ٹیسٹ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کرنے والے ویسٹ انڈیزکے گیند بازوں کی فہرست

کرکٹ میں، پانچ وکٹوں کا حصول (جسے "فائفر" بھی کہا جاتا ہے) سے مراد ایک ہی اننگز میں 5 یا زیادہ وکٹیں لینے والا باؤلر ہے جسے ایک اہم کامیابی قرار دیا جا رہا ہے۔ [2] جنوری 2024ء تک، مجموعی طور پر 170 کرکٹ کھلاڑیوں نے ٹیسٹ میچ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں ، [3] ان میں سے دس ویسٹ انڈین کھلاڑیوں نے حاصل کیں۔ [4] انھوں نے پانچ مختلف حریفوں کے خلاف ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں ان میں چار بار انگلینڈ کے خلاف، دو بار ہندوستان کے خلاف اور دو بار آسٹریلیا ، پاکستان اور سری لنکا کے خلاف یہ کارنامہ شامل ہے۔ [5] نو مواقع میں سے، ویسٹ انڈیز نے چار بار میچ جیتا اور ایک بار ڈرا ہوا ۔ [6] [7] کھلاڑیوں نے تین مختلف مقامات دو ویسٹ انڈیز اور ایک بیرون ملک۔ پر پانچ وکٹیں حاصل کیں، [8] ویسٹ انڈیز کے کسی کھلاڑی کے لیے یہ کارنامہ حاصل کرنے کا سب سے عام مقام کنگسٹن ، جمیکا میں سبینا پارک ہے، جہاں یہ پانچ مرتبہ ہوا ہے۔ [8] بیرون ملک ہونے والے تینوں واقعات انگلینڈ کے مانچسٹر کے اولڈ ٹریفورڈ میں ہوئے۔ [8] [9]

Darren Sammy at the Prime Ministers XI cricket match in Canberra in 2010.
ڈیرن سیمی نے 2007ء میں ٹیسٹ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں [1]

ہائنس جانسن وہ پہلے ویسٹ انڈین کھلاڑی تھے جنھوں نے اپنے ٹیسٹ ڈیبیو پر 5 وکٹیں حاصل کیں، انھوں نے 1948ء میں انگلینڈ کے خلاف 41 رنز کے عوض 5 وکٹیں حاصل کیں۔ [10] [11] الف ویلنٹائن ، ڈیرن سیمی اور فرینکلین روز نے بالترتیب آٹھ، سات اور چھ وکٹیں حاصل کیں، جبکہ چھ دیگر نے ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں۔ [4] ویلنٹائن نے 104 رنز کے عوض آٹھ وکٹیں حاصل کیں جو اولڈ ٹریفورڈ، مانچسٹر میں 1950ء میں انگلینڈ کے خلاف ڈیبیو پر ویسٹ انڈین باؤلر کی بہترین باؤلنگ ہے ۔ انھوں نے میچ میں 204 رنز کے عوض گیارہ وکٹیں حاصل کیں۔ [12] جانسن اور ویلنٹائن واحد ویسٹ انڈین کھلاڑی ہیں جنھوں نے ڈیبیو پر ایک میچ میں دس وکٹیں حاصل کیں۔ جانسن صرف نو بولرز میں سے ایک ہیں جنھوں نے ڈیبیو پر دو پانچ وکٹیں حاصل کیں ۔ [13] ان باؤلرز میں، جانسن سب سے زیادہ 1.17 رنز فی اوور کے ساتھ، کفایتی رہا ہے، [14] اور سیمی کا اسٹرائیک ریٹ بہترین ہے۔ یہ کارنامہ انجام دینے والے سب سے حالیہ باؤلر سیمی تھے جنھوں نے 2007ء میں انگلینڈ کے خلاف اپنے پہلے ٹیسٹ میں 66 رنز کے عوض 7 وکٹیں حاصل کیں۔ [1] [4]

چابی

ترمیم
علامت مطلب
گیند باز وہ بولر جس نے پانچ وکٹیں حاصل کیں۔
میچ میں 10 یا اس سے زیادہ وکٹیں لیں۔
باؤلر کو مین آف دی میچ منتخب کیا گیا۔
تاریخ ٹیسٹ میچ شروع ہونے کی تاریخ
زمین ٹیسٹ کرکٹ گراؤنڈ جہاں میچ کھیلا گیا تھا۔
خلاف جس ٹیم کے خلاف بولر کھیل رہا تھا۔
سرائے اس میچ کی اننگز جس میں پانچ وکٹیں حاصل کی گئیں۔
اوورز اننگز میں گیندوں کی تعداد
رنز۔ رنز نے قبول کیا۔
وکٹیں لی گئی وکٹیں کی تعداد
شماریات بولنگ اکانومی ریٹ (اوسط رنز فی اوور)
بلے باز وہ بلے باز جن کی وکٹیں پانچ وکٹوں کے حصول میں لی گئی تھیں۔
نتیجہ اس میچ میں ویسٹ انڈیز ٹیم کے لیے نتیجہ

پانچ وکٹوں کے واقعات

ترمیم
ویسٹ انڈین گیند بازوں نے ٹیسٹ ڈیبیو پر پانچ وکٹیں حاصل کیں۔
نمبر بولر تاریخ گراؤنڈ خلاف اننگ اوور رنز وکٹ اکانومی ریٹ بلے باز نتیجہ
1 جانسن, ہائنسہائنس جانسن 27 مارچ 1948 سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا   انگلستان 1 34.5 41 5 1.17 جیتا[11]
3 31.0 55 5 1.77
2 ویلنٹائن, الفالف ویلنٹائن 8 جون 1950 اولڈ ٹریفرڈ, مانچسٹر, انگلینڈ   انگلستان 1 50.0 104 8 2.08 شکست

4 کنگ, لیسٹرلیسٹر کنگ 13 اپریل 1962 سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا   بھارت 2 19.0 46 5 2.42 جیتا[15]
5 شیفرڈ, جانجان شیفرڈ 12 جون 1969 اولڈ ٹریفرڈ, مانچسٹر, انگلینڈ   انگلستان 1 58.5 104 5 1.76 شکست[16]
6 روز, فرینکلینفرینکلین روز 6 مارچ 1997 سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا   بھارت 2 33.0 100 6 3.03 ڈرا[17]
7 پیری, نیہیمیانیہیمیا پیری 13 مارچ 1999 سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا   آسٹریلیا 3 26.0 70 5 2.69 جیتا[18]
8 ایڈورڈز, فیڈلفیڈل ایڈورڈز 27 جون 2003 سبینا پارک, کنگسٹن, جمیکا   سری لنکا 1 15.4 36 5 2.29 جیتا[19]
9 سیمی, ڈیرنڈیرن سیمی 7 جون 2007 اولڈ ٹریفرڈ, مانچسٹر, انگلینڈ   انگلستان 3 21.3 66 7 3.06 شکست[1]
10 جوزف, شمرشمر جوزف 18 جنوری 2024 ایڈیلیڈ اوول، ایڈیلیڈ، آسٹریلیا   آسٹریلیا 2 20 94 5 4.70 شکست
  1. ^ ا ب پ "3rd Test: England v West Indies at Manchester, 7–11 June 2007"۔ ESPNcricinfo۔ 26 جون 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  2. M. A. Pervez (2001)۔ A Dictionary of Cricket۔ Orient Blackswan۔ صفحہ: 31۔ ISBN 978-81-7370-184-9۔ 22 جنوری 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  3. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Overall figures"۔ ESPNcricinfo۔ 05 جولا‎ئی 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2021 
  4. ^ ا ب پ "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Overall figures (West Indies)"۔ ESPNcricinfo۔ 17 جولا‎ئی 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  5. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / By opposition team"۔ ESPNcricinfo۔ 09 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  6. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Matches won"۔ ESPNcricinfo۔ 09 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  7. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Match drawn"۔ ESPNcricinfo۔ 02 اگست 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  8. ^ ا ب پ "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Each ground"۔ ESPNcricinfo۔ 09 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  9. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Ground averages"۔ ESPNcricinfo۔ 09 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  10. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / By year of match start"۔ ESPNcricinfo۔ 02 اگست 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  11. ^ ا ب "4th Test: West Indies v England at Kingston, 27 March–1 April1948"۔ ESPNcricinfo۔ 10 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  12. "1st Test: England v West Indies at Manchester, Jun 8–12, 1950"۔ ESPNcricinfo۔ 11 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  13. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Ten or more wickets in a match"۔ ESPNcricinfo۔ 03 اگست 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  14. "Statistics / Statsguru / Test matches / Bowling records / Best economy rate"۔ ESPNcricinfo۔ 03 اگست 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  15. "5th Test: West Indies v India at Kingston, Apr 13–18, 1962"۔ ESPNcricinfo۔ 11 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  16. "1st Test: England v West Indies at Manchester, 12–17 June 1969"۔ ESPNcricinfo۔ 08 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  17. "1st Test: West Indies v India at Kingston, 6–10 March 1997"۔ ESPNcricinfo۔ 11 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  18. "2nd Test: West Indies v Australia at Kingston, 13–16 March 1999"۔ ESPNcricinfo۔ 26 جون 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017 
  19. "2nd Test: West Indies v Sri Lanka at Kingston, 27–29 June 2003"۔ ESPNcricinfo۔ 11 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017