اسٹیفن ہاکنگ

برطانوی نطریاتی طبیعیات دان، ماہر فلکیات، پروفیسر اور مصنف
(سٹیفن ہاکنگ سے رجوع مکرر)

اسٹیفن ہاکنگ (برطانوی املا کے مطابق اسٹیون ہوکنگ) (انگریزی: Stephen Hawking، تلفظ: /ˈstvən ˈhɔːkɪŋ/ ( سنیے)؛) بیسویں اور اکیسویں صدی عیسوی کے معروف ماہر طبیعیات تھے۔ انھیں آئن سٹائن کے بعد گذشتہ صدی کا دوسرا بڑا سائنس دان قرار دیا جاتا ہے۔

اسٹیفن ہاکنگ
(انگریزی میں: Stephen William Hawking ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
 
اسٹیفن ہاکنک 1974ہ میں  ویکی ڈیٹا پر (P18) کی خاصیت میں تبدیلی کریں 

معلومات شخصیت
پیدائش 8 جنوری 1942ء [1][2][3][4][5][6][7]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اوکسفرڈ [8]،  مملکت متحدہ [9]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 14 مارچ 2018ء (76 سال)[10][11][12][7][4][13][14]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کیمبرج [15][8]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن ویسٹمنسٹر ایبی [16]  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت   ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش انگلستان   ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت مملکت متحدہ [17][8]  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن رائل سوسائٹی آف آرٹ ،  امریکن فلوسوفیکل سوسائٹی [18]،  قومی اکادمی برائے سائنس [19][20]،  رائل سوسائٹی [21]،  امریکی اکادمی برائے سائنس و فنون   ویکی ڈیٹا پر (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زوجہ جیر وایلڈ ہاکنگ (14 جولا‎ئی 1965–1991)[22]
Elaine Mason (1995–2006)  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد لوسی ہاکنگ [8]،  رابرٹ ہاکنگ [23]،  ٹم ہاکنگ [24]  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی یونیورسٹی کالج، اوکسفرڈ (اکتوبر 1959–1962)
ٹرنٹی ہال (اکتوبر 1962–مارچ 1966)[25]
جامعہ کیمبرج [26]  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تخصص تعلیم طبیعیات   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تعلیمی اسناد بی اے ،ڈاکٹریٹ   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ڈاکٹری مشیر ڈنیس ولیم سياما   ویکی ڈیٹا پر (P184) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ ڈنیس ولیم سياما   ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ڈاکٹری طلبہ ڈان پیج   ویکی ڈیٹا پر (P185) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ نظریاتی طبیعیات دان ،  ماہر کونیات ،  ماہر فلکی طبیعیات [8]،  ریاضی دان [27][28][8][29]،  ماہر تعلیم ،  سائنسی مصنف ،  استاد جامعہ [8]،  مصنف [30][31]،  طبیعیات دان [32][8]،  غیر فکشن مصنف ،  ماہر فلکیات [33]،  ٹیلی ویژن اداکار ،  آپ بیتی نگار ،  سائنس فکشن مصنف ،  سائنس دان [8]  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان انگریزی   ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی [34][35][36][37]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل عمومی اضافیت ،  نظری طبیعیات [38]،  کونیات ،  اطلاقی ریاضیات [38]،  کائنات [38]،  ثقب اسود [38]  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت گنول اور کائس [39]،  شعبۂ ریاضی، جامعہ کیمبرج [39]،  پریمیٹر انسٹی ٹیوٹ برائے نظریاتی طبیعیات [40]،  جامعہ کیمبرج [41][42]،  کیلیفورنیا انسٹیٹیوٹ آف ٹیکنالوجی [43]  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں وقت کی مختصر تاریخ [44]،  کائنات کا مکمل ترین نظریہ [45]،  میری مختصر تاریخ   ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مؤثر پال ڈیراک ،  برٹرینڈ رسل ،  کارل پاپر ،  آئن سٹائن   ویکی ڈیٹا پر (P737) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک الحاد [46][47]  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
 صدارتی تمغا آزادی   (2009)[48]
کاپلی میڈل (2006)[49][50]
تمغا البرٹ (1999)[51][52]
 کمپینین آف آنر (1989)[53][18]
وولف انعام برائے طبیعیات   (1988)[54]
 سی بی ای (1982)[53]
فرینکلن میڈل (1981)[55]
تمغا البرٹ آئن سٹائن (1979)[56]
ہیگس میڈل (1976)[57]
رائل سوسائٹی فیلو   (1974)
 آرڈر آف دی برٹش ایمپائر   ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
 
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

پیدائش

ترمیم

8 جنوری 1942ء کو آکسفورڈ میں پیدا ہوئے۔

تعلیم

ترمیم

انھوں نے اوکسفرڈ سے طبیعیات کی تعلیم حاصل کی اور بعد ازاں کیمبرج سے فلکیات کے شعبے میں پی ایچ ڈی کی

کیمبرج یونیورسٹی نے اسٹیفن ہاکنگ کے 1966ء میں کیے گئے پی ایچ ڈی کا مقالہ جاری کیا گیا جس نے چند ہی دن میں مطالعے کا ریکارڈ توڑ دیا۔ ان کے مقالے کو 20 لاکھ سے زائد مرتبہ پڑھا گیا اور 5 لاکھ سے زائد لوگوں نے اسے ڈاؤن لوڈ کیا۔

اعزازات

ترمیم

ہاکنگ کو 1988ء میں ان کی کتاب ’اے بریف ہسٹری آف ٹائم‘ سے شہرت ملی جس کی ایک کروڑ سے زائد کاپیاں فروخت ہوئیں۔

انھوں نے ریاضی اور سائنس کے شعبوں میں بہت سارے اعزازات حاصل کیے، سنہ 2009ء میں انھیں امریکی صدر براک اوباما نے پریزیڈنشل میڈل آف فریڈم سے نوازا۔

2014ء میں سینٹ جیمز پیلس میں منعقدہ ایک فلاحی تقریب کے دوران میں انھوں نے ملکہ برطانیہ سے ملاقات بھی کی۔

2014ء میں ان کی زندگی پر ایک فلم ’دی تھیوری آف ایورتھنگ‘ بنائی گئی جس میں ایڈی ریڈمین نے مرکزی کردار ادا کیا

2017ء میں ہانگ کانگ میں کیمبرج میں واقع اپنے دفتر سے ہانگ کانگ میں ایک تقریب سے ہولوگرام ٹیکنالوجی کے ذریعے بات چیت کی۔ ان کے موت کے بعد ان کے بچوں کا کہنا ہے کہ ان کی وراثت 'بہت سالوں کے لیے زندہ رہے گی،

ان کے دیگر اعزازات یہ تھے،

صدارتی تمغا آزادی (2009)

کاپلی میڈل (2006)

تمغا البرٹ (1999)

برطانوی کمپینین آف آنر (1989)

وولف انعام برائے طبیعیات (1988)

Order BritEmp (civil) rib.PNG سی بی ای (1982

فرینکلن میڈل (1981)

تمغا البرٹ آئن سٹائن (1979)

ہیگس میڈل (1976)

رائل سوسائٹی فیلو (1974)

نظریات

ترمیم

اسٹیفن ہاکنگ کو غیر معمولی ذہانت کی بدولت آج آئن اسٹائن کے ہم پلہ سائنس دان قرار دیا جارہا ہے۔ اس عظیم سائنس دان نے کائنات میں ایک ایسا ” بلیک ہول ” دریافت کیا جس سے روزانہ نئے سیارے جنم لیتے ہیں، اس بلیک ہول سے ایسی شعاعیں خارج ہوتی ہیں جو کائنات میں بڑی تبدیلیوں کا سبب بھی ہیں۔ ان شعاوں کو اسٹیفن ہاکنگ کے نام کی مناسبت سے ” ہاکنگ ریڈی ایشن ” کہا جاتا ہے۔

۔ 1970ءکی دہائی کے شروع میں ہی اس نے اپنے امتیازی مقالوں کے سلسلے کو شایع کروانا شروع کیا جس میں اس نے اس بات کو ثابت کرنے کی کوشش کی کہ آئن سٹائن کے نظریہ میں "وحدانیت "(جہاں ثقلی قوّت لامتناہی بن جاتی ہے، جیسے کہ کسی بلیک ہول کے مرکز میں اور بگ بینگ کی ساعت کے وقت ہوا تھا ) اضافیت کا ایک ناگزیر حصّہ ہے اور اس کو آسانی کے ساتھ نظر انداز نہیں کیا جا سکتا (جیسا کہ آئن سٹائن سمجھتا تھا)۔ 1974ء میں ہاکنگ نے اس بات کو بھی ثابت کر دیا کہ بلیک ہول مکمل طور پر بلیک نہیں ہیں، وہ بتدریج شعاعوں کا اخراج کر رہے ہیں جس کو اب ہاکنگ کی اشعاع کہتے ہیں کیونکہ اشعاع بلیک ہول کے ثقلی میدان سے بھی گذر کر نکل سکتی ہیں۔ اس مقالے نے پہلی دفعہ کوانٹم نظریہ کے عملی اظہار کو نظریہ اضافیت پر برتری حاصل کرنے کے لیے استعمال کیا اور یہ ابھی تک اس کا سب سے شاندار کام ہے۔

1990ء میں ہاکنگ نے جب اپنے کولیگز کے مقالات کا مطالعہ کیا جس میں ٹائم مشین کو بنانے کا ذکر تھا تو وہ فوری طور پر اس بارے میں متشکک ہو گیا۔ اس کے وجدان نے اس کو بتایا کہ وقت میں سفر کرنا ممکن نہیں ہے کیونکہ مستقبل سے آیا ہوا کوئی بھی مسافر موجود نہیں ہے۔ اگر وقت کا سفر کرنا اتنا آسان ہوتا کہ جیسے کسی سیر و تفریح پر جانا تو مستقبل سے آئے ہوئے سیاح اپنے کیمروں کے ساتھ ہمیں تنگ کرنے کے لیے یہاں موجود ہوتے اور ہمارے ساتھ تصاویر کھنچوانے کی درخواست کر رہے ہوتے اور ہم۔

ہاکنگ نے ایک چیلنج دنیائے طبیعیات کو بھی دیا۔ ایک ایسا قانون ہونا چاہیے جو وقت کے سفر کو ناممکن بنا دے۔ اس نے وقت کے سفر سے روکنے کے لیے قوانین طبیعیات کی طرف سے ایک "نظریہ تحفظ تقویم" (Chronology Protection Conjecture) پیش کیا ہے تاکہ "تاریخ کو مورخوں کی دخل اندازی سے بچایا جا سکے "۔

ان کا زیادہ تر کام ثقب اسود یعنی بلیک ہول، نظریاتی کونیات (کونیات) کے میدان میں ہے۔ ان کی ایک کتاب وقت کی مختصر تاریخ یعنی A brief History of Time ایک شہرہ آفاق کتاب ہے جسے انقلابی حیثیت حاصل ہے۔ یہ آسان الفاظ میں لکھی گئی ایک نہایت اعلیٰ پائے کی کتاب ہے جس سے ایک عام قاری اور اعلیٰ ترین محقق بھی فائدہ اٹھا سکتا ہے۔

بیماری

ترمیم

ان کی زندگی کا ایک اور منفرد اور المناک پہلو ایک عجیب بیماری بھی ہے۔ وہ ایم ایس سی تک درمیانے درجے کے طالب علم، سائیکلنگ، فٹ بال اور کشتی رانی کے شوقین تھے۔ روزانہ پانچ کلومیٹر دوڑ معمول تھی۔ 1963ء میں جب وہ کیمبرج یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کر رہے تھے ایک دن سیڑھیوں سے پھسل گئے۔ طبی معائنے کے بعد پتہ چلا کہ وہ پیچیدہ ترین بیماری ”موٹر نیوران ڈزیز” میں مبتلا تھے۔

پھر جس بات کا اندیشہ تھا، وہی ہوا۔ اس بیماری کے باعث آہستہ آہستہ ان کے ہاتھ، پیر اور زبان کو مفلوج کر دیا۔ لیکن بیماری کے اثر کی شرح اس سے قدرے سست رفتار تھی جتنا ڈاکٹروں کو شروع میں ڈر تھا۔

وہ ایک خطرناک بیماری سے دو چار تھے اور کرسی سے اٹھ نہیں سکتے تھے۔ ہاتھ پاؤں نہیں ہلا سکتے اور بول نہیں سکتے تھے۔ لیکن وہ دماغی طور پر صحت مند رہے اور بلند حوصلگی کی وجہ سے اپنا کام جاری رکھا۔ وہ اپنے خیالات کو دوسروں تک پہنچانے اور اسے صفحے پر منتقل کرنے کے لیے ایک خاص کمپیوٹر کا استعمال کرتے تھے۔ ان کی يہ بیماری ان کو تحقيقی عمل سے روک نہ سکی۔

1985ء میں نمونیا کے باعث اسٹیفن ہاکنگ قریب المرگ ہو گئے اور انھیں بچانے کے لیے کی گئی سرجری کی وجہ سے اُن کی آواز مکمل طور پر ختم ہو گئی، لیکن اُنھوں نے کمپیوٹر کی مدد سے اپنا یہ پراجیکٹ جاری رکھا۔

انھوں نے ویل چیئر کا استعمال کیا اور وہ وائس سنتھیائزر کے بغیر بولنے کے قابل نہیں تھے۔

لیکچرز

ترمیم

اس معروف طبیعیات دان نے دنیا بھر کی یونیورسٹیوں میں لیکچرز دیے، جیسا کہ اس کی ایک تصویر شائع ہوئی جس میں وہ 2008ء جارج واشنگٹن یونیورسٹی میں لیکچر دے رہے تھے۔

شادیاں

ترمیم

22 برس کی عمر میں ان میں ایک مرض موٹر نیورون کی تشخیص ہوئی۔ ان دنوں وہ اپنی پہلی بیوی جین (اوپر تصویر میں موجود ہیں) کے ساتھ شادی کی تیاری کر رہے تھے، ڈاکٹروں کا قیاس تھا وہ زیادہ لمبی عمر نہیں جی سکیں گے۔ ان کی شادی 26 سال قائم رہی اور ان کے تین بچے ہوئے۔

ہاکنگ نے 1995ء میں اپنی ایک نرس الائن میسن سے بھی شادی کی۔ طلاق سے پہلے وہ 11 برس تک اس بندھن میں بندھے رہے۔

اپنی پہلی بیوی کو طلاق دینے کے بعد اس نے چار سال بعد اس شخص کی بیوی سے شادی کر لی جس نے اس کے لیے آواز کو پیدا کرنے والا آلہ بنایا تھا۔ بہرحال اپنی اس بیوی کو بھی اس نے 2006ء میں طلاق دینے کے لیے دستاویز کو جمع کروا دیا ہے۔

خلا کا سفر

ترمیم

2007ء میں ہاکنگ دونوں بازوں اور ٹانگوں سے مفلوج پہلے شخص بن گئے جنھوں نے بے وزنی کی حالت کا تجربہ کیا جب انھوں نے کشش ثقل کی عدم موجودگی والے خصوصی طور پر تیار کردہ ایک جہاز میں سفر کیا تھا۔ ان کا اس وقت کہنا تھا کہ ’میرے خیال میں نسل انسانی اگر خلا میں نہیں جاتی تو اس کا کوئی مستقبل نہیں ہے۔‘

تصانیف

ترمیم
  • A Brief History of Time (1988)

Black Holes and Baby Universes and Other Essays

The Universe in a Nutshell (2001)

On the Shoulders of Giants (2002)

God Created the Integers: The Mathematical Breakthroughs That Changed History

The Dreams That Stuff Is Made of: The Most Astounding Papers of Quantum Physics and How They Shook the Scientific World (2011)

My Brief History (2013)

Brief Answers to the Big Questions (2018

وفات

ترمیم

14 مارچ 2018ء بروز بدھ اسٹیفن ہاکنگ 76 برس کی عمر میں انتقال کر گئے۔

مزید دیکھیے

ترمیم

http://www.jahanescience.com/2015/08/Time-Travel.html?spref=fb

سماجی میڈیا

ترمیم

حوالہ جات

ترمیم
  1. ربط : https://d-nb.info/gnd/118761285  — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اپریل 2014 — اجازت نامہ: CC0
  2. ربط : https://d-nb.info/gnd/118761285  — اخذ شدہ بتاریخ: 22 اگست 2017
  3. ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6nk63ht — بنام: Stephen Hawking — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  4. ^ ا ب Internet Speculative Fiction Database author ID: https://www.isfdb.org/cgi-bin/ea.cgi?37485 — بنام: Stephen Hawking — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  5. Stephen Hawking dies aged 76 — اخذ شدہ بتاریخ: 14 مارچ 2018 — ناشر: بی بی سی — شائع شدہ از: 14 مارچ 2018
  6. ڈسکوجس آرٹسٹ آئی ڈی: https://www.discogs.com/artist/513542 — بنام: Stephen Hawking — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  7. ^ ا ب NooSFere author ID: https://www.noosfere.org/livres/auteur.asp?NumAuteur=2147187108 — بنام: Stephen HAWKING — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  8. ^ ا ب پ ت ٹ جی این ڈی آئی ڈی: https://d-nb.info/gnd/118761285 — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  9. این کے سی آر - اے یو ٹی شناخت کنندہ: https://aleph.nkp.cz/F/?func=find-c&local_base=aut&ccl_term=ica=xx0046498 — اخذ شدہ بتاریخ: 29 جنوری 2023
  10. Stephen Hawking dies aged 76 — اخذ شدہ بتاریخ: 14 مارچ 2018 — ناشر: بی بی سی — شائع شدہ از: 14 مارچ 2018
  11. Stephen Hawking, modern cosmology's brightest star, dies aged 76 — اخذ شدہ بتاریخ: 14 مارچ 2018 — ناشر: دی گارجین — شائع شدہ از: 14 مارچ 2018
  12. ಕಪ್ಪು ಕುಳಿಗಳ ರಹಸ್ಯ ಬೇಧಿಸಿದ್ದ ವಿಜ್ಞಾನಿ ಸ್ಟೀಫನ್ ಹಾಕಿಂಗ್ ಇನ್ನಿಲ್ಲ — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  13. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/hawking-stephen-william — بنام: Stephen William Hawking — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  14. بی این ایف - آئی ڈی: https://catalogue.bnf.fr/ark:/12148/cb120395478 — بنام: Stephen Hawking — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — عنوان : اوپن ڈیٹا پلیٹ فارم — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  15. Stephen Hawking, modern cosmology's brightest star, dies aged 76 — اخذ شدہ بتاریخ: 14 مارچ 2018 — ناشر: دی گارجین — شائع شدہ از: 14 مارچ 2018
  16. Stephen Hawking sera enterré au côté de Newton et Darwin à l'abbaye de Westminster — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 20 مارچ 2018
  17. Stephen Hawking op jeugdliteratuur.org — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 24 مارچ 2017
  18. ^ ا ب http://www.amphilsoc.org/memhist/search?creator=hawking&title=&subject=&subdiv=&mem=&year=&year-max=&dead=&keyword=&smode=advanced
  19. ربط : این این ڈی بی شخصی آئی ڈی 
  20. National Academy of Sciences member ID: http://www.nasonline.org/member-directory/members/62159.html
  21. http://www.damtp.cam.ac.uk/people/s.w.hawking/ — اخذ شدہ بتاریخ: 17 مارچ 2018
  22. How Stephen Hawking Worked — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 30 جنوری 2012
  23. جی این ڈی آئی ڈی: https://d-nb.info/gnd/118761285
  24. جی این ڈی آئی ڈی: https://d-nb.info/gnd/118761285
  25. مکمل کام یہاں دستیاب ہے: https://www.repository.cam.ac.uk/handle/1810/251038 — مصنف: اسٹیفن ہاکنگ — عنوان : Properties of expanding universeshttps://dx.doi.org/10.17863/CAM.11283
  26. مکمل کام یہاں دستیاب ہے: https://www.repository.cam.ac.uk/handle/1810/251038
  27. http://www.washingtonpost.com/wp-dyn/content/article/2009/04/20/AR2009042001571.html — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  28. Guardian topic ID: https://www.theguardian.com/education/2006/sep/06/highereducation.uk1
  29. این کے سی آر - اے یو ٹی شناخت کنندہ: https://aleph.nkp.cz/F/?func=find-c&local_base=aut&ccl_term=ica=xx0046498 — اخذ شدہ بتاریخ: 28 ستمبر 2023
  30. NBA Rumors: Post-Draft Updates for Each Team — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  31. Guardian topic ID: https://www.theguardian.com/books/belief/audio/2010/sep/10/booker-shortlist-seamus-heaney-stephen-hawking
  32. Health Care in Britain: Expat Goes for a Checkup — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 15 اگست 2009
  33. http://www.comicvine.com/stephen-hawking/4005-8290/forums/disabled-speech-bubbles-1472615/
  34. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb120395478 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  35. این کے سی آر - اے یو ٹی شناخت کنندہ: https://aleph.nkp.cz/F/?func=find-c&local_base=aut&ccl_term=ica=xx0046498 — اخذ شدہ بتاریخ: 1 مارچ 2022
  36. کونر آئی ڈی: https://plus.cobiss.net/cobiss/si/sl/conor/5745763
  37. کونر آئی ڈی: https://plus.cobiss.net/cobiss/si/sl/conor/5745763 — عنوان : ПроДетЛит
  38. این کے سی آر - اے یو ٹی شناخت کنندہ: https://aleph.nkp.cz/F/?func=find-c&local_base=aut&ccl_term=ica=xx0046498 — اخذ شدہ بتاریخ: 7 نومبر 2022
  39. Professor Stephen Hawking — ناشر: جامعہ کیمبرج
  40. Physicist Stephen Hawking accepts post at Waterloo institute — ناشر: ٹورانٹو اسٹار — شائع شدہ از: 27 نومبر 2008
  41. Hawking gives up academic title — اخذ شدہ بتاریخ: 17 مارچ 2018 — شائع شدہ از: 30 ستمبر 2009
  42. People — اخذ شدہ بتاریخ: 17 مارچ 2018
  43. ORCID Public Data File 2023 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 نومبر 2023 — https://dx.doi.org/10.23640/07243.24204912.V1 — اجازت نامہ: CC0
  44. http://old.elementy.ru/nauchno-populyarnaya_biblioteka/434041/Put_v_nebesa — اخذ شدہ بتاریخ: 23 مئی 2018
  45. https://www.space.com/15923-stephen-hawking.html
  46. Stephen Hawking: 'No hay ningún dios. Soy ateo' — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 21 ستمبر 2014
  47. Stephen Hawking's Thoughts on Atheism, God and Death — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 14 مارچ 2018
  48. http://www.senate.gov/pagelayout/reference/two_column_table/Presidential_Medal_of_Freedom_Recipients.htm
  49. Copley Medal — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  50. Award winners : Copley Medal — اخذ شدہ بتاریخ: 30 دسمبر 2018 — ناشر: رائل سوسائٹی
  51. RSA - The Albert Medal — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023 — شائع شدہ از: 1 اکتوبر 2011
  52. Past winners — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  53. گوگل بکس آئی ڈی: https://books.google.com/books?id=nZLMWpujVUcC — عنوان : Google Books — خالق: گوگل
  54. http://www.wolffund.org.il/index.php?dir=site&page=winners&cs=341 — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  55. https://www.fi.edu/laureates/stephen-w-hawking
  56. Einsteinhaus Bern — اخذ شدہ بتاریخ: 12 اگست 2023
  57. https://royalsociety.org/awards/hughes-medal/