مظاہر علوم وقف

اسلامی تعلیمی ادارہ
(مظاہر علوم سے رجوع مکرر)

مظاہر علوم وقف (اردو: جامعہ مظاہر علوم، سہارنپور) ایک اسلامی مدرسہ ہے جو سہارنپور، اتر پردیش میں واقع ہے۔ جسے نومبر 1866ء میں سعادت علی فقیہ نے شروع کیا اور محمد مظہر نانوتوی اور احمد علی سہارنپوری نے اسے پروان چڑھایا؛ اسے ہندوستان کا دوسرا سب سے زیادہ بااثر اور بڑا دیوبندی مدرسہ سمجھا جاتا ہے۔ مدرسہ کے ابتدائی فضلا میں مشہور محدث خلیل احمد سہارنپوری شامل ہیں۔ یہ مدرسہ 1988ء میں منقسم ہو گیا، جس کے نتیجے میں مظاہر علوم جدید کا قیام عمل میں آیا اور تب سے مظاہر علوم قدیم کو ’مظاہر علوم وقف قدیم' سے موسوم کیا جاتا ہے۔[1][2]

مظاہر علوم
مدرسہ کا داخلی دروازہ
قسمجامعہ اسلامیہ
قیام9 نومبر 1866 (157 سال قبل) (1866-11-09)
بانیان
ریکٹرمولانا محمد سعیدی
مقامسہارنپور، اترپردیش، بھارت

مدرسے کے موجودہ مہتمم و متولی مولانا محمد سعیدی ہیں۔

تاریخ ترمیم

مظاہر علوم کا قیام "مظہر علوم"؛[3] کے نام سے 9 نومبر 1866ء کو، مدرسہ دیوبند کی بنیاد کے چھ ماہ بعد عمل میں آیا تھا۔[4][5][6] اس کے بانیوں میں احمد علی سہارنپوری، محمد مظہر نانوتوی، قاضی فضل الرحمان اور سعادت علی فقیہ شامل تھے۔[7] مظاہر علوم کو دار العلوم دیوبند کے بعد دوسرا بڑا مدرسہ سمجھا جاتا ہے۔[8]

 
مظاہر علوم کی قدیم ترین عمارتوں میں سے ایک

بانیوں کے علاوہ؛ دور اول کے اساتذہ میں احمد حسن کانپوری، سعادت حسین بہاری، سخاوت علی انبیٹھوی اور محمد صدیق انبیٹھوی شامل ہیں۔[9] دور اول کے فضلا میں خلیل احمد سہارنپوری، مشتاق احمد انبیٹھوی اور قمر الدین سہارنپوری شامل ہیں۔[10] محرم 1338 ھ میں، مدرسے نے اپنا دارالافتاء قائم کیا۔ مدرسے کے مفتیان کرام میں اشفاق الرحمان کاندھلوی، محمود حسن گنگوہی، عبد القیوم رائے پوری اور محمد شعیب بستوی شامل ہیں۔[11]

حالیہ ترقیاں ترمیم

1988ء میں مظاہر علوم سے الگ کرکے مظاہر علوم جدید کا قیام عمل میں آیا۔[1][12][13]

نصاب ترمیم

مدرسہ میں درس نظامی کا نصاب پڑھایا جاتا ہے۔ مدرسہ کے سابق ناظم عبد اللطیف مظفر نگری نے درس نظامی کے نصاب کا تفصیلی و مدلل دفاع کیا تھا جب بعض لوگوں کی طرف سے ان سے تجدیدِ نصاب کی بات کہی گئی تھی۔ مدرسے نے نصاب میں کچھ کتابیں بروقت تبدیل کی ہیں، لیکن انھوں نے اس میں مکمل ترمیم نہیں کی ہے اور وہ تبدیلیوں یا نظاموں سے متفق نہیں ہیں۔[14]

انتظامیہ ترمیم

مظاہر علوم اہل سنت کے عقائد اور ابو حنیفہ کی فقہ کا پیرو ہے۔ یہ رشید احمد گنگوہی اور خلیل احمد سہارنپوری کی پیروی کرتے ہوئے تصوف کے سلسلہ چشتیہ پر عامل ہے۔[15] مدرسہ صرف تعلیمی مقاصد پر توجہ مرکوز کرتا ہے۔ یہ سیاست پر بحث کرنے سے دور رہا ہے۔[16]

مدرسے کا انتظام روز اول سے مقامی ارکان کے زیر انتظام رہا تھا۔ مقامی ارکان کے اختلافات کی وجہ سے، رشید احمد گنگوہی کو 1896ء میں مدرسہ کا سرپرست اعلیٰ مقرر کیا گیا۔ گنگوہی 1319 ھ میں عہدے سے مستعفی ہو گئے[17] اور 3 جنوری 1903ء کو مدرسے کے امور کی دیکھ بھال کے لیے "مجلس شوریٰ سرپرستان" کے نام سے ایک انتظامی کمیٹی تشکیل دی گئی، جس کے اولین ارکان میں عبد الرحیم رائے پوری، اشرف علی تھانوی اور ذوالفقار علی دیوبندی شامل تھے۔[18]

عبد الرحیم رائے پوری، اشرف علی تھانوی، محمود حسن دیوبندی، فضل الرحمن سہارنپوری، خلیل احمد سہارنپوری، عبد القادر رائے پوری، عاشق الہی میرٹھی، محمد الیاس کاندھلوی، محمد زکریا کاندھلوی، محمد یوسف کاندھلوی، انعام الحسن کاندھلوی، افتخار الحسن کاندھلوی، محمود حسن گنگوہی اور غلام محمد وستانوی جیسے علما مجلس شوریٰ کے رکن رہے ہیں۔[19]

نشریات ترمیم

مظاہر علوم ایک ماہانہ جریدے کے طور پر آئینہ مظاہر علوم شائع کرتا ہے۔[2] مدرسے کے دار الافتاء کے جاری کردہ فتاویٰ کو ریکارڈ میں رکھا گیا ہے۔ خلیل احمد سہارنپوری کے جاری کردہ فتاویٰ کو محمد زکریا کاندھلوی نے مرتب کرکے فتاویٰ خلیلیہ کے نام سے شائع کیا۔[20]

مہتمم حضرات ترمیم

سعادت علی سہارنپوری کو مدرسہ کا پہلا ریکٹر مقرر کیا گیا۔[21] مظاہر علوم کی تقسیم اور مظاہر علوم جدید قیام کے بعد؛ مظفر حسین اجراڑوی [22]، جو متحدہ مدرسہ کے آخری مہتمم تھے؛ 2003ء میں اپنی وفات تک مظاہر علوم میں اس عہدے پر فائز رہے۔[23] ان کے جانشین محمد سعیدی ہوئے۔[23] مدرسے کے ابتدائی سالوں میں، مدرسے کے انتظامی کام بھی ایک نائب مہتمم کے ذریعے انجام دیے جاتے تھے۔ عبد الواحد خان نے 1881 تا 1896ء اس عہدے پر خدمات انجام دیں اور اس طرح تاریخوں میں ابہام نظر آتا ہے؛ یہاں تک کہ مہتمم کا مستقل عہدہ اپنایا گیا جو منشی مقبول احمد کے بعد ترتیب وار ہے۔[21]

ذیل میں مدرسے کے مہتمم حضرات کی فہرست ہے۔[24]

نمبر نام آغازِ منصب اختتامِ منصب
1 سعادت علی سہارنپوری 1866ء 1870ء
2 فضل الرحمان سہارنپوری 1866ء 1908ء
3 علی محمد 1896ء 1907ء
4 اکرام الحق 1907ء 1908ء
5 منشی مقبول احمد 1910ء 1916ء
6 منشی فضل حق 1917ء 1918ء
7 بشیر حسن نگینوی 1919ء 1920ء
8 خلیل احمد سہارنپوری 1920ء 1925ء
9 عنایت الٰہی 1925ء 1928ء
10 عبد اللطیف مظفر نگری 1928ء 1954ء
11 محمد اسد اللہ 1954ء 1979ء
12 مظفر حسین 1980ء 2003ء
13 محمد سعیدی 2003ء بر سر منصب

مایۂ ناز فضلا ترمیم

بعض مایۂ ناز فضلا کے نام درج ذیل ہیں:

حوالہ جات ترمیم

  1. ^ ا ب سہارنپوری 2005, p. 379.
  2. ^ ا ب قاسمی 2013, pp. 347–348.
  3. سہارنپوری 2005, p. 108.
  4. برنن ڈی انگرام (2019)۔ "'Modern' Madrasa: Deoband and Colonial Secularity" [جدید مدرسہ: دیوبند اور نوآبادیاتی سیکولرٹی]۔ Historical Social Research / Historische Sozialforschung۔ 44 (4): 211۔ JSTOR 26747455۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 مئی 2021 
  5. سید محبوب رضوی۔ History of The Dar al-Ulum Deoband [تاریخ دار العلوم دیوبند1 (پہلا ایڈیشن، 1980ء ایڈیشن)۔ ادارہ اہتمام، دارالعلوم دیوبند۔ صفحہ: 356 
  6. سہارنپوری 2005, p. 68.
  7. سہارنپوری 2005, p. 70.
  8. سہارنپوری 2005, p. 67.
  9. سہارنپوری 2005, p. 109.
  10. سہارنپوری 2005, p. 116.
  11. سہارنپوری 2005, pp. 333–334.
  12. ڈیچرچ ریٹز۔ "Change and Stagnation in Islamic Education: The Dar al-Ulum of Deoband after the Split in 1982 [اسلامی تعلیم میں تبدیلی اور جمود: 1982ء میں تقسیم کے بعد دیوبند کا دار العلوم]"۔ $1 میں فاریش اے. نور، یوگیندر سکند، مارٹن وین برونیسن۔ The Madrasa in Asia: Political Activism and Transnational Linkages [ایشیا میں مدرسہ: سیاسی سرگرمی اور بین الاقوامی روابط] (2008 ایڈیشن)۔ ایمسٹرڈیم: ایمسٹرڈیم یونیورسٹی پریس۔ صفحہ: 89۔ ISBN 978-90-5356-710-4 
  13. محمد اللہ خلیلی قاسمی (26 مئی 2011)۔ "Madrasa Mazahir Uloom Saharanpur 1866-2011" [مدرسہ مظاہر علوم سہارنپور 1866-2011]۔ 23 اکتوبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 مئی 2021 
  14. سہارنپوری 2005, pp. 131–132.
  15. سہارنپوری 2005, p. 217.
  16. سہارنپوری 2005, pp. 219–220.
  17. سہارنپوری 2005, p. 377.
  18. سہارنپوری 2005, p. 122.
  19. سہارنپوری 2005, pp. 198–199، 377.
  20. سہارنپوری 2005, p. 336.
  21. ^ ا ب سہارنپوری 2005, pp. 375–376.
  22. https://amuslim.org/book.php?b=5287&p=166
  23. ^ ا ب ناصر الدین مظاہری (17 نومبر 2012)۔ "مولانا محمد سعیدی"۔ algazali.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مئی 2021 
  24. Saharanpuri 2005, pp. 375–376.

کتابیات ترمیم

  • محمد شاہد سہارنپوری (2005)۔ علماء مظاہر علوم اور ان کی علمی و تصنیفی خدمات۔ 1۔ سہارنپور: مکتبہ یادگارِ شیخ 
  • نایاب حسن قاسمی (2013)۔ دار العلوم دیوبند کا صحافتی منظر نامہ۔ صفحہ: 347–348 

مزید پڑھیے ترمیم

متناسقات: 29°41′48.12″N 77°40′34.82″E / 29.6967000°N 77.6763389°E / 29.6967000; 77.6763389