کرکٹ عالمی کپ 1975ء

کرکٹ کا پہلا عالمی کپ جون 1975ء میں انگلستان میں کھیلا گیا۔ اپنی طرز کے اس پہلے عالمی کپ کا اعزاز ویسٹ انڈیز کرکٹ ٹیم نے جیتا۔1975ء کے اس پہلے کرکٹ ورلڈ کپ کو (باضابطہ طور پر پروڈینشل کپ '75 کہا جاتا ہے) یہ مردوں کا کرکٹ کا افتتاحی ورلڈ کپ تھا، اور ایک روزہ بین الاقوامی (ODI) کرکٹ کی تاریخ کا پہلا بڑا ٹورنامنٹ تھا۔ انٹرنیشنل کرکٹ کانفرنس (ICC) کے زیر اہتمام یہ 7 جون سے 21 جون 1975ء کے درمیان میں انگلینڈ میں منعقد ہوا۔ اس ٹورنامنٹ کو پروڈینشل ایشورنس کمپنی نے سپانسر کیا تھا اور اس میں شرکت کرنے والے 8 ممالک تھے: اس وقت کی 6 ٹیسٹ کھیلنے والی ٹیمیں آسٹریلیا، انگلینڈ، انڈیا، نیوزی لینڈ، پاکستان، ویسٹ انڈیز اور اس وقت کے دو سرکردہ ایسوسی ایٹ ممالک سری لنکا اور مشرقی افریقہ۔ ٹیموں کو چار، چار کے دو گروپوں میں تقسیم کیا گیا تھا، ہر ٹیم اپنے گروپ میں ایک دوسرے سے کھیلی۔ ہر گروپ سے سرفہرست دو ٹیموں نے سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کیا، ان میچوں کے فاتح فائنل میں ملے۔ ہر میچ 60 اوورز فی ٹیم پر مشتمل تھا اور روایتی سفید لباس میں اور سرخ گیندوں کے ساتھ کھیلا گیا۔ انگلینڈ میں موسم کے سبب سب کھیلے گئے میچ دن کی روشنی میں ختم ہوئے۔ انگلینڈ اور نیوزی لینڈ گروپ اے میں سرفہرست رہے جبکہ ویسٹ انڈیز اور آسٹریلیا گروپ بی سے سرفہرست رہے انہی چار ٹیموں نے سیمی فائنل کے لیے کوالیفائی کیا۔ آسٹریلیا نے انگلینڈ جبکہ ویسٹ انڈیز نے نیوزی لینڈ کو شکست دے کر فائنل کے لیے کوالیفائی کر لیا، ویسٹ انڈیز جو فیورٹ کے طور پر ٹورنامنٹ میں آیا تھا، لارڈز پر منعقدہ فائنل میں آسٹریلیا کو 17 رنز سے شکست دے کر پہلا ورلڈ کپ فاتح بن گیا۔ نیوزی لینڈ کے بلے باز گلین ٹرنر 333 رنز کے ساتھ ٹورنامنٹ میں سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی رہے جبکہ آسٹریلوی گیند باز گیری گلمور 11 وکٹیں لے کر ٹاپ باولر بنے۔

کرکٹ عالمی کپ 1975
World cup 1975.jpeg
تاریخ7 جون – 21 جون
منتظمانٹرنیشنل کرکٹ کونسل
کرکٹ طرزایک روزہ بین الاقوامی
ٹورنامنٹ طرزراؤنڈ روبن اور ناک آؤٹ
میزبانانگلستان
فاتحWestIndiesCricketFlagPre1999.svg ویسٹ انڈیز کرکٹ بورڈ (1 بار)
شریک ٹیمیں8
کل مقابلے15
تماشائی158,000 (10,533 فی میچ)
کثیر رنزنیوزی لینڈ کا پرچم گلین ٹرنر (333)
کثیر وکٹیںآسٹریلیا کا پرچم گیری گلمور (11)
1979

پس منظرترميم

بین الاقوامی سطح پر پہلا کثیر الجہتی کرکٹ مقابلہ 1912ء میں انگلینڈ میں ہونے والا ٹرائنگولر ٹورنامنٹ تھا۔ یہ اس وقت تین ٹیسٹ ممالک انگلینڈ، آسٹریلیا اور جنوبی افریقہ کے درمیان میں کھیلا جاتا تھا۔ اس تصور کو بعد میں خراب موسم اور عوام کی عدم دلچسپی کی وجہ سے ختم کر دیا گیا۔ تاہم پہلا ایک روزہ میچ 1962ء میں ہوا جب چار انگلش کاؤنٹی کرکٹ ٹیموں نے محدود اوورز کے ناک آؤٹ مقابلے میں کھیلنے کے لیے کمر کسی یہ ٹورنامنٹ نارتھمپٹن ​​شائر نے جیت لیا جس نے لیسٹر شائر کو پانچ وکٹوں سے شکست دی ٹھیک 9 سال بعد 1971ء میں، پہلا ایک روزہ بین الاقوامی میچ میلبورن کرکٹ گراؤنڈ (MCG) میں آسٹریلیا اور انگلینڈ کے درمیان میں 1970-71ء کی ایشز سیریز کے تیسرے ٹیسٹ کے متبادل کے طور پر ہوا۔ یہ بارش کی وجہ سے تھا جس نے ٹیسٹ کے پہلے تین دن میچ کو متاثر کیا تھا۔ یہ میچ 40 اوور کا تھا جس میں ہر اوور کی 8 گیندیں تھیں۔ انگلینڈ کے 39.4 اوورز میں 190 رنز بنانے کے بعد، آسٹریلیا نے ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے 42 گیندیں قبل میچ جیت لیا۔ دو سال بعد لارڈز میں 1973ء کے خواتین کرکٹ ورلڈ کپ کے دوران، 1975ء میں مردوں کے ٹورنامنٹ کا منصوبہ بنایا گیا۔ ٹورنامنٹ میں اس وقت تمام ٹیسٹ ممالک کو دو گروپ مراحل میں شامل کرنے کا منصوبہ بنایا گیا تھا۔

فارمیٹترميم

1975ء کے کرکٹ ورلڈ کپ کے فارمیٹ میں آٹھ ٹیموں کو چار کے دو گروپس میں تقسیم کیا گیا تھا، ہر ٹیم کو اپنے باقی گروپ سے ایک بار کھیلنا تھا۔ یہ میچز 7 سے 14 جون تک ہوئے۔ اس کے بعد ہر گروپ سے سرفہرست دو ٹیمیں 18 جون کو سیمی فائنل میں پہنچ گئیں، جہاں جیتنے والوں نے 21 جون کو لارڈز میں فائنل کے لیے کوالیفائی کیا۔ ہر میچ کے لیے ایک۔متبادل دن رکھا گیا تاکہ اگر کسی بھی میچ میں دن بھر بارش ہو، تو ٹیمیں اپنے ریزرو دن میں سے ایک استعمال کر سکیں یاد رہے کہ پہلے ورلڈ کپ میں انگلینڈ بھر میں سات مقامات کا انتخاب کیا گیا۔

میزبان ملک انگلینڈترميم

پہلے تینوں کرکٹ عالمی کپ مقابلوں کی میزبانی انگلینڈ نے کی، کیونکہ اس وقت انگلینڈ ہی بین الاقوامی مقابلے کی میزبانی کے قابل تھا، تیسرے عالمی کپ کے وقت بھارت نے پیش کش کی تھی، مگر آئی سی سی کے رکن ممالک نے اس سے اختلاف کیا، کیونکہ جون میں انگلینڈ میں دن کے وقت ایک پورا مقابلہ منعقد کیا جا سکتا تھا۔[1]

پہلے عالمی کپ کے شریک ممالکترميم

1975 کے کرکٹ ورلڈ کپ میں حصہ لینے والے ممالک پر روشنی ڈالی گئی۔
  Qualified as full member of ICC
  Qualified by invitation

1975ء کے کرکٹ ورلڈ کپ میں حصہ لینے والے ممالک کی تعداد 8 تھی۔ان میں سے 6 ممالک انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (ICC) کے مکمل رکن تھے، جبکہ سری لنکا کی قومی کرکٹ ٹیم اور۔جنوبی افریقہ کی قومی کرکٹ ٹیم|جنوبی افریقہ کا مقصد ٹورنامنٹ میں شامل ٹیموں میں سے ایک ہونا تھا لیکن ملک میں نسل پرستی کے قوانین کی وجہ سے ٹیم کو اس ٹورنامنٹ سے دستبردار ہونا پڑا اور اس کی جگہ مشرقی افریقہ کی ٹیم کو شامل کیا گیا

ٹیم

قابلیت کا طریقہ

پچھلی بہترین کارکردگی درجہ گروپ
 انگلستان میزبان ڈیبیو 1 اے
 بھارت مکمل ممبر ڈیبیو 5 اے
 آسٹریلیا ڈیبیو 3 بی
 پاکستان ڈیبیو 6 بی
 ویسٹ انڈیز ڈیبیو 2 بی
 نیوزی لینڈ ڈیبیو 4 اے
 سری لنکا دعوت نامہ ڈیبیو بی
سانچہ:Country data مشرقی افریقہ ڈیبیو اے

تیاریاںترميم

پہلے کرکٹ ورلڈ کپ کی طرف بڑھتے ہوئے، لیڈ بروک بیٹنگ ایجنسی نے ویسٹ انڈیز کو 9-4 سے فیورٹ قرار دیا تھا۔ اس کے بعد انگلینڈ 11-4 پر تھا اور پاکستان اور آسٹریلیا بالترتیب تیسرے اور چوتھے نمبر پر تھے۔ مشرقی افریقہ کا ریٹ 1500-1 یعنی آخری تھا۔ ٹورنامنٹ سے پہلے زیادہ تر ٹیموں نے انگلش کاؤنٹی سائیڈز کے خلاف وارم اپ میچز کھیلے تاکہ انگلش کنڈیشنز کی عادت ڈالی جا سکے اور زیادہ تر قومی ٹیمیں جیتیں۔ صرف مشرقی افریقہ، سری لنکا اور ہندوستان نے ٹورنامنٹ سے پہلے کم از کم ایک وارم اپ میچ ہارا۔ اور انگلینڈ جانے سے پہلے ٹورنٹو کے ساتھ ڈرا۔ ورلڈ کپ سے 8 دن پہلے، آئی سی سی نے متفقہ فیصلے میں اعلان کیا کہ تیز رفتار شارٹ پچ گیند کی وجہ سے بلے باز کے سر کے اوپر سے گزرنے والی گیند کو وائیڈ کہا جائے گا۔

میدانوں کا انتخابترميم

پہلے عالمی کپ کے لیے منتخب مقامات کا اعلان 26 جولائی 1973ء کو ہوا جب آئی سی سی نے انکشاف کیا کہ اس ٹورنامنٹ کا فائنل لارڈز کے تاریخی مقام پر کھیلا جائے گا۔ باقی مقامات کا اعلان 5 نومبر 1974ء کو کیا گیا تھا جس کے ساتھ ٹورنامنٹ کے شیڈول کا اعلان پانچ کاؤنٹی ٹورنامنٹس کے ساتھ کیا گیا تھا جو 1975ء کے سیزن میں ہونا تھے۔ ہیڈنگلے اور اوول کے گراونڈز کو سیمی فائنلز کے طور پر چنا گیا۔

لندن لندن
لارڈز کرکٹ گراؤنڈ اوول (کرکٹ میدان)
گنجائش: 30,000 گنجائش: 23,500
Lord's Pavilion.jpg The Oval Pavilion.jpg
برمنگہم مانچسٹر
ایجبیسٹن کرکٹ گراؤنڈ اولڈ ٹریفرڈ کرکٹ گراؤنڈ
گنجائش: 21,000 گنجائش: 19,000
Edgbaston Cricket Ground Pavillion.jpg Old Trafford Pavilion.JPG
ناٹنگہم لیڈز
ٹرینٹ برج ہیڈنگلے اسٹیڈیم
گنجائش: 15,350 گنجائش: 14,000
Trent Bridge Pavilion End.jpg Headingley Cricket Stadium.jpg

ٹورنامنٹ کا گروپ اےترميم

گروپ مرحلہ/خلاصہترميم

میچوں کا افتتاحی راؤنڈ 7 جون کو ہوا جس میں چار میچ کھیلے گئے۔ لارڈز میں کھیلے گئے میچ میں انگلینڈ نے 60 اوور کے میچ میں 334 رنز بنا کر ٹیم کی طرف سے سب سے زیادہ سکور کیا۔ انگلش کی جانب سے ڈینس ایمس نے سب سے زیادہ 147 گیندوں پر 137 رنز بنائے، کیتھ فلیچر اور کرس اولڈ نے نصف سنچری بنائی۔ اس کے جواب میں، سنیل گواسکر نے پوری اننگز میں صرف 36 رنز تک بیٹنگ کی آسٹریلیا نے ہیڈنگلے میں پاکستان کے خلاف 73 رنز کی فتح کے ساتھ اپنی مہم کا آغاز کیا۔ اس کی وجہ ڈینس للی کی پانچ وکٹیں حاصل کرنا تھیں جس سے پاکستان کی جیت کی امید دم توڑ گئی کیونکہ وہ 181 رنز چار وکٹ پر 205 رنز پر آل آؤٹ ہو گئے۔ آخری 13 اوورز میں 94 رنز نے آسٹریلیا کو 60 اوورز میں سات وکٹ پر 278 تک پہنچا دیا۔ دیگر دو میچوں میں ویسٹ انڈیز اور نیوزی لینڈ نے آسان جیت حاصل کی۔ تاہم گلین ٹرنر نے نیوزی لینڈ کی پوری اننگز کے دوران میں کریز پر قبضہ کرکے سب سے زیادہ 171 رنز بنائے اور اسی وجہ سے نیوزی لینڈ نے مشرقی افریقہ پر 180 رنز سے فتح حاصل کی۔ ویسٹ انڈیز نے سری لنکا کو نو وکٹوں سے شکست دی جو محدود اوورز کے ون ڈے انٹرنیشنل میں 100 سے کم رنز بنانے والی پہلی ٹیم بن گئی۔ پاکستان نے دوسرے راؤنڈ میں اپنے 60 اوورز میں سات وکٹوں پر 266 رنز بنائے اور کپتان ماجد خان نے سب سے زیادہ اسکور کیا۔ پاکستان نے 60 کے ساتھ 60۔ جواب میں ویسٹ انڈیز کی ٹیم 8 وکٹوں پر 166 پر گری جس میں صرف 10 رنز پر تین وکٹوں کا گرنا شامل تھا کیونکہ برنارڈ جولین، کلائیو لائیڈ اور کیتھ بوائس نے اپنی وکٹیں گنوا دیں تھیں لیکن ڈیرک مرے اور اینڈی رابرٹس کی آخری وکٹ کی جوڑی نے میچ چھین لیا کیونکہ ویسٹ انڈیز نے آخری اوور میں ایک وکٹ سے جیت لیا۔ گروپ بی کے دوسرے میچ میں آسٹریلیا نے اپنی دوسری جیت کا دعویٰ کیا، لیکن یہ سب کچھ ہموار نہیں تھا جب آسٹریلوی کپتان ایان چیپل نے ایک انٹرویو میں کہا کہ انگلش میڈیا چیپل کے ساتھ جیف تھامسن کی نو بال کے مسئلے کی وجہ سے آسٹریلیا کے منصوبوں کو ناکام بنانے کی کوشش کر رہا ہے۔ کہا: "میں نے انگلینڈ میں اس طرح کی چیزیں پہلے دیکھی ہیں۔" میدان پر، ایلن ٹرنر نے سنچری اسکور کی جب آسٹریلیا 328 رنز کے ساتھ ختم ہوا اور سری لنکا 52 رنز کی کمی سے گر گیا کیونکہ ڈیلی ٹیلی گراف کے جان میسن نے کہا کہ شاید ان کے پاس بہت سے نئے مداح نہیں ہوں گے جن کی شارٹ گیند کی وجہ سے سری لنکا کے دو بلے بازوں کو اسپتال منتقل کیا گیا تھا۔ گروپ اے میں انگلینڈ اور بھارت کے خلاف دو جیتنے والی کامیابیاں دیکھنے کو ملیں۔ ٹرینٹ برج میں، کیتھ فلیچر نے انگلینڈ کی جانب سے سب سے زیادہ 131 رنز بنائے کیونکہ انہوں نے انگلش کو دوسری فتح دلائی اور نیوزی لینڈ کو 80 رنز سے شکست دے کر گروپ ٹیبل پر برتری حاصل کی۔ گروپ اے کے دوسرے میچ میں 720 تماشائیوں نے بھارت کی 10 وکٹوں سے جیت کا ریکارڈ دیکھا جس میں مدن لال نے بھارت کے لیے تین وکٹیں حاصل کیں جس میں مشرقی افریقہ صرف 120 پر گر گیا۔ ویسٹ انڈیز نے آسٹریلیا سے مقابلہ کیا کہ گروپ بی میں کون سرفہرست رہے۔ آسٹریلیا کے سات وکٹ پر 61 کے سکور کے بعد چھٹی وکٹ کے لیے رن کی شراکت داری ہوئی۔ جواب میں، ویسٹ انڈیز نے ایلون کالیچرن کے 78 رنز کے ساتھ سب سے زیادہ اسکور کے ساتھ سات وکٹوں سے فتح حاصل کی، جس میں ڈینس للی کی نو گیندوں کے 31 رنز کا وقفہ شامل تھا کیونکہ ویسٹ انڈیز گروپ بی میں سرفہرست رہا۔ پاکستان نے اپنے ٹورنامنٹ کا اختتام اس کے ساتھ کیا۔ ٹرینٹ برج میں ظہیر عباس، ماجد خان اور صادق محمد کی نصف سنچریوں کی مدد سے سری لنکا کے خلاف 192 رنز کی فتح۔ گروپ اے میں، نیوزی لینڈ نے گلین ٹرنر کی سنچری کی بدولت ہندوستان کو چار وکٹوں سے شکست دے کر سیمی فائنل میں جگہ بنا لی جب اس نے 114 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلتے ہوئے بارہ چوکے لگائے۔ دوسرے میچ میں گروپ اے میں انگلینڈ نے مشرقی افریقہ کے خلاف 196 رنز کی زبردست فتح حاصل کی: انگلینڈ نے 158 کے پیچھے 60 اوورز میں 290/5 رنز بنائے۔

ٹیم پوائنٹ کھیلے جیتے ہارے بلا نتیجہ رن ریٹ
 انگلستان 12 3 3 0 0 4.94
 نیوزی لینڈ 8 3 2 1 0 4.07
 بھارت 4 3 1 2 0 3.24
مشرقی افریقا کرکٹ ٹیم 0 3 0 3 0 1.90

سانچہ:کرکٹ میچ کا خلاصہ

7جون 1975
اسکور کارڈ
 نیوزی لینڈ
309/5 (60 اوور)
بمقابلہ
نیوزی لینڈ 181 رنز سے جیت گیا۔
ایجبسٹن، برمنگہم، انگلینڈ
11 جون 1975
اسکور کارڈ
 انگلستان
266/6 (60 اوور)
بمقابلہ
 نیوزی لینڈ
186 (60 اوور)
انگلینڈ 80 رنز سے جیت گیا۔
ٹرینٹ برج، ناٹنگہم، انگلینڈ
11 جون 1975
اسکور کارڈ
بمقابلہ
 بھارت
123/0 (29.5 اوور)
بھارت 10 وکٹوں سے جیت گیا۔
ہیڈنگلے، لیڈز، انگلینڈ
14 جون 1975
اسکور کارڈ
 انگلستان
290 (60 اوور)
بمقابلہ
انگلینڈ 196 رنز سے جیت گیا۔
ایجبسٹن، برمنگہم، انگلینڈ
14 جون 1975
اسکور کارڈ
 بھارت
230 (60 اوور)
بمقابلہ
 نیوزی لینڈ
233/6 (58.5 اوور)
نیوزی لینڈ 4 وکٹوں سے جیت گیا۔
اولڈ ٹریفورڈ، مانچسٹر، انگلینڈ

گروپ بیترميم

ٹیم پوائنٹ کھیلے جیتے ہارے بلا نتیجہ رن ریٹ
 ویسٹ انڈیز 12 3 3 0 0 4.35
 آسٹریلیا 8 3 2 1 0 4.43
 پاکستان 4 3 1 2 0 4.45
 سری لنکا 0 3 0 3 0 2.78
7 جون 1975
اسکور کارڈ
 آسٹریلیا
278/7 (60 اوور)
بمقابلہ
 پاکستان
205 (53 اوور)
آسٹریلیا 73 رنز سے جیت گیا۔
ہیڈنگلے، لیڈز، انگلینڈ
7 جون 1975
اسکور کارڈ
 سری لنکا
86 (37.2 اوور)
بمقابلہ
 ویسٹ انڈیز
87/1 (20.4 اوور)
ویسٹ انڈیز 9 وکٹوں سے جیت گیا۔
اولڈ ٹریفورڈ، مانچسٹر، انگلینڈ
11 جون 1975
اسکور کارڈ
 آسٹریلیا
328/5 (60 اوور)
بمقابلہ
 سری لنکا
276/4 (60 اوور)
آسٹریلیا 52 رنز سے جیت گیا۔
کیننگٹن اوول، لندن، انگلینڈ
11 جون 1975
اسکور کارڈ
 پاکستان
266/7 (60 اوور)
بمقابلہ
 ویسٹ انڈیز
267/9 (59.4 اوور)
ویسٹ انڈیز 1 وکٹ سے جیت گیا۔
ایجبسٹن، برمنگہم، انگلینڈ
14 جون 1975
اسکور کارڈ
 آسٹریلیا
192 (53.4 اوور)
بمقابلہ
 ویسٹ انڈیز
195/3 (46 اوور)
ویسٹ انڈیز 7 وکٹوں سے جیت گیا۔
کیننگٹن اوول، لندن، انگلینڈ
14 جون 1975
اسکور کارڈ
 پاکستان
330/6 (60 اوور)
بمقابلہ
 سری لنکا
138 (50.1 اوور)
پاکستان 192 رنز سے جیت گیا۔
ٹرینٹ برج، ناٹنگہم، انگلینڈ

ناک آؤٹ مرحلہترميم

 
سیمی فائنلفائنل
 
      
 
18 جون – ہیڈنگلے اسٹیڈیم
 
 
  انگلستان93
 
21 جون – London
 
  آسٹریلیا94/6
 
  آسٹریلیا274
 
18 جون – London
 
  ویسٹ انڈیز291/8
 
  نیوزی لینڈ158
 
 
  ویسٹ انڈیز159/5
 

سیمی فائنلترميم

18 جون 1975
اسکور کارڈ
  انگلستان
93 (36.2 اوور)
بمقابلہ
  آسٹریلیا
94/6 (28.4 اوور)
آسٹریلیا 4 وکٹوں سے جیت گیا
ہیڈنگلے، لیڈز، انگلینڈ
18 جون 1975
اسکور کارڈ
  نیوزی لینڈ
158 (52.2 اوور)
بمقابلہ
  ویسٹ انڈیز
159/5 (40.1 اوور)
ویسٹ انڈیز 5 وکٹ سے جیت گیا
کیننگٹن اوول، لندن، انگلینڈ

فائنلترميم

اس پہلے عالمی کپ کے فائنل میں ویسٹ انڈیز کے کپتان کلائیو لائیڈ 85 گیندوں پر 102 رنز 12 چوکوں اور 2 چھکوں کے ساتھ شاندار اننگز کے بعد ویسٹ انڈیز نے آسٹریلیا کو 17 رنز سے شکست دی۔ کیونکہ آسٹریلوی اننگز میں ٹاپ آرڈر بلے بازوں کے رن آؤٹ ہونے کے باعث شکست تو ہونی ہی تھی حیرت انگیز طور پر پانچ رن آؤٹ ہوئے، جس میں تین ویوین رچرڈز نے کیے تھے تاہم یہ بات خاص طور پر نوٹ کی گئی کہ 1975ء میں کسی بھی کھلاڑی کو 'مین آف دی سیریز' قرار نہیں دیا گیا۔

21 جون 1975
اسکور کارڈ
  ویسٹ انڈیز
291/8 (60 اوور)
بمقابلہ
  آسٹریلیا
274 (58.4 اوور)
ویسٹ انڈیز 17 رنز سے جیت گیا
Lord's, London, انگلینڈ
Attendance: 24,000

حوالہ جاتترميم

بیرونی روابطترميم

مزید دیکھیےترميم