نظام الدین اسیر ادروی

بھارتی مسلمان مؤرخ

نظام الدین اسیر ادروی (معروف بہ: اسیر ادروی) (1926ء20 مئی 2021ء)؛ ایک بھارتی سیرت نگار، مصنف، مؤرخ، دیوبندی مکتب فکر کے عالم اور اردو زبان کے مصنف تھے۔ انھوں نے ادری میں مدرسہ "دار السلام" قائم کیا اور 1974ء سے 1978ء تک لکھنؤ میں جمعیت علمائے ہند کے آفیسر سکریٹری کے طور پر خدمات انجام دیں۔


نظام الدین اسیر ادروی
Asir Adrawi.jpg
ذاتی
پیدائش1926ء
وفات20 مئی 2021(2021-50-20) (عمر  94–95 سال)
مذہباسلام
فقہی مسلکحنفی
تحریکدیوبندی
بنیادی دلچسپیتاریخ
قابل ذکر کامتاریخِ جمعیت علمائے ہند، تاریخِ آزادی اور مسلمان، کاروانِ رفتہ
مادر علمیجامعہ مفتاح العلوم مئو، مدرسہ شاہی، مرادآباد
بانئمدرسہ دار السلام، ادری، مئو، اتر پردیش
مرتبہ

سوانحِ زندگیترميم

اسیر ادروی 1926ء میں ادری، مئو ( اس وقت کے برطانوی ہند کے متحدہ صوبہ) کے ایک علاقہ میں پیدا ہوئے۔[1] ابتدائی تعلیم کے لیے مدرسہ فیض الغرباء ادری میں داخل ہوئے اور پھر جامعہ مفتاح العلوم کا رخ کیا اور حبیب الرحمن اعظمی، ظہیر الحق نشاط سیمابی اور مولانا عبد اللطیف نعمانی کی نگرانی میں تعلیم حاصل کی۔[1] پھر اسیر ادروی احیاء العلوم مبارکپور گئے اور وہاں شکر اللہ مبارکپوری، بشیر احمد مظاہری، محمد عمر مظاہری اور مفتی محمد یاسین سے کسب فیض کیا۔ پھر آپ دار العلوم مئو چلے گئے، جہاں آپ نے مشکاۃ المصابیح مولانا عبدالرشید الحسینی اور تفسیر جلالین قاری ریاست علی سے پڑھی۔[1] اسیر ادروی دارالعلوم دیوبند میں داخلہ نہیں لے پائے جس کی وجہ سے ان کو جامعہ قاسمیہ مدرسہ شاہی کا رخ کرنا پڑا اور وہیں سے 1942ء دورہ حدیث کی تکمیل کی۔[2][3] آپ نے صحیح بخاری مولانا سید فخر الدین احمد، صحیح مسلم مولانا اسماعیل سنبھلی اور ترمذی مولانا محمد میاں دیوبندی سے پڑھی۔[4]

اسیر ادروی نے بھارت چھوڑ دو تحریک میں حصہ لیا[2] وہ 1948ء تک انڈین نیشنل کانگریس سے وابستہ رہے، پھر کانگریس سوشلسٹ پارٹی میں شامل ہو گئے۔[4]انھوں نے 1954ء میں ادری، مئو میں مدرسہ دار السلام کی بنیاد ڈالی اور وہاں آپ نے تقریباً سولہ سال تک درس و تدریس کے فرائض انجام دیے۔[1]اور 1974ء سے 1978ء تک لکھنؤ میں جمعیت علمائے ہند ، اتر پردیش کے آفس سکریٹری کے طور پر خدمات انجام دیں۔ بعد ازاں انھوں نے 4 فروری 1978ء سے عرصۂ دراز تک جامعہ اسلامیہ، ریوڑی تالاب بنارس میں تدریسی خدمات انجام دیے۔[4][5] ادروی نے اپنی اکثر تصانیف؛ بنارس کے دورِ قیام ہی میں لکھے۔[1]

اسیر سہ ماہی ”ترجمان الاسلام“ کے مدیر بھی رہے اور جس کے لیے بے شمار مضامین بھی لکھے ۔ وہ ”ہفت روزہ الجمعیت“ اور ”روزنامہ الجمعیت“ کے کالم نگار و مضمون نگار بھی رہے ہیں۔[6] وہ اپنی مختصر کہانیوں کے لیے بھی جانے جاتے ہیں۔ انھوں نے کئی افسانے بھی لکھے، جن میں ”اتنا“ ، ”دو لاشیں“ ، ”نشیب و فراز“ اور ”اعترافِ شکست“ شامل ہیں۔[4] ان کے افسانے جیسے ”ہینڈ بیگ“ اور ”اسپتال“ ”نوائے پاکستان ، لاہور“ میں شائع ہوئے۔[4] ”کامیاب ، دہلی“ اور دارالعلوم دیوبند کے ماہنامہ ”رسالہ دار العلوم“ میں بھی آپ کی شراکتیں رہی ہیں۔[4] دار العلوم دیوبند کی تاریخ سے متعلق؛ اسیر ادروی کی کئی تصانیف کو بھی ماخذی و مصدری حیثیت حاصل ہے۔[2]

اسیر ادروی کا انتقال 20 مئی 2021ء کو ادری، مئو میں ہوا۔[1][7] مولانا ارشد مدنی نے بھی ان کے انتقال پر غم کا اظہار کیا۔[3] امارت شرعیہ کے ناظم ثناء الہدی قاسمی نے بھی اسیر ادروی کے انتقال پر گہرے صدمہ کا اظہار کیا۔

قلمی خدماتترميم

اسیر ادروی نے محمد قاسم نانوتوی، محمود حسن دیوبندی، امام الدین پنجابی، رحمت اللہ کیرانوی، رشید احمد گنگوہی اور حسین احمد مدنی وغیرہ کی سوانحات لکھی ہیں۔[6] ان کی معروف تصانیف درج ذیل ہیں:[1][8]

  • افکارِ عالم
  • دبستانِ دیوبند کی علمی خدمات
  • دار العلوم دیوبند: احیائے اسلام کی عظیم تحریک
  • فنِ اسماء الرجال
  • مآثر شیخ الاسلام
  • تفسیر میں اسرائیلی روایات
  • تحریکِ آزادی اور مسلمان
  • تاریخِ جمعیت علمائے ہند
  • تاریخِ طَبری کا تحقیقی جائزہ
  • اردو شرح دیوانِ متنبی

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج سید انعام الحسن (21 مئی 2021). "مولانا اسیر ادروی: ایک تعارف". بصیرت آنلائن. اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2021. 
  2. ^ ا ب پ نایاب حسن. "مولانا نظام الدین اسیر ادروی:اسیرِ علم و قلم". قندیل آنلائن. اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2021. 
  3. ^ ا ب "مولانا نظام الدین اسیر ادروی کا انتقال ناقابلِ تلافی خسارہ:مولانا ارشدمدنی". قندیل آنلائن. 20 مئی 2021. اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2021. 
  4. ^ ا ب پ ت ٹ ث عافی، عاقب انجم. "مولانا نظام الدین اسیر ادروی، حیات اور کارنامے". ہندوستان اردو ٹائمز.کام. اخذ شدہ بتاریخ 20 ستمبر 2019. 
  5. اسیر ادروی. داستانِ ناتمام (ایڈیشن نومبر 2009). کتب خانہ حسینیہ، دیوبند. صفحہ 13,21–28,331. 
  6. ^ ا ب "اردو کے فروغ میں علمائے دیوبند کا 15 سالہ کردار" (اردو میں). فکر انقلاب (آل انڈیا تنظیم علمائے حق) 5 (112): 533. جنوری 2017. doi:ڈی او ئي. 
  7. "مشہور مؤرخ اور درجنوں کتابوں کے مصنف مولانا اسیر ادروی نہیں رہے". بصیرت آنلائن. 20 مئی 2021. اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2021. 
  8. "مولانا نظام الدین اسیر ادروی کی تصانیف". viaf.org. مجازی عالمی فائل مقتدرہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2020.