میں نے پیار کیا

1989ء ہندوستانی فلم

میں نے پیار کیا 1989ء کی ہندوستانی ہندی زبان کی رومانٹک فلم ہے جس کی ہدایت کاری سورج برجاتیا نے کی ہے۔ اس فلم میں سلمان خان اور بھاگیشری نے اداکاری کی اور آلوک ناتھ، موہنیش بہل، ریما لاگو، راجیو ورما، اجیت واچانی اور لکشمیکنت بردے نے معاون کردار ادا کیا۔ کہانی پریم اور سمن کے گرد گھومتی ہے۔ سمن ایک غریب میکینک کرن کی بیٹی ہے جو بیرون ملک جانے سے پہلے اسے اپنے امیر دوست کشن کے ساتھ چھوڑ دیتا ہے۔ سمن کی دوستی کشن کے بیٹے پریم سے ہو جاتی ہے اور یہ دوستی محبت میں بدل جاتی ہے۔

میں نے پیار کیا
Maine Pyar Kiya.jpg
پوسٹر
ہدایت کارسورج برجاتیہ
پروڈیوسرتاراچند برجاتیا
تحریرسی ایم اہالے[1]
سورج برجاتیہ
ستارےسلمان خان
بھاگیاشری پٹوردن
لکشمی کنت گرین
آلوک ناتھ
ریما لاگو
موہنیش بہل
موسیقیرام لکشمن (نغمہ ساز)
اسد بھوپالی (گیت)
دیو کوہلی (گیت)
سنیماگرافیاروند لاڈ
ایڈیٹرمختار احمد
پروڈکشن
کمپنی
تقسیم کارراجشری پروڈکشن
تاریخ نمائش
  • 29 دسمبر 1989ء (1989ء-12-29)
دورانیہ
192 منٹ[ا]
ملکبھارت
زبانہندی
بجٹاندازاً۔ ₹20 ملین[3]
باکس آفساندازاً۔ ₹280 ملین[4]

یہ فلم 29 دسمبر 1989ء کو ریلیز ہوئی۔ ₹20 ملین بجٹ پر راجشری پروڈکشن نے تیار کیا، یہ فلم باکس آفس پر اس کی کمائی ₹308.1 ملین ہے، 1989ء کی سب سے زیادہ کمائی کرنے والی بولی وڈ فلم اور 1980 کی دہائی میں سب سے زیادہ کمانے والی ہندوستانی فلم بن گئی۔ فلم میں 11 گانے ہیں ، مشہور گلوکارہ لتا منگیشکر نے فلم کے 11 گانوں میں سے 8 کو اپنی آواز دی۔

میں نے پیار کیا نے 6 فلم فیئر ایوارڈز جیتا، جن میں بہترین فلم، بہترین میوزک ڈائریکٹر ، بہترین گیت نگار، بہترین پس پردہ گلوکار، بہترین نیا اداکار اور بہترین نئی اداکارہ شامل ہے۔ فلم کو تیلگو، تامل اور ملیالم زبان میں ڈب کیا گیا. یہ فلم بالی ووڈ کی پہلی 10 کامیاب فلموں میں شمار ہوتی ہے۔

کہانیترميم

کرن ایک غریب میکینک ہے جو دیہی علاقوں میں اپنی ایک اکلوتی بیٹی ، سمن کے ساتھ رہتا ہے۔ انہوں نے کاروبار میں اپنی قسمت آزمانے کے بعد دبئی کا سفر کرنے کا فیصلہ کرتا ہے تاکہ وہ اپنی بیٹی کی شادی کے لئے اتنی دولت جمع کرسکے۔ اس طرح ، وہ اپنی بیٹی کو اپنے پرانے دوست کشن کے پاس چھوڑنے کا فیصلہ کرتا ہے۔ کشن ، ایک دولت مند کاروباری ہے ،اس نے گھر پر رہنے کی اجازت دے دیتا ہے۔ سمن کا دوست کشن کے بیٹے پریم سے دوستی ہے ، جو اس کو یقین دلاتا ہے کہ لڑکا اور لڑکی ایک اچھے دوست ہوسکتے ہیں۔

پریم سمن کو سیما کو پارٹی میں لے گیا، جو کشن کے کاروباری ساتھی رنجیت کی اکلوتی بیٹی کی پارٹی ہے۔ رنجیت کا بھتیجا جیون گھمنڈی اور متکبر ہے اور اس نے سمن اور پریم کی توہین کی (ان پر "صرف دوست" نہ ہونے کا الزام لگایا ہے)۔ یہ کہانی کا اہم موڑ ہے۔ سمن آنسوؤں سے پارٹی چھوڑ کر پریم سے خود کو دور کرتی ہے۔ اس موقع پر، پریم اور سمن دونوں کو احساس ہو گیا ہے کہ وہ ایک دوسرے کے ساتھ محبت کر چکے ہیں۔

پریم کی والدہ کوشالیا، پریم اور سمن کے رشتے کی گہرائی سے تحقیقات کرتی ہیں اور اس کی بہو کی حیثیت سے سمن کی منظوری دیتی ہیں ، لیکن کشن اس رشتے سے ناخوش ہیں اور سمن کو اپنا گھر چھوڑنے کو کہتا ہے۔ اسے لگتا ہے کہ سمن نے اپنی مہمان نوازی کا فائدہ اٹھایا ہے۔ کرن بیرون ملک سے واپس آتا ہے اور کشن نے اس پر پریم اور سمن کو ملانے کی سازش کا الزام لگاتا ہے۔ کرن اور کشن کا جھگڑا ہوتا ہے، اور آخر کار کرن اور سمن اپنے گاؤں لوٹ جاتے ہیں ، اور اپنے دوست کے گھر پر کرن بہت ذلیل ہوا ۔

پریم نے علیحدگی کو قبول کرنے سے انکار کردیا ، سمن کے گاؤں چلا گیا اور التجا کی کہ اس سے شادی کی اجازت دی جائے۔ کرن ، جو کشن کے الزامات سے ناراض ہے، کا کہنا ہے کہ وہ ایک شرط پر شادی کی اجازت دے گا: پریم کو یہ ثابت کرنا ہوگا کہ وہ اپنی کوشش سے اپنی بیوی کا ساتھ دے سکتا ہے اور الگ رہ سکتا ہے۔ پریم قریب کی کھدائی میں ٹرک ڈرائیور اور مزدور کی حیثیت سے کام کرنے لگتا ہے۔ مہینے کے آخر میں ، پریم نے مطلوبہ رقم کمائی ہے۔ کرن کے گھر جاتے ہوئے اس پر جیون اور گنڈوں کا ایک گروہ نے حملہ کیا جو اسے جان سے مارنے کی کوشش کر رہے تھے۔ پریم بچ گیا ، لیکن اس کی کمائی جنگ میں برباد ہوگئی۔

کرن نے پریم کی اس کوشش کو سختی سے مسترد کردیا اور وہ حملے سے متعلق پریم کی کہانی پر یقین نہیں کرسکتا ، پریم نے اپنے آپ کو ثابت کرنے کا ایک اور موقع مانگا۔ اس کا مخلص عزم کرن کے دل کو پگھلا دیتا ہے اور وہ اپنی بیٹی سمن کو پریم سے شادی کی اجازت دینے پر راضی ہوتا ہے۔ اسی دوران رنجیت پریم کے والد کشن کے پاس گیا اور اسے بتایا کہ کرن نے اس کے بیٹے، پریم کو ہلاک کر دیا۔ اس پر یقین کرنے سے قاصر ، کشن تصدیق کے لئے کرن کے پاس گیا ۔

جب پریم نے جیون کا مقابلہ کیا ، رنجیت اور اس کے حامیوں نے کشن اور کرن دونوں کو پیٹا ، جبکہ جیون نے سمن کو اغوا کرلیا۔ آخر میں ، پریم ، کرن ، اور کشن نے مشترکہ دشمن ، رنجیت ، اس کے بھتیجے جیون اور رنجیت کے حامیوں کو شکست دینے کے لئے ہاتھ ملایا ، اور پھر سمن کو بچایا۔ کرن اور کشن کے مابین تعصب کا خاتمہ ہوگیا اور پریم اور سمن نے شادی کرلی۔

کردارترميم

  • سلمان خان بطور پریم چودھری
  • بھاگیاشری پٹوردن بطورسمن شریستھا
  • آلوک ناتھ بطور کر، " شریستھا اور سمن کے والد
  • راجیو ورما بطور کِشن کمار چودھری، پریم کے والد
  • ریما لاگو بطور کوشالیا چودھری، پریم کی والدہ
  • اجیت واچانی بطور رنجن سہانی، کشن کے کاروباری ساتھی
  • ہریش پٹیل بطور رحیم چاچا
  • ہما خان بطور گلابیا
  • پروین دستور بطور سیما سہنی، رنجیت کی بیٹی
  • لکشمیکنت بردے بطور منوہر
  • موہنیش بہل بطور جیون سہانی، رنجیت کا بھتیجا
  • دلیپ جوشی بطور رامو
  • دیپ ڈھلون بطورلال میاں ٹرک ڈرائیور
  • راجو شریواستو بطور شمبو ، صفائی والا
  • شریچند مکھیجا بطور پربھو، کمپنی آفس ملازم

پروڈکشنترميم

فلم کی تیاری سے قبل راجشری پروڈکشن مالی جدوجہد کر رہی تھیں ، اور بند ہونے کے راستے پر تھی۔ ہدایتکار / مصنف سورج برجاتیا کے والد راجکمار برجاٹیا نے میں نے پیار کیا کی کہانی تجویز کی۔ برجاتیا نے میں نے پیار کیا کے اسکرین پلے لکھنے کے لئے دس مہینے وقف کیا۔ پہلے آدھی کہانی کو لکھنے میں ان کو چھ ماہ لگے اور دوسرے آدھی کہانی لکھنے میں چار ماہ لگے۔

فلم ریلیزترميم

میں نے پیار کیا کا پریمیئر 29 دسمبر 1989 کو پورے ہندوستان میں ہوا۔ فلم نے ابتدا میں ایک بہت ہی محدود ریلیز دیکھی ، جس میں صرف 29 پرنٹس تھیں بعد میں اس میں مزید ایک ہزار کا اضافہ کیا۔

باکس آفسترميم

یہ فلم 1989ء کی سب سے بڑی کمائی کرنے والی اور ہندوستان کی سب سے زیادہ کمانے والی فلموں میں سے ایک تھی۔ [5] یہ فلم 2 کروڑ کے بجٹ بنائی گئی تھی، 1990ء تک 20 کروڑ سے زیادہ کا منافع حاصل کیا، راجشری کو بند ہونے سے بچا لیا۔

میں نے پیار کیا نے 28 کروڑ حاصل کئے جو 2017ء میں تقریباً 500 کروڑ ہوتا ہے[4]یہ 1980ء کی دہائی میں سب سے زیادہ کمانے والی ہندوستانی فلم بن گئی۔ [6] ایک سروے کے مطابق ہندوستان میں اس فلم کا ٹکٹ کم از کم 30 ملین فروخت ہوا ہے۔

اس فلم کو باکس آفس انڈیا نے اسے "ہر وقت کا بلاک بسٹر" قرار دیا۔ [4]

نغمےترميم

میں نے پیار کیا کے نغمے
نمبر شمارعنوانبولگلوکار(ہ)طوالت
1."آتے جاتے ہنستے گاتے"دیو کوہلیلتا منگیشکر، ایس پی بالا سبرامنیم03:29
2."کبوتر جا جا جا"دیو کوہلیلتا منگیشکر، ایس پی بالا سبرامنیم، کورس08:24
3."آجا شام ہونے آئی"دیو کوہلیلتا منگیشکر، ایس پی بالا سبرامنیم05:14
4."انتاکشری"(بالی ووڈ کے مختلف گانوں کے اقتباسات)لتا منگیشکر، ایس پی بالا سبرامنیم، اوشا منگیشکر، شیلندر سنگھ، کورس09:08
5."دل دیوانا" (عورت)اسد بھوپالیلتا منگیشکر، کورس05:55
6."میرے رنگ میں رنگنے والی"اسد بھوپالی، دیو کوہلیایس پی بالا سبرامنیم06:46
7."دل دیوانا" (مرد)اسد بھوپالیایس پی بالا سبرامنیم05:22
8."میں نے پیار کیا"دیو کوہلیلتا منگیشکر، ایس پی بالا سبرامنیم، کورس06:55
9."کہے توہ سے سجنا"دیو کوہلیشاردا سنہا05:28
10."دل دیوانا" (جوڑی)اسد بھوپالیلتا منگیشکر،ایس پی بالا سبرامنیم01:03
11."آیا موسم دوستی کا"اسد بھوپالیلتا منگیشکر،ایس پی بالا سبرامنیم، اوشا منگیشکر، شیلندر سنگھ06:47
کل طوالت:1:01:01

ایوارڈز اور نامزدگیترميم

ایوارڈ قسم ا میدوار نتیجہ
35 واں فلم فیئر ایوارڈ بہترین فلم راجشری پروڈکشن فاتح
بہترین میوزک ڈائریکٹر رام لکشمن فاتح
بہترین گیت نگار اسد بھوپالی "دل دیوانہ" کے لئے فاتح
بہترین مرد پلے بیک سنگر "دل دیوانہ" کے لئے ایس پی بالصوبرحمانیم فاتح
بہترین مردانہ پہلی سلمان خان فاتح
بہترین خاتون پہلی فلم بھاگیشری فاتح
بہترین ڈائریکٹر سورج آر برجاتیا نامزد
بہترین اداکار سلمان خان نامزد
بہترین اداکارہ بھاگیشری نامزد
بہترین معاون اداکارہ ریما لاگو نامزد
مزاحیہ کردار میں بہترین کارکردگی لکشمیکنت بردے نامزد
بہترین گیت نگار دیو کوہلی برائے "آتے جاتے ہنستے گاتے" نامزد

اثر و رسوخترميم

کہا جاتا ہے کہ یہ فلم 2005ء کے تلگو کے بلاک بسٹر نوووستانت ننودّنٹانا (Nuvvostanante Nenoddantana)سے متاثر تھی جس کی ہدایت کاری پربھو دیوا نے کی تھی۔ بعد میں اس فلم کی وجہ سے تمل، ہندی اور کنڑ سمیت سات دیگر زبانوں میں دوبارہ فلم بنائی گئی۔ اور سلمان خان کی ایک اور فلم پیار کیا تو ڈرنا کیا اس فلم سے کچھ حد تک متاثر تھی۔

حوالہ جاتترميم

  1. "Maine Pyar Kiya". Bollywood Life. اخذ شدہ بتاریخ 15 نومبر 2017. 
  2. "Maine Pyar Kiya (1989)". British Board of Film Classification. اخذ شدہ بتاریخ 26 اگست 2014. 
  3. ^ ا ب پ "Box Office 1989". Box Office India. 15 January 2013. 15 جنوری 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  4. "Birthday Special: The Rise AND Rise Of Salman Khan". Sukanya Verma. Rediff. اخذ شدہ بتاریخ 27 دسمبر 2012. 
  5. "Top Earners 1980–1989". Box Office India. 03 مئی 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 اگست 2014. 

بیرونی روابطترميم