مرکزی مینیو کھولیں


مسجد کوفہ کے صدر دروازہ پر کندہ حدیث منزلت

حدیث منزلت (عربی: حدیث المنزلہ) اہل سنت اور اہل تشیع میں مستند ترین حدیث شمار کی جاتی ہے جو علی بن ابی طالب کی فضیلت پر دلیل سمجھی جاتی ہے۔ اِس حدیث کو اہل سنت اور اہل تشیع کے سبھی علمائے محدثین نے اپنی اپنی کتب میں ثقہ راویوں کی بابت نقل کرتے ہوئے درج کیا ہے۔ شیعی علماء اِس حدیث کو حدیث متواتر کہتے ہیں۔

متن حدیثترميم

حدیث منزلت کا پس منظر یہ ہے کہ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم غزوہ تبوک کے لیے مدینہ منورہ سے روانہ ہوئے تو اُنہوں نے علی بن ابی طالب کو مدینہ منورہ میں اپنا قائم مقام بنایا اور اُن کی فضیلت میں یہ الفاظ اداء فرمائے:

  • أَمَا تَرْضَی أَنْ تَکونَ مِنِّی بِمَنْزِلَةِ هَارُونَ، مِنْ مُوسیٰ (کیا تم اِس بات پر راضی نہیں ہو کہ میرے ساتھ تمہاری وہی نسبت ہو ہارون کو موسیٰ سے تھی)۔[1][2][3][4][5][6][7]
  • صحیح مسلم میں حدیث کی عبارت کچھ یوں ہے: أَنْتَ مِنِّي بمَنْزِلَةِ هَارُونَ مِن مُوسَى، إِلَّا أنَّهُ لا نَبِيَّ بَعْدِي (تمہیں یہ پسند نہیں کہ تمہارا میرے ساتھ وہی مقام ہو جو ہارون کا موسیٰ کے ساتھ تھا، مگر یہ کہ میرے بعد نبوت نہیں ہے)۔[8]
  • احمد بن حنبل نے عبد اللہ بن عاس سے مروی ایک طویل حدیث میں آخر پر چند الفاظ کے اِضافے کے ساتھ یوں بیان کیا ہے کہ: ’’إنَّه لا ينبغي أن أذهَبَ إلَّا وأنتَ خليفتي‘‘ (تجھے اپنا نائب بنائے بغیر میرا کُوچ کرنا مناسب نہیں)۔[9]

زید بن ارقم (جن سے یہ حدیث نقل ہوئی ہے) نے اِس بات کا اِضافہ بھی کیا ہے کہ جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے علی بن ابی طالب کو مدینہ منورہ میں اپنا قائم مقام بنایا تو کچھ لوگوں کو گمان ہوا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم علی بن ابی طالب سے ناراض ہیں (یعنی غزوہ تبوک میں اپنے ساتھ لے کر نہیں جا رہے)۔ جب یہ خبر علی بن ابی طالب تک پہنچی تو اُنہوں نے اِس مسئلہ کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس دریافت کیا تو آپ نے جواباً یہ قول (یعنی حدیث ہٰذا) ارشاد فرمایا۔ اِس واقعہ کو ابن حجر ہیتمی نے نقل کیا ہے۔[10]

اہل سنت علما کی اسناد روایتترميم

اہل سنت کے علما کے نزدیک یہ حدیث صحیح ہے۔ بخاری اور مسلم ، ترمذی، نسائی، امام ابن ماجہ، امام ابن حبان، ابو یعلیٰ موصلی نے اِس روایت کو سعد بن ابی وقاص سے روایت کیا ہے۔[1][2][3][4]

علمائے تشیع کی اسنادِ روایتترميم

شیعی علماء اِس حدیث کو حدیث متواتر کہتے ہیں۔ شیعی علمائے محدثین نے اِس حدیث کو کثرت سے روایت کیا ہے۔ اولاً شیعی کتبِ حدیث میں یہ حدیث ابوجعفر محمد بن یعقوب الکُلَینِی (متوفی 941ء) کی کتاب الکافی میں ملتی ہے۔[22] متعدد علمائے شیعہ نے اِس حدیث کو مستقل کتب و تالیفات کا موضوع قرار دیا ہے جیسے کہ میر حامد حسین (متوفی 1306ھ نے اپنے مجموعہ عبقات الانوار کی ایک جلد کو اِس حدیث کے لیے مختص کیا ہے۔ دوسری نقل کردہ روایت کے مطابق مشہور ترین راویوں میں سے 88 راویوں نے اِس حدیث کو نقل کیا ہے۔ شیخ گنجی الشافعی، ابوالقاسم علی بن محسن تنوخی بھی اِسے حدیث صحیحہ کہتے ہیں۔

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب امام بخاری: صحیح بخاری، کتاب فضائل الصحابہ: باب مناقب علی بن ابی طالب، جلد 3، صفحہ 1359، رقم الحدیث 3503۔
  2. ^ ا ب ابن ماجہ: سنن ابن ماجہ، مقدمہ، باب فضائل الصحابہ، فضل علی بن ابی طالب، جلد 1، صفحہ 42۔ رقم الحدیث 115۔
  3. ^ ا ب ابن حبان: صحیح ابن حبان، جلد 15، صفحہ 369، رقم الحدیث 6926۔
  4. ^ ا ب ابویعلیٰ الموصلی: مسند ابویعلیٰ، جلد 2، صفحہ 73۔ رقم الحدیث 718۔
  5. امام مسلم: صحیح مسلم، کتاب الفضائل الصحابہ، باب من فضائل علی، جلد 4، صفحہ 1871، رقم 2404۔
  6. ^ ا ب امام نسائی: سنن الکبریٰ للنسائی، جلد 5، صفحہ 44، رقم 8139۔
  7. امام طبرانی: المعجم الأوسط، جلد 3، صفحہ 139، رقم 2728۔
  8. صحيح مسلم: كتاب فضائل الصحابة، باب من فضائل علي بن أبي طالب 4 /1870، ح2404
  9. امام احمد بن حنبل: مسند احمد بن حنبل، جلد 1، صفحہ 330۔ رقم 3062۔
  10. ابن حجر ہیتمی: مجمع الزوائد و منبع الفوائدم جلد9، صفحہ111 ۔
  11. ابن ابی الحدید: شرح نہج البلاغہ ابن ابی الحدید، جلد 13، صفحہ 211، مطبوعہ قاہرہ، 1385ھ۔
  12. علامہ ابن عبدالبر: الاستیعاب فی معرفۃ الاصحاب، جلد 3، صفحہ 1097۔ مطبوعہ بیروت، 1412ھ مطابق 1992ء۔
  13. امام حاکم: المستدرک حاکم، جلد 3، صفحہ 134، مطبوعہ بیروت
  14. خطیب بغدادی: تاریخ مدینۃ السلام المعروف بہ تاریخ بغداد، جلد 8، صفحہ 262۔
  15. خطیب بغدادی: تاریخ مدینۃ السلام المعروف بہ تاریخ بغداد، جلد 8، صفحہ 498۔
  16. ابن الاثیر الجزری: اسد الغابۃ فی معرفۃ الصحابۃ، جلد 4، صفحہ104/105۔
  17. مفتیٔ اعظم الحافظ سلیمان بن ابراہیم قندوزی: ینابع المؤدہ لذوی القربیٰ، جلد 1، صفحہ161۔ مطبوعہ قم ، 1416ھ
  18. عبدالحسین شرف الدین: المراجعات، صفحہ 132/133، مطبوعہ قم، 1416ھ
  19. حاکم حسکانی: شواہد التنزیل، جلد 1، صفحہ195۔
  20. امام ابن ابی شیبہ: المُصَنَّف، جلد 6، صفحہ 366۔ رقم 32078۔
  21. علامہ ابن عساکر الدمشقی: تاریخ دمشق، جلد 42، صفحہ 116۔
  22. ابو جعفر محمد بن یعقوب الکُلَینِی: کتاب الکافی، جلد 8، صفحہ 106/107۔