محمد بن حسن شیبانی

(محمد الشیبانی سے رجوع مکرر)

امام محمد بن حسن شیبانی پورا نام ابو عبد اللہ محمد بن حسن بن فرقد شیبانی، امام ابو حنیفہ کے شاگرد اور مشیر خاص تھے۔امام ابو یوسف کے بعد آپ جید شاگرد تھے۔ استاد کے نظریات کو تدوین کرنے میں ان کی محنت بھی شامل تھی۔ فقہ حنفی کے اولین مرتب،جو امام محمد کے نام سے مشہور ہیں۔

محمد بن حسن شیبانی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 750[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
واسط  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 805 عیسوی
رے  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
عملی زندگی
استاذ ابو حنیفہ،  ابو یوسف،  مالک بن انس  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلمیذ خاص محمد بن ادریس شافعی  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ فقیہ،  قاضی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی[2]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل فقہ  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مؤثر ابوحنیفہ
P islam.svg باب اسلام

نسبترميم

محمد بن حسن بن عبد اللہ طاؤس بن ہرمز ملک بنی شیبان۔

شیبان کی نسبتترميم

نسبت شیبان کے متعلق مختلف آراء ہیں بعض کہتے ہیں کہ یہ قبیلہ کی طرف نسبت ہے اور بعض محققین کے نزدیک نسبت ولائی ہے کیونکہ آپ کے والد بنو شیبان کے غلام تھے۔

پیدائشترميم

اصل میں ان کا قریہ حرستا ہے یہ غوطہ دمشق کے قریب ہے جبکہ ان کی پیدائش واسط میں ہوئی اور زیادہ زندگی كوفہ میں گزاری۔

سنہ ولادتترميم

ان کا سنہ ولادت 132ھ یا 135ھ ہے۔

اساتذہ کرامترميم

یہ امام اعظم ابو حنیفہ نعمان بن ثابت کے شاگر د تھے ان کی وفات کے بعد امام ابو یوسف سے تربیت حاصل کی جبکہ امام مالک کے درس میں بھی حاضری دیتے تھے۔ دیگر اساتذہ میں مسعر بن کدام،سفیان ثوری،عمر بن فدا اور مالک بن مغول بھی اساتذہ میں شامل ہیں۔

تصنیفاتترميم

ان کی بہت سی تصنیفات فقہ اور اصول فقہ پر ہیں

وصالترميم

189ھ میں جب عمر 58 سال کی ہو گئی رے کے مقام نبویہ نامی بستی میں انتقال ہوا[3]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12990402n — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12990402n — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  3. کتاب الآثار صفحہ 19مکتبہ اعلی حضرت لاہور