عبد الرزاق ملیح آبادی

عبد الرزاق ملیح آبادی (ولادت: 1895ء – وفات: 1959ء)[1] برطانوی ہند کے ایک صحافی اور مولانا ابوالکلام آزاد کے سوانح نگار تھے۔ آپ اتر پردیش کے صدر مقام لکھنؤ ضلع کے ملیح آباد میں پیدا ہوئے تھے۔ کینسر کی وجہ سے آپ کا انتقال ممبئی میں ہوا، 2013ء تک آپ کے دو بیٹے (بڑے بیٹے اس وقت راجیہ سبھا کے ممبر پارلیمنٹ اور صحافی ہیں) اور ایک بیٹی ہیں۔ عبد الرزاق ملیح آبادی کی ابتدائی تعلیم لکھنؤ (ندوات العلماء) میں ہوئی لیکن بعد میں وہ اپنی ڈاکٹریٹ کے حصول کے لئے مصر چلے گئے اور وہاں پر انہوں نے اپنی زندگی کے کئی سال گزارے۔ عبد الرزاق ملیح آبادی اردو، فارسی، عربی اور پشتو جیسی زبانوں میں روانی رکھتے تھے۔ انہوں نے نئی دہلی میں عربی شعبہ کی سربراہی میں آل انڈیا ریڈیو میں کچھ سال کام کیا۔ وہ آزادی کی جدوجہد کے دوران سعودی بادشاہت، مہاتما گاندھی اور پنڈت نہرو خاندان کے قریب تھے۔ ہندوستان کی آزادی کی جدوجہد میں اپنے کردار کی وجہ سے اعتراف کرتے ہوئے انہیں نہرو حکومت میں آزادی کے بعد کابینہ کے عہدے کی پیش کش کی گئی تھی جسے انہوں نے مسترد کردیا۔ وہ روح کے لحاظ سے ایک صحافی تھے اور انہوں نے اپنی قلم سے برطانوی راج کے خلاف لکھا اور ان کے مظالم کو عام ہندوستانی آدمی پر لے گئے۔ جدوجہد آزادی کے ایک تجربہ کار اور شاعر جوش ملیح آبادی (جن کو "شاعر انقلاب" کہا جاتا ہے) عبد الرزاق ملیح آبادی کے کزن تھے۔ وہ پٹھان نسل سے تعلق رکھتے تھے۔[2]

عبد الرزاق ملیح آبادی
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1875  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات سنہ 1959 (83–84 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ صحافی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عبد الرزاق ملیح آبادی نے ذکرِ آزاد اور آزاد کی کہانی خود آزاد کی زبانی جیسی کتابیں لکھیں[3] جو آپ کی وفات کے بعد دفتار آزاد ہند (Daftar Azad Hind publications) نے شائع کیں۔ انہوں نے خلافت تحریک میں حصہ لیا جہاں وہ استنبول سے شائع ہونے والے عربی اور اردو میں ایک جریدے جہان اسلام کے اسٹاف ممبر تھے۔ وہ کولکتہ[4][5] سے شائع ہونے والے اردو روزنامہ آزاد ہند کے بانی ایڈیٹر تھے اور کولکاتا میں قیام کے دوران آزاد کے بہت قریب تھے جہاں وہ اپنی جوانی کے دوران اور تحریک آزادی کے دور میں رہے۔[6]عبد الرزاق ملیح آبادی، احمد سعید ملیح آبادی کے والد ہیں جو 03 اپریل 2008ء سے 02 اپریل 2014ء تک راجیہ سبھا کے(آزاد امیدوار) رکن پارلیمنٹ تھے۔ عبد الرزاق ملیح آبادی کی وفات کے بعد اردو روزنامہ آزاد ہند کے ایڈیٹر احمد سعید ملیح آبادی تھے اس وقت یہ اخبار سردھا گروپ کی ملکیت ہے۔[7]

حوالہ جاتترميم

  1. Qureshi، M. Naeem. Pan-Islam in British Indian politics: a study of the Khilafat Movement. BRILL. صفحہ 65. 
  2. ARSH MALSIANI (1976). ABUL KALAM AZAD. Publications Division Ministry of Information & Broadcasting. صفحات 106–. ISBN 978-81-230-2264-2. When Azad heard about this incident, he began to tease him and said, “Maulvi Saheb, you are no Pathan. Perhaps you are a Sheikh. How could a Pathan of Malihabad keep quiet after being abused ?” Abdur Razzak retorted: “It was no abuse, just a compliment to your paper.” Azad was pleased with this retort and complimented Abdur Razzak on his self-control. 
  3. By Aijaz Ahmad (2002). Lineages of the Present: Ideology and Politics in Contemporary South Asia. Verso. صفحہ 78. 
  4. Ahmed، Firoz Bakht. "Forgotten crusader". دکن ہیرالڈ. اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2013. 
  5. Ahmed، Firoz Bakht. "Forgotten crusader". دکن ہیرالڈ. اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2013. 
  6. Ahmed، Firoz Bakht. "Memorial for Maulana Azad in Kolkata". The Milli Gazette. New Delhi. اخذ شدہ بتاریخ 04 اکتوبر 2016. 
  7. "RICE scraps Channel 10 deal with 'tainted firm'". دی ٹائمز آف انڈیا. اخذ شدہ بتاریخ 23 اپریل 2013.