جمہوریہ کرغیزستان یا قیرغیزستان (Kyrgystan) وسط ایشیا میں واقع ایک ترکستانی ریاست ہے۔ اس کے شمال میں قازقستان، مغرب میں ازبکستان، جنوب میں تاجکستان اور مشرق میں عوامی جمہوریہ چین واقع ہیں۔ اس کا دار الحکومت اس کا سب سے بڑا شہر بشکیک ہے ۔ اس کا رقبہ تقریبا 198,500 مربع کلومیٹر ہے اور آبادی ساٹھ لاکھ کے قریب ہے جس میں سے اکثریت (90 فیصد) مسلمان ہیں۔ کرغیز کے علاوہ یہاں روسی، ازبک، ایغور اور زونگار بھی بڑی تعداد میں آباد ہیں۔

جمہوریہ کرغیز
Kyrgyz Republic
  • Кыргыз Республикасы  (کرغیز)
    Kyrgyz Respublikasy
  • Киргизская Республика  (روسی)
    Kirgizskaya Respublika
پرچم کرغیزستان
ترانہ: 
محل وقوع کرغیزستان (green)
محل وقوع کرغیزستان (green)
دار الحکومت
and largest city
بشکیک
نسلی گروہ
مذہب
اسلام 90 فیصد، روسی آرتھوڈاکس چرچ 7 فیصد دیگر 3 فیصد
آبادی کا نام
حکومتوحدانی ریاست پارلیمانی نظام
• صدر
صدر جاپاروف
عقیل بیگ جعفروف
مقننہسپریم کونسل
آزادی سوویت اتحاد سے
14 اکتوبر 1924
5 دسمبر 1936
• آزادی کا اعلان
31 اگست 1991
• تسلیم
25 دسمبر 1991
رقبہ
• کل
[آلہ تبدیل: invalid number] (87th)
• پانی (%)
3.6
آبادی
• 2015 تخمینہ
6٫000٫000[3] (110th)
• 2009 مردم شماری
5٫362٫800
• کثافت
27.4/کلو میٹر2 (71.0/مربع میل) (176th)
جی ڈی پی (پی پی پی)2015 تخمینہ
• کل
$20.095 بلین[4]
• فی کس
$3٫363[4]
جی ڈی پی (برائے نام)2015 تخمینہ
• کل
$6.650 بلین[4]
• فی کس
$1٫113[4]
جینی (2012)27.4[5]
low
ایچ ڈی آئی (2014)Increase 0.655[6]
میڈیم · 120th
کرنسیسوم (KGS)
منطقۂ وقتیو ٹی سی+6 (KGT)
ڈرائیونگ سائیڈدائیں
کالنگ کوڈ+996
انٹرنیٹ ایل ٹی ڈیKg.

"کرغیز" یا "قرقیز" کے معنی ہیں "ہم چالیس" جس سے مراد کرغز کے وہ چالیس قبیلے ہیں جو ترک روایت کے مطابق زمانہ قدیم میں متٌحد ہو کر ایک قوم بن گئے تھے۔ کرغیزستانی جھنڈے پر اس اتحاد کی نشان دہی چالیس کرنیں ہیں۔ جبکہ درمیان میں دائیرہ مقامی خیمے، یرت کے مرکز کی نشان دہی کرتا ہے۔ بعض تاریخ دانوں اور زبان شناسوں کے مطابق قرقیز کے اصل لفظی معنی لال ہیں جو اس علاقہ میں مقیم ترک قبیلوں کا قومی رنگ ہوا کرتا تھا۔

کرغزستان کی تاریخ مختلف ثقافتوں اور سلطنتوں پر محیط ہے۔ اگرچہ جغرافیائی طور پر اپنے انتہائی پہاڑی علاقے  کی وجہ سے الگ تھلگ ہے، لیکن کرغزستان دیگر تجارتی راستوں کے ساتھ شاہراہ ریشم کے حصے کے طور پر کئی عظیم تہذیبوں کے سنگم پر رہا ہے۔ قبائل اور خاندانوں کی پے در پے آباد ہونے کی وجہ سے کرغزستان کا ماضی بہت بڑے علاقے پر پھیلا ہوا ہے، مثال کے طور پر ترک خانہ بدوش، جو بہت سی ترک ریاستوں سے اپنا نسب جوڑتے ہیں۔ یہ سب سے پہلے یینیسی کرگی خاقانیت Yenisei Kurgy Khaganate کے طور پر قائم کیا گیا۔ بعد میں، 13ویں صدی میں، کرغزستان کو منگولوں نے فتح کر لیا۔ اس نے دوبارہ آزادی حاصل کر لی، لیکن بعد میں زونگار خاقانیت Dzungar Khanate نے اس پر حملہ کر دیا۔ زونگاروں کے زوال کے بعد، کرغیز اور کپچاک خوقند خاقانیت کا لازمی حصہ رہے۔ 1876ء ​​میں، کرغزستان روسی سلطنت کا حصہ بن گیا اور 1936ء میں، کرغیز سوویت سوشلسٹ جمہوریہ کو سوویت یونین کا ایک جزوی جمہوریہ بننے کے لیے تشکیل دیا گیا۔ سوویت روس میں میخائل گورباچوف کی جمہوری اصلاحات کے بعد، 1990ء میں آزادی کے حامی امیدوار عسکر آکایف صدر منتخب ہوئے۔ 31 اگست 1991ء کو کرغزستان نے ماسکو سے آزادی کا اعلان کیا اور ایک جمہوری حکومت قائم ہوئی۔ کرغزستان نے 1991ء میں سوویت یونین کے ٹوٹنے کے بعد ایک قومی ریاست کے طور پر خود مختاری حاصل کی۔

آزادی کے بعد، کرغزستان باضابطہ طور پر ایک واحد صدارتی جمہوریہ تھا۔ ٹیولپ انقلاب کے بعد یہ ایک وحدانی پارلیمانی جمہوریہ بن گیا، حالانکہ اس نے بتدریج ایک ایگزیکٹو صدر بنایا اور 2021ء میں صدارتی نظام میں واپس آنے سے پہلے ایک نیم صدارتی جمہوریہ کے طور پر حکومت بنی۔ اپنی آزادی کے ساتھ ہی کرغیزستان اقتصادی مشکلات، عبوری حکومتوں اور سیاسی تنازعات کا شکار رہا ہے۔

کرغزستان آزاد ریاستوں کی دولت مشترکہ، یوریشین اکنامک یونین، اجتماعی سلامتی معاہدہ تنظیم، شنگھائی تعاون تنظیم، اسلامی تعاون تنظیم، یورپ میں سلامتی اور تعاون کی تنظیم، ترک ریاستوں کی تنظیم ، ترکسوئے کمیونٹی اور اقوام متحدہ کا رکن ہے۔ یہ ایک ترقی پزیر ملک ہے جو انسانی ترقی کے اشاریہ میں 118 ویں نمبر پر ہے اور پڑوسی ملک تاجکستان کے بعد وسطی ایشیا کا دوسرا غریب ترین ملک ہے۔ ملک کی عبوری معیشت سونے، کوئلے اور یورینیم کے ذخائر پر بہت زیادہ انحصار کرتی ہے۔

وجہ تسمیہ ترمیم

کرغیز ترک زبان کے لفظ جس کے معنی ہیں،"ہم چالیس ہیں" سے ماخوذ ہے، جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ماناس کے چالیس قبیلوں کا حوالہ سے ہے، جو ایک افسانوی ہیرو تھا جس نے چالیس علاقائی قبیلوں کو متحد کیا۔ -ستان فارسی میں ایک لاحقہ ہے جس کا مطلب ہے "کا ملک"۔ کرغزستان کے جھنڈے پر 40 شعاعوں کا سورج انہی چالیس قبائل کا حوالہ ہے اور سورج کے مرکز میں تصویری عنصر لکڑی کے تاج کو دکھایا گیا ہے، جسے تندوک کہا جاتا ہے، یہ ایک یرت - ایک خیمہ گاہ جسے روایتی طور پر خانہ بدوش وسطی ایشیا کے میدانوں میں استعمال کرتے ہیں۔ ملک کا سرکاری نام جمہوریہ کرغیز ہے، جو بین الاقوامی طور پر اور خارجہ تعلقات میں استعمال ہوتا ہے۔ انگریزی بولنے والی دنیا میں، کرغزستان کے ہجے عام طور پر استعمال ہوتے ہیں، جبکہ اس کا سابقہ ​​نام کرغیزیا شاذ و نادر ہی استعمال ہوتا ہے۔

تاریخ ترمیم

آٹھویں صدی میں جب عرب افواج نے وسط ایشیا فتح کیا تو یہاں مقیم آبادی مسلمان ہونے لگی۔ بارہویں صدی میں چنگیز خان نے اس علاقے کا قبضہ کر لیا اور یوں چھ صدیوں تک یہ چین کا حصہ رہا۔ اٹھارویں صدی کے آخر میں دو معاہدوں کے تحت یہ علاقہ روسی سلطنت کا مقبوضہ صوبہ کرغزیہ بن گیا۔ اس دور میں کئی سرکش کرغیز چین یا افغانستان منتقل ہو گئے۔ 1919ء سے یہاں سوویت دور شروع ہوا جو 31 اگست 1991ء میں جمہوریہ کرغیزستان کی آزادی کے ساتھ اپنے اختتام پر پہنچا۔

جغرافیہ ترمیم

کرغیزستان کا رقبہ 198,500 مربع کلومیٹر ہے جس میں سے 80 فیصد تیان شان اور پامیر کے پہاڑی سلسلوں کا علاقہ ہے۔سب سے نچلا نقطہ کارا دریا میں 132 میٹر گہرا ہے اور سب سے اونچی چوٹیاں کاکشال۔تو رینج میں ہے، جو چینی سرحد کو تشکیل دیتی ہیں۔ چوٹی جینگش چوکسو، 7,439 میٹر (24,406 فٹ) پر، سب سے اونچا مقام ہے۔ موسم سرما میں شدید برف باری موسم بہار کے سیلاب کا باعث بنتی ہے جو اکثر نیچے کی طرف شدید نقصان کا باعث بنتی ہے۔ پہاڑوں سے نکلنے والے پانی کے بہاؤ کو پن بجلی کے لیے بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ اس علاقے کے شمال مشرق میں 1,606 میٹر کی بلندی پر اسیک کول کی نمکین جھیل واقع ہے جو دنیا میں اس نوعیت کی ٹٹی کاکا کے بعد دوسری سب سے بڑی جھیل ہے۔ کرغیز زبان میں اس کے معنی "گرم جھیل" ہیں کیونکہ اتنے برفانی علاقے میں اور اس بلندی پر ہونے کے باوجود یہ سال بھر جمتی نہیں ہے۔ اس نمکین جھیل کے علاوہ کرغیزستان باقی کئی وسط ایشیائی ممالک کی طرح مکمل طور پر خشکی سے محصور ہے۔ اس کی سرحدیں کسی سمندر سے نہیں ملتیں۔

یہ عرض البلد °39 اور °44 شمال اور طول البلد °69 اور °81 مشرق کے درمیان واقع ہے اور اس کے تمام دریا بند نکاسی آب کے نظام میں بہتے ہیں جو سمندر تک نہیں پہنچتے ہیں۔

شمال میں بشکیک دار الحکومت اور سب سے بڑا شہر ہے، جس میں 937,400 باشندے ہیں (2015 تک)۔ دوسرا شہر اوش کا قدیم قصبہ ہے جو ازبکستان کی سرحد کے قریب وادی فرغانہ میں واقع ہے۔ اہم دریا کارا دریا ہے، جو مغرب کی طرف وادی فرغانہ سے ہوتا ہوا ازبکستان میں بہتا ہے۔ ازبکستان میں سرحد کے اس پار یہ ایک اور بڑے کرغیز دریا، نارائن سے ملتا ہے۔ ان دونوں کے سنگم سے سیر دریا بناتا ہے، جو ابتدا میں بحیرہ ارال میں بہتا تھا۔ مگر سنہ 2010ء کے بعد یہ سمندر تک نہیں پہنچتا، کیونکہ تاجکستان، ازبکستان اور جنوبی قازقستان میں کپاس کے کھیتوں کو سیراب کرنے کے لیے اس کا پانی اوپر کی طرف نکالا جاتا ہے۔ "دریائے چو" بھی قازقستان میں داخل ہونے سے پہلے مختصر طور پر کرغزستان سے گزرتا ہے۔ کرغزستان میں دھاتوں کے اہم ذخائر ہیں جن میں سونا اور نایاب زمین کی دھاتیں شامل ہیں۔ ملک کے بنیادی طور پر پہاڑی علاقے کی وجہ سے، 8 فیصد سے بھی کم زمین پر کاشت کی جاتی ہے اور یہ شمالی نشیبی علاقوں اور وادی فرغانہ کے کنارے پر مرکوز ہے۔

کرغزستان میں سات ارضی ماحولیاتی نظام ہیں: تیان شان سلسلہ کوہ کے کونیفر جنگلات، الائی-مغربی تیان شان میدانی ڈھلانیں، گیسارو-الائی کھلے جنگلات، تیان شان کے دامن میں بنجر میدان، پامیر الپائن صحرا اور ٹنڈرا، تیان شان پہاڑی بنجر ڈھلانیں اور وسط ایشیائی شمالی صحرا۔ اس کا 2019 میں فاریسٹ لینڈ اسکیپ انٹیگریٹی انڈیکس (Forest Landscape Integrity Index) 8.86/10 تھا، جو اسے 172 ممالک میں عالمی سطح پر تیرھویں نمبر پر رکھتا ہے۔

آب و ہوا ترمیم

آب و ہوا علاقائی طور پر مختلف ہوتی ہے۔ جنوب مغرب میں نشیبی فرغانہ وادی ذیلی استوائی ہے اور گرمیوں میں انتہائی گرم ہے، جس کا درجہ حرارت °40 سینٹی گریڈ یا  °104 فارن ہائیٹ تک پہنچ جاتا ہے، شمالی دامن کی پہاڑیاں معتدل ہیں اور تیان شان کا موسم خشک براعظمی سے قطبی آب و ہوا تک مختلف ہوتا ہے۔ سرد ترین علاقوں میں سردیوں میں تقریباً 40 دنوں تک درجہ حرارت صفر ڈگری سینٹی گریڈ رہتا ہے، یہاں تک کہ کچھ صحرائی علاقوں میں اس عرصے میں مسلسل برف باری ہوتی ہے۔ نشیبی علاقوں میں درجہ حرارت جنوری میں تقریباً منفی °6 سینٹی گریڈ یا °21 فارن ہائیٹ سے جولائی میں °24 سینٹی گریڈ یا °75 فارن ہائیٹ تک ہوتا ہے۔

معاشرتی اور سیاسی تقاسیم ترمیم

کرغیزستان کی آبادی گذشتہ دہائیوں میں پچاس لاکھ تک پہنچ چکی ہے تاہم بیشتر کرغیزستانی اب بھی کسان یا خانہ بدوش ہیں۔ اسی فیصد کرغیزستانی ترک نژاد کرغیز (قرقیز) قوم سے تعلق رکھتے ہیں جب کہ بقیہ پچیس فیصد نسلاً ازبک اور روسی ہیں۔ ان کے علاوہ زونگار، تاتار، اوغر، قزاق، تاجک اور یوکرینی قومیں بھی یہاں آباد ہیں۔ اگرچہ یہاں کئی زبانیں بولی جاتی ہیں، سرکاری زبانیں صرف کرغیز اور روسی ہیں۔

نوے فیصد کرغیزستانی مسلمان ہیں۔ ان میں سے اکثریت حنفی فقہ سے منسلک ہیں جو یہاں سترہویں صدی میں رائج ہوا۔ شہروں سے باہر اسلامی روایات مقامی ترک قبائلی روایات اور عقائد سے ملی ہوئی ہیں۔ بقیہ کرغیزستانی زیادہ تر روسی یا یوکرینی آرتھوڈوکس چرچ کے مسیحی ہیں۔ سوویت دور میں یہاں سرکاری لامذہبیت (دہریت) عائد تھی اور کرغیزستان کا آئین اب بھی حکومت میں دین کی مداخلت کو ممنوع قرار دیتا ہے۔ تاہم آزادی کے بعد اسلام معاشرتی اور سیاسی سطحوں پر بتدریج اہمیت حاصل کر رہا ہے۔ اس کے باوجود کچھ سیاسی اور معاشرتی گروہ اب بھی سوویت دور کی دہریت کے حامی ہیں۔

کرغیزستان سات صوبوں میں مقسوم ہے جو اوبلاست (област) کہلاتے ہیں (جمع: اوبلاستار / областтар)۔ دار الحکومت بشکیک اور وادئ فرغانہ میں واقع شہر اوش انتظامی طور پر خود مختار علاقے ہیں جو "شار" کہلاتے ہیں۔ صوباؤں کے نام ہیں: باتکین، چوئی، جلال آباد، نارین، اوش، تالاس اور ایسیک کول۔

آبادیات ترمیم

مذہب ترمیم

کرغیزستان کی بھاری اکثریت مسلمان آبادی پر مشتمل ہے، 1998ء کی مردم شماری کے مطابق کرغیزستان کی کل آبادی کا 86.3 فیصد اسلام کے پیروکاروں پر مشتمل ہے اور ان کی اکثریت اہلسنت ہے۔[8] مسلمان پہلے پہل یہاں آٹھویں صدی عیسوی میں وارد ہوئے۔[9] آئین مذہبی آزادی کی ضمانت دیتا ہے۔ کرغزستان ایک کثیر النسلی اور اسلام کے ساتھ کثیر مذہبی ملک ہے (بشمول اہل سنت، اہل تشیعبدھ مت، بہائیت، مسیحیت (بشمول روسی راسخ الاعتقاد اور کاتھولک کلیسیایہودیت اور دیگر مذاہب سب ملک میں موجود ہے۔ سنی اسلام ملک کا سب سے بڑا مذہب ہے، سنیوں کی تعداد، کل آبادی کا 75 سے 80 فیصد ہے۔

مزید دیکھیے ترمیم

حوالہ جات ترمیم

  1. "Ethnic composition of the population in Kyrgyzstan 1999–2014" (PDF) (بزبان روسی)۔ National Statistical Committee of the Kyrgyz Republic۔ 6 جولائی 2014 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 اپریل 2014 
  2. Kyrgysztan آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ cia.gov (Error: unknown archive URL) in the CIA کتاب حقائق عالم۔
  3. "Long-awaited six millionth resident born in Kyrgyzstan" (بزبان انگریزی)۔ 24.kg News Agency۔ 27 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 نومبر 2015 
  4. ^ ا ب پ ت "Report for Selected Countries and Subjects"۔ World Economic Outlook Database, اپریل 2016۔ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ۔ اپریل 2016۔ 07 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 مئی 2016 
  5. "Gini index"۔ عالمی بنک۔ 07 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 مئی 2016 
  6. "2015 Human Development Report" (PDF)۔ United Nations Development Programme۔ 2015۔ 07 جنوری 2019 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 دسمبر 2015 
  7. "Constitution"۔ Government of Kyrgyzstan۔
    Article 5
    1. The state language of the Kyrgyz Republic shall be the Kyrgyz language.
    2. In the Kyrgyz Republic, the Russian language shall be used in the capacity of an official language.
     
  8. "آرکائیو کاپی" (PDF)۔ 19 مئی 2011 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2018 
  9. Gendering Ethnicity: Implications for Democracy Assistance By L. M. Handrahan, pg. 100