شیخ جراح (انگریزی: Sheikh Jarrah، (عربی: الشيخ جراح)‏، عبرانی: שייח' ג'ראח‎) مشرقی یروشلم میں قدیم شہر سے 2 کلومیٹر شمال میں، جبل المشارف کی سڑک پر ایک بنیادی طور پر فلسطینی محلہ ہے۔ [1][2] اس کا نام صلاح الدین ایوبی کے معالج شیخ جراح کے تیرہویں صدی کے مقبرے کے نام پر ہے جو یہاں واقع ہے۔ جدید محلہ کی بنیاد 1865ء میں رکھی گئی تھی اور یہ آہستہ آہستہ یروشلم کے مسلم اشرافیہ خاص طور پر الحسینی خاندان کا رہائشی مرکز بن گیا۔ 1948ء کی عرب اسرائیلی جنگ یہ اردن کے زیر انتظام مشرقی یروشلم اور اسرائیل کے زیر انتظام مغربی یروشلم کے درمیان میں آزاد سرزمین سے متصل ایک علاقہ تھا، لیکن اس محلہ پر اسرائیل نے 1967ء 6 روزہ جنگ میں قبضہ کر لیا۔ کہا جاتا ہے کہ اس کی زیادہ تر فلسطینی آبادی 1948ء میں یروشلم کے طالبیہ محلے سے بے دخل ہوئے والے مہاجرین ہیں۔ [3]

شیخ جرح محلہ اور پس منظر وسطی یروشلم
اقوام متحدہ کے 2018ء کے نقشے میں شیخ جراح، زرد رنگ کا علاقہ قدیم شہر کے شمال میں فلسطینی علاقہ ہے

یہ اس وقت یہ فلسطینیوں اور اسرائیلیوں کے مابین متعدد املاک کے تنازعات کا مرکز ہے۔ اسرائیلی قوم پرست 1967ء سے علاقے سے فلسطینی آبادی بے دخل کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔ [4] پانچ دہائیوں کے عرصے میں، شیخ جراح اور اس سے ملحقہ متعدد اسرائیلی بستیوں میں اسرائیلی آباد کاری کی گئی ہے۔ [5]

تاریخترميم

بارہویں صدی میں تاسیساتترميم

 
شیخ جراح کا داخلہ کا مقام
 
شارع نابلس پر قبور السلاطین کے شمال میں شیخ جراح اور قصر الاموی

شیخ جراح کا عرب محلہ اصل میں ایک گاؤں تھا جس کا نام حسام الدین الجراحی کے نام پر تھا، جو بارہویں صدی میں یہاں رہتے تھے۔ وہ ایک امیر اور صلاح الدین ایوبی کے ذاتی معالج تھے۔ وہ فوجی رہنما تھے جس کی فوج نے یروشلم کو صلیبیوں سے آزاد کرایا۔ [6][7] شیخ جراح نے زاویہ قائم کیا جسے "زاویہ الجراحیہ" کے نام سے جانا جاتا ہے۔ [8] شیخ جراح کو اسی مدرسہ کے گراؤنڈ میں سپرد خاک کیا گیا۔ 1201ء میں اس پر ایک مقبرہ تعمیر کیا گیا جو نمازیوں اور زائرین کے لیے ایک زیارت کا مقام بن گیا۔ آٹے کی چکی کو شامل کر کے یہاں دو منزلہ پتھر کی عمارت "قصر الاموی" سترہویں صدی میں مقبرے کے سامنے تعمیر کی گئی۔ [9] کہا جاتا ہے کہ شیخ جراح کی قبر پر دعا مانگنے سے قسمت میں بہتری آتی ہے، خاص طور پر ان لوگوں کے لیے جو مرغیاں پالتے ہیں۔ [10] یہ یروشلم کا پہلا عرب مسلم اکثریتی محلہ بن گیا جو قدیم شہر کی دیواروں کے باہر تعمیر ہوا۔ مغربی حصے میں مکان چھوٹے اور زیادہ بکھرے ہوئے تھے۔ [9]

انیسویں صدی میں ترقیترميم

محلہ شیخ جراح جبل المشارف کی ڈھلوان پر قائم کیا گیا تھا اس کا نام شیخ جراح کے مقبرے کے نام پر ہے۔ [11] ابتدائی رہائشی تعمیراتی کام کا آغاز شہر کے ایک اہم رہائشی رباح الحسینی نے کیا، جس نے شیخ جراح کے مقبرے کے قریب اور باب دمشق کے باہر زیتون کے درختوں جھنڈ کے درمیان میں ایک بڑی حویلی تعمیر کی تھی۔ اس اقدام نے قدیم شہر سے تعلق رکھنے والے بہت سے دوسرے نامور مسلمان افراد کو اس علاقے میں ہجرت کرنے اور نئے مکانات تعمیر کرنے کی حوصلہ افزائی کی، [12] نشاشیبیوں سمیت پڑوس کے اوپر اور مشرقی حصوں میں مکانات تعمیر کیے۔ شیخ جراح نے 1870ء اور 1890ء کی دہائی کے درمیان میں ایک مسلمان مرکز کے طور پر پروان چڑھنا شروع کیا۔ [9] چونکہ اس کی بنیاد رباح الحسینی نے رکھی تھی جس کا گھر شیخ جراح کا مرکز تھا، اس لیے مقامی طور پر محلے کو "حسینی محلہ" کہا جاتا تھا۔ [12] یہ آہستہ آہستہ قابل ذکر الحسینی خاندان کا مرکز بن گیا جس کے ارکان بشمول یروشلم کے میئر سلیم الحسینی اور سلطنت عثمانیہ کے دار الحکومت استنبول میں وزارت تعلیم کے سابق خزانچی شکری الحسینی نے پڑوس میں اپنی رہائش گاہیں بنائیں۔ [12] دوسرے قابل ذکر افراد جو محلے میں منتقل ہوئے ان میں فائدی افندی شیخ یونس بھی شامل تھے جو مسجد اقصٰی اور قبۃ الصخرہ کے ایک پاسبان تھے اور ضلعی انتظامی کونسل کے ارکان راشد افندی النشاشیبی بھی شامل ہیں۔ [13] شارع نابلس پر 1895ء میں قدیم شہر اور امریکن کالونی کے شمال میں شیخ جراح کے مقبرے پر مشتمل ایک مسجد تعمیر کی گئی۔ [10][14] 1898ء میں انگلیکانی سینٹ جارج اسکول شیخ جراح میں تعمیر کیا گیا اور جلد ہی وہ ثانوی تعلیمی ادارہ بن گیا جہاں یروشلم کی اشرافیہ نے اپنے بیٹوں کو بھیجا۔ [12]

1900ء کے آس پاس آبادیترميم

 
1931ء میں شیخ جراح کا فضائی نظارہ

1905ء کی عثمانی مردم شماری میں، شیخ جراح ناحیہ (ذیلی ضلع) شیخ جراح کے مسلم محلوں حی الحسینی، باب الظہیرہ اور وادی الجوز پر مشتمل تھا۔ اس کے علاوہ شمعون ہتسدک اور نہالات شمعون کے یہودی محلے بھی شامل تھے۔ [15] اس کی آبادی 167 مسلم خاندانوں میں (جس میں 1،250 افراد تھے) [12]، 97 یہودی خاندانوں اور 6 مسیحی خاندانوں پر مشتمل تھی۔ [15] اس میں قدیم شہر سے باہر مسلمانوں کی سب سے بڑی تعداد موجود تھی۔ [15] زیادہ تر مسلم آبادی یروشلم میں پیدا ہوئی تھی، جس میں 185 رہائشی الحسینی خاندان کے رکن تھے۔ [12] ایک چھوٹی سی تعداد فلسطین کے دوسرے حصوں سے تعلق رکھنے والی ہے جس میں الخلیل، نابلس، رملہ اور سلطنت عثمانیہ کے دوسرے حصوں سے جس میں دمشق، بیروت، لیبیا اور اناطولیہ شامل تھے۔ [16] یہودی آبادی میں اشکنازی، سفاردی مراکشی یہودی شامل تھے، جبکہ مسیحی زیادہ تر پروٹسٹنٹ تھے۔ [12] 1918ء میں شیخ جراح ناحیہ کے جراح محلے میں تقریباً 30 مکانات تھے۔ [9]

اردنی اور اسرائیلی کنٹرولترميم

 
شیخ جراح مختصر طور پر ہیرل بریگیڈ کے قبضہ میں بھی تھا، 24 اپریل 1948ء

1948ء کی عرب اسرائیلی جنگ کے دوران میں 14 اپریل 78 یہودی، زیادہ تر ڈاکٹر اور نرسیں ہداسا اسپتال جاتے ہوئے اس وقت جاں بحق ہو گئے جب ان کے قافلے پر عرب افواج نے حملہ کیا جب وہ شیخ جراح میں جبل المشارف کی مرکزی شارع سے گذر رہا تھا۔ ان حملوں کے نتیجے میں جبل المشارف کو اس سے منقطع کر دیا گیا تھا جو بعد میں مغربی یروشلم بنا۔ [17]24 اپریل کو ہگاناہ نے آپریشن ییوسی کے طور پر شیخ جراح پر حملہ کیا لیکن وہ برطانوی فوج کے ایکشن کے بعد پسپائی پر مجبور ہو گئے۔

حوالہ جاتترميم

  1. Zirulnick, Ariel. Bryant, Christa Case. Five controversial Jewish neighborhoods in East Jerusalem Christian Science Monitor. 10 جنوری 2011
  2. Medding, Shira. Khadder, Kareem. Jerusalem committee OKs controversial construction plan آرکائیو شدہ 2011-02-22 بذریعہ وے بیک مشین CNN 07 فروری 2011
  3. Neri Livneh, 'So What's It Like Being Called an Israel-hater?، ' ہاریتز 16 مارچ 2010.
  4. Israel under pressure to rein in settlers after clashes at al-Aqsa mosque: Fresh skirmishes break out in the early hours of Sunday amid protests by Palestinians against evictions in East Jerusalem، Financial Times، 9 مئی 2021: "Jewish settlers have for decades targeted Sheikh Jarrah, a middle-class Arab neighbourhood between east and west Jerusalem, aiming to turn it into a majority Jewish area."
  5. Scott A. Bollens (6 جنوری 2000). On Narrow Ground: Urban Policy and Ethnic Conflict in Jerusalem and Belfast. SUNY Press. صفحہ 79. ISBN 978-0-7914-4413-9. These colonies — Ramot Eshkol, Givat Hamivtar, Maalot Dafna, and French Hill — were built in and adjacent to the Arab Sheikh Jarrah quarter. 
  6. The Sheikh Jarrah Affair: The Strategic Implications of Jewish Settlement in an Arab Neighborhood in East Jerusalem[مردہ ربط]، JIIS Studies Series no. 404, 2010. Yitzhak Reiter and Lior Lehrs, The Jerusalem Institute for Israel Studies. On [1]
  7. Marim Shahin (2005). Palestine: A Guide. Interlink Books. صفحات 328–329. ISBN 1-56656-557-X. 
  8. Hawari، M. (2007). Ayyubid Jerusalem (1187–1250): an architectural and archaeological study (ایڈیشن Illustrated). Archaeopress. ISBN 978-1-4073-0042-9. 
  9. ^ ا ب پ ت Kark, R. and Shimon Landman, The establishment of Muslim neighbourhoods outside the Old City during the late Ottoman period, Palestine Exploration Quarterly، vol 112, 1980, pp 113–135.
  10. ^ ا ب Winter، Dave (1999). Israel handbook: with the Palestinian Authority areas (ایڈیشن 2nd, illustrated). Footprint Travel Guides. صفحہ 189. ISBN 978-1-900949-48-4. 
  11. Oesterreicher، J. M.؛ Sinai، Anne (1974). Jerusalem (ایڈیشن Illustrated). John Day. صفحہ 22. ISBN 978-0-381-98266-9. 
  12. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج Bussow, 2011, pp. 160- 161
  13. Bussow, 2011, p. 163
  14. Ma'oz، Moshe؛ Nusseibeh، Sari (2000). Jerusalem: Points of Friction, and Beyond (ایڈیشن Illustrated). BRILL. صفحہ 143. ISBN 9789041188434. 
  15. ^ ا ب پ Adar Arnon, The quarters of Jerusalem in the Ottoman period, Middle Eastern Studies، vol. 28, 1992, pp 1–65.
  16. Bussow, 2011, p. 162
  17. Shragai، N. (2009-07-27). "The Sheikh Jarrah-Shimon HaTzadik Neighborhood". Jerusalem Center for Public Affairs. 08 جون 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2009. 

متناسقات: 31°47′40.50″N 35°13′54.75″E / 31.7945833°N 35.2318750°E / 31.7945833; 35.2318750