یہ مضمون لیبیائی شہر طرابلس کے بارے میں ہے۔ لبنان کے شہر طرابلس کے بارے میں پڑھنے کے لیے دیکھیے طرابلس الشام یا دیکھیے

  
طرابلس، لیبیا
(عربی میں: طرابلس ویکی ڈیٹا پر (P1448) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Tripoli Montage.jpg
 

طرابلس، لیبیا
پرچم
طرابلس، لیبیا
نشان

تاریخ تاسیس 7ویں صدی ق م  ویکی ڈیٹا پر (P571) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
انتظامی تقسیم
ملک Flag of Libya (1951–1969).svg لیبیا[1]  ویکی ڈیٹا پر (P17) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[2][3]
دار الحکومت برائے
تقسیم اعلیٰ لیبیا  ویکی ڈیٹا پر (P131) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جغرافیائی خصوصیات
متناسقات 32°52′31″N 13°11′15″E / 32.87519°N 13.18746°E / 32.87519; 13.18746  ویکی ڈیٹا پر (P625) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[4]
رقبہ 400000000 مربع میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2046) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بلندی 81 میٹر  ویکی ڈیٹا پر (P2044) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آبادی
کل آبادی 1126000 (2014)  ویکی ڈیٹا پر (P1082) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مزید معلومات
جڑواں شہر
اوقات 00  ویکی ڈیٹا پر (P421) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سرکاری زبان عربی  ویکی ڈیٹا پر (P37) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فون کوڈ 21  ویکی ڈیٹا پر (P473) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قابل ذکر
باضابطہ ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جیو رمز 2210247  ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

طرابلس شمالی افریقہ کے ملک لیبیا کا دار الحکومت ہے۔ اس کی آبادی تقریباً 17 لاکھ ہے۔ یہ ملک کے شمال مغربی علاقے میں صحرائے اعظم کے کناروں اور بحیرۂ روم کے ساحلوں کے درمیان واقع ہے۔ طرابلس 7 ویں صدی قبل مسیح میں فونیقی باشندوں نے قائم کیا۔ لبنان میں بھی طرابلس نامی شہر واقع ہونے کے باعث اس لیبیائی شہر کو طرابلس الغرب بھی کہا جاتا ہے۔

طرابلس ملک کا سب سے بڑا شہر، اہم بندرگاہ اور سب سے بڑا تجارتی و مالیاتی مرکز ہے۔ جامعہ الفاتح بھی یہیں واقع ہے۔ لیبیا کی طویل تاریخ کے باعث یہاں آثار قدیمہ کے کئی مقامات واقع ہیں۔ یہاں کا موسم خشک و گرم موسم گرما اور معمولی سرد موسم گرما پر مشتمل ہے جبکہ معمولی بارش بھی ہوتی ہے۔

15 اپریل 1986ء میں امریکہ نے اس شہر پر فضائی حملہ کیا تھا، جس کے لیے لیبیا پر دہشت گردی کی حمایت کا الزام تراشا گیا تھا۔ اس حملے کے نتیجے میں لیبیا کے سربراہ معمر قذافی کی لے پالک 15 ماہ کی بیٹی سمیت 40 افراد ہلاک ہوئے۔ کہا جاتا ہے کہ ہلاکتوں میں 15 عام شہری بھی شامل تھے۔ امریکی ایما پر اقوام متحدہ نے لیبیا پر پابندیاں عائد کیں جو 2003ء تک موجود رہیں۔ پابندیوں کے خاتمے کے بعد طرابلس میں معاشی سرگرمیوں میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے اور شہر کی معیشت پر مثبت اثرات مرتب ہوئے ہیں۔

جڑواں شہرترميم

نگار خانہترميم

حوالہ جاتترميم

  1. archINFORM location ID: https://www.archinform.net/ort/1228.htm — اخذ شدہ بتاریخ: 6 اگست 2018
  2.    "صفحہ طرابلس، لیبیا في GeoNames ID". GeoNames ID. اخذ شدہ بتاریخ 11 اکتوبر 2021ء. 
  3.     "صفحہ طرابلس، لیبیا في ميوزك برينز.". MusicBrainz area ID. اخذ شدہ بتاریخ 11 اکتوبر 2021ء. 
  4.     "صفحہ طرابلس، لیبیا في خريطة الشارع المفتوحة". OpenStreetMap. اخذ شدہ بتاریخ 11 اکتوبر 2021ء. 
  5. https://old.kyivcity.gov.ua/files/2018/2/15/Mista-pobratymy.pdf
  یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔