انسانی ترقیاتی اشاریہ

متوقع زندگی ، متوقع تعلیم ، اور آمدنی اشاریہ کا جامع اعدادوشمار

انسانی ترقیاتی اشاریہ (ایچ ڈی آئی) ایک متوقع جامع اشاریہ ہے، جو متوقع زندگی ، تعلیم (نظام تعلیم میں داخل ہونے کے بعد اسکول کی تعلیم کے مکمل سال اور متوقع سال) اور فی کس آمدنی کے اشارے ہیں ، جو ممالک کو انسانی ترقی کے چار درجوں میں درجہ بند کرنے کے لیے استعمال ہوتے ہیں۔ ایک ملک ایک اعلی انسانی ترقیاتی اشاریہ کا نتیجہ اس وقت حاصل کرتا ہے، جب اس ملک کی متوقع زندگی زیادہ ہو ، تعلیمی سطح زیادہ ہو اور مجموعی قومی آمدنی فی کس مجموعی قومی آمدنی زیادہ ہو۔ اسے پاکستانی ماہر معاشیات محبوب الحق نے تیار کیا تھا اور اسے اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) کے انسانی ترقیاتی رپورٹ آفس کے ذریعہ کسی ملک کی ترقی کی پیمائش کے لیے استعمال کیا گیا تھا۔[1][2][3]

انسانی ترقیاتی اشاریہ زمرے کی نمائندگی کرنے والا عالمی نقشہ (2019ء کے اعداد و شمار پر مبنی، 2020ء میں شائع کردہ)۔
  0.800–1.000 (بہت اعلٰی)
  0.700–0.799 (اعلٰی)
  0.550–0.699 (متوسط)
  0.350–0.549 (ادنٰی)
  اعداد و شمار غیر دستیاب
عالمی نقشہ برائے ممالک بلحاظ انسانی ترقیاتی اشاریہ 0.050 کے اضافہ کے ساتھ (2019ء کے اعداد و شمار پر مبنی، 2020ء میں شائع کردہ)۔
  ≥ 0.900
  0.850–0.899
  0.800–0.849
  0.750–0.799
  0.700–0.749
  0.650–0.699
  0.600–0.649
  0.550–0.599
  0.500–0.549
  0.450–0.499
  0.400–0.449
  ≤ 0.399
  اعداد و شمار غیر دستیاب

2010ء کی انسانی ترقیاتی تجویز میں عدم مساوات سے متعلق انسانی ترقیاتی اشاریہ (IHDI) متعارف کرایا گیا۔ اگرچہ سادہ ایچ ڈی آئی کارآمد رہتا ہے، اس میں یہ بتایا گیا ہے کہ "IHDI انسانی ترقی کی اصل سطح (عدم مساوات کا محاسبہ) ہے ، جب کہ IHDI کو 'ممکنہ' انسانی ترقی (یا HDI کی زیادہ سے زیادہ سطح) کے ایک اشاریہ کے طور پر دیکھا جاسکتا ہے کہ اگر وہاں عدم مساوات نہ ہوتا تو یہ کامیابی حاصل کی جا سکتی تھی۔ "[4] یہ اشاریہ؛ انسانی ترقی کے نقطہ نظر پر مبنی ہے ، جسے محبوب الحق نے تیار کیا ہے ، اکثر اس لحاظ سے تیار کیا جاتا ہے کہ آیا لوگ زندگی میں مطلوبہ چیزوں کے "بننے" اور "کرنے" کے اہل ہیں یا نہیں۔ مثالوں میں شامل ہیں۔ کہ یہ ہو: عمدہ غذا، پناہ ، صحت مند۔ کہ یہ کریں: محنت ، تعلیم ، ووٹنگ اور سماجی زندگی میں شرکت۔ انتخاب کی آزادی مرکزی حیثیت رکھتی ہے - کوئی بھوکا رہنا پسند کرتا ہے (جیسے مذہبی روزہ کے دوران) جو اس شخص سے بالکل مختلف ہے، جس کو بھوک لگی ہو؛ لیکن اسے کھانا خریدنے پر قدرت نہ ہو یا اس لیے کہ ملک؛ قحط کا شکار ہو۔[5] اشاریہ؛ متعدد عوامل کو مدنظر نہیں رکھتا ہے ، جیسے ملک میں فی کس خالص دولت یا کسی ملک میں سامان کا معیار۔ انڈیکس متعدد عوامل کو مدنظر نہیں رکھتا ہے ، جیسے ملک میں فی کس خالص دولت یا کسی ملک میں اشیاء کا معیار۔ یہ صورت حال کچھ جدید ترین ممالک جیسے جی 7 ممبروں اور دیگر ممالک کی درجہ بندی کو کم کرنے کا موجب ہے۔[6]

ابتداترميم

ایچ ڈی آئی کی ابتدا؛ اقوام متحدہ ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) کے انسانی ترقیاتی اشاریہ رپورٹ آفس کے ذریعہ تیار کردہ سالانہ انسانی ترقیاتی رپورٹس میں پائی جاتی ہے۔ جو 1990ء میں پاکستانی ماہر اقتصادیات محبوب الحق اور بھارتی ماہر اقتصادیات امرتیہ سین نے وضع کیا تھا اور اس کا آغاز کیا تھا اور ان کا واضح مقصد تھا "ترقی معاشیات کی توجہ کا مرکز؛ قومی آمدنی کے محاسبہ سے عوام پر مبنی پالیسیوں کی جانب منتقل کرنا"۔ محبوب الحق کا خیال تھا کہ عوام ، ماہرین تعلیم اور سیاست دانوں کو یہ سمجھانے کے لیے انسانی ترقی کی ایک آسان جامع اقدام کی ضرورت ہے کہ وہ نہ صرف معاشی ترقی بل کہ انسانی فلاح و بہبود میں بہتری کے ذریعہ بھی ترقی کا جائزہ لے سکتے ہیں۔

 
انسانی ترقیاتی اشاریہ کے پیچھے بنیادی اصول۔[5]

طول و عرض اور حساب کتابترميم

نیا طریقہ (2010ء انسانی ترقیاتی اشاریہ کے بعد)ترميم

4 نومبر 2010 کو شائع ہوا (اور 10 جون 2011 کو اپ ڈیٹ ہوا) ، 2010 کی انسانی ترقیاتی رپورٹ میں ایچ ڈی آئی کا حساب کیا گیا جس نے تین جہتوں کو ملایا:[7][8]

  • معیارِ زندگی: جی این آئی فی کس (بین الاقوامی ڈالر|پی پی پی کے بین الاقوامی ڈالر)
  • اپنی 2010ء کی انسانی ترقیاتی رپورٹ میں ، یو این ڈی پی نے ایچ ڈی آئی کا حساب لگانے کا ایک نیا طریقہ استعمال کرنا شروع کیا۔ مندرجۂ ذیل تین اشاریے استعمال کیے گئے ہیں:

1. اشاریہ متوقع زندگی (LEI)  

اشاریہ متوقع زندگی 1 ہے جب پیدائش کے وقت متوقع عمر 85 ہو اور 0 ہے جب پیدائش کے وقت متوقع عمر 20 ہو۔

2. تعلیمی اشاریہ (EI)  [9]

2.1 مطلب سالانہ تعلیمی اشاریہ (MYSI)  [10]
سال 2025ء کے لیے اس اشاریہ میں زیادہ سے زیادہ پندرہ متوقع ہے۔
2.2 متوقع سالوں کی تعلیم اشاریہ (EYSI)  [11]
بیشتر ممالک میں اٹھارہ ماسٹر کی ڈگری حاصل کرنے کے مترادف ہے۔

3. آمدنی اشاریہ (II)  

آمدنی اشاریہ (II) 1 ہے جب جی این آئی فی کس 7,000$ ہو اور 0 جب جی این آئی فی کس 100$ ہے۔

اخیر میں، ایچ ڈی آئی پچھلے تین حسب ضرورت اشاریوں کا ہندسی مطلب ہے:

 

LE: پیدائش کے وقت متوقع عمر
MYS: مطلب سالانہ تعلیم (یعنی 25 سال یا اس سے زیادہ عمر؛ کسی فرد نے باضابطہ تعلیم میں صرف کیا ہے)
EYS: متوقع سالوں کی تعلیم (یعنی 18 سال سے کم عمر بچوں کے لیے اسکول جانے کے کل متوقع سال)
GNIpc: مجموعی قومی آمدنی فی کس مساوی قوت خرید

قدیم طریقہ (2010ء انسانی ترقیاتی اشاریہ سے پہلے)ترميم

ایچ ڈی آئی نے اپنی 2009ء کی رپورٹ میں آخری استعمال میں تین جہتوں کو ملایا:

  • پیدائش کے وقت متوقع زندگی،آبادی صحت اور ایچ ڈی آئی کے لیے لمبی عمر کے ایک اشاریہ کے طور پر
  • علم و تعلیم ، جیسا کہ بالغ خواندگی کی شرح سے ماپا جاتا ہے (دوتہائی وزن کے ساتھ) اور مشترکہ پرائمری ، ثانوی اور تیسری مجموعی اندراج کا تناسب (ایک تہائی وزن کے ساتھ)۔

یہ طریقہ کار یو ایم ڈی پی نے اپنی 2011ء کی رپورٹ تک استعمال کیا۔

ایچ ڈی آئی کی وضاحت کرنے والا فارمولا اقوام متحدہ کے ترقیاتی پروگرام (یو این ڈی پی) کے ذریعہ تیار کیا گیا ہے۔[12]*  

جہاں   اور   سب سے کم اور اعلی اقدار ہیں متغیر   بالترتیب حاصل کرسکتے ہیں۔


انسانی ترقیاتی اشاریہ (ایچ ڈی آئی) پھر یکساں وزن والی رقم کی نمائندگی کرتا ہے جس میں 13 کے ساتھ مندرجہ ذیل اشاریوں کی فہرست میں سے ہر ایک کے تعاون سے ہوتا ہے:


انسانی ترقیاتی اشاریہ 2019ء (2020ء رپورٹ)ترميم

اقوام متحدہ ترقیاتی پروگرام کے ذریعہ انسانی ترقیاتی رپورٹ 2020ء کو 15 دسمبر 2020ء میں جاری کیا گیا اور 2019ء میں جمع کردہ اعداد و شمار کی بنیاد پر ایچ ڈی آئی اقدار کا حساب لگاتا ہے۔[13] ذیل میں بہت اعلی انسانی ترقی والے ممالک یا علاقوں کی فہرست ہے:

  •   = اضافہ
  •   = مستحکم
  •   = کمی
درجہ ملک یا علاقہ انسانی ترقیاتی اشاریہ
2019 ڈیٹا (2020 رپورٹ)[14] 5 سال میں تبدیلی (2014)[15] 2019 ڈیٹا (2020 رپورٹ)[14] سالانہ اوسط انسانی ترقیاتی اشاریہ اضافہ (2010–2019)[15]
1     ناروے 0.957   0.20%
2   (7)   جمہوریہ آئرلینڈ 0.955   0.65%
2     سویٹزرلینڈ 0.955   0.16%
4   (7)   ہانگ کانگ 0.949   0.54%
4   (4)   آئس لینڈ 0.949   0.62%
6   (3)   جرمنی 0.947   0.24%
7   (3)   سویڈن 0.945   0.41%
8   (2)   آسٹریلیا 0.944   0.17%
8   (1)   نیدرلینڈز 0.944   0.32%
10   (6)   ڈنمارک 0.940   0.28%
11   (2)   فن لینڈ 0.938   0.26%
11     سنگاپور 0.938   0.35%
13     مملکت متحدہ 0.932   0.24%
14   (1)   بلجئیم 0.931   0.25%
14   (3)   نیوزی لینڈ 0.931   0.30%
16   (1)   کینیڈا 0.929   0.34%
17   (3)   ریاستہائے متحدہ 0.926   0.12%
18     آسٹریا 0.922   0.22%
19   (1)   اسرائیل 0.919   0.29%
19   (2)   جاپان 0.919   0.39%
19     لیختینستائن 0.919   0.18%
22   (2)   سلووینیا 0.917   0.35%
23   (1)   جنوبی کوریا 0.916   0.33%
23     لکسمبرگ 0.916   0.22%
  یورپی اتحاد 0.911
25   (1)   ہسپانیہ 0.904   0.40%
26   (1)   فرانس 0.901   0.28%
27   (1)   چیک جمہوریہ 0.900   0.38%
28   (2)   مالٹا 0.895   0.54%
29   (2)   استونیا 0.892   0.51%
29   (1)   اطالیہ 0.892   0.16%
31   (6)   متحدہ عرب امارات 0.890   0.91%
32   (3)   یونان 0.888   0.29%
33     قبرص 0.887   0.40%
34     لتھووینیا 0.882   0.66%
35     پولینڈ 0.880   0.52%
36   (4)   انڈورا 0.868   0.40%
37   (3)   لٹویا 0.866   0.55%
38   (1)   پرتگال 0.864   0.46%
39   (2)   سلوواکیہ 0.860   0.38%
40   (1)   مجارستان 0.854   0.30%
40   (4)   سعودی عرب 0.854   0.60%
42   (6)   بحرین 0.852   0.70%
43     چلی 0.851   0.65%
43   (2)   کرویئشا 0.851   0.48%
45     قطر 0.848   0.19%
46   (2)   ارجنٹائن 0.845   0.21%
47   (6)   برونائی دارالسلام 0.838   0.15%
48   (2)   مونٹینیگرو 0.829   0.37%
49   (2)   رومانیہ 0.828   0.31%
50   (3)   پلاؤ 0.826   0.55%
51   (7)   قازقستان 0.825   0.86%
52   (1)   روس 0.824   0.60%
53   (4)   بیلاروس 0.823   0.39%
54   (5)   ترکی 0.820   1.16%
55   (1)   یوراگوئے 0.817   0.49%
56   (2)   بلغاریہ 0.816   0.39%
57   (5)   پاناما 0.815   0.58%
58   (3)   بہاماس 0.814   0.12%
58   (6)   بارباڈوس 0.814   0.23%
60   (3)   سلطنت عمان 0.813   0.43%
61   (7)   جارجیا 0.812   0.87%
62   (3)   کوسٹاریکا 0.810   0.64%
62   (1)   ملائیشیا 0.810   0.54%
64   (5)   کویت 0.806   0.25%
64   (3)   سربیا 0.806   0.57%
66   (2)   موریشس 0.804   0.76%


2010ترميم

  1.   ناروے 0.938 ( )
  2.   آسٹریلیا 0.937 ( )
  3.   نیوزی لینڈ 0.907 (  17)
  4.   ریاستہائے متحدہ 0.902 (  9)
  5.   جمہوریہ آئرلینڈ 0.895 ( )
  6.   لیختینستائن 0.891 (  13)
  7.   نیدرلینڈز 0.890 (  1)
  8.   کینیڈا 0.888 (  4)
  9.   سویڈن 0.885 (  2)
  10.   جرمنی 0.885 (  12)
  11.   جاپان 0.884 (  1)
  12.   جنوبی کوریا 0.877 (  14)
  13.   سویٹزرلینڈ 0.874 (  4)
  14.   فرانس 0.872 (  6)

  1.   اسرائیل 0.872 (  12)
  2.   فن لینڈ 0.871 (  4)
  3.   آئس لینڈ 0.869 (  14)
  4.   بلجئیم 0.867 (  1)
  5.   ڈنمارک 0.866 (  3)
  6.   ہسپانیہ 0.863 (  5)
  7.   ہانگ کانگ 0.862 (  3)
  8.   یونان 0.855 (  3)
  9.   اطالیہ 0.854 (  5)
  10.   لکسمبرگ 0.852 (  13)
  11.   آسٹریا 0.851 (  11)
  12.   مملکت متحدہ 0.849 (  5)
  13.   سنگاپور 0.846 (  5)
  14.   چیک جمہوریہ 0.841 (  8)

  1.   سلووینیا 0.828 ( )
  2.   انڈورا 0.824 (  2)
  3.   سلوواکیہ 0.818 (  11)
  4.   متحدہ عرب امارات 0.815 (  3)
  5.   مالٹا 0.815 (  5)
  6.   استونیا 0.812 (  6)
  7.   قبرص 0.810 (  3)
  8.   مجارستان 0.805 (  7)
  9.   برونائی دارالسلام 0.805 (  7)
  10.   قطر 0.803 (  5)
  11.   بحرین 0.801 ( )
  12.   پرتگال 0.795 (  6)
  13.   پولینڈ 0.795 ( )
  14.   بارباڈوس 0.788 (  5)

مزید دیکھیےترميم

فہرست ایشیاء اور اوقیانوسیہ کی خود مختار ریاستیں بلحاظ انسانی ترقیاتی اشاریہ

سانچہ:فہرستیں آبادی بلحاظ ملک

  1. A. Stanton، Elizabeth (February 2007). "The Human Development Index: A History". PERI Working Papers: 14–15. 28 فروری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 فروری 2019. 
  2. "Human Development Index". Economic Times. 01 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 نومبر 2017. 
  3. "The Human Development concept". UNDP. 2010. 15 اپریل 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 جولا‎ئی 2011. 
  4. Human Development Index, "Composite indices — HDI and beyond", Retrieved 16 January 2021.
  5. ^ ا ب "What is Human Development". UNDP. 2017. 27 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2017. ... human development approach, developed by the economist Mahbub Ul Haq ...' 
  6. The Courier (بزبان انگریزی). Commission of the European Communities. 1994. 
  7. "Human Development Report 2010". UNDP. 4 November 2010. 22 دسمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 دسمبر 2015. 
  8. "Technical notes" (PDF). UNDP. 2013. 16 جون 2015 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 دسمبر 2015. 
  9. "New method of calculation of Human Development Index (HDI)". India Study Channel (بزبان انگریزی). 1 June 2011. 10 نومبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 نومبر 2017. 
  10. Mean years of schooling (of adults) (years) is a calculation of the average number of years of education received by people ages 25 and older in their lifetime based on education attainment levels of the population converted into years of schooling based on theoretical duration of each level of education attended. Source: Barro، R. J.؛ Lee، J.-W. (2010). "A New Data Set of Educational Attainment in the World, 1950–2010". NBER Working Paper No. 15902. doi:10.3386/w15902 . 07 اگست 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 جولا‎ئی 2011. 
  11. (ESYI is a calculation of the number of years a child is expected to attend school, or university, including the years spent on repetition. It is the sum of the age-specific enrollment ratios for primary, secondary, post-secondary non-tertiary and tertiary education and is calculated assuming the prevailing patterns of age-specific enrollment rates were to stay the same throughout the child's life. Expected years of schooling is capped at 18 years. (Source: UNESCO Institute for Statistics (2010). Correspondence on education indicators. March. Montreal.)
  12. "Definition, Calculator, etc. at UNDP site". 20 دسمبر 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2020. 
  13. Human Development Report 2020 The Next Frontier: Human Development and the Anthropocene (PDF). United Nations Development Programme. 15 December 2020. صفحات 343–350. ISBN 978-92-1-126442-5. اخذ شدہ بتاریخ 17 دسمبر 2020. 
  14. ^ ا ب Human Development Report 2020 The Next Frontier: Human Development and the Anthropocene (PDF). United Nations Development Programme. 15 دسمبر 2020. صفحات 343–346. ISBN 978-92-1-126442-5. اخذ شدہ بتاریخ 15 دسمبر 2020.