محمد بن سلمان آل سعود

سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے 28 اپریل 2015ء کو اپنے نئے شاہی فرمان کے ذریعے شہزادہ محمد بن نایف کو ولی عہد اور اپنے بیٹے شہزادہ محمد بن سلمان کو نائب ولی عہد مقررکیا۔ شہزادہ محمد بن سلمان بن عبد العزیز نائب ولی عہد کے ساتھ نائب وزیر اعظم، وزیردفاع اور اقتصادی ترقی کونسل کے صدر بھی ہیں۔

محمد بن سلمان آل سعود
Mohammad bin Salman Al Saud.jpg
ولی عہد سعودی عرب
پہلا نائب وزیر اعظم
معیاد عہدہ 21 جون 2017 – تاحال
پیشرو محمد بن نایف
بادشاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
ولی عہد سعودی عرب
دوسرا نائب وزیر اعظم
برسرعہدہ 29 اپریل 2017 –21 جون 2017
پیشرو محمد بن نایف
جانشین کوئی نہیں
بادشاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
وزیر دفاع
فرماں روائی 23 جنوری 2015 – تاحال
پیشرو سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
بادشاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
رئیس الدیوان الملکی
فرماں روائی ریاض
پیشرو خالد التویجری
بادشاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
شریک حیات سارہ بنت مشہور بن عبد العزیز آل سعود[1]
مکمل نام
محمد بن سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
خاندان آل سعود
والد سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
والدہ فہدہ بنت فلاح
پیدائش 31 اگست 1985ء (عمر 32 سال)
جدہ، سعودی عرب
مذہب

اہل سنت

محمد بن سلمان آل سعود
ذاتی تفصیلات
تعلیم شاہ سعود یونیورسٹی قانون کی ڈگری

فہرست

تعلیمترميم

محمد بن سلمان نے ریاض میں اسکولی تعلیم حاصل کی۔ وہ اسکولی سطح پر میں سعودی عرب بھرمیں سرفہرست 10 مقامات حاصل کرنے والے طلبہ میں رہا۔ دوران میں تعلیم انہوں نے مختلف پروگراموں کے اضافی کورسز بھی کیے اور قانون میں گریجویشن کی ڈگری حاصل کی۔ جامعہ الریاض کے لا کالج میں گریجوایشن میں قانون اور سیاسیات میں ان کا دوسرا مقام تھا۔

عملی زندگیترميم

10 اپریل 2007ء کو شاہی فرمان کے تحت محمد بن سلمان کو سعودی کابینہ میں ماہرین کونسل کا مشیر مقرر کیا گیا۔ انہوں نے 16 دسمبر 2009ء تک اس عہدے پر کام کیا۔ 16 دسمبر 2009ء کو انہیں شاہی فرمان کے تحت امیر ریاض کا خصوصی مشیر مقرر کر دیا گیا۔ 3 مارچ 2013ء انہوں نے ریاض کے مسابقتی مرکز کے سیکرٹری جنرل کے عہدے کی ذمہ داریاں سنھبالیں اور ساتھ ہی ساتھ شاہ عبد العزیز دفاعی ترقی کی اعلٰی کمیٹی کے بھی رکن رہے۔

شہزادہ محمد بن سلمان کو شاہ سلمان کا اس وقت مشیر مقرر کیا گیا جب وہ امیر ریاض کے عہدے پرتھے۔ ولی عہد کے دفتر کے انچارج اور ان کے پرنسپل سیکرٹری کے طورپربھی خدمات انجام دیں۔ 3 مارچ 2013ء کو شاہی فرمان کے تحت انہیں ولی عہد کے شاہی دیوان کا منتظم مقرر کیا گیا اورانہیں ایک وزیر کے برابر رتبہ دے دیا گیا۔

13 جولائی 2013ء کو انہیں وزیردفاع کے دفتر کا سپروائزرمقرر کیا گیا۔ 25 اپریل 2014ء کو شاہی فرمان کے تحت انہیں وزیر مملکت، پارلیمنٹ کارکن، 18 ستمبر 2014ء کو شاہ عبد العزیز بورڈ کی ایگزیکٹو کمیٹی کے چیئرمین کا اضافی چارج بھی سونپا گیا۔

23 جنوری 2015ء کو شاہی فرمان کے تحت شہزادہ محمد بن سلمان بن عبد العزیز کو خادم الحرمین الشریفین کا مشیر خاص اور شاہی دیوان کا منتظم اعلیٰ مقرر کیا گیا۔[2]

نسبترميم

ملاحظاتترميم

حوالہ جاتترميم

  1. "Profile: Saudi crown prince Mohammed bin Salman"۔ www.aljazeera.com۔ 
  2. العزیز۔html سوانحی خاکہ: نائب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبد العزیز
  3. "Royal Family Directory"۔ www.datarabia.com۔ اخذ کردہ بتاریخ 22 جون 2017۔ 

نقص حوالہ: <ref> tag with name "NYT: rewrites succession" defined in <references> is not used in prior text.

بیرونی روابطترميم

سیاسی دفاتر
ماقبل 
محمد بن نایف
پہلا نائب وزیراعظم
21 جون 2017 – تاحال
مابعد 
برسرِ عہدہ
ماقبل 
محمد بن نایف
دوسرا نائب وزیر اعظم
29 اپریل 2015–21 جون 2017
مابعد 
لاورث
ماقبل 
سلمان بن عبدالعزیز آل سعود
دفاع وزیر
23 جنوری 2015–تاحال
مابعد 
برسرِ عہدہ
ماقبل 
خالد بن عبد العزیز التویجری
شاہی عدالت کے حاکم
23 جنوری 2015–تاحال
مابعد 
برسرِ عہدہ
سعودی شاہی شخصیت
ماقبل 
محمد بن نایف
ولی عہد سعودی عرب
29 اپریل 2015–21 جون 2017
مابعد 
لاوارث
ماقبل 
محمد بن نایف
ولی عہد سعودی عرب
21 جون 2017 – تاحال
مابعد 
برسرِ عہدہ

سانچہ:Current heirs of monarchies