مرکزی مینیو کھولیں

کیلٹک زبانیں (Celtic languages) (عمومی تلفظ: /ˈkɛltɪk/ کیلٹک لیکن کبھی کبھار /ˈsɛltɪk/) سیلٹک بھی کہا کاتا ہے[2]ہند۔یورپی لسانی خاندان [3] کی شاخ پروٹو-کیلٹک زبان کی نسل سے ایک زبان ہے۔

کیلٹک
جغرافیائی
تقسیم:
یورپ میں سابقہ طور پر میں بڑے پیمانے پر; اب کورنوال، ویلز، اسکاٹ لینڈ، جزیرہ آئرلینڈ، بریتانیہ، پیٹاگونیا، نووا سکوشیا اور آئل آف مین
لسانی درجہ بندی: ہند۔یورپی
  • کیلٹک
سابقہ اصل-زبان: پروٹو-کیلٹک
ذیلی تقسیمات:
آیزو 639-2 / 5: cel
کرہ لسانی: 50= (phylozone)
گلوٹولاگ: celt1248[1]
{{{mapalt}}}
Distribution of Celtic speakers:
  Hallstatt culture area, 6th century BC
  Maximal Celtic expansion, c. 275 BC
  Lusitanian area; Celtic affiliation doubtful
  Areas where Celtic languages are widely spoken in the 21st century

جدید کیلٹک زبانیں زیادہ تر یورپ کے شمال مغربی کنارے پر بولی جاتی ہیں جس میں جزیرہ آئرلینڈ، اسکاٹ لینڈ، ویلز، بریتانیہ، کورنوال اور آئل آف مین قابل ذکر ہیں۔ ویلش بولنے والوں کی ایک بڑی تعداد ارجنٹائن کے علاقے پیٹاگونیا میں بھی موجود ہے۔ اس کے علاوہ اسکاٹش گیلک بولنے والے کچھ لوگ نووا سکوشیا میں موجود ہیں۔ کیلٹک زبانیں بولنے والے کچھ تارکین وطن ریاستہائے متحدہ [4]، کینیڈا، آسٹریلیا [5] اور نیوزی لینڈ میں بھی موجود ہیں۔

پہلے ہزارے قبل مسیح میں یہ یورپ، جزیرہ نما آئبیریا، بحراوقیانوس سے بحیرہ شمال کے ساحل تک، وادی رائن اور اور نیچے داودی ڈینیوب سے ہوتے ہوئے بحیرہ اسود تک، شمالی بلقان سے وسطی اناطولیہ تک بولی جاتی تھیں۔


حیات زبانیںترميم

کئی کیلٹک زبانیں معدوم ہو چکی ہیں، چھ کیلٹک زبانیں ایسی ہیں جن کے بولنے والے اب بھی بڑی تعداد میں موجود ہیں مندرجہ ذیل ہیں۔

  1. آئرش زبان
  2. اسکاٹش گیلک
  3. ویلش زبان
  4. بریٹن زبان
  5. کورنش زبان
  6. مینکس زبان

ان میں گویڈیلک زبانیں (آئرش، اسکاٹش گیلک) جو وسطی آئرش سے نکلی ہیں اور بریطانی زبانیں (ویلش اور بریٹن) جو عام بریطانی سے نکلی ہیں۔

دیگر دو کورنش (ایک بریطانی زبان) اور مینکس (ایک گویڈیلک زبان) جدید دور میں معدوم ہو چکی ہی۔ [6][7][8]

آبادیاتترميم

زبان مقامی نام گروہ بندی اصل بولنے والوں کی تعداد لوگوں کی تعداد جو زبان میں ایک یا زیادہ مہارت رکھتے ہیں بنیادی علاقے جہاں زبان بولی جاتی ہے فہرست منظمین زبان بڑے شہروں میں بولنے والوں کی اندازہً تعداد
ویلش زبان Cymraeg بریطانی 562,000 (19.0% ویلز کی آبادی کا) دعوی کرتے ہیں کہ وہ "ویلش بول سکتے ہیں" (2011)[9][10] تقریباً 947,700 (2011) کل متکلمین
ویلز: 788,000 متکلمین، 26.7% ویلز کی آبادی کا،[9][10]
انگلستان: 150,000[11]
صوبہ چوبوت، ارجنٹائن: 5,000[12]
ریاستہائے متحدہ امریکا: 2,500[13]
کینیڈا: 2,200[14]
ویلز;
Y Wladfa، صوبہ چوبوت
Welsh Language Commissioner (Meri Huws)
— The Welsh Government
(previously the Welsh Language Board، Bwrdd yr Iaith Gymraeg)
کارڈف: 54,504
سوانزی: 45,085
نیوپورٹ، ویلز: 18,490[15] بینگور، گوینڈ: 7,190
آئرش زبان Gaeilge/ Gaedhilge گویڈیلک 40,000–80,000[16][17][18][19]
جمہوریہ آئرلینڈ میں، 94,000 لوگ آئرش روزانہ تعلیم کے نظام سے علاوہ استعمال کرتے ہیں۔[20]
1,887,437
جمہوریہ آئرلینڈ:
1,774,437[20]
مملکت متحدہ:
95,000
ریاستہائے متحدہ امریکا:
18,000
جمہوریہ آئرلینڈ Foras na Gaeilge ڈبلن: 184,140
گالوے: 37,614
کورک (شہر): 57,318[21]
بیلفاسٹ: 30,360[22]
بریٹن زبان brezhoneg بریطانی 206,000 356,000[23] بریتانیہ Ofis Publik ar Brezhoneg رین: 7,000
بریسٹ، فرانس: 40,000
نانت: 4,000[24]
اسکاٹش گیلک Gàidhlig گویڈیلک 57,375 (2011)[25] اسکاٹ لینڈ میں اور 1,275 (2011) نووا سکوشیا میں[26] 87,056 (2011)[25] اسکاٹ لینڈ میں اسکاٹ لینڈ Bòrd na Gàidhlig گلاسگو: 5,726
ایڈنبرگ: 3,220[27]
ابرڈین: 1,397[28]
کورنش زبان Kernowek بریطانی نامعلوم[29] 3,000[30] کورنوال Cornish Language Partnership (Keskowethyans an Taves Kernewek) ٹرورو: 118[31]
مینکس زبان Gaelg/ Gailck گویڈیلک 100+،[32][33] بشمول ایک قلیل تعداد میں بچے جو نئے مقامی بولنے والے ہیں[34] 1,823[35] آئل آف مین Coonceil ny Gaelgey ڈگلس: 507[36]

جدول موازنہترميم

ویلش کورنش بریٹن آئرش سکاٹش گیلک مینکس انگریزی
gwenynen gwenenen gwenanenn beach seillean, beach shellan bee
cadair kador kador cathaoir cathair, seidhir caair chair
caws keus keuz cáis càis(e) caashey cheese
aber aber aber inbhear inbhir inver estuary, mouth of a river
llawn leun leun lán làn lane full
gafr gaver gavr gabhar gobhar goayr goat
chi ti teach, tigh taigh thie house
gwefus gweus gweuz liopa, beol bile, lip meill lip (anatomical)
arian, prês mona, arhans moneiz, arcʼhant airgead airgead argid silver, money
nos nos noz oíche oidhche oie night
rhif, nifer niver niver uimhir àireamh earroo number
tu mas, tu allan yn-mes er-maez amuigh a-muigh mooie outside
gellygen, peren peren perenn piorra peur/piar peear pear
chwarel, mwynglawdd mengleudh mengleuz cairéal coireall, cuaraidh quarral quarry, mine
ysgol skol skol scoil sgoil scoill school
seren steren steredenn réalta reul, rionnag rollage star
heddiw hedhyw hiziv inniu an-diugh jiu today
cwympo kodha kouezhañ tit(im) tuit(eam) tuitt(ym) (to) fall
ysmygu megi mogediñ, butuniñ caith(eamh) tobac smocadh toghtaney, smookal (to) smoke
chwibanu hwibana c'hwibanat feadáil fead fed (to) whistle

حوالہ جاتترميم

  1. ہرالڈ ہیمر اسٹورم؛ رابرٹ فورکل؛ مارٹن ہاسپلمتھ (ویکی نویس.)۔ "Celtic"۔ گلوٹولاگ 3.0۔ یئنا، جرمنی: میکس پلانک انسٹی ٹیوٹ فار دی سائنس آف ہیومین ہسٹری۔
  2. "American Heritage Dictionary. Celtic: kel-tik, sel"۔ Dictionary.reference.com۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2011۔
  3. The Celtic languages:an overview، Donald MacAulay, The Celtic Languages، ed. Donald MacAulay, (Cambridge University Press, 1992)، 3.
  4. "Language by State – Scottish Gaelic" نسخہ محفوظہ 11 January 2012 در وے بیک مشین on Modern Language Association website. Retrieved 27 December 2007
  5. "Languages Spoken At Home" نسخہ محفوظہ 25 March 2009 در وے بیک مشین from Australian Government Office of Multicultural Interests website. Retrieved 27 December 2007; G. Leitner, Australia's Many Voices: Australian English--The National Language, 2004, pg. 74
  6. John T. Koch۔ Celtic Culture: A Historical Encyclopedia۔ ABC-CLIO۔ صفحات 34, 365–366, 529, 973, 1053۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جون 2010۔
  7. "A brief history of the Cornish language"۔ Maga Kernow۔ مورخہ 25 دسمبر 2008 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  8. Peter Beresford Ellis۔ The Story of the Cornish Language۔ Tor Mark Press۔ صفحات 20–22۔ آئی ایس بی این 0-85025-371-3۔
  9. ^ ا ب "Welsh language skills by local authority, gender and detailed age groups, 2011 Census"۔ StatsWales website۔ Welsh Government۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 نومبر 2015۔
  10. ^ ا ب Office for National Statistics 2011 http://ons.gov.uk/ons/rel/census/2011-census/key-statistics-for-unitary-authorities-in-wales/stb-2011-census-key-statistics-for-wales.html#tab---Proficiency-in-Welsh
  11. United Nations High Commissioner for Refugees۔ "World Directory of Minorities and Indigenous Peoples – UK: Welsh"۔ UNHCR۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 مئی 2010۔
  12. "Wales and Argentina"۔ Wales.com website۔ Welsh Assembly Government۔ مورخہ 16 اکتوبر 2012 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 جنوری 2012۔
  13. "Table 1. Detailed Languages Spoken at Home and Ability to Speak English for the Population 5 Years and Over for the United States: 2006–2008 Release Date: اپریل 2010" (xls)۔ ریاستہائے متحدہ مردم شماری بیورو۔ 27 اپریل 2010۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 جنوری 2011۔
  14. "2006 Census of Canada: Topic based tabulations: Various Languages Spoken (147)، Age Groups (17A) and Sex (3) for the Population of Canada, Provinces, Territories, Census Metropolitan Areas and Census Agglomerations, 2006 Census – 20% Sample Data"۔ Statistics Canada۔ 7 دسمبر 2010۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 جنوری 2011۔
  15. StatsWales۔ "Welsh language skills by local authority, gender and detailed age groups, 2011 Census"۔ Welsh Government۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  16. "Irish Examiner"۔ Archives.tcm.ie۔ 24 نومبر 2004۔ مورخہ 19 جنوری 2005 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2011۔
  17. Christina Bratt Paulston۔ Linguistic Minorities in Multilingual Settings: Implications for Language Policies۔ J. Benjamins Pub. Co۔ صفحہ 81۔ آئی ایس بی این 1-55619-347-5۔
  18. David Pierce۔ Irish Writing in the Twentieth Century۔ Cork University Press۔ صفحہ 1140۔ آئی ایس بی این 1-85918-208-9۔
  19. Ó hÉallaithe، Donncha (1999). Cuisle. 
  20. ^ ا ب www.cso.ie Central Statistics Office, Census 2011 – This is Ireland – see table 33a
  21. Central Statistics Office۔ "Population Aged 3 Years and Over by Province County or City, Sex, Ability to Speak Irish and Census Year"۔ Government of Ireland۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  22. Department of Finance and Personnel۔ "Census 2011 Key Statistics for Northern Ireland"۔ The Northern Ireland Statistics and Research Agency۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  23. (فرانسیسی زبان میں) Données clés sur breton, Ofis ar Brezhoneg
  24. Pole Études et Développement Observatoire des Pratiques Linguistiques۔ "Situation de la Langue"۔ Office Public de la Langue Bretonne۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  25. ^ ا ب 2011 Scotland Census، Table QS211SC.
  26. "National Household Survey Profile, Nova Scotia, 2011"۔ Statistics Canada۔ 11 ستمبر 2013۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 جون 2014۔
  27. Scotland's Census۔ "Standard Outputs"۔ National Records of Scotland۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  28. Alison Campsie۔ "New bid to get us speaking in Gaelic"۔ The Press and Journal۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  29. See کورنش زبان
  30. Around 2,000 fluent speakers. "'South West:TeachingEnglish:British Council:BBC"۔ BBC/British Council website۔ BBC۔ مورخہ 8 جنوری 2010 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 فروری 2010۔
  31. Equalities and Wellbeing Division۔ "Language in England and Wales: 2011"۔ Office for National Statistics۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔
  32. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ iomtoday.co.im نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  33. "Anyone here speak Jersey?"۔ Independent.co.uk۔ 11 اپریل 2002۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2011-08-19۔
  34. "Documentation for ISO 639 identifier: glv"۔ Sil.org۔ 14 جنوری 2008۔ مورخہ 28 جولائی 2011 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2011۔
  35. "Isle of Man Census Report 2011" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Economic Affairs Division, Isle of Man Government Treasury۔ اپریل 2012۔ صفحہ 27۔ مورخہ 5 نومبر 2013 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 جون 2014۔
  36. Sarah Whitehead۔ "How the Manx language came back from the dead"۔ دی گارڈین۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016۔

بیرونی روابطترميم