق کا انتظام ان گورنروں کے زیر انتظام رہا جو مدینہ میں خلیفہ کے ذریعہ مقرر کیے گئے تھے، یہاں تک کہ چوتھے خلیفہ علی بن ابی طالب کے قتل سے پہلے، جنھوں نے کوفہ کو اپنا دار الخلافہ بنا لیا تھا۔

اموی ریاست

ترمیم

اموی ریاست یا اموی خلافت ( 41-132 ہجری / 662-750 AD ) اسلام کی تاریخ میں دوسری خلافت تھی اور اسلام کی تاریخ کی سب سے بڑی ریاست تھی۔ بنو امیہ کے خاندان نے 41 ہجری (662 ء) سے 132 ہجری (750 ء) تک حکومت کی اور ریاست کا دار الحکومت موجودہ جمہوریہ شام کے شہر دمشق میں تھا۔معاویہ بن ابی سفیان کے دور میں سیاسی سطح پر سب سے نمایاں تبدیلی یہ تھی کہ انھوں نے ریاست کے دار الحکومت کو کوفہ سے دمشق منتقل کر دیا (جب علی نے اسے مدینہ سے کوفہ منتقل کیا تھا) اور اس سے کچھ لوگ ناراض ہوئے۔ عراق اور حجاز کے ریاست نے ان کے دور حکومت میں استحکام اور خوش حالی کے دور کا مشاہدہ بھی کیا اور طویل وقفے کے بعد فتوحات کی پیروی کی ۔[14]

 
اموی ریاست کی حدود

اموی خاندان کے دوران عراق [15] رونما ہونے والے اہم ترین واقعات میں سے یہ ہیں: کربلا میں الطف کا واقعہ جو تین دن پر محیط تھا اور اس کا اختتام 10 [16] سنہ 61 ہجری کو ہوا جو 12 اکتوبر 680ء کے مطابق ہے۔ محمد بن عبداللہ ، جنہیں مسلمانوں نے جنگ کے خاتمے کے بعد "شہداء کا آقا" کہنا شروع کیا اور ان کے ساتھ ان کے اہل خانہ اور ساتھی اور اموی خلیفہ یزید بن معاویہ کی فوج تھی۔ جس کے نتیجے میں حسین اور ان کے ساتھی شہید ہو گئے۔ اور اہل عراق نے حجاز کے لوگوں کے ساتھ عبد اللہ بن زبیر کے خلیفہ کی بیعت کی، پھر اس کے بعد مختار الثقفی نے سنہ 66 ہجری میں بنی امیہ کے خلاف انقلاب کا اعلان کیا اور اس کے قاتلوں کے ایک گروہ کو قتل کر دیا۔ امام حسین [17] [18] [19] جو کوفہ اور دیگر جگہوں پر تھے، جیسے عمر بن سعد [20] اور شمر ابن ذی الجوشن اور دیگر اور کوفہ میں حکومت پر قبضہ کیا اور نعرہ بلند کیا۔ "اوہ، حسین کا بدلہ" اور عراق میں علوی ریاست بنانے کا ارادہ کر رہا تھا اور خلیفہ کے دور میں مصعب بن زبیر [21] کی فوج کے ہاتھوں سنہ 67 ہجری میں کوفہ میں مارا گیا۔ عبد الملک بن مروان جس نے سنہ 71 ہجری میں "جنگ دیر الجثیق" میں کامیابی کے بعد عراق کا مینڈیٹ دوبارہ حاصل کیا۔ اور عبد الملک بن مروان نے عبد اللہ بن زبیر کے خلاف جنگ میں کامیابی کے بعد حجاج بن یوسف کو عراق اور مشرق کا گورنر بنا کر بھیجا ۔ [22] عراق میں بنی امیہ کی حکمرانی انقلابات سے مشروط تھی، جس میں زید بن علی بن الحسین کا خلیفہ ہشام بن عبد الملک کے خلاف سنہ 121 ہجری میں انقلاب بھی شامل تھا، [23] اور عراق میں بنی امیہ کی حکومت کا خاتمہ ہوا۔ اموی خلیفہ مروان بن محمد کی عبد اللہ بن علی عباسی کی قیادت میں عباسی فوجوں کے حق میں ہارنے کے بعد 132 ہجری (750 عیسوی) میں جمادی الآخرہ کے مہینے میں عظیم زب کی جنگ ہوئی ۔ [24] [25]

عباسی خلافت

ترمیم
 
عباسی سونے کا دینار عباسی ریاست کے دوران 1244 عیسوی میں

عباسی ریاست ، اسلامی حکمران خاندانوں میں سے دوسری۔ عباسی امویوں کو اقتدار سے ہٹانے اور خود کو خلافت سے الگ کرنے میں کامیاب ہو گئے اور انھوں نے اس حکمران خاندان کو ختم کر دیا اور اس کے بیٹوں کا پیچھا کیا یہاں تک کہ ان میں سے اکثر کو ختم کر دیا اور صرف ان لوگوں کو بچایا گیا جو اندلس میں پناہ مانگتے تھے۔ عباسی ریاست کا قیام پیغمبر اسلام کے سب سے چھوٹے چچا محمد بن عبد اللہ، یعنی العباس بن عبد المطلب کے خاندان کی اولاد نے کیا تھا۔ یہ ریاست دمشق کے شہر سے کوفہ تک تھی۔ پھر انبار ، اس سے پہلے کہ انھوں نے بغداد شہر کو اپنا دار الحکومت بنایا اور بغداد تین صدیوں تک ترقی کرتا رہا اور دنیا کا سب سے بڑا اور خوبصورت شہر بن گیا، خاص طور پر خلیفہ ہارون الرشید کے دور میں، جس کا نام بغداد تھا۔ ہزار راتوں کے ناولوں سے وابستہ تھا اور ایک رات اور باقی عالمی ادب میں [26] لیکن اس کا ستارہ پوری طرح عباسی ریاست کے غروب آفتاب کے آغاز کے ساتھ ہی مدھم ہونا شروع ہو گیا۔ عباسی ریاست کے انہدام کی وجوہات مختلف تھیں، خاص طور پر: اس دور میں مختلف عوامی اور مذہبی تحریکوں کا ابھرنا۔ ان ٹیموں اور عباسی حکمرانوں کے درمیان جھگڑے کا مرکز " خلافت " یا مسلمانوں کی قیادت تھی۔

علیحدگی پسند تحریکوں کے پھیلاؤ کی حوصلہ افزائی کرنے والے اندرونی عوامل میں عباسی ریاست کے علاقے میں توسیع بھی تھی، کیونکہ اس وقت دار الحکومت اور ریاست کے کچھ حصوں کے درمیان فاصلہ اور نقل و حمل کی دشواریوں نے دور دراز ممالک کے گورنروں کو اپنے اختیارات سے تجاوز کر دیا تھا۔ اور اپنی علیحدگی پسند تحریک کو روکنے کے لیے خلافت کے دار الحکومت سے آنے والی فوجوں سے خوفزدہ ہوئے بغیر اپنی ریاستوں کے معاملات میں خود مختار ہو گئے۔جو اس وقت تک نہیں پہنچی جب تک کہ بہت دیر ہو چکی تھی اور عباسی ریاست کی سب سے نمایاں علیحدگی پسند تحریکوں میں سے ایک: مطالعہ تحریک، اضلاع کی تحریک ، اور فاطمی تحریک ۔ عباسی ریاست کی حکمرانی کے دوران، ہمدانیوں نے موصل پر قبضہ کر لیا اور اس پر (890 AD-1004 AD) تک حکومت کی، اس طرح ہمدانی ریاست قائم ہوئی۔ بغداد میں عباسی حکومت کا خاتمہ سنہ 656 ہجری / 1258 عیسوی میں ہوا جب ہلاکو خان تاتاری اس شہر پر حملہ کیا۔

منگول حملہ اور اس کا نتیجہ

ترمیم
 
بغداد کا محاصرہ (1258)۔ راشد الدین فضل اللہ الہمدنی کی کتاب "جامع التواریخ " سے۔

1257 میں منگول کمانڈر ہلاکو خان نے بغداد پر قبضہ کرنے کے لیے منگول سلطنت کی بڑی تعداد میں فوجیں جمع کرنا شروع کیں۔ [27] اسلامی خلافت کے دار الحکومت میں پہنچنے پر، ہلاکو نے عباسی خلیفہ المستسم باللہ سے ہتھیار ڈالنے کو کہا، لیکن خلیفہ نے ہتھیار ڈالنے سے انکار کر دیا، جس سے ہلاکو ناراض ہوا، چنانچہ اس نے دار الحکومت کو تباہ کرنے کا حکم دیا۔ جو مزاحمت کی حوصلہ شکنی کی منگول حکمت عملی سے مطابقت رکھتا ہے اور بغداد مکمل طور پر تباہ ہو گیا، [28] اور اندازے کے مطابق مرنے والوں کی تعداد 200,000 سے لے کر ایک ملین تک ہے۔ [29] ہلاکو کی نسطوری بیوی ڈوکوز خاتون کی مداخلت سے مقامی عیسائی آبادی کو کسی نے پریشان نہیں کیا۔ [30] [31] بیت الحکمت لائبریری کو جلانے کے علاوہ، جو اس وقت کی سب سے بڑی سائنسی، ادبی اور فنی لائبریری سمجھی جاتی تھی، کیونکہ اس میں لاتعداد قیمتی کتابیں اور آثار قدیمہ کے انمول دستاویزات موجود تھے۔ [32] کچھ مورخین کا خیال ہے کہ منگول حملے نے زرعی نظام کے بنیادی ڈھانچے کو تباہ کر دیا جس نے میسوپوٹیمیا کو ہزاروں سالوں تک پھلتا پھولتا رکھا۔ [33] تاہم، دوسرے مورخین نے نشان دہی کی کہ زرعی شعبے کے زوال کی بنیادی وجہ مٹی کی کھاری ہے۔ [34] منگولوں کے حملے کے بعد، جلائر نے عراق پر حکومت کی اور سال 1401 میں امیر تیمور نے عراق پر حملہ کیا اور اس کے سامنے ہتھیار ڈالنے کے بعد بغداد کو تباہ کر دیا اور تباہی کے نتیجے میں تقریباً 20،000 بے دفاع باشندے مارے گئے۔ [35] تیمرلین نے ہر سپاہی کو مقتولین کے دو سروں کے ساتھ اس کے پاس واپس آنے کا حکم دیا (اور سپاہیوں کے اس سے خوف کی وجہ سے، انھوں نے بغداد میں داخل ہونے سے پہلے ان قیدیوں کو مار ڈالا کہ جب وہ اس کے پاس آئے تو اسے سر دکھائے)۔ [36] اور تیموری ریاست سے اس کا الحاق۔ پندرہویں صدی میں، قرہ قویونلو کے قبائل نے عراق پر اپنا کنٹرول بڑھانے میں کامیاب ہو گئے، کیونکہ ان کے رہنما بہرام خواجہ نے موصل شہر پر اپنا کنٹرول بڑھایا اور پھر اس کے بیٹے یوسف بن قرہ محمد، پیرام کا پوتا، ایران میں تبریز کے قریب جلیری فوج کو شکست دینے میں کامیاب ہوا اور اس نے عراق پر قبضہ کر لیا اور کالی بھیڑوں کی حکمرانی 1467 عیسوی میں دوسرے ترک قبائل یعنی سفید بھیڑوں کے بعد ختم ہو گئی۔ عراق پر قبضہ کرنے میں کامیاب ہو گئے، کیونکہ ان کے امیر حسن قسون نے بلیک شیپ قبائل کی فوج کو شکست دی اور انھیں عراق سے نکال دیا۔[37]

صفوی ریاست

ترمیم
 
صفوی ریاست کی توسیع 1501 AD-1722 AD میں

صفویوں، شاہوں کے خاندان نے 1501-1785 عیسوی میں فارس ( ایران ) پر حکومت کی اور 1509 میں شاہ اسماعیل صفوی کی قیادت میں بغداد پر قبضہ کر لیا۔ [38] صفویوں کے زیر تسلط رہا یہاں تک کہ 1535 میں عثمانیوں نے اسے ان سے چھین لیا، لیکن صفویوں نے جلد ہی 1624 عیسوی میں اس پر قبضہ کر لیا اور جب شاہ کی فوج داخل ہوئی تو اس میں قتل عام ہوا اور یہ باقی رہا۔ صفوی حکومت کے تحت 1638 عیسوی تک، جب عثمانی سلطان مراد چہارم نے 1638 عیسوی میں اس میں داخلہ لیا۔

سلطنت عثمانیہ

ترمیم
 
1803ء میں عراق۔

صفوی ریاست نے سفید بھیڑوں کی ریاست کو شکست دی جو عراق، ایران، آذربائیجان، آرمینیا، ترکی کے کچھ حصوں، ترکمانستان اور جارجیا پر حکومت کر رہی تھیں اور عراق مختصر مدت کے لیے صفویوں کے ماتحت ہو گیا، یعنی 1508ء کے عرصے میں۔ ، پھر انھوں نے عثمانیوں کے ساتھ جنگ چالدران میں اپنی شکست کے بعد 1514ء سے آہستہ آہستہ عراق کو کھو دیا یہاں تک کہ انھوں نے 1533ء میں اپنی تمام سرزمین عراق کو کھو دیا، پھر 1623-1638 کے درمیان عراق کو دوبارہ فتح کیا۔ [39] [40] سترہویں صدی تک سلطنت عثمانیہ کی طاقت ایک طرف صفوی ریاست اور دوسری طرف یورپی ممالک کے ساتھ بار بار تنازعات کی وجہ سے ختم ہو گئی اور اپنی ریاستوں پر اس کا کنٹرول کمزور ہو گیا۔ جزیرہ نما عرب میں نجد سے خانہ بدوشوں کی آمد سے آبادی میں اضافہ ہوا۔ اور آباد علاقوں پر بدویوں کے چھاپوں کو روکنا ناممکن ہو گیا۔ [41] [42] زیادہ تر ہجرتیں وسطی اور جنوبی علاقوں کی طرف تھیں، خاص طور پر وہ جو دریائے فرات سے متصل ہیں، یعنی انبار سے بصرہ تک۔ 1747-1831 کے درمیانی عرصے کے دوران، ادیگی قوم نسل کے مملوک افسروں نے عراق پر حکومت کی [43] وہ عثمانی سبلائم پورٹ سے خود مختاری حاصل کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ انھوں نے قبائلی بغاوتوں کو کچل دیا، ینی چری فورس کے اختیارات کو محدود کیا، امن بحال کیا اور ایک پروگرام متعارف کرایا۔ معیشت اور فوجی نظام کو جدید بنانا۔ 1831ء میں، عثمانیوں نے مملوک حکومت کا تختہ الٹنے اور عراق پر براہ راست کنٹرول مسلط کرنے میں کامیابی حاصل کی۔ [44] بیسویں صدی کے اوائل میں عراق کی آبادی پچاس لاکھ سے کم تھی۔ [45] اور عراق میں عثمانی سلطنت کے اختتام پر، اس نے قتل عام کیا جسے سیفو قتل عام کے نام سے جانا جاتا ہے، جسے آشوری قتل عام یا شامی قتل عام بھی کہا جاتا ہے، جو سلطنت عثمانیہ کی باقاعدہ افواج کی مدد سے شروع کی جانے والی جنگی کارروائیوں کا ایک سلسلہ ہے۔ نیم باقاعدہ مسلح گروہوں کا جنھوں نے پہلی عالمی جنگ کے دوران اور اس کے بعد آشوری قوم کے شہریوں کو نشانہ بنایا۔ [46] ان کارروائیوں کے نتیجے میں ان میں سے ہزاروں افراد ہلاک ہوئے اور دیگر موجودہ ترکیہ کے جنوب مشرق اور شمال مغربی ایران میں اپنے اصل رہائش کے علاقوں سے بے گھر ہو گئے۔ [47] ان میں سے کچھ عراق میں آباد ہوئے۔

پہلی جنگ عظیم، برطانوی مینڈیٹ اور کنونشنز

ترمیم
 
سر فریڈرک اسٹینلے ماؤڈ 1917ء میں بغداد میں برطانوی فوج (ہندوستانیوں کی طرف سے) کی کمان کرتے ہوئے

عراق تین ریاستوں سے قائم ہوا: بغداد ، بصرہ اور موصل، جو سابقہ سلطنت عثمانیہ سے تعلق رکھتی تھیں۔ عراق پر عثمانی حکومت پہلی جنگ عظیم تک جاری رہی، جب عثمانیوں نے جرمنی اور مرکزی طاقتوں کا ساتھ دیا۔ جنگ کا اعلان کرنے کے بعد، میسوپوٹیمیا مہم میں انگریزوں نے 92,000 فوجیوں کو کھو دیا۔ عثمانی نقصانات معلوم نہیں تھے، لیکن برطانوی افواج نے عثمانی فوج سے 45,000 قیدیوں کو پکڑ لیا۔ برطانوی فوج 11 مارچ 1917ء کو بغداد میں داخل ہونے میں کامیاب ہوئی۔ 1918ء کے آخر تک اس خطے میں 410,000 برطانوی فوجی تعینات تھے، [48] جن میں سے 112,000 جنگی فوجیں تھیں۔ [49] 1916 میں، برطانیہ اور فرانس نے سائیکس پیکو معاہدہ کے تحت پہلی جنگ عظیم کے بعد مغربی ایشیا کی تقسیم کا منصوبہ پیش کیا۔ [50] [51] جنگ کے بعد، جمعیت اقوام نے میسوپوٹیمیا کی ریاستوں (یعنی بغداد، بصرہ اور موصل ) کو برطانیہ سے نوازا۔ 11 نومبر 1920ء کو عراق برطانوی کنٹرول میں لیگ آف نیشنز کا مینڈیٹ بن گیا۔ [52] برطانوی مسلح افواج نے قبضے کے خلاف عرب اور کردوں کی بغاوتوں کو کچل دیا۔ ان انقلابات میں سب سے نمایاں: بیس کی دہائی کا انقلاب اور شام میں دیر الزور کا انقلاب، جو موصل اور تکریت تک پھیلا ہوا محافظہ الانبار اور کرد علاقوں میں شیخ محمود الحفید کا انقلاب شام تھا۔ [53] [54]

 
مشرق وسطیٰ اور افریقہ میں لیگ آف نیشنز مینڈیٹ کے تحت آنے والے ممالک کو دکھانے والی ایک تصویر

مارچ 1921ء میں، قاہرہ کانفرنس، جس کی صدارت چرچل نے کی، مشرق وسطیٰ میں استحکام کے لیے منعقد ہوئی۔ جہاں فیصل کو تنصیب کی تصدیق کے لیے ریفرنڈم کرانے کی سفارش کے ساتھ عراق کا بادشاہ نامزد کیا گیا اور فیصل کو 23 اگست 1921ء کو باضابطہ طور پر بادشاہ کا تاج پہنایا گیا۔ [55] جنرل اسمبلی کی طرف سے آئین کے مسودے پر بحث میں ایک ماہ کا عرصہ لگا اور معمولی ترامیم کے بعد اسے جولائی 1924ء میں منظور کر لیا گیا۔ نامیاتی قانون (جیسا کہ آئین کہا جاتا تھا) 21 مارچ 1925ء کو بادشاہ کے دستخط کے فوراً بعد نافذ ہوا۔ آئین نے ایک آئینی بادشاہت، ایک پارلیمانی حکومت اور دو قانون ساز ایوانوں کی منظوری دی۔ دونوں کونسلیں ایک منتخب پارلیمنٹ اور مقرر کردہ قابل ذکر کونسلوں پر مشتمل تھیں۔ پارلیمنٹ کے ارکان ہر چار سال بعد آزادانہ انتخابات میں منتخب ہوتے تھے۔ پہلی پارلیمنٹ کا اجلاس 1925ء میں ہوا۔ 1958ء میں بادشاہت کے خاتمے سے پہلے دس عام انتخابات ہوئے۔ اس عرصے میں 50 سے زائد حکومتوں کا قیام نظام کے عدم استحکام کی عکاسی کرتا ہے۔ [55] عراق اور برطانیہ کے درمیان 1926 اور 1927 کے دوران یکے بعد دیگرے معاہدے ہوئے اور 1929ء میں برطانیہ نے عراق کو مطلع کیا کہ وہ اسے 1932 میں آزادی دے گا ۔ 30 جون 1930ء کو ایک نئے معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ اس معاہدے نے عراق اور برطانیہ کے درمیان ایک مضبوط اتحاد کے قیام کی منظوری دی تھی، جس میں "خارجہ پالیسی سے متعلق تمام معاملات میں دونوں فریقوں کے درمیان مکمل اور واضح مشاورت کی منظوری دی گئی تھی جو ان کے مشترکہ مفادات کو متاثر کر سکتے ہیں۔" عراق نظم و نسق اور داخلی سلامتی کا انتظام کرتا ہے اور برطانیہ کی حمایت سے غیر ملکی جارحیت کے خلاف اپنا دفاع کرتا ہے۔ برطانیہ نے اپنے یونٹوں کو بصرہ کے قریب اور فرات کے قریب حبانیہ میں فضائی فوجی اڈوں کے لیے جگہیں دیں۔اس معاہدے کی مدت پچیس سال تھی اور اگر عراق لیگ آف نیشنز میں داخل ہوتا ہے تو یہ موثر ہوگا۔ 3 اکتوبر 1932ء کو عراق ایک آزاد ملک کے طور پر لیگ آف نیشنز میں داخل ہوا۔ [56]

زمانہ جدید

ترمیم
 
تاجی ضلع، بغداد میں دریائے دجلہ

جنگ عظیم اول کے دوران میں برطانیہ نے اس پر قبضہ کر لیا۔ بعد میں فرانس اور برطانیہ نے بندر بانٹ کر کے مشرق وسطی کے حصے بخرے کیے۔ 1932ء میں انگریزوں نے اسے آزادی دی اور حکومت شریف مکہ کے بھائی امیر فیصل کو ترکوں کے خلاف جنگ لڑنے کے معاوضے کے طور پر دی۔ مگر عراق میں برطانیہ کے فوجی اڈے برقرار رہے اور اصل طاقت اسی کے پاس تھی۔ جنگ عظیم دوم کے بعد امریکا کا اثر اس خطے میں بڑھنا شروع ہو گیا۔ 1956ء میں عراق، پاکستان، ترکی، ایران، امریکا اور برطانیہ کے درمیان میں معاہدہ بغداد ہوا جو مصر کے جمال عبدالناصر اور شام کے خلاف ایک محاذ بن گیا۔ اس پر جمال عبدالناصر نے عراقی بادشاہت کے خلاف آواز اٹھائی جس کا اثر عراق میں بھی ہوا۔ 14 جولائی 1958ء کو بریگیڈئیر جنرل عبد الکریم قاسم اور کرنل عبدالسلام عارف کی قیادت میں عراقی فوج نے انقلاب برپا کیا اور عراقی بادشاہت کا خاتمہ کر دیا۔ انھوں نے عراق کو جمہوریہ قرار دیا اور معاہدہ بغداد کو قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ بریگیڈئیر جنرل عبد الکریم قاسم اور کرنل عبدالسلام عارف میں بعد میں اختلافات پیدا ہو گئے کیونکہ کرنل عبدالسلام عارف مصر کے ساتھ گہرے تعلقات کے حامی تھے مگر بریگیڈئیر جنرل عبد الکریم قاسم ایسا نہیں چاہتے تھے۔ اس وقت کرنل عبدالسلام عارف کو فارغ کر دیا گیا۔ 1963ء میں ایک اور فوجی بغاوت میں بعث پارٹی نے اقتدار پر قبضہ کر لیا اور کرنل عبدالسلام عارف کو صدر بنا دیا گیا۔ یہ وہی پارٹی ہے جس کے رکن صدام حسین بعد میں صدر بن گئے۔ درمیان میں کچھ وقت کے لیے اقتدار بعث پارٹی کے ہاتھ سے نکل گیا مگر انھوں نے دوبارہ اقتدار پر قبضہ کر لیا۔ 1968ء میں تیل کی برطانوی کمپنی کو فارغ کر کے ایک فرانسیسی کمپنی کے ساتھ معاہدہ کر لیا گیا۔ مگر بعد میں تیل کی صنعت کو قومیا لیا گیا۔ یہی وہ دور ہے جس میں عراق نے کچھ اقتصادی ترقی کی۔ جو پہلے برطانوی لوٹ کھسوٹ کے ساتھ ممکن نہیں تھی۔ بعث پارٹی کے صدام حسین کی حکومت 2003ء تک قائم رہی جس کے بعد امریکا نے عراق پر قبضہ کر لیا۔ صدام حسین کے زمانے میں ایران کے ساتھ ایک طویل وقت (ایران عراق جنگ) لڑی گئی جس میں عراق کو سعودی عرب اور امریکا کی آشیر باد حاصل تھی۔ مگر جب صدام حسین نے کویت پر قبضہ کرنے کی کوشش کی تو سعودی عرب اور امریکا نے اس کے خلاف جنگ لڑی۔ اس جنگ میں امریکا نے ترکی اور سعودی عرب کا علاقہ عراق کے خلاف استعمال کیا۔ کویت پر عراق کا قبضہ چھڑا لیا گیا مگر اس کے بعد بھی امریکا کے عزائم جاری رہے حتیٰ کہ امریکا نے مارچ 2003ء میں ایک اور جنگ (جنگ عراق 2003ء) میں عراق پر قبضہ کر لیا۔

صدام حسین کا دور حکومت

ترمیم
 
صدام حسین 1974ء میں

صدام حسین عبد المجید التکریتی ، جن کا تعلق البیضات قبیلے سے ہے [57] (28 اپریل 1937 [58] - 30 دسمبر 2006) [59] 1979 عیسوی سے 9 اپریل تک جمہوریہ عراق کے چوتھے صدر 2003 AD [60] اور عراقی جمہوریہ کے پانچویں ریپبلکن گورنر اور 1975ء اور 1979ء کے درمیان عراقی جمہوریہ کے نائب صدر رہے۔ اس کا نام 17 جولائی 1968ء کے انقلاب میں بعث پارٹی کی بغاوت کے دوران سامنے آیا، جس نے عرب قوم پرست نظریات، اقتصادی شہری کاری، اور سوشلزم کو اپنانے پر زور دیا۔ صدام نے حکومت اور مسلح افواج کے متضاد شعبوں کی باگ ڈور ایسے وقت میں سنبھالی تھی جب بہت سی تنظیموں کا خیال تھا کہ وہ حکومت کا تختہ الٹنے کے قابل ہیں۔ عراق کے لیے ایک منظم ترقیاتی پالیسی کے نتیجے میں ستر کی دہائی میں عراقی معیشت میں تیزی سے اضافہ ہوا، اس کے علاوہ اس وقت تیل کی قیمتوں میں بڑی تیزی کے نتیجے میں حاصل ہونے والے وسائل بھی۔ [61] 1968ء میں بعث پارٹی کے عراق میں اقتدار سنبھالنے کے بعد، صدام نے سنی اور شیعہ فرقوں اور عربوں ، کردوں اور دیگر کے درمیان استحکام حاصل کرنے کی کوشش کی۔ [62] یہ صدام کی رائے میں تھا جس ملک میں فرقہ واریت اور تفریق پھیلی ہوئی ہو وہاں کی مضبوط اور مستحکم قیادت کو جبر کی پالیسی کی ضرورت ہوتی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ معیار زندگی کو بلند کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ [62]

صدام کے عراق کے صدر بننے کے فوراً بعد، اس نے 22 جولائی 1979ء کو بغداد کے ہال آف مولے میں بعث پارٹی کے رہنماؤں کو جمع کیا۔ اس نے انھیں غداری قرار دیا اور انھیں میٹنگ روم کے باہر اور حاضرین کے سامنے فائرنگ اسکواڈ کے ذریعے ایک ایک کر کے پھانسی کا سامنا کرنا پڑا۔ [63] 1980 میں، عراق نے ایران کے ساتھ جنگ شروع کر دی [64] اور 2 اگست 1990 کو صدام نے کویت پر حملہ کر دیا ۔ [65] جس کی وجہ سے 1991ء میں دوسری خلیجی جنگ شروع ہوئی۔ [66] دوسری خلیجی جنگ کے فوراً بعد عراق کے جنوب اور شمال میں ایک بغاوت برپا ہوئی جسے شعبان بغاوت کے نام سے جانا جاتا ہے اور اس کا آغاز تیسرے مارچ 1991ء کو ہوا [67]۔ یہ ناکہ بندی 6 اگست 1990ء کو کویت پر حملے کے چار دن بعد شروع ہوئی اور سلامتی کونسل نے عراق کے خلاف اقتصادی پابندیاں لگانا جاری رکھیں اور عراق پر نوے کی دہائی کے دوران اپنی ذمہ داریوں کی خلاف ورزی کا الزام عائد کیا گیا، جس میں 1993ء میں ایک سازش کا الزام عائد کیا گیا۔ [68] [69] [70] عراق پر ناکہ بندی کے سنگین نتائج برآمد ہوئے، کیونکہ اس سے ملک کی معیشت تباہ ہوئی، صحت اور تعلیمی سطح میں گراوٹ آئی اور خوراک اور ادویات کی کمی کی وجہ سے انسانی تباہی ہوئی۔ [71] عراق نے سلامتی کونسل کی قراردادوں 706 اور 712 کو مسترد کر دیا ہے، جو عراق کو انسانی امداد کے بدلے تیل فروخت کرنے کی اجازت دیتی ہیں۔ لیکن عراق نے بعد میں رضامندی ظاہر کی اور سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 986 کے مطابق انسانی امداد اس کو منتقل کر دی گئی، جس نے خوراک کے لیے تیل کے پروگرام کی منظوری دی۔ [72] [73] 18 فروری 1999 کو، اپریل 1999 کے آخر تک، صدام حسین کی سربراہی میں عراقی حکومت کے ہاتھوں جناب محمد صادق الصدر کے قتل کے نتیجے میں ایک بغاوت ہوئی اور محاذ آرائیاں ہوئیں۔

امریکی قبضہ اور اس کے بعد

ترمیم
 
اتحادی افواج نے بغداد اور پھر باقی عراق پر کنٹرول حاصل کرنے کے لیے مارچ کیا۔

آج کل عراق میں ایک برائے نام حکومت قائم ہے جو 30 جنوری 2005ء کے انتخابات کے نتیجے میں قائم ہوئی تھی مگر امریکی قبضہ جاری ہے اور اصل طاقت اسی کے پاس ہے۔ تیل کی عراقی دولت کو برطانیہ اور امریکا دونوں ہاتھوں سے لوٹ رہے ہیں۔ یہ دور ایک خون آلود دور کے طور پر یاد کیا جائے گا کیونکہ ان چند سالوں میں اتنی عراقی عوام قتل ہوئی ہے جو پچھلے پچاس سال میں نہیں ہوئی۔ عراق کے سابق صدر صدام حسین کو امریکی کی زیرِنگیں حکومت نے پھانسی دے دی ہے جس سے فرقہ وارانہ فساد میں اضافہ ہوا ہے۔ استعماری طاقتیں سنی، شیعہ اور کرد مسلمانوں میں اختلافات کو ہوا دے رہے ہیں جس کا منطقی نتیجہ عراق کی تقسیم کی صورت میں نکل سکتا ہے۔ اس کے علاوہ امریکا کی نظریں ایران اور پاکستان پر لگی ہوئی ہیں جو اس وقت ھر طرف سے امریکی افواج یا ان کی ساتھی حکومتوں کے درمیان میں گھری ہوئی ہیں۔ اس سے مشرقِ وسطیٰ کا نقشہ ایک بار پھر بدلنے کا امکان ہے۔

موجودہ عراق

ترمیم

شہری بے امنی نے ملک کو ہلا کر رکھ دیا جو جولائی 2018ء میں بغداد اور نجف سے شروع ہوا اور ستمبر 2019ء کے آخر میں دوسرے صوبوں تک پھیل گیا کیونکہ بدعنوانی، بے روزگاری اور عوامی خدمت کی ناکامی کے خلاف احتجاجی مارچ پرتشدد ہو گئے۔ انتظامیہ کے خاتمے اور عراق میں ایرانی مداخلت کے خاتمے کے مطالبات میں اضافے سے پہلے 16 سال [74] بدعنوانی، بے روزگاری اور عوامی خدمات میں نا اہلی کے خلاف یکم اکتوبر 2019ء کو دوبارہ احتجاج اور مظاہرے شروع ہوئے ۔ بعض صورتوں میں، عراقی حکومت نے ضرورت سے زیادہ سختی کا جواب دیا ہے، جس کے نتیجے میں 12 دسمبر 2019ء تک 500 سے زیادہ اموات ہوئیں۔ 27 دسمبر 2019ء کو عراق میں K1 بیس پر 30 سے زیادہ میزائلوں سے حملہ کیا گیا جس میں ایک امریکی شہری ٹھیکیدار ہلاک اور دیگر زخمی ہوئے۔ امریکا نے ایرانی حمایت یافتہ کتائب حزب اللہ تنظیم کو ذمہ دار ٹھہرایا۔ اس مہینے کے آخر میں، 27 دسمبر کو ہونے والے کتائب حملے کے جواب میں ، امریکا نے عراق اور شام میں کتائب حزب اللہ کے پانچ مقامات پر بمباری کی ۔ عراقی ذرائع کے مطابق تنظیم کے کم از کم 25 جنگجو مارے گئے۔ 31 دسمبر 2019ء کو امریکی فضائی حملوں میں ہلاک ہونے والے کتائب حزب اللہ کے ارکان کے جنازے کے بعد درجنوں عراقی شیعہ ملیشیا اور ان کے حامیوں نے بغداد کے گرین زون کی طرف مارچ کیا اور امریکی سفارت خانے کے احاطے کا گھیراؤ کیا ۔ مظاہرین نے بیریئر کا دروازہ توڑ دیا، استقبالیہ جگہ کو آگ لگا دی، امریکا مخالف پوسٹرز چھوڑے اور امریکا مخالف نعرے لکھے۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران پر حملے کے ماسٹر مائنڈ کا الزام عائد کیا ہے۔ 3 جنوری 2020ء کو، امریکہ اور ایران کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی کے درمیان، امریکا نے بغداد کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب سفر کرنے والے ایک قافلے پر ڈرون حملہ کیا، جس میں ایرانی میجر جنرل اور پاسداران انقلاب اور قدس فورس کے کمانڈر قاسم سلیمانی ہلاک ہو گئے۔ ایران میں دوسری سب سے زیادہ بااثر شخصیت؛ [75] ابو مہدی المہندس ، عراقی پاپولر موبلائزیشن فورسز کے ڈپٹی کمانڈر، چار سینئر ایرانی افسران اور چار عراقی افسران بھی مارے گئے۔ اکتوبر 2019ء میں عراق بھر میں شروع ہونے والے مہینوں کے مظاہروں اور وزیر اعظم عادل عبد المہدی اور ان کی حکومت کے استعفیٰ کے بعد، مصطفیٰ الکاظمی وزارت عظمیٰ کے لیے اہم دعویدار بن گئے۔ [76] 9 اپریل 2020 کو صدر برہم صالح نے انھیں وزیر اعظم مقرر کیا، صرف 10 ہفتوں میں ملک کی قیادت کے لیے منتخب ہونے والے تیسرے شخص تھے۔ سرکاری ٹی وی نے اطلاع دی ہے کہ کاظمی کو صدر برہم صالح نے نامزد کیا تھا، جس کے فوراً بعد سابق وزیر اعظم نامزد، عدنان الزرفی نے حکومت کو منظور کرنے کے لیے خاطر خواہ حمایت حاصل کرنے میں ناکامی کے بعد دستبرداری کا اعلان کیا۔ نومبر 2021ء میں، عراقی وزیر اعظم مصطفیٰ الکاظمی ایک ناکام قاتلانہ حملے میں بال بال بچ گئے۔

 
2021 کے انتخابات کے بعد عراقی پارلیمنٹ میں نشستیں، سدرسٹ تحریک (سیاہ)، تقدم پارٹی (نیلے)، ریاستی قانون (سرخ)، کردستان ڈیموکریٹک پارٹی (پیلا)، فتح اتحاد (سبز)، پیٹریاٹک یونین کردستان کے (زیتون)، آزاد ارکان پارلیمنٹ (سفید)۔

30 نومبر 2021ء کو، شیعہ رہنما مقتدیٰ الصدر کی زیر قیادت سیاسی بلاک، صدری تحریک نے اکتوبر کے پارلیمانی انتخابات میں کامیابی حاصل کرنے کی تصدیق کی تھی، جس میں پارلیمنٹ کی 329 نشستوں میں سے کل 73 نشستیں تھیں۔ پارلیمنٹ کے اسپیکر محمد الحلبوسی کی قیادت میں تقدم پارٹی نے 37 نشستیں حاصل کیں۔ سابق وزیر اعظم نوری المالکی کی قیادت میں اسٹیٹ آف لا پارٹی نے پارلیمنٹ میں 33 نشستیں حاصل کیں۔ جہاں تک فتح الائنس کا تعلق ہے، جس کے اہم اجزاء ایران کے حمایت یافتہ دھڑے ہیں، اس نے عوامی حمایت کھونے کے بعد صرف 17 نشستیں حاصل کیں۔ کے ڈی پی نے 31 نشستیں حاصل کیں اور پیٹریاٹک یونین آف کردستان نے 18 نشستیں حاصل کیں۔ عجم اتحاد نے 12 نشستیں حاصل کیں، امتداد موومنٹ اور نیو جنریشن موومنٹ کو نو نشستیں اور آزاد ارکان پارلیمنٹ کو 40 نشستیں حاصل ہوئیں۔ [77] جہاں تک اقلیتوں کے لیے مخصوص نشستوں کا تعلق ہے، بابلیون تحریک نے عیسائیوں کے لیے مختص 5 نشستوں میں سے 4 نشستیں حاصل کیں، جب کہ ایک آزاد امیدوار نے ایک نشست جیتی۔ یزدی موومنٹ فار ریفارم اینڈ پروگریس نے ایک یزدی سیٹ جیت لی۔ [78]

جغرافیہ

ترمیم
 
عراق کا نقشہ

عراق کا کل رقبہ 168,743 مربع میل (437,072 مربع کلومیٹر) ہے۔ اس کا زیادہ تر علاقہ صحرائی ہے مگر دریائے دجلہ اور دریائے فرات کے درمیان میں کا علاقہ انتہائی زرخیز ہے۔ اس علاقے کو میسوپوٹیمیابلادالرافدين یا مابین النھرین کہتے ہیں۔ زیادہ تر شہر انہی دو دریاؤں کے کناروں پر آباد ہیں۔ عراق کا ساحلِ سمندر خلیجِ فارس کے ساتھ بہت تھوڑا ہے جو ام قصر کہلاتا ہے اور بصرہ کے پاس ہے۔ عراق عرب کی آخری سرزمین کہلائی جا سکتی ہے کیونکہ اس کے بعد ایران اور پاکستان ہیں۔ عراق کے ایک طرف کویت ہے جو کسی زمانے میں عراق ہی کا حصہ تھا۔ ایک طرف شام ہے اور ایک طرف سعودی عرب۔ عراق کو اپنے تیل کے ذخائر کی وجہ سے بہت اہمیت حاصل ہے جو دنیا میں دوسرے نمبر پر ہیں۔ عراق میں خشک گرمیوں کا موسم آتا ہے جس میں بادل تک نہیں آتے مگر سردیوں میں کچھ بارش ہوتی ہے۔ عراق کے شمال میں کچھ پہاڑی علاقے بھی ہیں۔ مگر اس کا سب سے بڑا صوبہ (محافظۃ الانبار) جو سعودی عرب کے ساتھ لگتا ہے مکمل طور پر صحرائی ہے۔

جمہوریہ عراق براعظم ایشیا کے جنوب مغرب میں واقع ہے، لہذا یہ مشرق وسطی کے علاقے میں واقع ہے۔ یہ عرب دنیا کا شمال مشرقی حصہ بناتا ہے۔ اس کی سرحدیں شمال میں ترکیہ ، مشرق میں ایران ، مغرب میں شام ، اردن اور سعودی عرب اور جنوب میں کویت اور سعودی عرب سے ملتی ہیں ۔ یہ عرض البلد 29° 5' اور 37° 22' N اور عرض البلد 38° 45' اور 48° 45' E کے درمیان پھیلا ہوا ہے۔ [79] عراق بنیادی طور پر ایک صحرائی ملک ہے اور اسے صحرائے عرب اور صحرائے شام کا حصہ سمجھا جاتا ہے ، دریائے دجلہ جو ایک دوسرے کے ساتھ ملتے ہیں ، اور اس سے دو بڑے دریا گزرتے ہیں، دجلہ اور فرات ۔ عراق کے علاقے۔, اور دونوں دریاؤں میں بہت سی معاون ندیاں ہیں جو عراق کی سرحدوں کے باہر سے آتی ہیں، سوائے عظیم معاون دریا کے، جو ایک عراقی معاون دریا ہے۔ پانی کا ایک جسم جسے شط العرب کہا جاتا ہے، جو بدلے میں خلیج فارس میں خالی ہو جاتا ہے اور عراق کے بیشتر بڑے شہر ان دو دریاؤں کو نظر انداز کرتے ہیں، جیسے نینویٰ ، بیجی ، بغداد ، رمادی ، عمارہ ، ناصریہ اور بصرہ ۔ جہاں تک عراق کے شمال کا تعلق ہے، اس پر پہاڑوں کا غلبہ ہے اور اس کا سب سے اونچا مقام 3611 میٹر (11847 فٹ) اونچائی ہے، جو کوہ شیخا در کی چوٹی ہے [80] ، جس کا مطلب ہے (سیاہ خیمہ)۔ عراق کے پہاڑ دو زنجیروں پر مشتمل ہیں: ترکی کے ساتھ سلسلہ کوہ طوروس سلسلہ اور ایران کے ساتھ زگروس پہاڑی سلسلہ۔ اور اندرونی طور پر عراق میں، حمرین کی پہاڑیوں کے اندر پہاڑیاں اور پہاڑ ہیں، اسی طرح مغربی عراق میں ایک سطح مرتفع ہے جسے مغربی سطح مرتفع کہا جاتا ہے اور عراق کا ایک مختصر ساحل ہے جس سے 58 کلومیٹر [80] (36 میل) عرب نظر آتے ہیں۔ خلیج مزید برآں، عراق میں مصنوعی جھیلیں ہیں، جن میں سب سے اہم ثرثار جھیل ، الرزازہ جھیل اور صوا جھیل جیسی قدرتی جھیلیں ہیں، جو المثنا گورنری میں صحرائے شام کے وسط میں واقع ہیں۔ عراق کے جنوبی گورنریٹس میں کئی دلدل بھی ہیں جن میں سے سب سے اہم حوثی دلدل اور حمار دلدل ہیں۔

رقبہ

ترمیم

عراق کا کل رقبہ (علاقائی پانیوں کے ساتھ)، 20 اکتوبر 2009 کو عراقی حکومت کے اعدادوشمار کے مطابق، کل 435,052 مربع کلومیٹر ہے، جس میں سے 434,128 مربع کلومیٹر زمینی رقبہ (99.8%) اور 924 مربع کلومیٹر علاقائی پانیوں کا رقبہ ہے (0.2%)۔ کتاب حقائق عالم ویب گاہ کے اعدادوشمار کے مطابق عراق [81] رقبہ 438,317 کلومیٹر 2 ہے۔ [82] پانی زمینی رقبہ کا 0.29% ہے، یعنی پانی کا رقبہ 950 km2 ہے۔ [82] جہاں تک عراق کی سرحدوں کی لمبائی کا تعلق ہے، یہ کل 3,809 مربع کلومیٹر ہے۔ ترکی کے ساتھ یہ 367 مربع کلومیٹر، ایران کے ساتھ 1599 مربع کلومیٹر، کویت کے ساتھ 254 مربع کلومیٹر، سعودی عرب کے ساتھ 811 مربع کلومیٹر، اردن کے ساتھ 179 مربع کلومیٹر اور شام کے ساتھ 599 مربع کلومیٹر ہے۔ [82]

تلچھٹ کا میدان

ترمیم
 
جزیرہ فرات کی سرحدیں، جسے جزیرے کے نام سے جانا جاتا ہے اور تاریخی طور پر اکورے کا علاقہ ہے۔

تلچھٹ کا میدان عراق کے ایک چوتھائی رقبے پر یا 132,000 کلومیٹر 2 کے برابر ہے اور ایک مستطیل کی شکل میں پھیلا ہوا ہے (650 کلومیٹر لمبا اور 250 کلومیٹر چوڑا) اور دریائے دجلہ پر بلاد شہر کے درمیان پھیلا ہوا ہے۔ اور شمال کی طرف سے دریائے فرات پر بلیک پہاڑی کے علاقے میں رمادی کا شہر اور مشرق سے ایرانی سرحد۔ اور مغرب کی طرف سے صحرائی سطح مرتفع اور اس میں دلدل اور جھیلیں شامل ہیں، جیسا کہ میدانی علاقوں کے ساتھ دلدل اور جھیلیں بنتی ہیں۔ یہ ملک کے رقبے کا 30.5%ہے۔[83]

صحرائی سطح مرتفع

ترمیم

یہ مغربی عراق میں واقع ہے اور ملک کا تقریباً نصف رقبہ یا 198,000 مربع کلومیٹر پر محیط ہے اور اس کی اونچائی (100-1000) میٹر کے درمیان ہے اور اس میں جزیرہ فرات بھی شامل ہے۔ عراق کے ریگستان 38.7 فیصد ہیں۔ [84]

پہاڑی علاقہ

پہاڑی علاقہ عراق کے شمالی اور شمال مشرقی حصے میں واقع ہے اور مغرب [85] اور مشرق میں شام، ترکی اور ایران کے ساتھ اپنی مشترکہ سرحدوں تک پھیلا ہوا ہے۔

ہموار علاقہ

یہ جنوب میں نچلے میدانوں اور عراق کے شمال اور شمال مشرق میں بلند پہاڑوں کے درمیان ایک عبوری خطہ ہے۔یہ پہاڑی علاقے کے رقبے کے 50% سے بھی کم یا (67,000 مربع کلومیٹر ) پر قابض ہے۔ 42,000 مربع کلومیٹر ) پہاڑی علاقے سے باہر ہے اور اس کی اونچائی (100-1200) میٹر اور پہاڑی علاقے کے اندر 25،000 کلومیٹر 2 اور اس کی اونچائی (200-450) میٹر تک ہے اور لہراتی خطہ 9.7 تک ہے۔  [86]

جزیرے

ترمیم

عراق میں دریائی جزیرے ہیں جن میں سب سے اہم یہ ہیں: گورنری الانبار میں دو جزیرے الوس اور جبہ ، بغداد میں ام الخنظیر کا جزیرہ، ام الرصاص کے جزائر، ام الببی اور سنباد۔ بصرہ میں شط العرب اور بصرہ میں خور الزبیر کے داخلی راستے پر واقع جزیرہ حجام اور جزیرہ مجنون جو ایک مصنوعی جزیرہ ہے جس سے تیل کی پائپ لائنیں بصرہ میں قرنہ میں گزرتی ہیں۔ دریائے دجلہ اور فرات میں بہت سے جزیرے ہیں۔

موسم

ترمیم
 
NASA کی ایک تصویر میں 30 جولائی 2009 کو ملک میں دھول کا طوفان آ رہا ہے۔

پورے عراق میں اوسط درجہ حرارت جولائی اور اگست میں 48 ° C (118.4 ° F ) سے لے کر جنوری میں انجماد سے نیچے تک ہوتا ہے۔ زیادہ تر بارش دسمبر اور اپریل کے درمیان ہوتی ہے، جس کی اوسط سالانہ 100 اور 180 ملی میٹر (3.9 اور 7.1 انچ) کے درمیان ہوتی ہے۔ شمالی عراق کے پہاڑی علاقے میں وسطی اور جنوبی علاقوں کے مقابلے میں نمایاں طور پر زیادہ بارشیں ہوتی ہیں۔ تقریباً 90% سالانہ بارش نومبر اور اپریل کے درمیان اور خاص طور پر دسمبر اور مارچ کے درمیان ہوتی ہے۔ جہاں تک باقی مہینوں کا تعلق ہے، خاص طور پر اعلی درجہ حرارت جیسے جون ، جولائی اور اگست ، خشک ہوتے ہیں۔ موسم سرما کا کم از کم درجہ حرارت شمالی، شمال مشرقی دامن اور مغربی صحرا میں قریب انجماد (صبح سے پہلے) سے لے کر 2 سے 3 °C (35.6–37.4 °F) اور 4 سے 5 °C (39.2 °C) تک ہوتا ہے۔ 41 ڈگری فارن ہائیٹ)، جنوبی عراق کے اللووی میدانی علاقوں میں۔ یہ مغربی صحرا، شمال مشرق میں تقریباً 16 °C (60.8 °F) کی زیادہ سے زیادہ اوسط اور جنوب میں 17 °C (62.6 °F) تک بڑھ جاتا ہے۔ گرمیوں میں، کم سے کم درجہ حرارت، تقریباً 27 سے 34 °C (80.6 سے 93.2 °F) اور زیادہ سے زیادہ تقریباً 42 سے 47 °C (107.6 اور 116.6 °F) تک بڑھ جاتا ہے، کچھ دنوں میں 50 درجہ حرارت ریکارڈ کیا گیا تھا۔ ڈگری سیلسیس اور زیادہ۔ رات کا درجہ حرارت بعض اوقات انجماد سے نیچے گر جاتا ہے اور انبار گورنریٹ کے مغربی صحرا میں رتبہ میں درجہ حرارت -14 °C (6.8 °F) ریکارڈ کیا گیا ہے۔ گرمی کے مہینوں میں درجہ حرارت 49 °C (120.2 °F) سے زیادہ ہونے کے ساتھ نمی کا امکان زیادہ ہوتا ہے اور کئی اسٹیشنوں پر 53 °C (127.4 °F) سے زیادہ کا ریکارڈ ہوتا ہے۔

عراق کی آب و ہوا تین اقسام میں تقسیم ہے: [87]

  • بحیرہ روم کی آب و ہوا : ملک کے شمال مشرق میں پہاڑی علاقے میں غالب ہے اور اس کی خاصیت اس کی سرد سردیوں سے ہوتی ہے، جہاں پہاڑی چوٹیوں پر برف پڑتی ہے اور بارش کی مقدار سالانہ 400-1000 ملی میٹر کے درمیان ہوتی ہے۔ اپنے بہت سے ریزورٹس کے لیے مشہور ہوا، جیسے کہ صلاح الدین، شکلوا، حج عمران، سارسنگ اور دیگر۔
  • میدانی آب و ہوا : پہاڑی شمالی علاقے اور جنوب میں گرم صحرائی آب و ہوا کے درمیان ایک عبوری آب و ہوا ہے۔ یہ زیادہ تر غیر منقولہ علاقے کی حدود میں واقع ہے۔ اس کی سالانہ بارش 200-400 ملی میٹر کے درمیان ہوتی ہے اور یہ مقدار موسمی موسم کے لیے کافی ہے۔
  • گرم صحرائی آب و ہوا : یہ تلچھٹ کے میدان اور مغربی سطح مرتفع میں موجود ہے اور اس میں عراق کا 70% علاقہ شامل ہے۔ اس کی سالانہ بارش 50-200 ملی میٹر کے درمیان ہوتی ہے۔ اس کی خصوصیت رات اور دن، گرمیوں اور موسم گرما کے درمیان ایک بڑی تھرمل رینج ہے۔ موسم سرما اور گرم موسم۔ اس کا درجہ حرارت نقطہ انجماد سے اوپر رہتا ہے سوائے چند راتوں کے۔

قدرتی وسائل

ترمیم
 
کرکوک میں تیل کا کنواں (تصویر بشکریہ امریکی لائبریری آف کانگریس )

عراق پچھلی صدی کے ساٹھ کی دہائی کے آغاز میں پانی کے مسائل سے دوچار ہوا جب ترکی نے دجلہ اور فرات پر 22 ڈیم بنانے کے مقصد سے جنوب مشرقی اناطولیہ کے منصوبے کو عملی جامہ پہنایا اور یہ بحران 2008 عیسوی کی خشک سالی میں مزید خراب ہونے تک جاری رہا۔ 19 ستمبر 2009 کو ترکی اور شام اور عراق کے درمیان دجلہ اور فرات کے طاسوں میں پانی کی ترسیل اور پانی کی سطح کے لیے مشترکہ نگرانی کے مراکز کے قیام سے متعلق ایک مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے گئے۔ ترکی نے فرات کے حصے میں بھی اضافہ کیا۔ دریا 450 سے 500 کیوبک سینٹی میٹر تک اور عراق نے مہینوں کے بعد ترکی کے ساتھ تیل کی تجارت کرنے اور بدلے میں ترکی کے ساتھ سرحد پر کرد ملیشیا کے کام کو روکنے میں مدد کرنے پر رضامندی ظاہر کی۔ الیسو ڈیم ، جس کا کام 2015 عیسوی میں شروع ہونے کی امید ہے۔ ترکی میں دجلہ، عراق اور ترکی کے درمیان سیاسی تنازع کی نمائندگی کرتا ہے اور عراق کے پاس زمینی پانی کا ایک بڑا ذخیرہ بھی ہے۔

  • تیل : عراق، خاص طور پر بصرہ اور کرکوک کے صوبوں میں، تیل سے مالا مال علاقہ ہے۔ 2015 کے اندازوں کے مطابق، عراق تقریباً 30 لاکھ بیرل یومیہ پیدا کرتا ہے اور 2015 کے اگست کے مہینے میں برآمد کی جانے والی مقدار 93,700,000 بیرل تھی [88] اور یہ تیل کی پیداوار کے لحاظ سے دنیا کے ممالک میں آٹھویں نمبر پر ہے۔ 31 دسمبر 2014 کو [89]
  • قدرتی گیس : 2008 کے اندازوں کے مطابق عراق تقریباً 15 بلین کیوبک میٹر پیدا کرتا ہے اور اس مقدار کے ساتھ قدرتی گیس کی پیداوار کے لحاظ سے دنیا کے ممالک میں بتیسویں نمبر پر ہے۔ عراق کے قدرتی گیس کے ذخائر، 2008ء کے اندازوں کے مطابق، تقریباً 3000 بلین کیوبک میٹر ہیں اور اس مقدار کے ساتھ قدرتی گیس کے ثابت شدہ ذخائر کے لحاظ سے دنیا کے ممالک میں دسویں نمبر پر ہے۔ [90]
  • مویشی : عراقی وزارت زراعت کے سال 2008 کے اعدادوشمار کے مطابق، کل (2,552,113) گائے کے سر، (7,722,375) بھیڑوں کے سر، (1,474,845) بکریوں کے سر، (285,537) سروں کے سر ہیں۔ اور (58,293) اونٹوں کے سر (اونٹ) [91]
  • زرعی دولت : عراق میں 2013 عیسوی میں کاشت کی گئی اراضی 19,794,742 دونم تھی جبکہ قابل کاشت اراضی 51,616,179 دونم تھی (عراق میں ایک [92] 2500 مربع میٹر کے برابر ہے) 2013 عیسوی کے لیے کردستان کے علاقے کے تین گورنروں کو چھوڑ کر، مجموعی طور پر (1,043,489 دونم (عراقی دونم 2,500 مربع میٹر کے برابر ہے))، گندم کی پیداوار (4,178,379) ٹن، گندم کی پیداوار جو (1,003,198) ٹن ہے، پیلی مکئی کی پیداوار (831,345) ٹن ہے اور کھجور کے درختوں کی تعداد (سوائے کردستان اور موصل کے تین گورنروں کے) کھجور کے درختوں کی تعداد (15,968,660) ہے اور اس کی پیداوار (676111) ہے۔ [93]

حکومت اور سیاست

ترمیم

سیاسی نظام

ترمیم
 
عراقی پارلیمنٹ

عراق میں 1968ء سے 2003ء تک عرب سوشلسٹ بعث پارٹی کی حکومت رہی اور 1979ء میں صدام حسین صدر کے عہدے پر فائز ہوئے اور امریکی قیادت میں حملے کے نتیجے میں ان کی معزولی کے بعد 2003ء تک صدر رہے۔ . [94] 15 اکتوبر 2005 کو، 63 فیصد سے زیادہ اہل عراقیوں نے نئے آئین کو قبول کرنے یا مسترد کرنے پر ووٹ دیا۔ 25 اکتوبر کو، ریفرنڈم کو اپنایا گیا اور آئین کو 78 فیصد کی اکثریت سے منظور کیا گیا، جس کی حمایت ملک کے علاقوں کے درمیان مختلف تھی۔ [95] نئے آئین کو شیعوں اور کردوں میں زبردست حمایت حاصل تھی، لیکن سنی عربوں نے اسے بھاری اکثریت سے مسترد کر دیا تھا۔ آئین کو سنی عرب اکثریت کے ساتھ تین صوبوں نے مسترد کر دیا: ( صلاح الدین نے مخالفت میں 82 فیصد، نینوا میں 55 فیصد کے ساتھ، اور الانبار نے 97 فیصد کے خلاف)۔ آئین کی شقوں کے مطابق نئی حکومت کے انتخاب کے لیے ملک میں 15 دسمبر کو نئے ملک گیر پارلیمانی انتخابات ہوئے۔ عراق کے تین اہم نسلی اور مذہبی گروہوں کی بھاری اکثریت نے نسلی بنیادوں پر ووٹ دیا اور یہ ووٹ ایک نسلی مردم شماری میں بدل گیا، جو ایک مسابقتی انتخابات سے زیادہ ہے اور اس نے نسلی بنیادوں پر ملک کی تقسیم کی راہ ہموار کی۔ [96] عراق میں نسلی اقلیتوں کا مرکب ہے جیسے کرد، اسوری، مندائیت ، عراقی ترکمان ، شاباک اور خانہ بدوش۔ ان گروہوں کو عراق کی پوری تاریخ میں عرب اکثریتی آبادی کے برابر درجہ حاصل نہیں ہے۔ 1990-1991 میں خلیجی جنگ کے بعد "نو فلائی زونز" کے قیام کے بعد سے کردوں کے لیے صورت حال بدل گئی ہے کیونکہ انھیں ایک خود مختار علاقہ ملا ہے۔ یہ خاص طور پر ترکی کے ساتھ کشیدگی کا باعث تھا۔ [97]

عراق سیاسی اور مالی بدعنوانی کا شکار ہے اور 2008 میں الجزیرہ ٹی وی نے رپورٹ کیا کہ عراقی تیل کی آمدنی کا 13 بلین ڈالر امریکا کے پاس ہے، جس میں سے 2.6 بلین ڈالر مکمل طور پر ضائع ہو چکے ہیں اور اس کا کوئی پتہ نہیں ہے۔ [98] 17 نومبر 2008 کو، ریاستہائے متحدہ اور عراق نے ایک وسیع اسٹریٹجک معاہدے کے حصے کے طور پر، [99] فورسز کے معاہدے پر اتفاق کیا۔ [100] اس معاہدے میں کہا گیا ہے کہ "حکومت عراق" امریکی افواج سے درخواست کرتی ہے کہ وہ عراق میں "سلامتی اور استحکام کو برقرار رکھنے" کے لیے عارضی طور پر رہیں اور یہ کہ عراق کو امریکی فوجی ٹھیکیداروں اور اہلکاروں پر اختیار حاصل ہے جب وہ امریکی اڈوں یا ڈیوٹی پر نہ ہوں۔ 12 فروری 2009 کو، عراق باضابطہ طور پر کیمیائی ہتھیاروں کے کنونشن کے 186 ویں مسلسل دستخط کنندگان میں سے ایک بن گیا۔ اس معاہدے کی شقوں کے مطابق عراق اس کا ایک فریق ہے اور اسے اپنے کیمیائی ہتھیاروں کے ذخیرے کا اعلان کرنا چاہیے۔ اس کے دیر سے الحاق کی وجہ سے، عراق واحد فریق ہے جو کیمیائی ہتھیاروں کی تباہی کے لیے وقت کی حد سے مستثنیٰ ہے اور اس کے پاس عراق کے الحاق کی منفرد نوعیت کو حل کرنے کے لیے ترقی کے مخصوص معیارات ہیں۔ [101]

31 اگست 2010 کو امریکی افواج نے عراق میں اپنا جنگی مشن ختم کر دیا۔ اور 15 دسمبر 2011 کو باضابطہ طور پر جنگ کے خاتمے کا اعلان کیا [102] اور 18 دسمبر 2011 کی صبح امریکی افواج سرحد پار کویت کے لیے روانہ ہوگئیں۔ [103] اگست 2014 میں، حیدر العبادی کو نوری المالکی کی جگہ عراق کا وزیر اعظم مقرر کیا گیا تھا، جو عراقی وزیر اعظم کے طور پر تیسری مدت کے لیے کوشاں تھے۔ [104]

انتظامی ڈھانچہ

ترمیم

عراق سرکاری طور پر 18 صوبوں اور 19 ڈی فیکٹو صوبوں پر مشتمل ہے اور ایک خطہ عراق کا کردستان علاقہ ہے، جس میں اربیل ، دہوک ، سلیمانیہ اور حلبجا کے صوبے شامل ہیں۔ صوبوں کو اضلاع میں تقسیم کیا گیا ہے اور عراق میں 118 اضلاع ہیں جن کو اضلاع میں تقسیم کیا گیا ہے اور عراق میں 393 اضلاع ہیں۔ [105] کردستان کا علاقہ عراق کے اندر واحد قانونی طور پر متعین خطہ ہے اور اس کی اپنی حکومت اور اپنی سرکاری افواج ہیں۔ [106] تل عفر، میدان نینویٰ، فلوجہ اور تز خرماتو کو اضلاع سے گورنری میں تبدیل کرنے کی تجویز ہے۔

 
عراق کی انتظامی تقسیم
گورنریٹ کے لحاظ سے عراق کی آبادی [107] (1 جنوری 2014 کے اندازوں کے مطابق، سورس لسٹ میں حلبجا گورنریٹ کا ذکر کیے بغیر)
 



بغداد



 



بصرہ



 



نجف



 



اربیل


# گورنریٹ آبادی [1]آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL)  



موصل





سرمئی



 



کربلا



 



ڈوہوک



1 صوبہ بغداد 7,665,300
2 دیالہ 1,548,500
3 صوبہ انبار 1,675,600
4 کرکوک 1,508,900
5 صلاح الدین 1,509,200
6 نینوا 3,524,300
7 سلیمانیہ 2,039,800 (حلبجا گورنریٹ کی آبادی کے ساتھ)
8 اربیل 1,749,900
9 ڈوہوک 1,220,400
10 وصیت 1,303,100
11 بابل صوبہ 1,953,200
12 کربلا 1,151,200
13 نجف 1,389,500
14 میسان 1,050,600
15 ذی قار 1,979,600
16 القدسیہ 1,220,300
17 متھنہ 770,500
18 صوبہ بصرہ 2,774,600
19 (صوبے کا فیصلہ) حلبجا 337,000 (2013 کا تخمینہ)

آبادی

ترمیم
عراق کی آبادی [108]
سال دس لاکھ
1971 9.7
1980 13.2
1990 18.1
2000 22.7
2009 28.9
2014 34.8
ماخذ: او ای سی ڈی / ورلڈ بینک

سنہ 2016 عیسوی میں عراق کی کل آبادی کا تخمینہ تقریباً 37,547,686 لگایا گیا ہے اور 1867 عیسوی میں عراق کی آبادی چند ایک کو چھوڑ کر ایک کروڑ چوتھائی سے زیادہ نہیں تھی۔ [109] [110] 2003 کی جنگ کے بعد آبادی میں اضافے کے بعد حکومت نے اعلان کیا کہ عراق کی آبادی 35 ملین تک پہنچ گئی ہے۔ [111] عراق میں 2013 عیسوی کے لیے شہری آبادی کا فیصد آبادی کا 69.4% تھا [112] عراق پر قبضے کے بعد بے ترتیب غیر رسمی رہائش کا رجحان سامنے آیا اور یہ اب بھی بڑھ رہا ہے جب تک کہ عراق میں غیر رسمی بستیاں 1552 تک پہنچ گئیں۔ 2015 میں وزارت منصوبہ بندی کے اعلان کے مطابق غیر رسمی علاقے، جن میں 20 لاکھ 50 ہزار لوگ رہتے ہیں۔ [113]

زبانیں

ترمیم

عربی اکثریت کی زبان ہے، کرد زبان تقریباً 10% - 15% بولی جاتی ہے، ترکمان، ترک زبان کی ایک مقامی بولی [114] [115] اور آشوریوں کی آرامی زبان اور دیگر تقریباً 5% بولی جاتی ہیں [116] لوگوں کے. چھوٹی اقلیتی زبانوں میں منڈیان ، کرمانجی ، شباکیہ، آرمینیائی ، سرکیسیئن اور فارسی شامل ہیں۔ یہ بولیاں اور زبانیں 25,000 سے 100,000 کے درمیان بولی جاتی ہیں۔ چیچنیا اور جارجیا سے تعلق رکھنے والی دوسری زبانیں اور دیگر کاکیشین زبانوں کے بولنے والے بھی ہو سکتے ہیں۔ عربی، کرد، فارسی اور جنوبی آذری عربی حروف تہجی کے مختلف ورژن میں لکھے گئے ہیں۔ نیا آرامی سریانی حروف تہجی میں لکھا جاتا ہے اور آرمینیائی کو آرمینیائی حروف تہجی میں لکھا جاتا ہے۔ 2003 میں حملے سے پہلے عربی واحد سرکاری زبان تھی۔ تاہم عراق کے نئے آئین نے جون 2004 میں عربی زبان اور کرد زبان کو دو سرکاری زبانوں کے طور پر منظور کیا تھا [117] جب کہ عراقی آئین شامی زبان اور ترکمان زبان کو محل وقوع کے مطابق علاقائی زبانوں کے طور پر تسلیم کرتا ہے۔ [118] اس کے علاوہ، کوئی بھی علاقہ یا گورنریٹ دوسری سرکاری زبانوں کا اعلان کر سکتا ہے اگر عوامی ریفرنڈم میں آبادی کی اکثریت کی طرف سے منظوری دی جائے۔ [119]

مذاہب

ترمیم
 
عراق میں اہم نسلی اور مذہبی گروہ اور نقشہ مورخہ 6 جون 2011ء

عراق میں شیعوں اور سنیوں کے تناسب کے بارے میں ایک " تنازع " ہے، کیونکہ دونوں فرقے آبادی کی عام مردم شماری پر انحصار کیے بغیر اکثریت ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں جس میں آزاد ادارے حصہ لیتے ہیں ۔ [120] میں مسلمانوں کی اکثریت ہے، تقریباً 97۔ آبادی کا % [121] ذرائع کے مطابق، آبادی کا 60-65% شیعہ ہیں [121] [122] [123] [124] اور 32-37% سنی ہیں اور دیگر ذرائع بھی اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ شیعوں کی فیصد 51.4 ہے [125] [126] [127] [128] اور دوسرے اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ اہل سنت والجماعت کا فیصد 58.8 فیصد ہے۔ کردوں کے ساتھ، ایسے ذرائع کا ذکر ہے کہ عراق میں سنی اور شیعوں کی تعداد قریب اور متوازن ہے۔ [129] [125] [122] [130] [131] عیسائی، صابی ، اور یزیدی تقریباً 3% بنتے ہیں، جن میں بہائی مذہب کے پیروکاروں اور یارسنیوں کی معمولی موجودگی ہے اور یہ ذکر کیا جاتا ہے کہ دوسری جنگ عظیم کے بعد عراق میں یہودیوں کی آبادی 4% سے زیادہ تھی، لیکن اسرائیل کے قیام کے بعد فرہود کے واقعات اور بادشاہت کی طرف سے ان کی جبری ہجرت نے ان کی تعداد تقریباً 100,000 افراد تک کم کر دی۔ 2018 میں عراق میں یہودیوں کی تعداد کا تخمینہ دس لگایا گیا تھا، [132] جن میں سے اپنے شناختی کارڈ میں اپنا مذہب تبدیل کر کے دوسرے مذہب میں شامل ہو گئے تھے۔ [133]

تعطیلات

ترمیم

ہر ہفتے کے جمعہ اور ہفتہ کو سرکاری محکموں میں سرکاری تعطیل تصور کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ، 12 دیگر سرکاری تعطیلات ہیں، جو یہ ہیں:[134]

تاریخ موقع نوٹس
یکم جنوری نئے سال کی شام -
6 جنوری آرمی ڈے -
21 مارچ نوروز
9 اپریل یوم آزادی صرف عراقی کردستان
یکم مئی مزدوروں کی بین الاقوامی تعطیل -
14 جولائی یوم جمہوریہ 14 جولائی 1958 کے انقلاب کی سالگرہ
3 اکتوبر قومی دن 1932 میں برطانوی مینڈیٹ کے خاتمے کی سالگرہ
ہجری کیلنڈر کے مطابق اسلامی نیا سال 1 محرم
عاشورہ 10 محرم
یومِ ولادتِ رسول 12 ربیع الاول
عید الفطر (3 دن) 1-3 شوال
عید الاضحی (4 دن) 10-13 ذی الحجہ

سیکورٹی

ترمیم
 
بغداد میں ہمرز عراقی پولیس کی پریڈ

وزارت داخلہ داخلی سلامتی کو برقرار رکھنے کے لیے ذمہ دار ہے اور وزارت داخلہ کے لیے اس کے قوانین کے ذریعے متعین فرائض کا مقصد عام طور پر جمہوریہ عراق کے لیے داخلی سلامتی کے تحفظ، امن عامہ کو مستحکم کرنے اور ریاست کی عمومی پالیسی کو نافذ کرنا ہے۔ آئینی حقوق کا تحفظ اور خاص طور پر لوگوں کی زندگیوں اور آزادیوں اور سرکاری و نجی فنڈز کی حفاظت اور کسی بھی خطرے سے اس کی حفاظت کو یقینی بنانا جس سے اسے خطرہ لاحق ہو، جرائم کے کمیشن کو روکنا، مجرموں کے خلاف قانونی اقدامات کرنا اور مکمل قانون سازی کے لیے کوشش کرنا ہے۔ [135] [136]۔حشد الشعبی مسلح افواج کے کمانڈر انچیف (جو وزیر اعظم حیدر العبادی ہیں) کے دفتر کے ماتحت ہیں۔ [137] [138] اس کا تخمینہ (60 ملین امریکی ڈالر) عراقی بجٹ سے ہے جو سال 2015 عیسوی کے لیے مختص کیا گیا ہے۔ [139]

فوج جمہوریہ عراق کی باقاعدہ فورس ہے اور اس کی شاخیں زمینی قوت [140] ، بحری فوج [141] اور فضائیہ پر مشتمل ہیں۔ [142] عراقی فوج کی تاریخ سنہ 1921 سے ہے [143] ، جب عراق کے برطانوی مینڈیٹ کے دوران مسلح افواج کے پہلے یونٹ قائم کیے گئے تھے [144] ، جب امام موسیٰ کاظم رجمنٹ تشکیل دی گئی تھی اور مسلح افواج کی کمان نے اپنا جنرل ہیڈ کوارٹر بغداد میں لے لیا، اس کے بعد 1931ء میں عراقی فضائیہ کی تشکیل ہوئی، پھر 1937ء میں عراقی بحریہ کی تشکیل ہوئی اور ایران کے خاتمے کے ساتھ ہی فوج کی تعداد اپنے عروج پر پہنچ گئی۔ عراق جنگ ، اس کے ارکان کی تعداد 1,00,0000 تک پہنچ گئی۔ 1990 عیسوی تک عراقی فوج 56 ڈویژنوں تک بڑھ چکی تھی جس کی وجہ سے عراقی فوج عرب دنیا میں پہلے اور دنیا کی فوجوں میں پانچویں نمبر پر آ گئی۔ [145] [146] کویت پر حملے کے بعد ریپبلکن گارڈ فورسز کے علاوہ زمینی فورس 23 ڈویژنوں تک سکڑ گئی۔

 
عراقی فوج کی گولڈن جوبلی کے موقع پر 1971 میں جاری کردہ 15 فائلوں کا ایک عراقی ڈاک ٹکٹ

2003 میں عراق پر امریکی حملے کے بعد عراق کے سول ایڈمنسٹریٹر پال بریمر نے عراقی فوج کو تحلیل کرنے کا فیصلہ جاری کیا۔ [147] [148]فوج کو دوبارہ تشکیل دیا گیا اور دوبارہ مسلح کیا گیا۔ نئی عراقی فوج کے لیے یہ منصوبہ بنایا گیا تھا کہ وہ صرف تین ڈویژنوں پر مشتمل ہو، جس کے بعد یہ تعداد بڑھ کر چودہ ڈویژن ہو گئی اور توقع ہے کہ یہ 20 ڈویژنوں تک پہنچ جائے گی۔ 13 نومبر 2015 کو (گلوبل فائر پاور) کے مطابق عراقی فوج دنیا میں 112 ویں نمبر پر ہے۔ [149] عراقی مسلح افواج کی تمام شاخیں عراقی وزارت دفاع کے اختیار کے تابع ہیں، جس کا انتظام وزیر دفاع خالد العبیدی کرتے ہیں اور مسلح افواج کے کمانڈر انچیف عراقی وزیر اعظم حیدر العبیدی ہیں۔ -عبادی اور آرمی کے چیف آف اسٹاف عثمان الغنیمی ہیں۔ [150] عراقی فوج نے بہت سی جنگوں میں حصہ لیا، بشمول : اینگلو-عراقی جنگ ، 1948 کی جنگ ، پہلی عراقی کرد جنگ ، 1967 کی جنگ، اکتوبر 1973 کی جنگ ، عراق-ایرانی جنگ ، کویت پر حملہ ، دوسری خلیجی جنگ اور تیسری خلیجی جنگ ۔ فوج نے 2003 عیسوی کے بعد دیگر تمام عراقی مسلح افواج کے ساتھ بھی حصہ لیا۔عراق کے اندر بہت سی لڑائیوں کے ساتھ، بشمول عراقی بغاوت اور انبار کی جھڑپیں ، 2014ء میں موصل کی لڑائی اور اس وقت داعش کے خلاف جاری جنگ میں حصہ لیا۔

بری فوج

عراقی فوج کئی آپریشن کمانڈز پر مشتمل ہے اور عراقی یونٹس کا انتظام مشترکہ آپریشنز کمانڈ کے ذریعے کیا جاتا ہے، جب کہ زمینی فورس کمانڈ براہ راست فوج کے ڈویژنوں کا انتظام نہیں کرتی ہے۔ عراقی فوج کو 14 ڈویژنوں میں تقسیم کیا گیا ہے جو بدلے میں 56 بریگیڈز یا 185 لڑاکا بٹالین میں تقسیم ہیں۔2010 میں جنگی بٹالینز کی تعداد 197 تک پہنچ گئی۔ ہر ڈویژن کو چار بریگیڈز، ایک انجینئرنگ رجمنٹ اور ایک آرٹلری رجمنٹ میں تقسیم کیا گیا ہے۔

بحری فوج

بحریہ کے پاس تقریباً 5,000 ملاح اور میرینز ہیں، جو فروری 2011 تک 5 سکواڈرن اور دو میرین بٹالین پر مشتمل ایک آپریشن ہیڈ کوارٹر کو رپورٹ کرتے ہیں۔

فضا ئیہ

فضائیہ کے پاس اس وقت چار F-16 فائٹنگ فالکن ، 12 Sukhoi Su-25 ، 2 Aero L-159 Alka، 13 Mil Mi-35 ہیلی کاپٹر ، 23 Mil Mi-28 ہیلی کاپٹر اور 60 Mil Mi ہیلی کاپٹر ہیں۔ -17 ، درجنوں ہوائی جہاز اور نقل و حمل اور تربیت کے لیے ہیلی کاپٹرموجود ہیں۔

معیشت

ترمیم

عراق کی معیشت بین الاقوامی لوٹ کھسوٹ کی ایک اعلیٰ داستان ہے۔ معیشت تیل کے ارد گرد گھومتی ہے۔ تیل کی دولت کو پہلے تو برطانوی کمپنیوں نے خوب لوٹا۔ بعث پارٹی کی ابتدائی حکومت میں عراق برطانوی کمپنیوں سے جان چھڑا کر فرانسیسی چنگل میں پھنس گئے۔ مگر بعد میں بعث پارٹی کی دوسری حکومت نے تیل کی صنعت کو قومیا لیا اور عراق نے کچھ عرصہ ترقی کی۔ عالمی طاقتوں نے عراق کو ایران سے ایک لمبی جنگ میں پھنسا کر خوب برباد کیا۔ اس کی ساری دولت اس جنگ کی نذر ہو گئی۔ امریکا، برطانیہ، فرانس اور اسرائیل نے عراق کو بے تحاشا اسلحہ بیچا۔ حتیٰ کہ عراق کے بیرونی قرضے ایک سو بیس ارب ڈالر تک پہنچ گئے۔ ایران سے جنگ بندی کے بعد تیل کی صنعت میں کچھ بہتری آئی مگر زیادہ وسائل تیل کی صنعت کی بحالی اور بیرونی قرضوں کی ادائیگی پر خرچ ہوتی رہی جس کی وجہ سے عراق خاطر خواہ ترقی نہ کرسکا۔ اس موقع پر عراق نے عالمی طاقتوں کے جال میں آ کر کویت پر قبضہ کرنے کی کوشش کی جس کا نتیجہ اسے ایک اور جنگ اور بین الاقوامی پابندیوں کی صورت میں بھگتنا پڑا۔ اس سے عراق کی معیشت تباہ ہو گئی۔ ایک دہائی کی مسلسل پابندیوں سے عراق کمزور ہو گیا تو بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے کیمیائی ہتھیاروں کا بہانہ کر کے امریکا نے 2003ء میں عراق پر قبضہ کر لیا۔ اگرچہ پیرس کلب کے ممالک نے 33 ارب ڈالر کے قرضے معاف کرنے کا عندیہ دیا ہے ۔[151] مگر اس سے عراق کے ایک سو بیس ارب ڈالر کے قرضوں میں کوئی خاص کمی نہیں آتی جس کا نتیجہ یہ ہوگا کہ جنگ اور خانہ جنگی کے ممکنہ خاتمے کے بعد بھی عراق کو اپنی نئے سرے سے تعمیر اور بیرونی قرضوں کی ادائیگی کے لیے عالمی طاقتوں اور اداروں پر انحصار کرنا پڑے گا اور مستقبل قریب میں عراق میں معاشی ترقی کے کوئی آثار نظر نہیں آتے۔ عراق کی تعمیرِ نو کے نوے فی صد ٹھیکے امریکی کمپنیوں اور باقی برطانوی اور کچھ فرانسیسی اور اطالوی کمپنیوں کو مل رہے ہیں جو مہنگا کام کرنے میں مشہور ہیں اور یوں لوٹ کھسوٹ کا ایک اور در کھل گیا ہے۔

عراقی معیشت کا مکمل انحصار تیل کے شعبے پر ہے، عراق کی کل آمدنی کا 95% ہارڈ کرنسی سے آتا ہے۔ پہلی خلیجی جنگ میں ایک اندازے کے مطابق 100 بلین ڈالر کا نقصان ہوا اور جنگ کے خاتمے کے بعد عراق قرضوں کے بوجھ تلے دب گیا۔ 6 اگست 1990 سے 21 اپریل 2003 تک عراق پر اقتصادی ناکہ بندی کی۔ پال بریمر اور یونیفائیڈ کولیشن اتھارٹی کی آمد کے بعد، اتھارٹی نے عراق میں نجی شعبے کی حوصلہ افزائی اور نفاذ کے لیے فیصلے کیے یا جسے نجکاری کہا جاتا ہے، خاص طور پر تیل کے شعبے میں اور پال بریمر نے اس کی مکمل ملکیت کی اجازت دی۔ غیر عراقی کمپنیوں نے عراق میں اپنے مفادات کے لیے ان غیر ملکی کمپنیوں پر ٹیکس عائد کیا جس کا فیصد 15 فیصد ہے، لیکن ان اقتصادی منصوبوں اور فیصلوں پر ان حکومتوں نے عمل نہیں کیا جو متحدہ اتحادی اتھارٹی کے بعد آئیں، جو بالترتیب گورننگ کونسل ہیں۔ عراق میں ، عراقی عبوری حکومت اور عراقی عبوری حکومت ۔ نجکاری کے یہ فیصلے 2006 میں نافذ ہونے والے ہیں۔ سلامتی کی صورت حال میں بہتری اور غیر ملکی سرمایہ کاری کے پہلے مرحلے کے ساتھ، اس سے اقتصادی سرگرمیوں کو فروغ دینے میں مدد ملی، خاص طور پر توانائی، تعمیرات اور خوردہ شعبوں میں۔ تاہم، طویل مدت میں اقتصادی اور مالیاتی بہتری اور معیارِ زندگی کو بہتر بنانے کا انحصار بنیادی طور پر حکومت کی جانب سے سیاسی اصلاحات کی منظوری اور عراق کے تیل کے وسیع ذخائر کی ترقی پر ہے۔ اگرچہ غیر ملکی سرمایہ کاروں نے عراق کو 2010 سے بڑھتی ہوئی دلچسپی کے ساتھ دیکھا ہے، لیکن ان میں سے اکثر کو اب بھی منصوبوں کے لیے زمین کے حصول میں مشکلات اور دیگر ریگولیٹری رکاوٹوں کا سامنا ہے۔ 2013 عیسوی میں اندرون ملک مچھلیوں کی پکڑنے کی مقدار 105,168 ٹن تھی، جب کہ سمندری مچھلی 5,314 ٹن تھی۔ عراقی پانیوں میں داخل ہونے والی نقل مکانی کرنے والی مچھلیوں کی مقدار اور اقسام سے متعلق وجوہات کی بنا پر پکڑنے کی مقدار ہر سال نمایاں طور پر مختلف ہوتی ہے۔ اور جو خلیج عرب میں موسمی اتار چڑھاو پر منحصر ہے [152] 2002 میں عراقی کردستان میں کل 112,000 مکعب میٹر لکڑی کی کٹائی کی گئی اور تقریباً نصف رقم بطور ایندھن استعمال کی گئی۔ عراق کی کان کنی کی صنعت نسبتاً کم مقدار میں فاسفیٹ ( عکاشات میں)، نمک اور سلفر ( موصل کے قریب) کے اخراج تک محدود تھی۔ ستر کی دہائی میں ایک نتیجہ خیز دور سے، کان کنی ایران عراق جنگ (1980-1988)، اقتصادی ناکہ بندی کی پابندیوں اور 2003 میں اقتصادی بحران کی وجہ سے رکاوٹ بنی تھی۔ سال 2012 عیسوی میں عراق میں بے روزگاری کی شرح 15 سال سے کم ہو گئی۔ عمر اور اس سے زیادہ 11.9٪ تک پہنچ گئی۔[153]

سرکاری کرنسی

ترمیم

دینار عراق کی سرکاری کرنسی ہے اور اسے عراق کے مرکزی بینک کے ذریعے جاری کیا جاتا ہے۔ دینار کو 1,000 فائلوں میں تقسیم کیا گیا ہے، لیکن بیسویں صدی کے [154] میں مہنگائی کی اونچی شرح سکوں کو ترک کرنے کا سبب بنی، جو فائلوں میں بنائے جاتے تھے، کیونکہ وہ اب گردش سے باہر ہیں۔ جہاں تک عراقی کرنسی کے فرقوں کا تعلق ہے، وہ 250 دینار، 500، 1,000، 5,000 اور 10,000 سے 25,000 دینار تک شروع کریں اور سنٹرل بینک آف عراق نے نومبر 2015 میں 50,000 ہزار دینار (امریکی ڈالر کے برابر) کی ایک نئی کرنسی متعارف کرانے کے ارادے کا اشارہ کیا۔ [155]

نیا عراقی دینار

ترمیم

2003 میں اتحادی افواج کے حملے کے بعد، کولیشن پروویژنل اتھارٹی نے 15 اکتوبر 2003 سے 15 جنوری 2004 تک ایک نیا عراقی دینار جاری کیا، کیونکہ نئی کرنسی برطانیہ کے ڈیلارکس پریس میں چھپی تھی اور اس کی پرنٹنگ اچھی خاصیت کی تھی۔ جعل سازی مشکل تھی اور اسے پورے عراق میں استعمال کیا گیا، بشمول شمالی عراق کے کردستان کے علاقے اور کرنسی کے تبادلے کا عمل ہوا، کیونکہ عراق یا چین میں چھپنے والے ہر دینار کو ایک نئے عراقی دینار سے بدل دیا گیا، جبکہ عراقی سوئٹزرلینڈ میں چھپنے والے دینار کی جگہ 150 جدید دینار لے لیے گئے۔

تیل اور توانائی

ترمیم
 
2007 میں عراق میں ایک برقی سب اسٹیشن
 
بصرہ آئل اسٹیشن پر آئل ٹینکرز

عراقی معیشت کا بہت زیادہ انحصار تیل پر ہے۔ اس کی معیشت سب سے پہلے تیل ہے، لیکن باقی عرب خلیجی ممالک کی طرح تیل ہی واحد وسیلہ نہیں ہے اور عراق اوپیک کے بانی ممالک میں سے ایک ہے اور اس کی صنعت کا آغاز 1925 میں ہوا ۔ بابا گرگر فیلڈ میں پیداوار شروع ہوئی۔ کرکوک میں اور اس تاریخ کے دو سال بعد، 1972 میں عراقی صدر احمد حسن البکر کے دور میں تیل کو عراقی قومیا دیا گیا۔ قومیانے سے پہلے، آپریٹنگ تیل کی رعایتی کمپنیوں نے عراق کو اس کی پیداوار کو محدود کرکے اور عالمی منڈیوں میں اپنا حصہ کم کرکے سزا دینے کی پالیسی پر عمل کیا، خاص طور پر 14 جولائی 1958 کے انقلاب اور 1961 کے قانون نمبر 80 کے نفاذ کے بعد، براہ راست سرمایہ کاری کا قانون۔ 1989 میں عراقی تیل کی کل آمدنی 14.5 بلین ڈالر تھی، جو برآمدی آمدنی کا 99 فیصد تھی۔ 1990 میں جاری ہونے والی مردم شماری کے مطابق، عراقی برآمدات کی مالیت 10.535 بلین ڈالر تھی، جس میں سے 99.5 فیصد تیل اور توانائی کے ذرائع سے آتا تھا، جس میں امریکی درآمدات کا حصہ (28٪) تھا۔ 1990 سے عراق پر عائد پابندیوں کے باوجود، 1996 میں تیل کی برآمدات صرف 269 ملین ڈالر تھیں یا عراق کی 950 ملین ڈالر کی برآمدات کا ایک تہائی حصہ تھیں۔ تاہم، عراقی تیل کی برآمدات (سفید + سیاہ) کی کل آمدنی کا تخمینہ سال 2000 میں 20 بلین ڈالر سے زیادہ لگایا گیا تھا اور تیل کی پیداوار، عراق پر امریکی حملے سے پہلے، 20 لاکھ بیرل یومیہ سے کم نہیں تھی اور اس کی ریفائننگ کی صلاحیت 500 ہزار بیرل یومیہ سے تجاوز کرگئی، سب سے زیادہ تیل ریفائنریوں کے ذریعے، جو سال 2000 میں (عرب دنیا کے تمام ممالک کے مقابلے) 12 ریفائنریز تک پہنچ گئی۔ لیکن 2001 تک یہ واپس آگئی اور اس کی مالیت 15.14 بلین ڈالر تک پہنچ گئی۔ کل برآمدات میں سے 15.94 بلین ڈالر کی رقم ہے۔ [156] [157] [158] [159] [160] اگست 2015 میں پیداوار 3 ملین بیرل سے زیادہ تک پہنچ گئی۔

عراق کے تیل کے ذخائر

ترمیم

عراق کے تیل کے ثابت شدہ ذخائر تقریباً 140 بلین بیرل ہیں، کیونکہ عراق کے تیل کے ذخائر دنیا میں [161] وینزویلا ، سعودی عرب ، کینیڈا اور ایران کے بعد پانچویں نمبر پر ہیں۔

عراقی ایٹمی پروگرام

ترمیم
 
[162]یکم جولائی اور 2 جولائی کو عراقی ری ایکٹرز پر بمباری کرنے والے طیاروں کا راستہ، آپریشن اوپرا [163] ، جسے آپریشن بابل بھی کہا جاتا ہے۔

عراقی جوہری پروگرام کا آغاز 17 اگست 1959ء کو عراق اور سوویت یونین کے درمیان ایک جوہری ری ایکٹر کی تعمیر کے لیے مفاہمت کے ساتھ ہوا اور ایک جوہری پروگرام تیار کیا گیا اور یہ عراقی سوویت مفاہمت کا حصہ ہے اور 1968ء میں ایک تحقیقی ری ایکٹر (آئی آر ٹی-2000 سوویت یونین کی طرف سے دیا گیا) [164] کے قریب تابکار آاسوٹوپس پیدا کرنے کے قابل متعدد سہولیات کے ساتھ بنایا گیا تھا اور [165] ء میں صدام نے ماسکو کا دورہ کیا اور اسے تعمیر کرنے کے لیے کہا۔ ایک جدید ایٹمی پلانٹ، لیکن سوویت یونین نے یہ شرط رکھی کہ یہ پلانٹ بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے کنٹرول میں ہو، لیکن عراق نے انکار کر دیا اور پھر اسی سال اپریل کی 15 تاریخ کو دونوں فریقوں کے درمیان تعاون کے معاہدے پر دستخط ہوئے اور اس معاہدے کو 1959 کے معاہدے کی پیروی سمجھا جاتا ہے اور چھ ماہ کے بعد، فرانس نے 72 کلوگرام یورینیم 93 فیصد کے درجے پر فروخت کرنے پر رضامندی ظاہر کی [166] اور اس کے کنٹرول کے بغیر ایک جوہری پلانٹ بنانے پر اتفاق کیا۔

ستر کی دہائی کے آغاز میں صدام نے خفیہ جوہری ہتھیاروں کے پروگرام کے قیام کا حکم دیا [167] اور سال 1976 عیسوی میں عراق نے (Osiris) ماڈل کا ایک جوہری ری ایکٹر خریدا [168] [169] اور یہ ری ایکٹر تھا۔ پرامن جوہری تحقیق کے مقاصد کے لیے بنایا گیا [170] اور عراقی اور فرانسیسی ماہرین نے اسے برقرار رکھا۔لیکن اسرائیل نے عراق کے مقاصد پر شک کیا اور کہا کہ اسے جوہری ہتھیاروں کی تیاری کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے اور جون 1981 کو اسرائیل نے حملہ کر دیا۔ F-16s کے ایک سکواڈرن کے ساتھ اچانک ری ایکٹر اور F-15 Eagles کی مدد سے، جسے سینائی اڈے سے لانچ کیا گیا (جو اس وقت اسرائیلی کنٹرول میں تھا) اور مملکت سعودی عرب کی سرزمینوں سے ہوتا ہوا اور عراق تک اور بغداد سے 17 کلومیٹر جنوب مشرق میں زیر تعمیر نیوکلیئر ری ایکٹر (جس کا نام تموز 1 اور تموز 2 ہے) کو تباہ کر دیا۔ [171]

 
بغداد میں میڈیکل سٹی ۔

عراق کی صحت اس کی ہنگامہ خیز جدید تاریخ کے دوران اتار چڑھاؤ کا شکار رہی ہے۔ پچھلی دہائی کے دوران، صدام حسین کی حکومت نے صحت عامہ کی مالی امداد میں 90 فیصد کمی کی اور صحت کی دیکھ بھال ڈرامائی طور پر بگڑ گئی۔ [172] اس عرصے کے دوران، زچگی کی شرح اموات میں تقریباً تین گنا اضافہ ہوا اور طبی کارکنوں کی تنخواہوں میں ڈرامائی کمی واقع ہوئی۔ [172] طبی آلات، جو 1980 کی دہائی میں مشرق وسطیٰ کے بہترین آلات میں سے تھے، ابتر ہو چکے ہیں۔ [172] صورت حال سنگین تھی، خاص طور پر جنوب میں، جہاں غذائی قلت عام تھی اور پانی سے پیدا ہونے والی بیماریاں 1990ء میں عام تھیں۔ [172] میں عراق میں ٹائیفائیڈ ، ہیضہ ، ملیریا اور تپ دق کے واقعات اسی طرح کے ممالک کے مقابلے زیادہ تھے۔ [172]2003 کے تنازعے نے عراق کے ایک اندازے کے مطابق 12 فیصد ہسپتالوں اور دو صحت کی لیبارٹریوں کو تباہ کر دیا۔ [173] 2004 میں کچھ بہتری آئی۔ [173] بین الاقوامی فنڈنگ کے ذریعے، تقریباً 240 ہسپتال اور 1,200 بنیادی صحت کی دیکھ بھال کے مراکز کام کر چکے ہیں، کچھ طبی مواد کی کمی کو کم کیا گیا ہے، طبی عملے کو تربیت دی گئی ہے اور بچوں کو بڑے پیمانے پر ویکسین پلائی گئی ہے۔ [173] جہاں تک عراقی اسپتالوں میں صحت سے بچاؤ کے اقدامات کا تعلق ہے، وہ طبی سطح پر اب بھی تسلی بخش نہیں ہیں اور تربیت یافتہ اہلکاروں اور ادویات کی کمی ہے اور دہشت گردی کے شکار علاقوں میں صحت کی دیکھ بھال اب بھی بڑی حد تک دستیاب نہیں ہے۔ [173] 2005 میں، ہر 10,000 عراقی شہریوں میں ہسپتال کے 15 بستر، 6.3 ڈاکٹر اور 11 نرسیں تھیں۔ [173] 2006 میں، صحت کی دیکھ بھال کے اخراجات کے لیے قومی بجٹ سے US$1.5 بلین مختص کرنے کا منصوبہ بنایا گیا۔[173] 1990 کی دہائی کے آخر میں بچوں کی اموات کی شرح دوگنی سے بھی زیادہ ہو گئی۔ [174] نوے کی دہائی کے آخر اور نئے ہزاریے کے آغاز میں کینسر اور ذیابیطس سے اموات کی شرح اور پیچیدگیوں میں اضافہ ہوا، جس کی وجہ نوے کی دہائی میں ان دونوں بیماریوں کی تشخیص اور علاج کی شرح میں کمی ہے۔ [174]2003ء میں صحت کی سہولیات، صفائی ستھرائی اور پانی کی جراثیم کشی کے بنیادی ڈھانچے کے گرنے سے ہیضہ، پیچش اور ٹائیفائیڈ بخار کے واقعات میں اضافہ ہوا۔ [175] غذائیت کی کمی اور بچپن کی بیماریاں (جیسے دمہ، ایڈز، خون کی کمی وغیرہ)، جو 1990 کی دہائی کے آخر میں نمایاں طور پر بڑھیں، پھیلتی رہیں۔ [175] 2006 میں، عراق میں ایچ آئی وی / ایڈز کے تقریباً 73 فیصد کیسز خون کی منتقلی سے پیدا ہوئے اور 16 فیصد کیسز جنسی تعلقات کی وجہ سے تھے۔ بغداد میں ایڈز ریسرچ سینٹر، جہاں زیادہ تر کیسز کی تشخیص ہوئی تھی، عراق [175] داخل ہونے والے غیر ملکیوں کے لیے مفت علاج اور لازمی ٹیسٹ کی پیشکش کرتا ہے۔ [175] اکتوبر 2005 AD اور جنوری / جنوری 2006 AD کے درمیان کی مدت کے لیے، انفیکشن کے 26 نئے کیسز ریکارڈ کیے گئے، جس سے سرکاری طور پر 1986 AD سے ایڈز کے 261 کیسز سامنے آئے [175] اور سال 2015 میں، ہیضے کے کیسز۔ بغداد میں ابو غریب کے علاقے میں ریکارڈ کیے گئے تھے [176] پھر، ہیضے کے دیگر کیسز عراق کے دیگر گورنریٹس میں رپورٹ ہوئے۔ 2013 میں وائرل ہیپاٹائٹس کے انفیکشن کی اقسام (E, D, C, B, A) کی تعداد 29,059 تک پہنچ گئی۔[177] عراق میں سال 2013 کے لیے سرکاری اسپتالوں کی تعداد (242) تھی، جب کہ نجی (نجی) اسپتال (111)، مشہور طبی کلینک کی تعداد (340) اور بنیادی صحت کی دیکھ بھال کے مراکز کی تعداد (2,622) تھی۔ )[178]

سیاحت

ترمیم

سیاحت ان شعبوں میں سے ایک ہے جو پچھلی صدی کے اسی کی دہائی سے عراق میں کشیدگی کے ادوار سے سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔ جہاں سیاحت عراقی قومی پیداوار کا بہت کم حصہ دیتی ہے۔ جہاں تک کردستان کے شمالی علاقوں کا تعلق ہے، سیاحت کی نقل و حرکت بہت بہتر ہے، کیونکہ 2011 کے پہلے چھ ماہ کے دوران اندرون ملک سیاحوں کی کل تعداد 392,000 سیاحوں سے زیادہ تھی اور اسی عرصے کے لیے 2010 کے مقابلے میں، وہاں سیاحوں کی تعداد زیادہ ہے۔ [179] ہوٹلوں اور سیاحتی رہائش کے احاطے اور سال 2013 عیسوی کے لیے عراق میں مہمانوں کی تعداد (کردستان کے علاقے کو چھوڑ کر) (1267) سہولیات اور (6321105) مہمانوں تک پہنچ گئی، جن میں سے سب سے بڑی سہولت کربلا میں ہے (577) مہمانوں کی تعداد کے لحاظ سے سب سے زیادہ قدامت پسند، جو (3115149) مہمانوں کے تھے اور سب سے کم میسان (5) سہولیات میں ہے، جبکہ بغداد میں 288 سیاحتی سہولیات اور (1,494,269) مہمان ہیں، جبکہ انبار میں کوئی بھی نہیں ہے۔ ہوٹل یا کمپلیکس اور مہمانوں کی سب سے کم تعداد المتھنہ میں (2927) مہمانوں کے ساتھ ریکارڈ کی گئی۔ [180] [181]

مذہبی سیاحت

ترمیم

عراق ابراہیمی مذاہب کے بہت سے اہم مقامات اور مزارات کے لیے مشہور ہے۔ مثال کے طور پر شہر اُر [182] جس میں تورات کے مطابق ابراہیم پیدا ہوئے تھے اور یہودیوں ، عیسائیوں اور مسلمانوں کے عقائد کے مطابق انبیا دانیال، حزقیل اور یونس ) کی قبریں بھی ہیں۔ شمالی عراق میں بہت سی قدیم خانقاہیں اور گرجا گھر ہیں، جن میں سالانہ ہزاروں لوگ آتے ہیں۔ جیسا کہ سینٹ میٹی کی خانقاہ [183] اور سینٹ بہنم اور سینٹ سارہ کی خانقاہ وغیرہ۔ [184] [185] مسلمانوں کے بہت سی مساجد اور مزارات بھی ہیں جہاں ملکی اور غیر ملکی خاص طور پر عرب خلیجی ممالک، ایران ، ہندوستان اور پاکستان سے سیاح آتے ہیں۔ درج ذیل فہرستوں میں سب سے اہم مذہبی مقامات کی فہرست دی گئی ہے، لیکن ان سب کی نہیں:[186]

مزارات

ترمیم

مقامات

ترمیم
  • امام علی کا گھر جسے امارت کا گھر کہا جاتا ہے، نجف میں کوفہ مسجد کے باہر ہے
  • کربلا میں بہت سے مزارات اور مزارات ہیں جن میں: زینبیہ کا مزار، امام مہدی کا مزار، اخراس بن کاظم کا مزار
  • کوفہ شہر میں امام مہدی کا مزار
  • بابل کے صوبے میں سبزیوں کے لیے دو مزار
  • ہللا میں حضرت ذوالکفلی کا روضہ
  • امام علی کا مزار (سورج کی واپسی کا منظر) شیعہ عقیدہ کے مطابق

مساجد اور جامعات

ترمیم
  • ام القراء مسجد یہ ان جدید اور بڑی مساجد میں سے ایک ہے جو بغداد میں سابق صدر صدام حسین کے دور میں تعمیر کی گئی تھیں۔اسے ام الماریک مسجد کہا جاتا تھا جو دوسری خلیجی جنگ کا سرکاری نام تھا۔
  • ام التبل مسجد اس کا نام آج کی مسجد ابن تیمیہ ہے۔اسے ام الطبل مسجد کہا جاتا ہے اور اسے 1388ھ/1968ء میں کھولا گیا۔یہ بغداد کی جدید مساجد میں سے ایک ہے۔یہ مسجد کے مضافات میں واقع ہے۔ یرموک کا علاقہ البیضاء شہر کی طرف ہے۔ یہ بغداد بین الاقوامی ہوائی اڈے کی طرف جانے والی شاہراہ سے قریب ترین مسجد ہے۔
  • الاحمدیہ مسجد یہ بغداد کی قدیم مساجد میں سے ایک ہے، یہ المیدان اسکوائر کے مشرق میں، المرادیہ مسجد کے قریب روسفہ کے پہلو میں واقع ہے۔ اسے احمد پاشا الکتخدہ نے تعمیر کروایا تھا، جو اس کے نائب تھے۔ سلیمان پاشا الکبیر 1211ھ / 1796ء میں۔
  • سرائے مسجد یا حسن پاشا مسجد، جسے بادشاہ کی مسجد بھی کہا جاتا ہے، روسفہ کی طرف واقع بغداد کی مشہور تاریخی مساجد میں سے ایک ہے۔یہ 692ھ/1293ء میں تعمیر کی گئی۔
  • نجف کی کوفہ مسجد اور اس میں امام علی کا منبر جس میں وہ صبح کی نماز پڑھتے ہوئے شہید ہو گئے تھے۔ وہ جگہ جہاں وہ نماز ادا کرتے تھے، اب اسے امام علی کا مزار کہا جاتا ہے۔
  • قدم امام علی مسجد (مسجد بصرہ) یہ مسجد نبوی کے بعد اسلام میں تعمیر ہونے والی دوسری مسجد ہے، جیسا کہ یہ 14 ہجری میں تعمیر کی گئی تھی۔
  • نجف میں السہلہ مسجد ماضی میں، السہلہ مسجد کو (البیر) مسجد، (مسجد عبدالقیس) اور (بنی ظفر) مسجد کہا جاتا تھا، یہ مسجد کوفہ کے شمال مغربی جانب واقع ہے۔
  • قدیم شہر موصل کے شمال مشرقی جانب واقع امام عون الدین (ابن الحسن) کا مزار، عمر ابن الخطاب کے دور میں 16 ہجری – 637 عیسوی میں تعمیر کیا گیا تھا۔ اس کی اہم یادگاروں میں سے کچھ باقی نہیں بچا سوائے محراب کے سینہ اور اس کے اوپر محراب کے، جو النوری مسجد میں نصب تھا۔
  • الحنانہ مسجد ، وہ جگہ ہے جہاں کربلا میں سنہ 61 ہجری میں شہادت کے بعد آل حسین (ع) کے جلوس کے گزرنے کے دوران الحسین کے سر کو ان کے اہل خانہ کے ساتھ رکھا گیا تھا۔ کوفہ تک پہنچا اور یہ جگہ نماز کے لیے مسجد بن گئی۔
  • خلافت مسجد بغداد کے شورجہ ضلع میں خلافت سٹریٹ کے وسط میں واقع ہے۔مذکورہ بالا مسجد عباسی خلیفہ المکتفی نے خدا میں سال (289-295ھ / 902-908 عیسوی) میں تعمیر کی تھی۔
  • النوری مسجد موصل شہر کے مرکز میں واقع ہے اور اسے 566-568 عیسوی میں قائم کیا گیا تھا۔مسجد کا سب سے نمایاں باقی ماندہ اس کا مینار ہے جو 52-54 میٹر بلند ہے۔
  • حضرت دانیال کی مسجد، جو ایک قبر پر بنائی گئی ایک مسجد ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ حضرت دانیال علیہ السلام کا جسم موجود ہے۔یہ مسجد عراق کے شہر کرکوک میں کرکوک قلعہ کے اندر واقع ہے۔
  • حضرت یونس [187] اور پیغمبر کی چادر [188] کا مزار دریائے دجلہ کے شمال مشرقی جانب حضرت یونس علیہ السلام کی پہاڑی کے اوپر واقع ہے۔

مسلمانوں کا سب سے مشہور قبرستان

ترمیم
 
وادی السلام دنیا کے بڑے قبرستانوں میں سے ایک ہے۔

درج ذیل مشہور قبرستان ہیں۔

کیتھیڈرل، گرجا گھر اور خانقاہیں

ترمیم
 
نینوی میں مار ایلیا خانقاہ ، عراق کی سب سے قدیم خانقاہ

درج ذیل عیسائیوں کے کیتھیڈرل، گرجا گھر اور خانقاہیں ہیں۔

  • مار ایلیا خانقاہ عراق کی سب سے قدیم خانقاہ ہے جو چھٹی صدی عیسوی کی ہے۔ [190]
  • مر متی کی خانقاہ موصل میں العوس کے علاقے میں واقع ہے، جسے کلاک ڈسٹرکٹ (اس کے ساتھ واقع کلاک ٹاور کے نسبت سے) کہا جاتا ہے۔
  • مار بہنم خانقاہ موصل کے شمال مشرق میں اس سے پانچ میل کے فاصلے پر واقع ہے۔
  • مار اوراہا کی خانقاہ نینویٰ گورنری میں موصل کے شمال میں بتنایا قصبے میں واقع ہے۔
  • ہماری لیڈی آف ڈیلیورینس چرچ بغداد میں۔
  • کرکوک میں الحمرا کلڈین کیتھولک چرچ۔
  • مارٹوم چرچ، موصل کے جنوب مشرق میں۔

یہودی عبادت گاہیں اور مزارات

ترمیم
 
حزقیل نبی کا مقبرہ اور تصویر میں، اس کے قریب یہودی
  • یہودیوں کی عظیم عبادت گاہ بغداد میں واقع ہے اور موجودہ وقت میں یہ ایک میوزیم ہے۔
  • بغداد میں میر تویج مندر اور اس کے بند یا کھلے ہونے کے بارے میں متضاد اطلاعات تھیں۔ [191]
  • بابل میں گوبر ٹوڈ کا مندر، جو بند ہے۔ [191]
  • موصل کے شہر القوش میں نبی نہم کا مزار۔

عراق کے دیگر صوبوں میں بھی مندر موجود ہیں لیکن وہ یا تو بند ہیں یا ویران ہیں۔ کردستان میں کرد یہودیوں کی تعداد کا تخمینہ 400 سے 730 یہودی خاندانوں کے درمیان ہے اور وہاں یہودی عبادت گاہوں کی بحالی کے لیے کارروائیاں جاری ہیں اور وزارت اوقاف میں یہودیوں کا ایک نمائندہ مقرر کیا گیا ہے۔ [192]

صابیوں کے علم کے گھر

ترمیم

بغداد، کوت، ہللا، دیوانیہ، کرکوک، سلیمانیہ، موصل اور دیگر میں صابین کی عبادت گاہیں ہیں جنہیں ( منڈی یا علم کا گھر) کہا جاتا ہے، ان میں سب سے اہم یہ ہیں:

  • منڈیان ہاؤس آف نالج (ہیڈ کوارٹر) بغداد میں القادسیہ کے پڑوس میںہے۔ یہ فروری 2014ء میں کھولا گیا۔ [193] [194]
  • یہ منڈیان ہاؤس آف نالج کے قریب منڈی سبین

یزیدی مندر

ترمیم
 
لالیش میں عدے بن مسافر کا مقبرہ

لعلش النوریانی مندر یزیدیوں کا مرکزی مذہبی مندر وادی لالش (جس کا مطلب خاموشی کی وادی ہے) میں واقع ہے۔یہ موصل شہر سے تقریباً 60 کلومیٹر شمال مغرب میں عین سیفنی یا شاخیان کے قریب پہاڑی علاقے میں واقع ہے۔ جہاں لالش النوری ہیکل اور شیخ عدے ابن مسافر کا مقبرہ مذہب کے پیروکاروں کے لیے مقدس ہے۔یہ دنیا میں یزیدی مذہب کی روحانی کونسل کا ہیڈ کوارٹر ہے۔

تاریخی سیاحتی مقامات

ترمیم
 
اربیل قلعہ (اربیل قلعہ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے) اربیل، عراقی کردستان میں

سب سے اہم یادگاروں میں ٹاور آف بابل ، اشتر گیٹ ، زیگورات ، شہر ہاترا ، ایوان خسرو ، مالویہ ، مستنصریہ اسکول ، شیرین محل اور بہت سے دوسرے شامل ہیں۔ عراق کو چوتھی صدی قبل مسیح سے قدیم ترین انسانی تہذیبوں کا ماخذ سمجھا جاتا ہے۔ جہاں عراق میں سمیری اور اکادین کے اثرات اب بھی پھیلے ہوئے ہیں۔ بابل کے صوبے میں تاریخی شہر بابل کے باقی کھنڈر اور دیواریں بھی شامل ہیں۔ [195] عراقی میوزیم میں عراق پر متواتر تہذیبوں کے اثرات کا ایک بڑا ذخیرہ موجود ہے اور یہ دنیا کے بہترین آثار قدیمہ کے ذخیرے پر مشتمل ہے۔قابل ذکر ہے کہ عراقی میوزیم کو اس ملک پر امریکی حملے کے آغاز کے ساتھ ہی لوٹ لیا گیا تھا۔ مارچ 2003 میں تب سے، حفاظتی خدشات اور ان کی بحالی کی خاطر، بابلی، آشوری اور سمیری تہذیبوں سے تعلق رکھنے والے اس کے باقی ماندہ اور بحال شدہ نوادرات کو ظاہر کرنے سے منع کر دیا گیا ہے۔ [196] [197] [198] [199] شمالی گورنری بہت سے الگ الگ آشوری یادگاروں کی موجودگی کے لیے بھی مشہور ہیں، جیسے کہ موصل میں نینویٰ کی دیواریں، نمرود میں آشوری بادشاہوں کے محلات [200] [201] ، بلاوات اور شرقات کے قریب اسوری کا تاریخی شہر وغیرہ ۔[202]مسلمانوں نے بہت سی ثقافتی اور تعمیراتی عمارتیں تعمیر کیں ، جیسے المستنصریہ اسکول [203] [204] اور ملاویہ آف سامرا ، [205] اور دیگر شامل ہیں۔

ماحولیاتی سیاحت اور تفریح

ترمیم
 
بابل کے قدیم شہر کے دروازوں میں سے ایک

عراق اپنے متنوع سیاحتی ماحول کے لیے مشہور ہے، جہاں ایکو ٹورازم عراق میں عوامی سیاحت کا ایک بڑا حصہ بناتا ہے۔کچھ عرصہ پہلے تک، تیسری خلیجی جنگ شروع ہونے سے پہلے، عراق ماحولیاتی سیاحوں کی توجہ کا مرکز تھا جو مختلف ممالک سے آتے تھے۔ دنیا خصوصاً پڑوسی ممالک پرندوں کے شکار میں اپنے مشاغل کو عملی جامہ پہنانے کے لیے، بالخصوص فالکنری شکار، یہ شوق جو عراق میں بیسویں صدی کے آغاز میں عراقی شکاریوں کے ہاتھوں ملک کے وسطی اور جنوبی علاقوں میں شروع ہوا اور بغداد کے تفریحی علاقوں میں سے: الزوراء پارک اور بغداد کا سیاحتی جزیرہ اور عراق میں کئی جھیلیں اور دلدل ہیں، جہاں اسے ایک سیاحتی مقام سمجھا جاتا ہے، بشمول: حبانیہ جھیل ، دکن جھیل ، دربندیخان جھیل ثرثار جھیل ۔ شمالی عراق بھی اپنی متنوع نوعیت سے مالا مال علاقہ ہے جہاں ریزورٹس، بشمول صلاح الدین ریزورٹ اور دیگروغیرہ ہیں۔

سیاحتی اور ماحولیاتی مقامات کی تصاویر

ترمیم

نقل و حمل

ترمیم

عراق میں نقل و حمل میں ریلوے، ہائی ویز، آبی گزرگاہیں (سمندر اور دریا)، پائپ لائنیں، بندرگاہیں اور بندرگاہیں اور ہوائی اڈے شامل ہیں۔

ہوائی نقل و حمل

ترمیم

1999ء کے اعداد و شمار کے مطابق، عراق میں کل 113 چھوٹے، درمیانے اور بڑے ہوائی اڈے ہیں، جن میں سے کچھ فوجی ہوائی اڈے ہیں، باقی شہری ہوائی اڈے ہیں اور ان میں سے کچھ ہوائی اڈوں پر کچے رن وے ہیں اور کچھ صرف ہیلی کاپٹروں کے لیے موزوں ہیں۔

ریلوے

ترمیم

عراق میں برطانیہ کی موجودگی کے دوران گذشتہ صدی کے آغاز سے ریلوے عراق میں داخل ہوئی اور ریلوے نیٹ ورک کی لائنیں جنوبی عراق سے شمال تک پھیلی ہوئی ہیں۔ عراق نے بہت سے نیٹ ورک لائنوں، مسافروں اور مال بردار انجنوں کی تجدید، ترقی اور ترقی شروع کر دی ہے اور عراق میں ریلوے نیٹ ورک کی لمبائی 2272 کلومیٹر ہے۔عراق نے حال ہی میں کچھ پڑوسی ممالک سے منسلک کرنے کے لیے ریلوے نیٹ ورک کو وسعت دینا شروع کیا ہے، جس کی قیادت ترکی، بغداد میٹرو پروجیکٹ کے علاوہ، یہ عراق میں اپنی نوعیت کا پہلا منصوبہ ہے۔ [206]

شاہراہیں

ترمیم

1996ء کے اندازوں کے مطابق، عراق میں مرکزی سڑکوں کی کل لمبائی تقریباً 45,550 کلومیٹر ہے، جن میں سے 38,400 کلومیٹر پکی سڑکیں ہیں اور 7,150 کلومیٹر کچی ہیں۔ اور عراق میں دنیا کی سب سے بڑی سڑک بغداد سے شام (الولید) تک کی سڑک ہے۔ [207]

آبی گذر گاہیں

ترمیم

شط العرب کو عراق کی سب سے اہم آبی گزرگاہوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے لیکن شط العرب کے بعض حصوں میں اس کی گہرائی ناکافی ہونے کی وجہ سے بحری جہاز رانی کے قابل نہیں ہے۔شط العرب کے تقریباً 1,000 کلومیٹر طویل بحری جہازوں کا استعمال کرتے ہوئے بحری سفر کے قابل ہے۔ بحری جہاز اور سمندر پر عراق تک کافی رسائی نہ ہونا سب سے اہم وجوہات میں سے ایک ہے جس کی وجہ سے پہلی خلیجی جنگ شروع ہوئی اور بصرہ کی بندرگاہ اور ام قصر کی بندرگاہ کو عراق کی اہم ترین بندرگاہوں میں شمار کیا جاتا ہے اور دوسری چھوٹی بندرگاہیں ہیں جیسے کہ خر الزبیر کی بندرگاہ اور خر الامایا کی بندرگاہ۔ 1999 کے اعداد و شمار کے مطابق، عراق کے پاس 13 بڑے آئل ٹینکرز، 14 کارگو جہاز اور ایک مسافر بردار جہاز تھا۔

اب تک عراق میں دریا کی نقل و حمل بہت کم فاصلے کے لیے اور ذاتی پیمانے پر استعمال ہوتی ہے۔ بصرہ خلیج فارس پر واقع عراق کا واحد صوبہ ہے اور اس کی بندرگاہیں ہیں:

ثقافت

ترمیم

موسیقی اور گانا

ترمیم

عراق میں موسیقی کی تاریخ خود عراق کی طرح پرانی دوروں میں واپس چلی جاتی ہے اور موسیقی دنیا کے قدیم ترین ہارپ ( سومیری ہارپ ) سے لے کر لیوٹ کی ایجاد تک اور پانچویں تار کو شامل کرنے تک، متعدد ادوار میں تیار ہوئی ہے۔ اس کے لیے، مختلف عراقی تال اور مقام تک۔ عراقی موسیقی نے بیسویں صدی کے آغاز میں دو بھائیوں صالح الکویتی اور داؤد الکویتی کے ہاتھوں نمایاں ترقی کی اور اس صدی کے چالیس کے عشرے میں خواتین گلوکاروں کی تعداد تقریباً چالیس گلوکاروں تک پہنچ گئی، تب عراقی موسیقی کی پہچان تھی۔ اس کے بعد بہت سے موسیقار جنھوں نے عراقی گیت کو تقویت بخشی، جیسے: طالب غالی، حامد البصری ، طارق الشبلی، مفید النصیح۔ ، جعفر الخفاف ، طالب القرگولی اور دیگر وغیرہ ہیں۔

ادب، شاعری اور فن

ترمیم

جدید عراقی ادب عراق کی سیاسی تاریخ سے بہت زیادہ متاثر ہوا ہے۔ 1970 کی دہائی کے آخر میں، صدام حسین کی حکومت نے عراق میں ممتاز ادیبوں کو ایک اپارٹمنٹ، ایک کار اور سال میں ایک اشاعت کی ضمانت فراہم کی۔ بدلے میں، مصنف سے توقع کی جاتی تھی کہ وہ حکمران بعث پارٹی کی حمایت کریں گے۔ اور ایران عراق جنگ کے لیے پروپیگنڈا کیا، بلکہ کئی ادیبوں اور مصنفین کو جلاوطنی کا انتخاب کرنے پر اکسایا۔ مصنف نجم ولی کے مطابق، اس عرصے کے دوران، "جن لوگوں نے لکھنا بند کرنے کا انتخاب کیا انھیں بھی کچھ ایسا لکھنا پڑا جس سے آمر کو غصہ نہ آئے، کیونکہ خاموشی کو جرم سمجھا جاتا تھا۔" بیسویں صدی کے آخر کے مصنفین میں سے: سعدی یوسف ، فادل العزوی ، مشین الرملی، صلاح الحمدانی اور فتح شیرکو۔عراق کو عرب ادیبوں میں "شاعروں اور شاعروں کا ملک" یا " شاعروں کا ملک" کہا جاتا ہے کیونکہ اس میں شاعروں کی بڑی تعداد ہے، [208] [209] اور عراق فن کے میدانوں میں بہت سے بڑے ناموں سے بھرا ہوا ہے۔ اور ادب۔ جدید دور، عبد الوہاب البیطی ، محمد مہدی الجواہری ، نازک الملائکہ ، احمد مطر ، بدر شاکر الصیاب ، جمیل صدیقی الزہاوی، معروف الروسفی ، عبد ال -رزاق عبد الواحد اور پلاسٹک کے فنکاروں، مصوروں اور مجسمہ سازوں میں: رفعت الجدیرجی ، زاہا حدید ، لیلیٰ العطار ، محمود صابری، جواد سلیم، شاکر حسن السعید ، اور محمد غنی حکمت شامل ہیں۔

عراقی داستانی ورثہ

ترمیم

عراق اپنے داستانی ورثے سے مالا مال ہے، کیونکہ اسے ناولوں کے لیے زرخیز زمین سمجھا جاتا ہے جو پوری دنیا میں مشہور ہوئے۔ ان کہانیوں کا کئی بین الاقوامی زبانوں میں ترجمہ ہوا اور دوسرے لوگ انھیں جانتے تھے۔

کھیل

ترمیم

عراق میں کھیل مختلف ہوتے ہیں اور عراقی حکومت اس میدان میں خاص طور پر فٹ بال، تائیکوانڈو ، فائیو اے سائیڈ ، باسکٹ بال، ایتھلیٹکس ، شطرنج اور باکسنگ میں بہت دلچسپی ظاہر کرتی ہے۔ شکار اور اسکیئنگ کے علاوہ یہ تمام کھیل لوگوں میں اچھی طرح پھیلے ہیں جو عام طور پر موسمی ہوتے ہیں اور شمالی عراق کے پہاڑی علاقوں تک محدود ہوتے ہیں۔ عراقی ریاست بھی معذوروں کے کھیل میں بہت دلچسپی ظاہر کرتی ہے اور خصوصی ضروریات کے ساتھ کھیلوں کی ٹیموں نے بہت سے مقامی، عرب اور بین الاقوامی چیمپئن شپ اور تمغے حاصل کیے ہیں۔

فٹ بال

ترمیم

فٹ بال عراق میں سب سے مشہور کھیل ہے۔ عراق فٹ بال ایسوسی ایشن کا باضابطہ قیام 1948ء میں ہوا اور دو سال بعد 1950ء میں فیفا میں شمولیت کا عمل مکمل ہوا۔ [210] اور ایشیائی فٹ بال کنفیڈریشن میں شامل ہونے میں 1971ء تک کا وقت لگا۔ عراقی فٹ بال ٹیم کے لیے مختلف سطحوں پر فٹ بال کے بہت سے کارنامے ہیں۔ براعظمی سطح پر، عراقی قومی ٹیم 2007ء میں ایک بار ایشین فٹ بال نیشن کپ ٹائٹل جیتنے میں کامیاب رہی۔ علاقائی سطح پر، عراقی ٹیم مسلسل 4 بار عرب کپ چیمپئن شپ جیتنے میں کامیاب ہوئی: 1964- گلف کپ چیمپئن شپ جیتنے کے علاوہ 1966-1985-1988۔ 3 بار 1979-1984-1988۔ عراقی انڈر 19 ٹیم نے اپنی تاریخ میں 5 بار ایشین یوتھ چیمپئن شپ بھی جیتی [211] ، سال یہ تھے: 1975-1977 [212] – 1978-1988 [213] –2000۔[214] جہاں تک عراقی فٹ بال کی تاریخ کی سب سے بڑی کامیابی ہے، یہ میکسیکو میں 1986ء فیفا عالمی کپ کے فائنل میں پہنچنا تھا [215] اور 2007ء میں ایشین نیشنز کپ جیتا تھا [216] [217] 2004 کے سمر اولمپکس میں چوتھی پوزیشن حاصل کرنے کے علاوہ [218] [219] بہترین کامیابی کے طور پر۔ ایشیائی فٹ بال کی تاریخ میں 1982ء میں ہندوستان میں منعقد ہونے والے ایشیائی کھیل کا طلائی تمغا جیتنے کے علاوہ، فیفا انڈر 20 ورلڈ میں ان کا چوتھا مقام تھا۔ عراق نے 2009ء میں جنوبی افریقہ میں ہونے والے کنفیڈریشن کپ میں کھیلنے کے لیے کوالیفائی کیا۔ عراقی پولیس ٹیم نے 1971ء میں عراقی کلبوں کے لیے اے ایف سی چیمپئنز لیگ تقریباً حاصل کر لی تھی، لیکن اسرائیلی ٹیم مکابی تل ابیب کے خلاف فائنل میچ میں سیاسی وجوہات کی بنا پر دستبرداری کے بعد یہ دوسرے نمبر پر رہی۔ 1931ء میں پہلا عراقی کلب قائم ہوا جو ایئر فورس کلب ہے۔ [220]

عراقی فٹ بال کلب

ترمیم

عراق میں 110 رجسٹرڈ کلب ہیں [221] اور ایئر فورس کلب کو قدیم ترین کلبوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے، جس کی بنیاد 1931ء میں رکھی گئی تھی، [222] اور مینا کلب ، جس کی بنیاد اسی سال رکھی گئی تھی، [223] [224] اور پولیس کلب ، جس کی بنیاد 1932ء میں رکھی گئی تھی [225] اور 1937ء میں ریلوے کلب، جس کا نام بعد میں بدل کر ٹرانسپورٹیشن کلب اور پھر الزوراء کلب رکھ دیا گیا۔ [226] یہ کلب صرف فٹ بال یا مختلف کھیلوں کے کلبوں کے لیے وقف ہونے سے مختلف ہیں۔

فن تعمیر

ترمیم

میسوپوٹیمیا کا فن تعمیر کئی مختلف ثقافتوں پر محیط ہے اور یہ دسویں صدی قبل مسیح سے لے کر آٹھویں صدی قبل مسیح تک، جب پہلی مستقل تعمیرات تعمیر کی گئی تھیں، ایک عرصے پر محیط ہے۔ عراقی تعمیراتی کامیابیوں میں شہری منصوبہ بندی کی ترقی، صحن کے گھر کا ڈیزائن اور زیگورات کی تعمیر شامل ہیں۔ عراقی فن تعمیر بھی اس تاریخ کے بعد آنے والی تمام تہذیبوں سے متاثر تھا، بشمول رومی، ایرانی اور دیگر تہذیبیں۔ اور جب خلفائے راشدین کے دور میں عراق فتح ہوا تو عراق میں اسلامی فن تعمیر کا آغاز ہوا اور اسلامی فن تعمیر کے عناصر کو مینار، گنبد، صحن، مسجد، محراب وغیرہ سے ممتاز کیا گیا۔ سامرا مسجد ، جو عباسی دور میں قائم ہوئی تھی اور اس کی بادشاہت، سامرا بادشاہت کو عراق میں اسلامی فن تعمیر کا نمونہ سمجھا جاتا ہے، اسی طرح عراقی فن تعمیر کی خصوصیت چناچیل تھی، جو بیسویں صدی کے آغاز تک جاری رہی اور عراق کو موصلی فن تعمیر سے بھی ممتاز کیا گیا تھا، جس کے بعد عراق عصری فن تعمیر سے متاثر ہوا جو دنیا میں پھیل گیا، حالانکہ عصری کاموں میں سے کچھ میں عراقی فن تعمیر کی خصوصیات موجود ہیں، جیسے بغداد ٹاوروغیرہ۔

پکوان

ترمیم
 
عراقی قوزی
 
ایک عراقی کھانا جس میں لوبیا کا شوربہ، چاول ، چکن، عراقی روٹی ، کھجور اور اچار شامل ہیں۔

عراق میں بہت سے مشہور پکوان، ان کے اجزاء اور تیاری کے طریقے ہیں۔ عراقی پکوان عراق میں جغرافیائی علاقے کے لحاظ سے ماحول اور اس کے وسائل میں تبدیلی کی وجہ سے مختلف ہیں۔ عراق کے مشہور پکوان درج ذیل ہیں: [227]

  • المصگوف : یہ ایک مشہور بغدادی کھانا ہے، جس کی تیاری کا ایک خاص طریقہ ہے، جیسا کہ مچھلی کو بھون کر لکڑی کی لاٹھیوں پر لٹکایا جاتا ہے۔
  • چاول اور قیمہ : یہ جنوبی اور وسطی عراق میں ایک مشہور کھانا ہے، خاص طور پر مذہبی مواقع پر (دسویں محرم) اور یہ چاول کے ساتھ چھلکے اور گوشت پر مشتمل ہوتا ہے۔
  • عراقی کباب عربی کباب جیسا ہی ہے لیکن اس کا ذائقہ الگ ہے۔کباب کی ایک اور قسم ہے جسے رگ کباب کہتے ہیں۔
  • ڈولما : اسے کچھ ممالک میں سٹفڈ کہا جاتا ہے اور یہ اس کے اجزاء کے تنوع کی وجہ سے نمایاں ہے۔
  • بریانی : یہ گلف کبسا کھانے کی طرح ہے، جس میں چاول کچھ گری دار میوے جیسے پستے ، بادام ، نیز کٹے ہوئے گوشت کے ساتھ ملائے جاتے ہیں اور اس کے لیے ایک خاص قسم کا مصالحہ اور مسالا استعمال کیا جاتا ہے۔
  • باجا : یہ ایک مشہور کھانا ہے جس میں بھیڑ کے بچے کی ٹانگوں کے ساتھ سر کا گوشت ہوتا ہے جسے ابال کر روٹی اور چاول کے ساتھ کھایا جاتا ہے۔
  • دلیمی
  • تھریڈ ، جو دوسرے عرب ممالک میں بھی پایا جاتا ہے
  • کوزی
  • پھلیاں اور انڈے

عجائب گھر

ترمیم
 
عراق میوزیم، بغداد
 
بغدادی میوزیم، بغداد
 
سلیمانیہ میں شیروانہ کیسل، جس میں گرمیان میوزیم واقع ہے۔

عراق کی ثقافتی، تاریخی اور قدرتی دولت کی وجہ سے عراق میں بہت سے عجائب گھر موجود ہیں۔ہر شہر میں متعدد تاریخی اور قدرتی عجائب گھر ہیں۔ سب سے مشہور عجائب گھر ہیں:

ٹی وی ڈراما اور سینما

ترمیم

چالیس کی دہائی میں، شاہ فیصل دوم کے دور میں، حقیقی عراقی سنیما کا آغاز ہوا، کیونکہ بغداد میں برطانوی اور فرانسیسی فنانسرز کے تعاون سے فلم پروڈکشن کمپنیاں قائم کی گئیں۔ بغداد اسٹوڈیو کی بنیاد 1948ء میں رکھی گئی تھی۔ پروڈکشن اکثر خالصتاً تجارتی ہوتی تھی اور فلمیں نرم رومانوی موضوعات پر مرکوز ہوتی تھیں، جن میں گانے اور رقص کے بہت سے حصے اور کہانیاں ، چھوٹے دیہاتوں میں سیٹ لگائے جاتے تھے۔ فلم (عالیہ اور عصام) 1948ء میں تیار کی جانے والی پہلی عراقی فلم ہے۔ [233] [234] 1955ء میں، حیدر العمر نے مشہور رومیو اور جولیٹ کی کہانی سے ملتا جلتا عراقی ناول فتنہ و حسن تیار کیا۔ [235] 1959ء میں اس نے عراقی سنیما کے لیے پہلا سرکاری ادارہ سینما اینڈ تھیٹر اتھارٹی قائم کیا، لیکن اس نے ساٹھ کی دہائی کے دوسرے نصف تک پروڈکشن شروع نہیں کی۔ سینما اور تھیٹر اتھارٹی کی طرف سے پیش کی جانے والی فلمیں اس دور میں انقلاب کے واقعات سے متعلق دستاویزی فلمیں تھیں اور یہ صورت حال 1966ء تک جاری رہی۔ ( الجابی ) فلم کے ہدایت کار جعفر علی تھے ، اور اس کی نمائندگی اسد عبد الرزاق ، وداد، فوزیہ الشاندی اور جعفر السعدی نے کی۔ [236] [237] [238]

 
ڈان آف دی ورلڈ کی شوٹنگ کے دوران ڈائریکٹر عباس فادل

1979 میں صدام حسین کے اقتدار میں آنے سے عراقی سنیما کو قدرے مختلف سمت میں دھکیل دیا۔ عراق اور ایران کے درمیان جنگ نے قومی وسائل اور فلم پروڈکشن کو محدود کر دیا۔ 1981ء میں، حکومت نے مصری ہدایت کار صلاح ابو سیف کو القدسیہ کی ہدایت کاری کا کام سونپا، یہ ایک مہاکاوی فلم ہے جو 636ء میں القدسیہ کی جنگ میں فارسیوں پر عربوں کی فتح کی کہانی بیان کرتی ہے۔ محمد شکری جمیل نے فلم ( دی گریٹ ایشو ) کی ہدایت کاری کی تھی، جس میں برطانوی اداکار اولیور ریڈ نے کرنل لیچ مین کا کردار ادا کیا تھا، جو بیسویں انقلاب میں مارا گیا تھا۔ [239] [240] 1980 میں، ایک 6 گھنٹے طویل فلم تیار کی گئی تھی، جس میں صدر صدام حسین کی سوانح عمری پر بات کی گئی تھی، جو فلم (دی لانگ ڈیز) ہے اور یہ فلم صدام حسین کے وزیر اعظم عبد الکریم قاسم کے قتل کی ناکام کوشش میں شرکت کے بارے میں بات کرتی ہے۔ پھر فرار ہو کر تکریت واپس آ گئے۔ فلم کے ہدایت کار مصری فنکار توفیق صالح ہیں۔ [241] صدام حسین کا کردار اس کے کزن اور داماد صدام کامل نے ادا کیا تھا۔

1990ء میں کویت کی جنگ کے بعد عراق پر اقتصادی پابندیاں عائد کر دی گئیں، جس نے ہدایت کاروں کی نئی نسل کے ابھرنے کے باوجود اس ملک میں سنیما کا کام مشکل بنا دیا۔ نوے کی دہائی کے نمایاں کاموں میں 1993ء میں ریلیز ہونے والی فلم غازی بن فیصل تھی۔ [242] 2003ء میں تیسری خلیجی جنگ کے بعد، ڈرامائی اور دستاویزی فلموں کا ایک نیا انداز سامنے آیا، جو طویل اور مختصر فلموں کے درمیان مختلف تھا اور سنیما کی تیاری کے آزاد طرز پر انحصار کرتا تھا۔ [243]

تعلیم

ترمیم
 
صدام کی قیادت میں عراقی حکومت نے ناخواندگی کے خاتمے اور خواتین کی تعلیم پر زور دیا۔ یہاں صدام حسین کو عراقی اسکول کی طالبات کے ساتھ دکھایا گیا ہے۔

عراق میں تعلیم کا عمل عراقی وزارت تعلیم کے زیر انتظام ہے۔ یونیسکو کی رپورٹ کے مطابق 1991ء میں دوسری خلیجی جنگ سے پہلے کے عرصے میں عراق میں ایک ایسا تعلیمی نظام موجود تھا جو خطے میں سب سے بہتر سمجھا جاتا تھا۔ اسی طرح گذشتہ صدی کے ستر اور اسی کی دہائی میں جب حکومت نے ناخواندگی کو تقریباً مکمل طور پر ختم کر دیا تھا، پڑھنے لکھنے کے اہل (خواندگی) کی فیصد زیادہ تھی۔ تاہم، عراق جنگوں، محاصروں اور عدم تحفظ کی وجہ سے تعلیم کو بہت نقصان پہنچا ہے، کیونکہ ناخواندگی کی شرح اب عراق میں جدید تعلیم کی تاریخ میں بے مثال سطح پر پہنچ چکی ہے۔ موجودہ عراقی حکومت اپنے سالانہ بجٹ کا 10% تعلیم کے لیے مختص کرنے کے بعد اس بحران کو دور کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ [244] [245]

عراق کے ماحولیاتی اعدادوشمار کے مطابق، 2012 میں آبادی کی شرح خواندگی 79.5% تھی، جب کہ ناخواندگی کی شرح 20.5% تھی. [246]

ابتدائی مرحلہ

ترمیم

یہ گریڈ ایک سے گریڈ چھ تک چھ درجات پر مشتمل ہے اور چھ سال تک رہتا ہے۔ 6 سال کی عمر میں بچے کی رجسٹریشن لازمی ہے۔

انٹرمیڈیٹ مرحلہ

ترمیم
 
سال 2016 کے لیے ایک عراقی یونیورسٹی میں طلبہ۔

یہ ابتدائی مرحلے کے بعد ہے اور 3 سال پر مشتمل ہے (پہلا انٹرمیڈیٹ ہے۔ . دوسرا اوسط ہے۔ . تیسری اوسط)۔

مڈل اسکول

ترمیم

یہ چوتھی تیاری کی جماعت سے شروع ہوتی ہے اور 3 مراحل (چوتھی، پانچویں اور چھٹی تیاری) پر مشتمل ہوتی ہے۔ چوتھی جماعت میں، طالب علم سائنسی یا ادبی علوم کا انتخاب کرتا ہے۔

اعلی تعلیم

ترمیم

اعلیٰ تعلیم کے حوالے سے عراق میں بہت سی یونیورسٹیاں ہیں جن میں سب سے اہم بغداد، موصل، بصرہ، انبار اور دیگر میں ہیں۔2003 عیسوی کے بعد عراق میں بہت سے کالج اور یونیورسٹیاں کھلی اور ترقی کی گئیں اور یونیورسٹی کی درجہ بندی کے مطابق نیٹ ورک [247] ، ۔ اکتوبر 2015 کے مطابق بغداد یونیورسٹی عراق میں پہلے نمبر پر ہے۔ (عالمی سطح پر 1812 ویں نمبر پر)، دیالہ یونیورسٹی دوسرے نمبر پر (عالمی سطح پر 3514 ویں نمبر پر) اور یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی تیسرے نمبر پر (عالمی سطح پر 4051 نمبر پر)۔

عراق کے شہر

ترمیم
عراق کے شہر

بیرونی روابط

ترمیم
  • "عراق"۔ کتاب عالمی حقائق۔ سینٹرل انٹیلی جنس ایجنسی 
  • عراق برائے فروخت۔ یو ٹیوب

حوالہ جات

ترمیم
  1.     "صفحہ عراق في خريطة الشارع المفتوحة"۔ OpenStreetMap۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 جولا‎ئی 2024ء 
  2. باب: 4.1
  3. http://chartsbin.com/view/edr
  4. "ميناء أم قصر المنفذ الخليجي الوحيد للعراق"۔ 08 مئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  5. "السومريون أول من اخترع الكلمات"۔ 08 مئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  6. Anzovin, item # 1824, p. 69 The first museum known to historians (circa 530 BCE) was that of Ennigaldi-Nanna, the daughter of Nabu-na'id (Nabonidus), the last king to Babylonia.
  7. Casey, p.
  8. Harvey, p. 20 Princess Ennigaldi-Nanna, collected antiques from the southern regions of Mesopotamia, which she stored in a temple at Ur – the first known museum in the world.
  9. Leon, pp. 36–37 ...the first known museum.
  10. جریدہ سمتھسونینSmithsonian Magazine, 03/2004, Beth Py-Lieberman: Found and Lost – (دیکھنے کی تاریخ 12/9/2006)
  11. Between Memory and Desire: The Middle East in a Troubled Age (p. 180)
  12. Between Memory and Desire: The Middle East in a Troubled Age (p. 180)
  13. "The Fourth Caliph, Ali"۔ 29 جنوری 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2023 
  14. خلافة بني أمية من أهم السلالات الإسلامية التي حكمت مابين 661 إلى 750 آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ faculty.ksu.edu.sa (Error: unknown archive URL) . لـ«سعاد العمري». تاريخ الولوج: 02-04-2012.
  15. Western-Islamic Calendar Converter
  16. "Gregorian-Hijri Dates Converter"۔ 18 اکتوبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2023 
  17. الكامل في التاريخ - ابن الأثير - ج 4 - ذكر قتل المختار قتلة الحسين
  18. تاريخ الرسل والملوك - الطبري - ج6 -ذكر الخبر عن أمر المختار مع قتلة الحسين بالكوفة
  19. الأعلام - خير الدين الزركلي - ج 7 - الصفحة 192
  20. الكامل في التاريخ - ابن الأثير - ج 4 - الصفحة 241
  21. تاريخ الرسل والملوك - الطبري - ج6 - في ذكر خبر قتل مصعب المختار بن أبي عبيد
  22. ابن عبد ربه.
  23. الدولة الأموية: من الميلاد إلى السقوط 2006
  24. كتاب «سير أعلام النبلاء» للذهبي، فصل «مروان بن محمد».
  25. الدولة الأموية: من الميلاد إلى السقوط 2006
  26. الملامح السياسية في الف ليلة وليلة، محمد أحمد الشحاذ، اطروحة دكتوراه من جامعة بغداد، 1977، ص 432
  27. مكتبة العراق الألكترونية
  28. web archive
  29. new yorker
  30. Maalouf, p. 243
  31. "A history of the Crusades", Steven Runciman, p.306
  32. المغول وحرق مكتبة بغداد
  33. مكتبة العراق الألكترونية 2
  34. water encyclopedia
  35. Timur or Tamerlane
  36. "14th century annihilation of Iraq"۔ 26 اگست 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  37. الفصل الأول: العراق منذ الغزو المغولي حتى السيطرة العثمانية آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ uobabylon.edu.iq (Error: unknown archive URL) من موقع جامعة اب
  38. "iraqnaa.com -&nbspiraqnaa Resources and Information"۔ 24 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  39. الصفويون
  40. "حكم الصفويين الفرس بالعراق"۔ 24 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  41. the ottoman period, 1534–1918
  42. "العراق تحت حكم الدولة العثمانية"۔ 24 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  43. books google
  44. encyclopedia britannica
  45. "population crises"۔ 25 فروری 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  46. Aprim 2005
  47. Yeor, Kochan & Littman 2001
  48. "mesopotamian+campaign+410,000"&q="The+ration+strength+of+the+Mesopotamia+Expeditionary+Force+on+19+October+1918+was+more+than"#v=snippet&q="The%20ration%20strength%20of%20the%20Mesopotamia%20Expeditionary%20Force%20on%2019%20October%201918%20was%20more%20than"&f=false A Naval History of World War I
  49. معلومات عن العراق 2
  50. "عن العراق"۔ 18 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  51. نص الوثيقة
  52. "الاحتلال البريطاني ونظام الانتداب"۔ 24 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  53. حركة الشيخ محمود الحفيد البرزنجي
  54. "الشيخ محمود الحفيد"۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  55. ^ ا ب "الاحتلال البريطاني ونظام الانتداب"۔ 24 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  56. الانتداب البريطاني على بلاد ما بين النهرين
  57. مقتل شيخ عشيرة صدام حسين آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ arabic.people.com.cn (Error: unknown archive URL) صحيفة الشعب اليومية
  58. في أثناء حكمه، كان هذا هو التاريخ الرسمي لميلاده، لكن يعتقد أن تاريخ ميلاده الحقيقي بين عامي 1935 و1939.
  59. "Saddam Hussein executed in Iraq".
  60. Saddam Hussein's 'Official' Biography
  61. See PBS Frontline (2003)، "The survival of Saddam: secrets of his life and leadership: interview with Saïd K. Aburish" at https://www.pbs.org/wgbh/pages/frontline/shows/saddam/interviews/aburish2.html
  62. ^ ا ب Humphreys، 78
  63. الإجتماع المسجل كاملا على موقع اليوتيوب یوٹیوب پر
  64. Edward Willett، ، P.4
  65. "التحضير العسكري العراقي لغزو الكويت"۔ 05 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  66. "CNN، 16 Jan 2001"۔ 11 دسمبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  67. https://news.bbc.co.uk/2/hi/middle_east/2888989.stm موقع https://news.bbc.co.uk/ بتاريخ (Page last updated at 12:49 GMT, Tuesday, 21 August 2007 13:49 UK) واطلع عليه في 19 أكتوبر 2015
  68. How Do We Know that Iraq Tried to Assassinate President George H.W. Bush?
  69. U.S. Strikes Iraq for Plot to Kill Bush
  70. SECTION D: THE BUSH ASSASSINATION ATTEMPT
  71. آثار الحصار على العراق
  72. "النفط مقابل الغذاء"۔ 12 فروری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  73. Security Council resolutions regarding IRAQ
  74. Al Jazeera and News Agencies. (5 October 2019).
  75. 'VS doden topgeneraal Iran, vrees voor escalatie groeit' (US kill top general Iran, fear for escalation grows).
  76. "Iraqi spy chief Mustafa Al Kadhimi rumoured to be prime ministerial contender"۔ 29 December 2019۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2020 
  77. "Iraq announces full results of parliamentary elections"۔ 17 October 2021۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2021 
  78. "Minority quota candidates received over 96,000 votes in Iraqi election"۔ 2021-10-19 
  79. خرائط Google
  80. ^ ا ب https://www.cia.gov/library/publications/the-world-factbook/geos/iz.html آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cia.gov (Error: unknown archive URL) موقع https://www.cia.gov/library/publications/the-world-factbookواطلع آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cia.gov (Error: unknown archive URL) عليه في 20 إكتوبر 2015
  81. https://www.cosit.gov.iq/AAS13/Physical%20Features%201/phys-feat1.htm من موقع https://www.cosit.gov.iq/ar/لسنة آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) 2009 واطلع عليه في 7 نوفمبر 2015
  82. ^ ا ب پ https://www.cia.gov/library/publications/the-world-factbook/geos/iz.html آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cia.gov (Error: unknown archive URL) موقع https://www.cia.gov/library/publications/the-world-factbookواطلع آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cia.gov (Error: unknown archive URL) عليه في 20 إكتوبر 2015
  83. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ 2016-06-24 بذریعہ وے بیک مشین من موقع https://www.cosit.gov.iq آرکائیو شدہ 2016-06-13 بذریعہ وے بیک مشین الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 أكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 يونيو 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  84. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 أكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  85. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 أكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  86. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 أكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  87. http://www.moen.gov.iq/Portals/0/الواقع%20البيئي/Iraqi%20SoE.pdf من موقع وزارة البيئة العراقية مأخوذ من توقعات حالة البيئة في العراق 2013، واطلع عليه في 3 نوفمبر 2015
  88. موقع وزارة النفط العراقية https://www.oil.gov.iq/index.php?name=Pages&op=page&pid=100 واطلع عليه في 12 إكتوبر 2015
  89. "Total Petroleum and Other Liquids Production 2014"۔ U.S. Energy Information Administration۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 ستمبر 2015 
  90. US Department of Energy Information – Assessment of Iraqi Petroleum Assets
  91. https://www.zeraa.gov.iq/ موقع وزارة الزراعة العراقية في قسم بيانات إحصائية ثم إحصائيات زراعية لعام 2014 من صفحة 25 إلى 33 واطلع عليه في 27 إكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 أكتوبر 2015 
  92. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20dev/Full%20Report/مؤشرات%20البيئة%20والتنمية%20المستدامة%20في%20العراق%202014.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) موقع https://www.cosit.gov.iq مؤشرات البيئة والتنمية المستدامة ذات الأولوية في العراق لسنة 2014 ص 71 "نسخة مؤرشفة"۔ 13 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 يونيو 2020 
  93. https://www.zeraa.gov.iq/ وزارة الزراعة العراقية قسم بيانات إحصائية إحصائات زراعية لعام 2014 والصفحات 5،8،9،11،13 واطلع عليه في 27 إكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 أكتوبر 2015 
  94. صدام حسين
  95. Wagner, Thomas, (October 25, 2005), "Iraq's Constitution Adopted by Voters"
  96. حسن الشامي - تقرير التحول الديمقراطي في العراق عام 2011
  97. حسن الشامي - تقرير التحول الديمقراطي في العراق عام 2011
  98. "Inside Story – Iraq's missing billions"۔ YouTube۔ 2010-07-29۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جون 2011 
  99. "US-Iraq SOFA" (PDF)۔ 27 مئی 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2008 
  100. "Strategic Framework Agreement" (PDF)۔ 27 مئی 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 دسمبر 2008 
  101. "Iraq Joins the Chemical Weapons Convention"۔ The Organisation for the Prohibition of Chemical Weapons -Opcw.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جون 2011 
  102. "بانيتا: الولايات المتحدة ستبقي شريكا وصديقا ملتزما مع العراق (فيديو)"۔ 01 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  103. الموكب الأخير ضم 110 آليات تحمل 500 جندي، القوات الأمريكية تغادر العراق بعد 9 سنوات من الاجتياح وتبقي 157 جندياً، موقع قناة العربية الفضائية
  104. http://www.france24.com/ar/20151005-العراق-بغداد-المنطقة-الخضراء-حيدر-العابدي موقع الشرق الأوسط في 05/10/2015 واطلع عليه في 7 أغسطس 2015
  105. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئي للعراق في 2013 واطلع عليه في 26 إكتوبر 2015 صفحة 25 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  106. Iraqi Council of Ministers approved new provinces of Tuz Khurmatu and Tal Afar
  107. https://www.citypopulation.de/Iraq.html من موقع https://www.citypopulation.de حسب تقديرات E 2014-01-01 واطلع عليه في 7 نوفمبر 2015
  108. https://data.worldbank.org/indicator/SP.
  109. Bulletin of the Oxford University Institution of Statistics,Vol.20,NO.4,1958
  110. دراسة في طبيعة المجتمع العراقي، الدكتور علي الوردي طبعة المكتبة الحيدرية، ص 100
  111. "Iraqi population reaches about 35 million"۔ Aswat Al Iraq۔ 2013-04-27۔ 24 جون 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2013 
  112. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئي للعراق في 2013 واطلع عليه في 26 إكتوبر 2015 صفحة 25 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  113. خولة كريم كوثر، إمكانيات تكامل السكن العشوائي مع السكن النظامي - منطقة الدراسة محلة 747 في حي المعلمين، ص 354
  114. "التركمان.. قومية عراقية عارضت استفتاء كردستان"۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2021 
  115. "United Nations Iraq" (PDF)۔ 10 اکتوبر 2016 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ أكتوبر 2020 
  116. CIA Factbook دولة العراق
  117. Constitution of Iraq, Article 4 (1st)
  118. Constitution of Iraq, Article 4 (4th)
  119. Constitution of Iraq, Article 4 (5th)
  120. أ.د. علي النشمي، ا.د.محمد الربيعي، تاريخ العراق المعاصر، الجامعة المستنصرية/ كلية التربية / قسم التاريخ، ومنشورة في مجلة مركز بابل للدرسات الإنسانية المجلد /4- العدد 1،
  121. ^ ا ب "آرکائیو کاپی"۔ 24 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  122. ^ ا ب https://www.britannica.com/place/Iraq من موقع موسوعة بريتانكا http://www.britannica.com/، وورد فيها أن الشيعة أكثر من النصف بقليل وحسب بعض المصادر ثلاث أخماس العراقيين (أي 60%)، واطلع عليه في 3 نوفمبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 يناير 2018 
  123. https://www.islamicweb.com/beliefs/cults/shia_population.htm آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ islamicweb.com (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.islamicweb.com/ آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ islamicweb.com (Error: unknown archive URL) وأوردت نسبة شيعة العراق ب 62.5% وفي بداية الصفحة توضح أن الشيعة هم ديانة مختلفة عن الإسلام واطلع عليه في 3 نوفمبر 2015
  124. https://www.bbc.com/news/world-middle-east-25434060 من موقع https://www.bbc.com/ وقدرت نسبة السنة في العراق من 21-40% والشيعة من 61 إلى 80%، واطلع عليه في 3 نوفمبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 يناير 2018 
  125. ^ ا ب Safa Khulusi, Ma'ruf Al-Rusafi (1875–1945).
  126. Romero, Juan (2011).
  127. د.عدنان عليان، الشيعة والدولة العراقية الحديثة، بيروت، 2005، ص 179
  128. حنا بطاطو، العراق الطبقات الاجتماعية والحركات الثورية، طبعة دار الأبحاث، بيروت، 1990، ترجمة عفيف الرزاز، ج1 ص 60
  129. Casey, p.
  130. أ.د. علي النشمي، ا.د.محمد الربيعي، تاريخ العراق المعاصر، الجامعة المستنصرية/ كلية التربية / قسم التاريخ، ومنشورة في مجلة مركز بابل للدرسات الإنسانية المجلد /4- العدد 1، واطلع على البحث في 2 نوفمبر 2015
  131. علي الوردي، طبيعة المجتمع العراقي، بيروت، 2014، الملحق رقم 3
  132. Jews in Islamic Countries: Iraq
  133. Baghdad Jews Have Become a Fearful Few نيو يورك تايمز
  134. اقرار مشروع قانون للعطل الرسمية، الأتحاد الديمقراطي العراقي آرکائیو شدہ 2014-12-25 بذریعہ وے بیک مشین [مردہ ربط]
  135. https://moi.gov.iq/PageViewer.aspx?id=1 من الموقع الرسمي لوزارة الداخلية العراقية واطلع عليه في 3 ديسمبر 2015
  136. https://moi.gov.iq/default.aspx الموقع الرسمي لوزارة الداخلية العراقية واطلع عليه في 3 ديسمبر 2015
  137. https://www.pmo.iq/press2015/12-3-20151.htm موقع رئيس الوزراء الدكتور حيدر العبادي في 12-3-2015، وإطلع عليه في االثاني من آذار/مارس 2015
  138. http://www.alarabiya.net/ar/politics/2015/07/09/تصرّفات-تنال-من-سمعة-الحشد-الشعبي.html من موقع العربية بتاريخ الخميس 22 رمضان 1436هـ - 9 يوليو 2015م، وآخر تحديث: الخميس 22 رمضان 1436هـ - 9 يوليو 2015م KSA 02:22 – GMT 23:22 واطلع عليه في 3 ديسمبر 2015
  139. https://newhub.shafaqna.com/IQ/10787093-مجلس-الوزراء-يخصص-ميزانية-الحشد%7B%7Bوصلة[مردہ ربط] مكسورة}}
  140. "وزارة الدفاع-قيادة القوات البرية"۔ 06 جنوری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  141. "وزارة الدفاع-قيادة القوة البحرية"۔ 23 جنوری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  142. وزارة الدفاع-قيادة الفرقة الجوية
  143. «تاريخ الجيش العراقي بين المؤسسة والنظام الحاكم في ذكراه الثامنة والثمانين-ش ب ن»
  144. "6 يناير يوم تأسيس الجيش العراقي-ج الاتحاد"۔ 05 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  145. http://www.alarabiya.net/ar/arab-and-world/2014/08/28/اقوى-10-جيوش-عربية-في-عام-2014.html من موقع العربية بتاريخ لخميس 2 ذو القعدة 1435هـ - 28 أغسطس 2014م وآخر تحديث: السبت 4 ذو القعدة 1435هـ - 30 أغسطس 2014م KSA 18:45 – GMT 15:45 واطلع عليه في 3 ديسمبر 2015م
  146. https://www.irqkrama.com/post.php?id=11866 آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ irqkrama.com (Error: unknown archive URL) من موقع عراق الكرامة بتاريخ الأربعاء, 29 أكتوبر 2015 واطلع عليه في 3 ديسمبر 2015
  147. "حل-الجيش-العراقي-دلالات-وخلفيات-الجزيرة"۔ 24 اپریل 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  148. عبد الخالق حسين - حل الجيش العراقي... ضرر أم ضرورة؟
  149. https://www.globalfirepower.com/country-military-strength-detail.asp?country_id=iraq من موقع https://www.globalfirepower.com/ بتاريخ 13 نوفمبر 2015 واطلع عليه في 19 نوفمبر 2015
  150. «دستور جمهورية العراق»الامانة العامة لمجلس الوزراء
  151. Bohsem, Guido & Somerville, Glen,نومبر 2004, "G7, پیرس کلب کے ممالک کا عراقی قرضوں میں سہولت کا اعلان"، Reuters، بتاریخ 17 ستمبر 2006
  152. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20dev/Full%20Report/مؤشرات%20البيئة%20والتنمية%20المستدامة%20في%20العراق%202014.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iqلسنة آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.xn--iq-jtd3b6en (Error: unknown archive URL) 2013م رقم الصفحة 79 واطلع عليه في 26 إكتوبر 2015
  153. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 إكتوبر 2015 صفحة 25 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  154. "سنان الشبيبي"۔ 16 جون 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  155. https://arabic.rt.com/news/800101-العراق-عملة-نقدية-جديدة-طرح-إصدار/ من موقع روسيا اليوم بالعربي بعنوان (العراق يطرح ورقة نقدية من فئة 50 ألف دينار) وبتاريخ (تاريخ النشر:12.11.2015 | 15:37 GMT | آخر تحديث:12.11.2015 | 15:44 GMT |) واطلع عليه في 4 ديسمبر 2015
  156. "World Proved Reserves of Oil and Natural Gas, Most Recent Estimates"۔ Energy Information Administration۔ 2009-03-03۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 جنوری 2013 
  157. "Iraq's flood of 'cheap oil' could rock world markets"۔ The Washington Times۔ 2013-02-03۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 فروری 2013 
  158. "Iraq Opens New Oil Terminal"۔ Nuqudy English۔ 2012-02-12۔ 13 ستمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ أكتوبر 2020 
  159. "U.S. Electricity Imports from and Electricity Exports to Canada and Mexico Data for 2008"۔ Web.archive.org۔ 2010-07-26۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 جنوری 2013 
  160. "Iraq facts and figures"۔ OPEC۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 فروری 2013 
  161. "OPEC Share of World Crude Oil Reserves"۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جنوری 2015 
  162. Amos Perlmutter, Michael I. Handel, Uri Bar-Joseph.
  163. Perlmutter, p. 172.
  164. "Power of this station was 2 MW"۔ Isis-online.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 اگست 2009 
  165. "Iraq Survey Group Final Report"۔ Globalsecurity.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 اگست 2009 
  166. "Osiraq – Iraq Special Weapons Facilities"۔ Fas.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 اگست 2009 
  167. Hamza, Khidhir (September–October 1998)۔ Inside Saddam's secret nuclear program۔ Bulletin of the Atomic Scientists۔ 08 مارچ 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2009 
  168. Ramberg, Bennett.
  169. Cordesman, Anthony H. Iraq and the War of Sanctions: Conventional Threats and Weapons of Mass Destruction.
  170. The 1982 World Book Year Book.
  171. https://books.google.se/books?id=PQsAAAAAMBAJ&pg=PA33&dq=nuclear+fuel+osirak&hl=sv&ei=tK_0TKaPFY7oOdP-iKsI&sa=X&oi=book_result&ct=result#v=onepage&q=nuclear%20fuel%20osirak&f=false Anthony Fainberg (1981).
  172. ^ ا ب پ ت ٹ Iraq country profile.
  173. ^ ا ب پ ت ٹ ث Iraq country profile.
  174. ^ ا ب Iraq country profile.
  175. ^ ا ب پ ت ٹ Iraq country profile.
  176. https://www.alhurra.com/content/cholera-causes-4-dead-in-iraq/281448.html آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ alhurra.com (Error: unknown archive URL) موقع الحرة في 19-09-2015 واطلع عليه في السادس من إكتوبر 2015
  177. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 أكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  178. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصائات البيئية للعراق في 2013م واطلع عليه في 26 أكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  179. "وزارة السياحة العراقية: الاعلام السياحي في كوردستان نجح ونحن اخفقنا"۔ 28 نومبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  180. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Trade/Tourism/Full%20Reports/مسح%20الفنادق%20ومجمعات%20الايواء%20السياحي%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع الجهاز المركزي للإحصاء https://www.cosit.gov.iq/ar/ بقسم إحصاء التجارة، ثم السياحة والبحث عن مسح الفنادق ومجمعات الايواء السياحي لسنة 2013 ص 6 واطلع عليه في 31 إكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 03 جولا‎ئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 يونيو 2020 
  181. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Trade/Tourism/Full%20Reports/مسح%20الفنادق%20ومجمعات%20الايواء%20السياحي%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع الجهاز المركزي للإحصاء https://www.cosit.gov.iq/ar/ بقسم إحصاء التجارة، ثم السياحة والبحث عن مسح الفنادق ومجمعات الايواء السياحي لسنة 2013 ص 37 واطلع عليه في 31 إكتوبر 2015 "نسخة مؤرشفة"۔ 03 جولا‎ئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 يونيو 2020 
  182. Ur
  183. "Texts and Traditions: A Source Reader for the Study of Second Temple" By Lawrence H. Schiffman "Mar+Mattai"+assyria&lr=&sig=FnfxQZAhAJs_kEJ_UW91zjzrhJQ
  184. "دير مار بهنام الشهيد في مدينة الموصل بالعراق"۔ 20 مارچ 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  185. "بهنام وسارة الصرح والتاريخ"۔ 06 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  186. https://www.tourism.gov.iq/index.php آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ tourism.gov.iq (Error: unknown archive URL) موقع وزارة السياحة والآثار العراقية في قسم الدليل السياحي والآثاري واطلع عليه في 28 إكتوبر 2015
  187. "جامع النبي يونس.. رمز السياحة الدينية في الموصل"۔ 10 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  188. "سبيل خانات وجوامع الموصل 1563 ـ 1869"۔ 02 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2023 
  189. Wadi Al-Salam Cemetery in Najaf
  190. https://www.npr.org/templates/story/story.php?storyId=16493810 من موقع https://www.npr.org/ وجاء فيها أن دير مار إيليا هو أقدم دير بالعراق ونشر في (NOVEMBER 21, 2007 6:00 AM ET) من قبل (Eric Westervelt) واطلع عليها بتاريخ 17 نوفمبر 2015
  191. ^ ا ب https://elaph.com/Web/opinion/2012/12/779539.html من موقع إيلاف بتاريخ GMT 12:37 2012 الأربعاء 12 ديسمبر واطلع عليه في 29 إكتوبر 2015
  192. https://www.jpost.com/Diaspora/Jew-appointed-to-official-position-in-Iraqi-Kurdistan-426320 من موقع ومن قبل SAM SOKOL 10/18/2015 واطلع عليه في 29 إكتوبر 2015
  193. http://www.almadapaper.net/ar/news/459605/الثقافة-تفتتح-بيت-المعرفة-للمندائيين-وتع آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ almadapaper.net (Error: unknown archive URL) من موقع المدى نيوزبيبر في 2014/02/19 (21:01 مساء) واطلع عليه في 19 نوفمبر 2015
  194. https://archive.aawsat.com/details.asp?section=54&article=762276&issueno=12869#.
  195. https://whc.unesco.org/en/tentativelists/1837/ The Sacred Complex of Babylon
  196. https://www.baghdadmuseum.org/wmcd_index.htm Mesopotamia Yesterday, Iraq Today
  197. https://www.aljazeera.net/NR/exeres/2EF01F38-1A2D-4FDF-AD7A-7567921FFC7A.htm غوغل يعرض موجودات المتحف العراقي
  198. https://www.alarabiya.net/programs/2012/01/27/190969.html آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ alarabiya.net (Error: unknown archive URL) من العراق: آثار العراق المسروقة (قناة العربية الفضائية) [مردہ ربط]
  199. https://www.aljazeera.net/NR/exeres/E24627AB-9759-432A-BDBD-B8C4DEE4DBEF.htm القوات الأميركية تنهب آثار العراق
  200. https://whc.unesco.org/en/tentativelists/1465/ The Ancient City of Nineveh
  201. https://whc.unesco.org/en/tentativelists/1463/ Nimrud
  202. https://whc.unesco.org/en/list/1130 Ashur (Qal'at Sherqat)
  203. https://www.islamweb.net/media/index.php?page=article&lang=A&id=80578 المدرسة المستنصرية تحفة حضارية ومعمارية
  204. https://www.coptcatholic.net/section.php?hash=aWQ9MjkyNA== آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ coptcatholic.net (Error: unknown archive URL) المدرسة المستنصرية بغداد - العراق
  205. https://whc.unesco.org/en/list/276 Samarra Archaeological City، ومدينة سامراء الأثرية، والتي تعد من معالم التراث الإنساني المهددة بالخطر حسب اليونسكو
  206. "Railway Gazette: Urban rail progress in Najaf and Baghdad"۔ 05 جولا‎ئی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2010 
  207. "Railway Gazette: Urban rail progress in Najaf and Baghdad"۔ 05 جولا‎ئی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2010 
  208. "شعراء عراقيون يكتبون اغترابهم ... بلغات منافيهم"۔ جريدة الحياة۔ 11 أكتوبر 2009۔ 03 اکتوبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 أكتوبر 2019 
  209. "العراق بلد الشعراء"۔ جريدة الرياض۔ 22 أبريل 2010۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 أكتوبر 2019 
  210. العراق آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ ar.fifa.com (Error: unknown archive URL) على موقع فيفا آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ ar.fifa.com (Error: unknown archive URL)
  211. كأس آسيا للشباب سجل الإبطال - عدد مرات الفوز
  212. كأس آسيا للشباب في تايلند 1977
  213. كأس آسيا للشباب في قطر 1988
  214. كأس آسيا للشباب في إيران 2000
  215. كأس العالم 1986 في المكسيك
  216. كأس آسيا 2007 في إندونيسيا وماليزيا وتايلند وفيتنام
  217. نهائيات كرة القدم بأولمبياد أثينا - رجال 2004
  218. نهائيات كرة القدم بأولمبياد أثينا - رجال 2004
  219. معلومات عن دولة العراق آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ ar.fifa.com (Error: unknown archive URL) موقع فيفا
  220. موجز عن نادي القوة الجوية العراقي
  221. معلومات عن العراق آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ ar.fifa.com (Error: unknown archive URL) موقع فيفا آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ ar.fifa.com (Error: unknown archive URL)
  222. موجز عن نادي القوة الجوية العراقي
  223. نادي الميناء
  224. تاريخ نادي الميناء الرياضي آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ alminaasc.com (Error: unknown archive URL) من الموقع الرسمي لنادي الميناء
  225. معلومات عن نادي الشرطة
  226. معلومات عن نادي الزوراء
  227. "Foods of Iraq: Enshrined With A Long History"۔ ThingsAsian۔ 08 مئی 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جون 2011 
  228. المتحف العراقي يستقبل الزوار مجددا – بي بي سي العربية - تاريخ النشر والوصول 23 فبراير-2009
  229. Anzovin, item # 1824, p. 69 The first museum known to historians (circa 530 BCE) was that of Ennigaldi-Nanna, the daughter of Nabu-na'id (Nabonidus), the last king to Babylonia.
  230. Casey, p.
  231. Harvey, p. 20 Princess Ennigaldi-Nanna, collected antiques from the southern regions of Mesopotamia, which she stored in a temple at Ur – the first known museum in the world.
  232. Leon, pp. 36–37 ...the first known museum.
  233. "عليا وعصام - فيلم - 1948"۔ 12 مئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2023 
  234. مخرجون عراقيون يخاطرون بحياتهم لسرد قصصهم وآخرون يهربون من الواقع إلى الماضي
  235. فتنة وحسن - فيلم - 1955
  236. الجابي - فيلم - 1968
  237. قراءة متأنية في تاريخ السينما العراقية 2-3
  238. نشوء القطاع العام للسينما العراقية آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cinema-masrah.org (Error: unknown archive URL) موقع دائرة السينما والمسرح العراقية
  239. المسألة الكبرى - فيلم - 1982
  240. الفلم الروائي (المسألة الكبرى) آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cinema-masrah.org (Error: unknown archive URL) موقع دائرة السينما والمسرح العراقية
  241. الأيام الطويلة - فيلم - 1980
  242. الملك غازي - فيلم - 1993
  243. https://www.newsabah.com/wp/newspaper/47770 الصباح الجديد في 6 أيار/مايو 2015 واطلع عليه في 16 إكتوبر 2015
  244. "جريدة الرأي نيوز"۔ 11 دسمبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2023 
  245. "جريدة بغداد - ظلام الجهل في العراق، بقلم د. فاروق رضاعة."۔ 11 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2023 
  246. https://www.cosit.gov.iq/documents/statistics_ar/Environment/Env%20stat/Full%20Report/تقرير%20احصاءات%20البيئة%20في%20العراق%20لسنة%202013.pdf آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cosit.gov.iq (Error: unknown archive URL) من موقع https://www.cosit.gov.iq الإحصاءات البيئية للعراق في 2013 واطلع عليه في 26 إكتوبر 2015 صفحة 25 "نسخة مؤرشفة"۔ 24 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 أكتوبر 2015 
  247. https://www.webometrics.info/en/aw/Iraq?sort=asc&order=World%20Rank موقع https://www.webometrics.info/en في 17 أكتوبر 2015 واطلع عليه في نفس التاريخ