دار العلوم ندوۃ العلماء

بھارت کا ایک قدیم اور اہم جامعہ

دار العلوم ندوۃ العلماء لکھنؤ، بھارت میں واقع ایک اسلامی ادارہ ہے۔[1][2][3] اسے 26 ستمبر 1898ء کو علمائے کرام کی کونسل ندوۃ العلماء نے قائم کیا تھا۔

دار العلوم ندوۃ العلماء
Nadwatul Ulama Lucknow 1.jpg
دار العلوم ندوۃ العلماء کا ایک منظر
دیگر نام
ڈی یو این یو، ندوہ
شعارإلى الإسلام من جديد (از سر نو اسلام کی طرف)
قسمجامعہ اسلامیہ
قیام26 ستمبر 1898 (122 سال قبل) (1898-09-26)
بانیمحمد علی مونگیری
چانسلرمحمد رابع حسنی ندوی
پرنسپلسعید الرحمن اعظمی ندوی
طلبہ6500+
انڈر گریجویٹ4000
پوسٹ گریجویٹ1500
پتہ504/21G, منکامیشور مندر، مکارم نگر، حسن گنج، لکھنؤ، اتر پردیش، 226007، بھارت
کیمپسشہری
ویب سائٹnadwa.in

یہ تعلیمی ادارہ پوری دنیا سے مسلم طلبا کی ایک بڑی تعداد کا مرجع ہے۔ندوۃ العلماء نے حنفی (غالب جماعت) ، شافعی اور اہل حدیث مسالک کے علما و طلبا کی ایک بڑی تعداد کو تیار کیا ہے۔ مزید برآں یہ کہ یہ ادارہ خطہ کے ان قلیل معہدوں میں سے ایک ہے، جو مکمل طور پر عربی زبان میں اسلامی علوم کی تعلیم دیتے ہیں۔

تاریخترميم

ندوۃ العلماء اس مقصد کے ساتھ تشکیل دی گئی تھی کہ اس میں عقائد میں کچھ اختلافات سے قطع نظر اسلام کے تمام فرقوں کو اکٹھا کیا جائے۔[1]

ندوۃ کا مطلب اسمبلی اور مجلس ہے ، یہ نام اس لیے رکھا گیا؛ کیوں کہ اسے مختلف مذہبی مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے بھارتی علما کی ایک جماعت نے تشکیل دیا تھا۔ دار العلوم ندوۃ العلماء؛ ندوۃ العلماء کا تعلیمی ادارہ ہے۔ندوۃ العلماء 1893ء میں تشکیل پایا تھا، 2 ستمبر 1898ء کو ندوہ کے دفتر کو لکھنؤ منتقل کردیا گیا تھا اور 26 ستمبر 1898ء کو دارالعلوم ندوۃ العلماء شروع کیا گیا تھا۔ اور وہاں جدید علوم ، ریاضی ، پیشہ ورانہ تربیت اور شعبہ انگریزی کے اضافہ کے ساتھ اسلامی نصاب کی تجدید کر دی گئی۔[1][4][5]

انتظامیہترميم

ندوۃ العلماء کا ناظم؛ دار العلوم ندوۃ العلماء کا چانسلر (سرپرست) ہوتا ہے۔ 2000ء میں محمد رابع حسنی ندوی چانسلر بنائے گئے۔[6]

مولانا حفیظ اللہ بندولی کو دار العلوم ندوۃ العلماء کا پہلا مہتمم مقرر کیا گیا تھا۔[7] 2000ء میں جب محمد رابع حسنی ندوی چانسلر مقرر کیے گئے تبھی سعید الرحمن اعظمی ندوی مہتمم بنائے گئے۔[6]

مایا ناز فضلاترميم

دارالعلوم ندوۃ العلماء سے فارغ التحصیل فاضل کو عام طور پر ندوی کہا جاتا ہے۔ بعض مایا ناز فضلا کے نام مندرجۂ ذیل ہیں:

علی احمد ندوی

مزید دیکھیںترميم

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ شاہد صدیقی (27 مارچ 2017). "Decolonisation and the Nadwatul Ulama". دی نیوز انٹرنیشنل (اخبار). اخذ شدہ بتاریخ 06 مارچ 2020. 
  2. Edicts issued by Indian maulanas leave Muslim voters confused Dawn (newspaper), Published 14 April 2014, Retrieved 6 March 2020
  3. "Darul Uloom Nadwatul Ulama, Lucknow, India Accurate Prayer Times أوقات الصلاة, Qibla اتجاه القبلة Mosques (Masjids), Islamic Centers, Organizations and Muslim Owned Businesses". Islamicfinder.org website. 1 January 1980. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2020. 
  4. English Department inaugurated at Darul Uloom Nadwatul Ulama The Siasat Daily (newspaper), Published 5 September 2018, Retrieved 7 March 2020
  5. اسحاق جلیس ندوی. تاریخ ندوۃ العلماء. 1. صفحہ 212. 
  6. ^ ا ب "Principal of Darul Uloom Nadwatul Ulama". nadwa.in. اخذ شدہ بتاریخ 07 جولا‎ئی 2021. 
  7. اسحاق جلیس ندوی. تاریخ ندوۃ العلماء. 1. صفحہ 220. 

کتابیاتترميم

  • اسحاق جلیس ندوی (2017). تاریخ ندوۃ العلماء. 1. لکھنؤ: مجلس صحافت و نشریات. 
  • شمس تبریز خان (2015). تاریخ ندوۃ العلماء. 2. لکھنؤ: مجلس صحافت و نشریات. 

بیرونی روابطترميم

  1. دارالعلوم ندوۃ العلماء آفیشل ویب سائٹ
  2. آفیشل ویب سائٹ
  3. دار المصنفین شبلی اکیڈمی

متناسقات: 26°51′54″N 80°55′57″E / 26.8651°N 80.9325°E / 26.8651; 80.9325