ٹیسٹ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کرنے والے نیوزی لینڈ گیند بازوں کی فہرست

کرکٹ میں، پانچ وکٹوں کا حصول (جسے"فائفر" بھی کہا جاتا ہے) [2] [3] ایک ہی اننگز میں پانچ یا زیادہ وکٹیں لینے والا بولر ہے۔ اسے ایک قابل ذکر کامیابی قرار دیا جاتا ہے۔ [4] جنوری 2024ء تک، 163 گیند بازوں نے ٹیسٹ میچ میں اپنے ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں ، [5] ان میں سے 10 نیوزی لینڈ کےگیند بازوں نے حاصل کیں۔ [6] انھوں نے چھ مختلف مخالفین کے خلاف ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کی ہیں: تین بار انگلینڈ کے خلاف، دو بار پاکستان کے خلاف اور ایک بار ہندوستان ، جنوبی افریقہ ، سری لنکا اور زمبابوے کے خلاف۔ [7] نو مواقع میں سے، نیوزی لینڈ نے 4 بار میچ جیتا، تین 3 بار ڈرا ہوا اور دو بار ہارا۔ [8] [9] [10] نیوزی لینڈ گیند بازوں نے نو مختلف مقامات پر پانچ وکٹیں حاصل کی ہیں، جن میں چھ نیوزی لینڈ سے باہر ہیں۔ سب سے حالیہ شیخ زید کرکٹ اسٹیڈیم ابوظہبی میں لیا گیا۔ [11] ٹیسٹ ڈیبیو پر 5 وکٹیں لینے والے نیوزی لینڈ کے پہلے کھلاڑی فین کریس ویل تھے جنھوں نے 1949ء میں انگلینڈ کے خلاف 168 رنز کے عوض6 وکٹیں حاصل کیں۔ [12] [13] کریس ویل، ایلکس موئیر اور کولن ڈی گرینڈہوم واحد بولر ہیں جنھوں نے ڈیبیو پر چھ وکٹیں حاصل کیں۔ چھ دیگر کھلاڑیوں نے اپنے ٹیسٹ ڈیبیو پر 5 وکٹیں حاصل کیں۔ [6] ڈی گرینڈ ہوم نے 41 رنز کے عوض 6 وکٹیں حاصل کیں، جو نیوزی لینڈ کے باؤلر کی جانب سے 2016ء میں ہیگلے اوول میں پاکستان کے خلاف ٹیسٹ ڈیبیو کی اننگز میں بہترین باؤلنگ ہے ۔ [6] [14] انھوں نے میچ میں 64 رنز کے عوض 7 وکٹیں حاصل کیں، یہ نیوزی لینڈ کے کھلاڑی کی جانب سے ڈیبیو پر ٹیسٹ میچ میں بہترین باؤلنگ ہے۔ [12] ڈی گرینڈہوم اور اعزاز پٹیل واحد کھلاڑی ہیں جنھوں نے اپنے ٹیسٹ ڈیبیو پر مین آف دی میچ کا ایوارڈ حاصل کیا۔ [14] [15] گیند بازوں میں، بروس ٹیلر واحد کھلاڑی ہیں جنھوں نے ایڈن گارڈنز ، کلکتہ میں 1964-65ء میں ہندوستان کے خلاف اپنے ٹیسٹ ڈیبیو پر "آل راؤنڈ کارنامہ انجام دیا"۔ اس نے رنز بنائے اور 86 رنز کے عوض 5 وکٹیں حاصل کیں۔ [16] پال وائزمین کی پانچ وکٹیں سب سے زیادہ اقتصادی ہیں، فی اوور 1.75 رنز کے ساتھ اور ٹم ساؤتھی کا اسٹرائیک ریٹ بہترین ہے۔نومبر 2018ء تک، یہ کارنامہ انجام دینے والے سب سے حالیہ نیوزی لینڈ گیند باز اعجاز پٹیل تھے۔ [6] موئیر، وائز مین اور پٹیل یہ کارنامہ انجام دینے والے واحد اسپن گیند باز ہیں، باقی سبفاسٹ باؤلر ہیں۔ [17] [18]

Tim Southee at a training session at the Adelaide Oval in 2009
ٹم ساؤتھی نے 2008ء میں انگلینڈ کے خلاف ٹیسٹ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں۔ [1]

چابی

ترمیم
علامت مطلب
تاریخ میچ کے انعقاد کی تاریخ یا ٹیسٹ میچوں کے لیے میچ شروع ہونے کی تاریخ
اننگز میچ کی وہ اننگز جس میں پانچ وکٹیں حاصل کی گئیں۔
اوورز اس اننگز میں کرائے گئے اوورز کی تعداد
رنز رنز مان گئے۔
وکٹیں وکٹوں کی تعداد
اوسط رنز فی اوور بولنگ اکانومی ریٹ (اوسط رنز فی اوور)
بلے باز وہ بلے باز جن کی وکٹیں پانچ وکٹوں کے مقابلے میں لی گئیں۔
نتیجہ اس میچ میں نیوزی لینڈ کی ٹیم کا نتیجہ
بولر مین آف دی میچ منتخب ہوئے۔

پانچ وکٹوں کے واقعات

ترمیم
ٹیسٹ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کرنے والے نیوزی لینڈ گیند باز
نمبر گیند باز تاریخ گراؤنڈ خلاف اننگز اوورز رنز وکٹیں اوسط رنز فی اوور بلے باز نتیجہ
1 کریس ویل, فینفین کریس ویل 13 اگست 1949 اوول, لندن   انگلستان 2 41.2 168 6 4.06 ڈرا[13]
2 موئیر, ایلکسایلکس موئیر 17 مارچ 1951 لنکاسٹر پارک, کرائسٹ چرچ   انگلستان 2 56.3 155 6 2.74 ڈرا[19]
3 ٹیلر, بروسبروس ٹیلر 5 مارچ 1965 ایڈن گارڈنز, کولکاتا   بھارت 2 23.5 86 5 3.60 ڈرا[20]
4 وائزمین, پالپال وائزمین 27 مئی 1998 آر پریماداسا اسٹیڈیم, کولمبو   سری لنکا 4 46.5 82 5 1.75 جیتا[21]
5 گیلسپی, مارکمارک گیلسپی 16 نومبر 2007 سنچورین پارک, سینچورین   جنوبی افریقا 2 30.0 136 5 4.53 شکست[22]
6 ساؤتھی, ٹمٹم ساؤتھی 22 مارچ 2008 مکلین پارک, نیپئر   انگلستان 1 23.1 55 5 2.37 شکست[1]
7 بریسویل, ڈگڈگ بریسویل 1 نومبر 2011 کوئنز اسپورٹس کلب, بولاوایو   زمبابوے 4 25.0 85 5 3.40 جیتا[23]
8 ڈی گرینڈ ہوم, کولنکولن ڈی گرینڈ ہوم 17 نومبر 2016 ہاگلے اوول, کرائسٹ چرچ   پاکستان 1 15.5 41 6 2.68 جیتا[14]
9 پٹیل, اعجازاعجاز پٹیل 16 نومبر 2018 شیخ زاید کرکٹ اسٹیڈیم, ابوظہبی   پاکستان 4 23.4 59 5 2.49 جیتا[15]
10 او رورک, ولیمولیم او رورک 13 فروری 2024 سیڈون پارک، ہیملٹن   جنوبی افریقا 3 13.5 34 5 2.45 جیتا [24]

حوالہ جات

ترمیم
  1. ^ ا ب "3rd Test: New Zealand v England at Napier, Mar 22–26, 2008"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  2. Greg Buckle (30 April 2007)۔ "Pigeon's almost perfect sendoff"۔ Canberra Times۔ 15 اگست 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016۔ McGrath didn't get the five-for that he had hoped for... 
  3. "Swinging it for the Auld Enemy – An interview with Ryan Sidebottom"۔ The Scotsman۔ 17 August 2008۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016۔ ... I'd rather take fifers (five wickets) for England ... 
  4. M. A. Pervez (2001)۔ A Dictionary of Cricket۔ Orient Blackswan۔ صفحہ: 31۔ ISBN 978-81-7370-184-9 
  5. "Bowling records: Test matches"۔ ESPNcricinfo۔ 05 جولا‎ئی 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2021 
  6. ^ ا ب پ ت "Bowling records: Test matches (New Zealand)"۔ ESPNcricinfo۔ 03 نومبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  7. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / By opposition team"۔ ESPNcricinfo۔ 29 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2017 
  8. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Won match"۔ ESPNcricinfo۔ 09 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2017 
  9. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Drawn match"۔ ESPNcricinfo۔ 29 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2017 
  10. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Lost match"۔ ESPNcricinfo۔ 09 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2017 
  11. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Ground averages"۔ ESPNcricinfo۔ 10 مئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  12. ^ ا ب "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / By year of match start"۔ ESPNcricinfo۔ 10 مئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  13. ^ ا ب "4th Test: England v New Zealand at The Oval, Aug 13–16, 1949"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  14. ^ ا ب پ "1st Test: New Zealand v Pakistan at Christchurch, Nov 17–21, 2016"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  15. ^ ا ب "1st Test, New Zealand tour of United Arab Emirates at Abu Dhabi, Nov 16-19 2018"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2018 
  16. Mohandas Menon (4 August 2016)۔ "Rahane and rain hold sway, but Chase outshines all"۔ Wisden India۔ 12 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 ستمبر 2013 
  17. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Spin bowler"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2017 
  18. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Fast bowler"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2017 
  19. "1st Test: New Zealand v England at Christchurch, Mar 17–21, 1951"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  20. "2nd Test: India v New Zealand at Kolkata, Mar 5–8, 1965"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  21. "1st Test: Sri Lanka v New Zealand at Colombo (RPS), May 27–31, 1998"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  22. "2nd Test: South Africa v New Zealand at Centurion, Nov 16–18, 2007"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  23. "Only Test: Zimbabwe v New Zealand at Bulawayo, Nov 1–5, 2011"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2016 
  24. "Second Test: New Zealand v South Africa at Hamilton, February 13 - 17, 2024"۔ ESPNcricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 فروری 2024