مرکزی مینیو کھولیں

انڈین نیشنل کانگریس

بھارت کی بڑی سیاسی جماعت

انڈین نیشنل کانگریس (جسے کانگریس پارٹی اور آئی این سی بھی کہا جاتا ہے) بھارت کی ایک بڑی سیاسی جماعت ہے۔ جماعت کا قیام دسمبر 1885ء میں عمل میں آیا جب ایلن اوکٹیوین ہیوم، دادابھائی نوروجی، ڈنشا واچا، ومیش چندر بونرجی، سریندرناتھ بینرجی، مونموہن گھوش اور ولیم ویڈربرن نے اس کی بنیاد رکھی۔ اپنے قیام کے بعد یہ ہندوستان میں برطانوی راج کے خلاف جدوجہد کرنے والی ایک اہم جماعت بن گئی اور تحریک آزادی ہند کے دوران اس کے ڈیڑھ کروڑ سے زائد اراکین تھے۔

انڈین نیشنل کانگریس
भारतीय राष्ट्रीय काँग्रेस
چیئرمین سونیا گاندھی
پارلیمانی چیئرپرسن سونیا گاندھی
لوک سبھا رہنما ملکارجن کھڑگے
راجیہ سبھا رہنما غلام نبی آزاد
(راجیہ سبھا میں قائد حزب اختلاف)
تاسیس 28 دسمبر 1885؛ 133 سال قبل (1885-12-28)
صدر دفتر 24، اکبر روڈ، نئی دہلی 110001
اخبار کانگریس سندیش
طلبا تنظیم نیشنل اسٹوڈینٹس یونین آف انڈیا
یوتھ ونگ انڈین یوتھ کانگریس
خواتین وِنگ مہیلا کانگریس
لیبر ونگ انڈین نیشنل ٹریڈ یونین کانگریس
نظریات
سیاسی حیثیت وسط بائیں بازو[2]
بین الاقوامی اشتراک پروگریسیو الائنس[3]
ای سی آئی حیثیت قومی جماعت[4]
اتحاد متحدہ ترقی پسند اتحاد (یو پی اے)
لوک سبھا میں نشستیں
52 / 545
[5](موجودہ 541 ارکان + 1 اسپیکر)
راجیہ سبھا میں نشستیں
50 / 245
(موجودہ 244 ارکان)[6]
حکومت میں ریاستوں و یونین علاقوں کی تعداد
6 / 31
)
انتخابی نشان
Hand INC.svg
ویب سائٹ
www.inc.in

پاکستان کے بانی محمد علی جناح بھی مسلم لیگ میں شمولیت سے قبل اس جماعت میں شامل رہے ہیں جبکہ ہندوستان کی تاریخ کی کئی عظیم شخصیات بھی اس جماعت سے وابستہ رہی ہیں جن میں موہن داس گاندھی، جواہر لعل نہرو، ولبھ بھائی پٹیل، راجندرہ پرساد، خان عبدالغفار خان اور ابو الکلام آزاد زیادہ معروف ہیں۔ ان کے علاوہ سبھاش چندر بوس بھی کانگریس کے سربراہ رہے تھے تاہم انہیں اشتراکی نظریات کی وجہ سے جماعت سے نکال دیا گیا۔

بعد آزاد تقسیم کے معروف کانگریسی رہنماؤں میں اندرا گاندھی اور راجیو گاندھی معروف ہیں۔

1947ء میں تقسیم ہند کے بعد یہ ملک کی اہم سیاسی جماعت بن گئی، جس کی قیادت بیشتر اوقات نہرو گاندھی خاندان نے کی۔ 15 ویں لوک سبھا (2009ء تا حال) میں 543 میں سے اس کے 206 اراکین تھے۔ یہ جماعت بھارت کے حکمران یونائیٹڈ پروگریسیو الائنس کی سب سے اہم رکن ہے۔ یہ بھارت کی واحد جماعت ہے جس نے گزشتہ تین انتخابات (1999ء، 2004ء، 2009ء) میں 10 کروڑ سے زائد ووٹ حاصل کیے ہیں۔

پارٹی کے موجودہ سربراہ (چیئرپرسن) سابق وزیر اعظم راجیو گاندھی کے بیٹے راہل گاندھی ہیں جبکہ لوک سبھا میں اس کے رہنما ملیکا ارجن کھڑگے ہیں۔ راجیہ سبھا میں اس کی قیادت غلام نبی آزاد کر رہے ہیں۔

کانگریس کو 1975ء میں بھارت میں ہنگامی حالت کے نفاذ اور 1984ء میں سکھ مخالف فسادات (آپریشن بلیو اسٹار) کے باعث شدید تنقید کا نشانہ بھی بننا پڑا۔

تاریخترميم

کانگریس کی تاریخ کو تین ادوار میں تقسیم کیا جا سکتا ہے۔

پہلا دورترميم

اس کا پہلا حصہ 1885ء سے 1905ء تک محیط رہا۔ اس دور کو اعتدال پسندوں کے دور سے موسوم کیا جاتا ہے کیونکہ کانگریس پر ان رہنماؤں کا غلطہ رہا جو حکومت کے وفادار تھے۔ مغربی تعلم سے آراستہ تھے، برطانوی جمہوری اداروں کو ہندوستان میں قائم کرنا چاہتے تھے۔ انگریزوں کے منصفانہ جذبہ میں یقین رکھتے تھے اور ان کے وجود کو ہندوستان کے باعث رحمت تصور کرتے تھے۔

دوسرا دورترميم

اعتدال پسندوں کی پالیسی سے کانگریس کے رہنماؤں کا ایک طبقہ اختلاف رکھتا تھا۔ وہ اعتدال پسندوں کی اصلاحات اور مراعات کی پالیسی کو خیرات کی پالیسی سے تعبیر کرتا تھا اور ہندوستان کو ہندوستانیوں کی تقدیر سمجھتا تھا۔ وہ اس پر ہندوستانیوں کا تصور کرتا تھا۔ یہ دور 1905ء سے 1919ء تک جاری رہا اور انتہا پسندوں کے دور سے موسوم ہوا۔ اس کے رہنماؤں میں لالہ لاجپت رائے، بال گنگا دھر تلک اور بپن چندر پال بڑی اہمیت کے حامل تھے۔ 1907ء میں اعتدال پسندوں اور انتہا پسندوں کے مابین اختلافات کے سبب دو حصوں میں منقسم ہو گئی اور اعتدال پسندوں کو کانگریس کی رکنیت سے خارج کر دیا۔ بعد ازاں 1916 میں جب مسلم لیگ اور کانگریس نے میثاق لکھنؤ پر دستخط کیے تو انتہا پسندوں کو دوبارہ کانگریس میں داخل کر لیا گیا۔ 1918 میں مانٹیگو جیمسفورڈ اصلاحات پر اختلافات کے سبب اعتدال پسند کانگریس سے منحرف ہو گئے اور انہوں نے اپنے آپ کو لبرل پارٹی کے نام سے منظم کر لیا۔

تیسرا دورترميم

کانگریس کا تیسرا دور 1919ء سے 1947ء تک محیط رہا ہے۔ اسے مہاتما گاندھی کے دور سے موسوم کیا جاتا ہے۔ اس دور میں گاندھی نے افریقا سے ہندوستان واپس آ کر 1917ء میں چمپارن میں ستیہ گرہ کیا۔ احمد آباد کے مل مزدوروں کی تحریک چلائی۔ 1919ء رولٹ بل کی مخالفت میں ستیہ گرہ کیا۔ 1920ء میں خلافت عدم تعاون تحریک کی قیادت کی۔ 1930ء میں ڈانڈی مارچ کر کے نمک کا قانون توڑا۔ 1932ء میں تحریک سول نافرمانی کا آغاز کیا۔ 1940ء میں جنگ کے خلاف انفرادی ستیہ گرہ کیا اور 1942 میں ابو الکلام آزاد کی صدارت میں "ہندوستان چھوڑ دو" تحریک کی قرار داد پیش کی۔ اس کے نتیجے میں کانگریس کے تمام رہنماؤں کو گرفتا ر کر کے گاندھی جی کو آغا خان پونا میں نظر بند کر دیا گیا اور دوسرے رہنماؤں کو احمد نگر کے تاریخی قلعہ میں قید کر دیا گیا۔

23 مارچ 1940ء کو جب مسلم لیگ نے لاہور میں اجلاس میں دو قومی نظریہ کی بنیاد پر لاہور قرارداد کے تحت مسلمانوں کے لیے ہندوستان کی تقسیم کا مطالبہ کیا تو کانگریس نے شدت سے اس کی مخالفت کی لیکن برطانوی حکومت نے مسلم لیگ کے ساتھ تعاون کیا اور اس کی پالیسی سے نہ صرف اتفاق کیا بلکہ ہر قدم پر اس کی مدد بھی کی اور بالآخر ہندوستان کے آخری وائسرائے لارڈ ماؤنٹ بیٹن کے ذریعہ تین جون پلان کے تحت 14 اگست 1947ء کو پاکستان کا قیام عمل میں آ گیا اور 15 اگست کو ہندوستان آزاد ہو گیا۔ حصولِ آزادی کے بعد کانگریس تین برس تک مرکز اور کئی برسوں تک ریاستوں میں برسرِ اقتدار رہی۔ تاہم کانگریس کو 1977ء میں مسنر اندرا گاندھی کے الیکشن میں ناکامی کے بعد اقتدار سے ہاتھ دھونا پڑا اور جنتا پارٹی نے مرار جی ڈیسائی کے زیر قیادت اقتدار کی ذمہ داری سنبھالی تاہم 1980ء میں مسنر گاندھی دوبارہ برسرِ اقتدار آ گئیں اور انھوں نے کانگریس کو کانگریس، آئی، کے نام سے موسوم کیا۔ مسنر گاندھی اس کی صدر منتخب ہوئیں۔ اکتوبر 1984ء میں ان کی ہتھیا کے بعد ان کے بیٹے راجیو گاندھی کانگریس کے صدر اور وزیر اعظم منتخب ہوئے۔ 1989ء میں کانگریس پھر اقتدار سے محروم ہو گئی۔ تاہم 1991میں پھر برسرِ اقتدار آ گئی اور 1995ء تک صدر کانگریس نرسمہاراؤ کی وزارتِ عظمیٰ میں اقتدار پر قابض رہی۔ اس کے بعد سے 2001ء تک یہ اقتدار سے محروم ہے اور اس کی باگ ڈور راجیو گاندھی کی بیوی اور مسنر اندرا گاندھی کی بہو سونیا گاندھی کے ہاتھوں میں ہے۔

کانگریس سے تعلق رکھنے والے وزرائے اعظمترميم

بیرونی روابطترميم

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Yogendra Yadav (21 نومبر 2018)۔ "The 4 Cs that mark Congress' decline from secularism to soft Hindutva"۔ ThePrint۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 دسمبر 2018۔
  2. "Indian National Congress – about INC, history, symbol, leaders and more"۔ Elections.in۔ 7 فروری 2014۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 مئی 2014۔
  3. Expected Participants[مردہ ربط], Progressive Alliance
  4. "List of Political Parties and Election Symbols main Notification Dated 18.01.2013"۔ India: Election Commission of India۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 مئی 2013۔
  5. "Members: Lok Sabha"۔ loksabha.nic.in۔ لوک سبھا سیکریٹریٹ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 مارچ 2019۔
  6. "STRENGTHWISE PARTY POSITION IN THE RAJYA SABHA"۔ Rajya Sabha۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 جولا‎ئی 2018۔