محمد فاتح

عثمانی خلیفہ جس نے قسطنطنیہ فتح کیا

سلطان محمد فاتح یا سلطان محمد الثانی (عثمانی ترکی زبان: محمد ثانى، Meḥmed-i s̠ānī; ترکی زبان: II. Mehmet ترکی تلفظ: [ˈmeh.met]; اور المعروف el-Fātiḥ، الفاتح) (پیدائش: 30 مارچ 1432ء — وفات: 3 مئی 1481ء) سلطنت عثمانیہ کے ساتویں سلطان تھے جو 1444ء سے 1446ء اور 1451ء سے 1481ء تک سلطنت عثمانیہ کے سلطان رہے۔ انھوں نے محض 21 سال کی عمر میں قسطنطنیہ (موجودہ استنبول) فتح کرکے عیسائیوں کی بازنطینی سلطنت کا ہمیشہ کے لیے خاتمہ کر دیا۔ اس عظیم الشان فتح کے بعد انھوں نے اپنے خطابات میں قیصر کا اضافہ کیا۔ انھیں سلطان محمد الفاتح یا سلطان الفاتح کے القابات سے بھی یاد کیا جاتا ہے۔

محمد فاتح
(عثمانی ترک میں: مُحمَّد ثانى، فاتح سُلطان محمد ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
 

معلومات شخصیت
پیدائش 30 مارچ 1432ء   ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ادرنہ   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 3 مئی 1481ء (49 سال)[1][2][3]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
گیبزے   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن فاتح مسجد   ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زوجہ امینہ گل بہار خاتون
گل شاہ خاتون
ست شاہ خاتون
چیچک خاتون
ہلینا پالایولوگینا   ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد بایزید ثانی ،  سلطان جم ،  گوہر خان سلطان   ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد مراد ثانی   ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ ہما خاتون   ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خاندان عثمانی خاندان   ویکی ڈیٹا پر (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
سلطان سلطنت عثمانیہ   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
1444  – 1446 
مراد ثانی  
مراد ثانی  
سلطان سلطنت عثمانیہ   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
12 فروری 1451  – 12 مئی 1481 
مراد ثانی  
بایزید ثانی  
عملی زندگی
پیشہ شاہی حکمران ،  شاعر   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان عثمانی ترکی   ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عثمانی ترکی ،  عربی ،  فارسی ،  توراتی عبرانی ،  وسطی یونانی ،  لاطینی زبان ،  سربیائی   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دستخط
 

سلطان محمد ثانی نے مسیحیوں کے اس عظیم مرکز اور باز نطینی سلطنت کے اس مستحکم قلعے کو فتح کر کے حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی خواہش کو پورا کر دکھایا۔ آنحضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے اپنی زندگی میں فتح قسطینطینہ کی خواہش کا اظہار کرتے ہوئے اس کے فاتحین کو جنت کی بشارت دی تھی۔ قسطنطنیہ فتح کر کے سلطان محمد ثانی نے اسلام کی نامور ہستیوں میں ایک ممتاز شخصیت کی حیثیت اختیار کر لی۔ قسطنطنیہ فتح ہوا اور زمانے نے دیکھا کہ باز نطینی سلطنت کے ہزار سالہ غرور اور تکبر کے بت اوندھے پڑے ہوئے ہیں اور قسطنطینہ کی فصیل کے نیچے حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ عنہ کے مقبرے پر ہلالی پرچم کا سایہ ہے۔ قسطنطینہ کی تسخیر عالم اسلام کے لیے مسلمانوں کی جرات و شجاعت کی یادگار ہے۔

محمد فاتح نے اینز، گلاتا اور کیفے کے علاقے عثمانی سلطنت میں شامل کیے جبکہ محاصرہ بلغراد میں بھی حصہ لیا جہاں وہ شدید زخمی ہوئے۔ 1458ء میں انھوں نے موریا کا بیشتر حصہ اور ایک سال بعد سربیا فتح کر لیا۔ 1461ء میں اماسرا اور اسفندیار عثمانی سلطنت میں شامل ہوئے انھوں نے یونانی سلطنت طربزون کا خاتمہ کیا اور 1462ء میں رومانیہ، یائچی اور مدیلی بھی سلطنت میں شامل کرلیے۔

ابتدائی زندگی ترمیم

محمد ثانی 30 مارچ 1432ء کو ادرنہ میں پیدا ہوئے، جو اس وقت سلطنت عثمانیہ کا دار الحکومت تھا۔ ان کے والد سلطان مراد ثانی اور والدہ ہما خاتون تھیں۔ 11 سال کی عمر میں محمد ثانی کو اماسیہ بھیج دیا گیا، جہاں انھوں نے حکومت سنبھالنے کی تربیت حاصل کی۔ اگست 1444ء میں مراد ثانی اناطولیہ میں امارت کرمان کے ساتھ امن معاہدے کے بعد 12 سالہ محمد ثانی کے حق میں سلطنت سے دستبردار ہو گئے۔

اپنے پہلے دور بادشاہت کے دوران میں جنگ ورنا کے خدشات کے پیش نظر سلطان محمد نے اپنے والد مراد ثانی سے تخت سنبھالنے کا مطالبہ کیا لیکن انھوں نے زاہدانہ زندگی کو ترجیح دیتے ہوئے اس سے انکار کر دیا۔ جس پر محمد ثانی نے انھیں ایک خط لکھا، جس میں درج تھا کہ "اگر آپ سلطان ہیں تو آئیے اور فوج کی کمان سنبھالیے لیکن اگر میں سلطان ہوں تو میں آپ کو حکم دیتا ہوں کہ میری فوج کی قیادت سنبھالیں"۔ اس خط کے بعد سلطان مراد نے 1444ء میں جنگ ورنا میں عثمانی افواج کی قیادت کی اور 10 نومبر 1444 کو ورنا کی جنگ جیت لی۔[4] 1446 میں، جب مراد دوم تخت پر واپس آئے، محمد ثانی نے سلطان کا خطاب برقرار رکھا لیکن صرف منیسا کے گورنر کے طور پر کام کیا۔ 1451 میں مراد دوم کی موت کے بعد محمد ثانی دوسری بار سلطان بنے۔ کرمان کے ابراہیم دوم نے متنازع علاقے پر حملہ کیا اور عثمانی حکمرانی کے خلاف مختلف بغاوتوں کو اکسایا۔ محمد ثانی نے کرمان کے ابراہیم کے خلاف اپنی پہلی مہم چلائی۔ بازنطینی سلطنت نے عثمانی دعویدار اورہان کو رہا کرنے کی دھمکی دی۔[4]

فتح قسطنطنیہ ترمیم

1451ء میں اپنے والد سلطان مراد ثانی کی وفات پر سلطان محمد ثانی نے دوسری مرتبہ تخت سنبھالا اور دو سال بعد ہی محاصرہ قسطنطنیہ میں کامیابی حاصل کرکے بازنطینی سلطنت کا ہمیشہ کے لیے خاتمہ کر دیا۔ اس فتح کے بعد سلطنت موریا کو فتح کیا اور بازنطینی حکومت کی یہ آخری نشانی بھی 1461ء میں ختم کردی۔ قسطنطنیہ کی فتح نے سلطنت عثمانیہ کو ایک دنیا بھر میں شاندار عظمت اورعزت عطا کی اور عثمانی پہلی بار ایک بھرپور قوت کے طور پر ابھرے۔ فتح قسطنطنیہ کے بعد محمد ثانی نے اپنے لیے قیصر روم کا خطاب چنا۔

فتح قسطنطنیہ کی خوشخبری ایک حدیث میں بیان کی گئی تھی جس میں آنحضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا کہ : لتفتحنّ القسطنطینیۃ فلنعم الأمیر أمیرھا و لنعم الجیش جیشھا

تم ضرور بالضرور قسطنطنیہ فتح کرو گے، وہ فاتح بھی کیا باکمال ہوگا اور وہ فوج بھی کیا باکمال ہوگی۔(مسند امام احمد بن حنبل، جلد 6، صفحہ225)

ابو ایوب انصاری جو آنحضور صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے ساتھی تھے، قسطنطنیہ کے پہلے محاصرے کے دوران فوت ہوئے تھے۔ جیسے ہی محمد دوم کی فوج قسطنطنیہ کے قریب پہنچی، محمد کے شیخآق شمس الدین نے ابو ایوب انصاری کا مقبرہ دریافت کیا۔[5] فتح کے بعد، محمد نے اس جگہ پر ایوب سلطان مسجد تعمیر کی تاکہ اسلامی دنیا میں فتح کی اہمیت پر زور دیا جاسکے اور غازی کے طور پر اپنے کردار کو اجاگر کیا جاسکے۔ [5]

 
قسطنطنیہ کی فتح کے بارے میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشن گوئی، آیا صوفیہ کے ایک دروازے پر کندہ

1453ء میں، محمد نے 80,000 سے 200,000 کی فوج کے ساتھ ، ستر سے زیادہ توپ خانے اور 320 جہازوں کی بحریہ کے ساتھ قسطنطنیہ کا محاصرہ شروع کیا۔[6] یہ شہر سمندر اور زمین سے گھرا ہوا تھا۔ باسفورس کے داخلی دروازے پر بیڑا ساحل سے ساحل تک ایک ہلال کی شکل میں پھیلا ہوا تھا، تاکہ قسطنطنیہ کے لیے سمندر سے کسی بھی مدد کو روکا یا پسپا کیا جا سکے۔ [7] اپریل کے اوائل میں قسطنطنیہ کا محاصرہ شروع ہوا۔ سب سے پہلے، شہر کی دیواروں نے ترکوں کو روک دیا، حالانکہ محمد کی فوج نے اوربان کے ڈیزائن کردہ نئے بمبارڈ کا استعمال کیا، جو ڈارڈینیلس گن سے ملتی جلتی ایک بڑی توپ تھی۔ گولڈن ہارن کی بندرگاہ کو بوم چین نے بلاک کر دیا تھا اور اٹھائیس جنگی جہاز نے اس کا دفاع کیا تھا۔ 22 اپریل کو محمد نے اپنے ہلکے جنگی جہازوں کو گلاٹا کی جمہوریہ جینوا کے ارد گرد اور گولڈن ہارن کے شمالی ساحل پر پہنچایا۔ ایک میل سے تھوڑا زیادہ، لکڑی سے راستہ ہموار کرنے کے بعد باسفورس سے اسی گیلیوں کو منتقل کیا گیا۔ اس طرح، بازنطینی باشندوں نے اپنی فوجیں دیواروں کے ایک لمبے حصے پر پھیلا دیں۔ تقریبا ایک ماہ بعد، قسطنطنیہ، 29 مئی کو 57 دن کے محاصرے کے بعد فتح کر لیا گیا ۔ [8] اس فتح کے بعد محمد نے عثمانی دار الحکومت کو ادرنہ سے قسطنطنیہ منتقل کر دیا۔

 
قسطنطنیہ میں سلطان محمد دوم کا داخلہ، فوسٹو زونارو کی پینٹنگ (1854-1929)
 
فتح قسطنطنیہ مصور کی نظر میں۔ سلطان محمد فاتح نے اپنے لڑاکا بحری جہازوں کو لگ بھگ دو کلومیٹر خشکی پر سے گزار کر دشمن کے علاقے میں دوبارہ پانی میں اتار دیا اور فتح حاصل کی۔
 
ایک عثمانی نقشہ جس میں قسطنطنیہ کے محاصرے کے دوران زمین اور سمندر پر عثمانی فوجی ڈویژنوں کے مقامات کو دکھایا گیا ہے۔

قسطنطنیہ کی فتح کے بعد، محمد نے رومن سلطنت کے قیصر کے لقب کا دعوی کیا اس دعوے کی بنیاد پر کہ قسطنطنیہ 330 عیسوی سے رومی سلطنت کا دار الحکومت رہا تھا اور جو بھی شاہی دار الحکومت کا مالک تھا وہ سلطنت کا حکمران تھا۔ [9] عصری عالم جارج آف ٹریبیزونڈ نے اس کے دعوے کی حمایت کی۔ [10][11] اس دعوے کو کیتھولک چرچ اور مغربی یورپ کے بیشتر، اگر سب نہیں تو، تسلیم نہیں کیا گیا تھا، لیکن مشرقی آرتھوڈوکس چرچ نے اسے تسلیم کیا تھا۔ محمد نے مغرب کے ایک سخت مخالف، جینیڈیئس اسکالرئس کو تمام رسمی عناصر، نسل پرست (یا ملیٹباشی) کی حیثیت اور جائداد کے حقوق کے ساتھ قسطنطنیہ کے ایکومینیکل سرپرست کے طور پر نصب کیا تھا جس نے اسے خود 1454ء میں سلطان کے بعد سلطنت کا دوسرا سب سے بڑا زمیندار بنا دیا تھا اور اس کے نتیجے میں، جننیڈیوس دوم نے محمد کو تخت کے جانشین کے طور پر تسلیم کیا۔ [12] شہنشاہ قسطنطین یازدہم پالایولوگوس کا کوئی وارث پیدا کیے بغیر انتقال ہو گیا اور اگر قسطنطنیہ عثمانیوں کے قبضے میں نہ آتا تو غالبا اس کے متوفی بڑے بھائی کے بیٹے اس کا جانشین ہوتے۔ قسطنطنیہ کے زوال کے بعد ان بچوں کو محمد کی محل خدمت میں لے جایا گیا۔ سب سے بڑا لڑکا، جس کا نام بدل کر ہاس مراد رکھا گیا، محمد کا ذاتی پسندیدہ بن گیا اور بلقان کے بیلربی کے طور پر خدمات انجام دیں۔ چھوٹے بیٹے، جس کا نام بدل کر مسیح پاشا رکھا گیا، عثمانی بیڑے اور گلیپولی کے سنجک-بے کے ایڈمرل بن گئے۔ انھوں نے بالآخر محمد کے بیٹے بایزید ثانیکے ماتحت دو بار وزیر اعظم کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔[13] قسطنطنیہ کے زوال کے بعد، محمد نے 1458ء اور 1460ء میں دو مہمات میں موریہ میں اور 1461ء میں شمال مشرقی اناطولیہ میں ٹریبیزونڈ کی سلطنت کو بھی فتح کیا۔ اس طرح بازنطینی حکمرانی کے آخری دو آثار سلطنت عثمانیہ نے جذب کر لیے۔ قسطنطنیہ کی فتح نے ملک کو بے پناہ شان و شوکت اور وقار عطا کیا۔ اس بات کے کچھ تاریخی شواہد موجود ہیں کہ قسطنطنیہ کی فتح کے 10 سال بعد محمد دوم نے ٹرائے کے مقام کا دورہ کیا اور فخر کیا کہ اس نے یونانیوں کو فتح کرکے ٹروجنوں کا بدلہ لیا تھا۔ [14][15][16]

ایشیا میں فتوحات ترمیم

قسطنطنیہ کی فتح نے محمد ثانی کو اپنی توجہ اناطولیہ پر مرکوز کرنے کی مہلت دی۔ محمد ثانی اناطولیہ میں قائم ترک ریاستوں اور شمال مشرقی اناطولیہ کی مسیحی سلطنت طربزون کا خاتمہ کرکے ایشیائے کوچک کو ایک سیاسی وحدت میں تبدیل کرنا چاہتا تھا۔ اناطولیہ کو مکمل فتح کرنے کی صورت میں ہی وہ یورپ میں مزید فتوحات حاصل کر سکتا تھا۔

یورپ میں فتوحات ترمیم

اناطولیہ اور قسطنطنیہ کی فتوحات اور اسے اپنا دار الحکومت قرار دینے کے بعد محمد ثانی نے یورپ میں پیش قدمی کی۔ وہ سابق رومی سلطنت کو سلطنت عثمانیہ کے پرچم تلے لانا چاہتا تھے جس کے لیے انھوں نے 1480ء میں اٹلی پر حملہ کیا جس کا مقصد روم پرحملہ کر کے 751ء کے بعد پہلی مرتبہ رومی سلطنت کو دوبارہ یکجا کرنا تھا اور پہلے مرحلے میں اس نے 1480ء میں اوٹرانٹو فتح کر لیا۔ لیکن 1443ء اور 1468ء کے بعد 1480ء میں تیسری مرتبہ البانیا میں سکندر بیگ کی بغاوت نے افواج کے رابطے کو منقطع کر دیا جس کی بدولت پوپ سکسٹس چہارم نے ایک زبردست فوج لے کر 1481ء میں اوٹرانٹو کو مسلمانوں سے چھین لیا۔ دوسری جانب محمد ثانی نے بلقان کی تمام چھوٹی ریاستوں کو فتح کر لیا اور مشرقی یورپ میں بلغراد تک پہنچ گیا جہاں 1456ء میں بلغراد کا محاصرہ کیا لیکن جون ہونیاڈے کے خلاف کامیاب نہ ہو سکا۔ 1462ء میں اس کا افلاق کے شہزاد ولیڈ سوم ڈریکولا سے بھی تصادم ہوا۔ 1475ء میں عثمانیوں کو جنگ ویسلوئی میں مالدووا کے اسٹیفن اعظم کے ہاتھوں شکست ہوئی۔ چند شکستوں کے باوجود محمد فاتح کے دور میں عثمانی سلطنت کا رقبہ کافی وسیع ہوا۔

سربیا کی فتح (1454-1459) ترمیم

 
بلغراد کا محاصرہ 1456ء

قسطنطنیہ کے بعد محمد دوم کی پہلی مہمات سربیا کی سمت میں تھیں، جو 1389 میں کوسوو کی جنگ کے بعد سے عثمانی جاگیردار ریاست رہی تھی۔ مراد دوم کی بیویوں میں سے ایک مارا برنکوفیتش تھی جس کا تعلق سربیا سے تھا۔ سربیا کے بادشاہ ڈوراڈ برانکوویچ نے ہنگری کے ساتھ اتحاد کیا تھا اور بے قاعدگی سے خراج ادا کیا تھا۔ جب سربیا نے ان مطالبات سے انکار کر دیا تو عثمانی فوج 1454 میں ادرنہ سے سربیا کی طرف روانہ ہو گئی۔ سمیدیریوو کا محاصرہ کر لیا گیا اور سربیا کی سب سے اہم کان کنی کے مرکز پر قبضہ کر لیا۔ عثمانیوں اور ہنگریوں نے 1456 تک لڑائی کی۔ عثمانی فوج بلغراد تک آگے بڑھی، جہاں اس نے 14 جولائی 1456 کو بلغراد کے محاصرے میں جان ہنیدی سے شہر کو فتح کرنے کی کوشش کی لیکن ناکام رہی۔ سلطان ایڈرن کی طرف پیچھے ہٹ گیا اور ڈوراڈ برانکوویچ نے سربیا کے کچھ حصوں پر دوبارہ قبضہ کر لیا۔ تاہم، سال کے اختتام سے پہلے، 79 سالہ برینکوویچ کا انتقال ہو گیا۔ سربیا کی آزادی صرف دو سال تک برقرار رہی، جب سلطنت عثمانیہ نے اس کی بیوہ اور باقی تین بیٹوں کے درمیان اختلاف کے بعد اس کی زمینوں کو باضابطہ طور پر الحاق کر لیا۔ سب سے چھوٹے لازار نے اپنی ماں کو زہر دے کر اپنے بھائیوں کو جلاوطن کر دیا، لیکن اس کے فورا بعد ہی اس کی موت ہو گئی۔ جاری ہنگامہ آرائی میں سب سے بڑے بھائی اسٹیفن برانکوویچ نے تخت حاصل کیا لیکن مارچ 1459 میں اسے معزول کر دیا گیا۔ اس کے بعد بوسنیا کے مستقبل کے بادشاہ اسٹیفن ٹوماسوویچ کو سربیا کا تخت پیش کیا گیا، جس سے سلطان محمد ناراض ہو گئے۔ اس نے اپنی فوج بھیجی، جس نے جون 1459 میں سمیدیریوو پر قبضہ کر لیا، جس سے سربیا کی حکومت کا وجود ختم ہو گیا۔ [17]

موریہ کی فتح (1458–1460) ترمیم

 
دردنیل توپ کو عثمانی انجینئر منیر بن علی نے سنہ 1464 عیسوی میں بنایا تھا۔ یہ اس بڑی توپ سے بہت مشابہت رکھتا ہے جسے ہنگری کے انجینئر اربن نے سنہ 1453 عیسوی میں قسطنطنیہ کی ناقابل تسخیر دیواروں کو گرانے کے لیے بنایا تھا۔ آج یہ توپ برطانوی رائل آرسنل میں رکھی گئی ہے۔

موریہ جنوبی عثمانی بلقان سے متصل تھا۔ عثمانیوں نے پہلے ہی مراد دوم کے ماتحت اس خطے پر حملہ کر دیا تھا اور 1446 میں کرنتھس کا استھمس میں بازنطینی دفاع ہیکسامیلیئن دیوارکو تباہ کر دیا تھا۔   قسطنطنیہ کے آخری محاصرے سے پہلے، محمد نے عثمانی فوجیوں کو موریا پر حملہ کرنے کا حکم دیا۔ آخری شہنشاہ کے بھائی، ڈیمیٹریوس پیلیولوگوس اور تھامس پیلیولوگوس کوئی امداد بھیجنے میں ناکام رہے۔ محمد دوم کے ساتھ 1446 کے امن معاہدے کے بعد، ترکوں کو دائمی عدم استحکام اور خراج کی ادائیگی کے نتیجے میں ان کے خلاف البانیائی-یونانی بغاوت ہوئی، جس کے دوران بھائیوں نے عثمانی فوجیوں کو بغاوت کو ختم کرنے میں مدد کے لیے مدعو کیا۔ [18] اس وقت، متعدد بااثر موروٹ یونانیوں اور البانیائیوں نے محمد کے ساتھ صلح کی۔ [19] حکومت سلطان کو اپنا سالانہ خراج ادا کرنے میں ناکامی کے بعد ، آخر کار عثمانی حکمرانی کے خلاف ان کی اپنی بغاوت کے بعد، محمد مئی 1460 میں موریا میں داخل ہوئے۔ دار الحکومت مسترا 29 مئی 1460 کو قسطنطنیہ کے ٹھیک سات سال بعد پر قبضہ کر لیا گیا۔ ڈیمیٹریوس بالآخر عثمانیوں کا قیدی بن گیا اور اس کا چھوٹا بھائی تھامس فرار ہو گیا۔ موسم گرما کے اختتام تک، عثمانیوں نے یونانیوں کے زیر قبضہ تقریبا تمام شہروں پر قبضہ کر لیا تھا۔[20]

طربزون کی فتح (1460-1461) ترمیم

طربزون کے شہنشاہوں نے مختلف مسلم حکمرانوں کے ساتھ شاہی شادیوں کے ذریعے اتحاد قائم کیا۔ طربزون کے شہنشاہ جان چہارم نے اپنی بیٹی کی شادی اپنے بہنوئی کے بیٹے ازون حسن سے کی، جو طربزون کے دفاع کے وعدے کے بدلے میں آق قویونلو کے سلطان (جسے سفید بھیڑ ترکمان بھی کہا جاتا ہے) کے بیٹے تھے۔ اس نے سینوپ اور کارامان کے ترک باشندوں اور جارجیا کے بادشاہ اور شہزادوں سے حمایت کے وعدے بھی حاصل کیے۔ عثمانیوں کوطربزون پر قبضہ کرنے یا سالانہ خراج حاصل کرنے کے لیے حوصلہ افزائی کی گئی۔ مراد دوم کے زمانے میں، انھوں نے پہلی بار 1442 میں سمندر کے راستے سے دار الحکومت پر قبضہ کرنے کی کوشش کی، لیکن خراب موسم نے اسے مشکل بنا دیا اور اس کوشش کو پسپا کر دیا گیا۔ جب محمد دوم 1456 میں بلغراد کا محاصرہ کرنے کے لیے مصروف تھے تو اماسیا کے عثمانی گورنر نے طربزون پر حملہ کیا اور اگرچہ اسے شکست ہوئی، اس نے بہت سے قیدیوں کو لے لیا اور بھاری خراج حاصل کیا۔ طربزون کو الگ کرنے کے بعد، محمد نے فوری طور پر اس پر حملہ کر دیا اس سے پہلے کہ باشندوں کو معلوم ہو کہ وہ آ رہا ہے اور اس نے اسے محاصرے میں لے لیا۔ اس شہر ایک ماہ تک محاصرہ رہا جس کے بعد شہنشاہ ڈیوڈ نے 15 اگست 1461 کو ہتھیار ڈال دیے۔

بوسنیا کی فتح (1463) ترمیم

 
فتح شدہ بوسنیا کے کیتھولک راہبوں کے لیے محمد دوم کا احدنام 1463 میں جاری کیا گیا، جس میں انھیں مکمل مذہبی آزادی اور تحفظ فراہم کیا گیا۔

سربیا کے مطلق العنان، لازار برانکوویچ کا 1458 میں انتقال ہوا اور اس کے وارثوں کے درمیان خانہ جنگی شروع ہو گئی جس کے نتیجے میں عثمانی فوج نے سربیا کو فتح کیا۔ بوسنیا کے بادشاہ کے بیٹے اسٹیفن توماشیویچ نے سربیا کو اپنے قبضے میں لانے کی کوشش کی، لیکن عثمانی مہمات نے اسے اپنا منصوبہ ترک کرنے پر مجبور کر دیا اور اسٹیفن اپنے والد کے دربار میں پناہ لے کر بوسنیا فرار ہو گیا۔ [21] 10 جولائی 1461 کو اسٹیفن تھامس کا انتقال ہو گیا اور اسٹیفن ٹوماسوویچ بوسنیا کے بادشاہ کے طور پر ان کے جانشین بنے۔ 1461 میں، اسٹیفن توماشیویچ نے ہنگری کے ساتھ اتحاد کیا اور آنے والے عثمانی حملے کے پیش نظر پوپ پیوس دوم سے مدد مانگی۔ 1463 میں، بوسنیا کی بادشاہی کی طرف سے عثمانیوں کو سالانہ ادا کیے جانے والے خراج پر تنازع کے بعد، اس نے وینس سے مدد طلب کی۔ تاہم، کوئی بھی بوسنیا نہیں پہنچا۔ 1463 میں سلطان محمد ثانی نے فوج کی قیادت کی۔ بوبوواک کا شاہی شہر جلد ہی گر گیا، جس سے اسٹیفن ٹوماسوویچ کو جازے اور بعد میں کلوچ پیچھے ہٹنا پڑا۔ محمد نے بوسنیا پر حملہ کیا اور اسے بہت جلد فتح کر لیا، اسٹیفن توماسوویچ اور اس کے چچا راڈیوج کو پھانسی دے دی۔ بوسنیا پر 1463 میں قبضہ کر لیا گیا اور سلطنت عثمانیہ کا مغربی ترین صوبہ بن گیا۔

عثمانی وینیشیائی جنگ (1463-1479) ترمیم

بازنطینی مورخ مائیکل کریٹوبلس کے مطابق، ایتھنز کے عثمانی کمانڈر کے ایک البانیائی غلام کے اپنے مالک کے خزانے سے 100,000 چاندی کے ایسپرز کے ساتھ کوروانی کے وینیشین قلعے میں فرار ہونے کے بعد دشمنی پھوٹ پڑی۔ مفرور نے پھر عیسائیت قبول کرلی، لہذا عثمانی مطالبات کو وینس کے حکام نے مسترد کر دیا۔ [22] نومبر 1462 میں اسے بہانے کے طور پر استعمال کرتے ہوئے، وسطی یونان میں عثمانی کمانڈر، توراہانوگلو عمر بی نے حملہ کیا اور اہم وینیشین قلعہ لیپانٹو (نفپاکتوس) پر قبضہ کرنے میں تقریبا کامیاب ہو گیا۔ تاہم، 3 اپریل 1463 کو، موریہ کے گورنر، عیسی بیگ نے وینیشین کے زیر قبضہ شہر آرگوس کو غداری کے ذریعے لے لیا۔ [22]

1466 کے موسم بہار میں سلطان محمد نے ایک بڑی فوج کے ساتھ البانیائیوں کے خلاف مارچ کیا۔ اپنے رہنما، سکندربیگ کے تحت، انھوں نے طویل عرصے تک عثمانیوں کی مزاحمت کی تھی اور بار بار اٹلی سے مدد طلب کی تھی۔ [23] محمد دوم نے البانیہ کے خلاف دوبارہ مارچ کرکے جواب دیا لیکن ناکام رہا سردیوں نے طاعون کی وبا کو جنم دیا، جو ہر سال دوبارہ پھیلتا اور مقامی مزاحمت کی طاقت کو ختم کر دیتا۔ [24] اسکندربیگ خود ملیریا سے وینس کے مضبوط گڑھ لیسس میں فوت ہوا جس سے وینس کی البانیائی مالکان کو اپنے فائدے کے لیے استعمال کرنے کی صلاحیت ختم ہو گئی۔ [25] اسکیندربیگ کی موت کے بعد، وینس کے زیر کنٹرول شمالی البانیائی محافظ دستوں نے عثمانیوں کے زیر مطلوب علاقوں پر قبضہ جاری رکھا۔  محمد دوم نے 1474 میں شکودر پر قبضہ کرنے کے لیے اپنی فوجیں بھیجیں لیکن ناکام رہے۔[26] پھر وہ ذاتی طور پر 1478-79 کے شکودر کے محاصرے کی قیادت کرنے گیا۔ وینس اور شکودران نے حملوں کی مزاحمت کی اور اس وقت تک قلعے پر قبضہ جاری رکھا جب تک کہ وینس نے جنگ کے خاتمے کی شرط کے طور پر قسطنطنیہ کا معاہدہ میں شکودر کو سلطنت عثمانیہ کے حوالے نہیں کیا۔ یہ معاہدہ عثمانیوں کے وینس کے مضافات میں پہنچنے کے نتیجے میں قائم ہوا۔ معاہدے کی شرائط کی بنیاد پر، وینیشینوں کو اولتسینی اینٹیوان اور ڈورس کو رکھنے کی اجازت دی گئی۔ تاہم، انھوں نے شکودرا کو، جو کئی مہینوں سے عثمانی محاصرے میں تھا، اس کے ساتھ ساتھ دیلماشا ساحل کے دیگر علاقوں کو بھی حوالے کر دیا اور انھوں نے یونانی جزائر نیگروپونٹے (ایوبویا اور لیمنوس) کا کنٹرول چھوڑ دیا۔ مزید برآں، وینس کو 100,000 ڈوکیٹس معاوضہ ادا کرنے پر مجبور کیا گیا اور بحیرہ اسود میں تجارتی مراعات حاصل کرنے کے لیے ہر سال تقریبا 10,000 ڈیوکٹس کے خراج تحسین پر اتفاق کیا گیا۔[27] [28]

اناطولیہ کی فتوحات (1464-1473) ترمیم

 
محمد کا فتح کا اعلان)، اوٹلوکبیلی کی جنگ کے بعد

قرون وسطی کے دوسرے نصف میں سلاجقہ روم کے بعد کے دور میں، اناطولیہ میں متعدد ترکمان ریاستیں جنہیں اجتماعی طور پر اناطولیائی بییلیکس کے نام سے جانا جاتا ہے ابھر کر سامنے آئیں۔ کرمان ابتدائی طور پر کرمان اور کونیا کے جدید صوبوں کے ارد گرد مرکوز تھے، جو اناطولیہ کی سب سے اہم طاقت ور علاقے تھے۔ لیکن 14 ویں صدی کے آخر میں، عثمانیوں نے اناطولیہ کے بیشتر حصوں پر غلبہ حاصل کرنا شروع کر دیا، جس سے کرمان کا اثر و رسوخ اور وقار کم ہو گیا۔ کرمان کا ابراہیم دوم کرمان کا حکمران تھا اور اس کے آخری سالوں کے دوران، اس کے بیٹوں نے تخت کے لیے جدوجہد کرنا شروع کر دی۔ اس کا ظاہری وارث کرمان اشک تھا، جو سلسیلیفکے گورنر تھا۔ لیکن اس کے ایک چھوٹے بیٹے پیر احمد نے خود کو کونیا میں کرمان کا بادشاہ قرار دیا۔ ابراہیم مغربی علاقوں کے ایک چھوٹے سے شہر میں فرار ہو گئے جہاں 1464 میں ان کا انتقال ہوا۔ازون حسن کی مدد سے، اشک تخت نشین ہونے میں کامیاب ہو گیا۔ تاہم، اس کا دور حکومت مختصر تھا، کیونکہ پیر احمد نے سلطان محمد ثانی سے مدد کی اپیل کی، محمد کو کچھ ایسا علاقہ پیش کیا جسے اشک نے دینے سے انکار کر دیا۔ عثمانی کی مدد سے پیر احمد نے داغپزار کی جنگ میں اشک کو شکست دی۔ [29] پیر احمد نے اپنا وعدہ پورا کیا اور علاقہ کا ایک حصہ عثمانیوں حوالے کر دیا، لیکن وہ اس نقصان سے بے چین تھا۔ لہذا، مغرب میں عثمانی مہم کے دوران، اس نے اپنے سابقہ علاقے پر دوبارہ قبضہ کر لیا۔ تاہم محمد واپس آیا اور 1466 میں کرمان (لارینڈی اور کونیا دونوں پر قبضہ کر لیا۔ پیر احمد بمشکل مشرق کی طرف فرار ہوئے۔ چند سال بعد، عثمانی وزیر احمد کدک پاشا نے اس علاقہ کے ساحلی علاقے پر قبضہ کر لیا۔ [30] پیر احمد اور اس کا بھائی کاسم ازون حسن کے علاقے میں فرار ہو گئے۔ اس سے ازون حسن کو مداخلت کرنے کا موقع ملا۔ 1472 میں، اکیوئنلو کی فوج نے اناطولیہ کے بیشتر حصے پر حملہ کیا اور چھاپے مارے (یہی وجہ تھی کہ 1473 میں اوٹلوکبیلی کی جنگ ہوئی تھی۔ لیکن پھر محمد نے 1473 میں ازون حسن کے خلاف ایک کامیاب مہم کی قیادت کی جس کے نتیجے میں سلطنت عثمانیہ نے اوتلکبیلی کی جنگ میں فیصلہ کن فتح حاصل کی۔ اس سے پہلے پیر احمد نے اکیوئنلو کی مدد سے کرمان کو پکڑ لیا تھا۔ تاہم، پیر احمد ایک اور مدت سے لطف اندوز نہیں ہو سکے۔ کیونکہ کرمان پر قبضہ کرنے کے فورا بعد، اکیوئنلو کی فوج کو بیشیہر کے قریب عثمانیوں نے شکست دے دی اور پیر احمد کو ایک بار پھر فرار ہونا پڑا۔ اگرچہ اس نے اپنی جدوجہد جاری رکھنے کی کوشش کی، لیکن اسے معلوم ہوا کہ اس کے خاندان کے افراد کو گیدک احمد پاشا نے استنبول منتقل کر دیا تھا، اس لیے آخر کار اس نے ہار مان لی۔ حوصلہ شکنی کے بعد، وہ اکیوئنلو کے علاقے میں فرار ہو گیا جہاں اسس نے 1474ء میں وفات پائی۔ [31]   

علم و ہنر کی سرپرستی ترمیم

محمد ثانی عظیم فاتح ہونے کے ساتھ ساتھ علم و ہنر کا بھی سرپرست تھا۔ اس نے قسطنطنیہ کی فتح کے بعد اٹلی کے مصوروں اور یونانی دانشوروں کو اپنے دربار کا حصہ بنایا اور مسلم سائنس دان اور ہنرمند بھی اس کے دربار سے وابستہ تھے۔ اس نے قسطنطنیہ میں ایک جامعہ قائم کی اور فاتح مسجد سمیت کئی مساجد، نہریں اور توپ قاپی محل تعمیر کرایا۔

محمد ثانی کا دور رواداری اور برداشت کا دور سمجھا جاتا ہے جس میں اس نے مفتوح بازنطینیوں کے ساتھ نیک سلوک کیا جو قرون وسطی کے یورپیوں کے لیے حیران کن تھا۔ محمد ثانی کے دور میں حکومت میں سلطنت کے مسیحیوں اور یہودیوں کے ساتھ مثالی سلوک کیا جاتا تھا اور انھیں ہر قسم کی خود مختاری حاصل تھی۔

وفات اور میراث ترمیم

 
محمد فاتح کا مقبرہ
 
استنبول میں واقع سلطان محمد فاتح پل

سلطان محمد فاتح 3 مئی 1481ء کو انتقال کر گئے۔ ان کا مزار استنبول میں فاتح مسجد کے برابر میں ہے۔ آبنائے باسفورس پر قائم کیے جانے والے دوسرے پل کو انہی کے نام پر "سلطان محمد فاتح پل" کا نام دیا گیا ہے۔

1481 میں محمد نے عثمانی فوج کے ساتھ مارچ کیا، لیکن استنبول کے مالٹیپ پہنچنے پر وہ بیمار ہو گیا۔ وہ روڈس اور جنوبی اٹلی پر قبضہ کرنے کے لیے ابھی نئی مہمات شروع کر رہا تھے، تاہم کچھ مورخین کے مطابق ان کے اگلے سفر کا منصوبہ مصر کی مملوک سلطنت کا تختہ الٹنے اور مصر پر قبضہ کرنے اور خلافت کا دعوی کرنے کے لیے بنایا گیا تھا۔[32] لیکن کچھ دنوں کے بعد 3 مئی 1481 کو انتالیس سال کی عمر میں ان کا انتقال ہو گیا اور انھیںفاتح مسجد کے احاطے کے ترب ان کے مقبرے میں دفن کیا گیا۔ [33] مورخ کولن ہیووڈ کے مطابق، "اس بات کے کافی حالات کے ثبوت موجود ہیں کہ محمد کو زہر دیا گیا تھا۔" [34] محمد کی موت کی خبر نے یورپ میں بڑی خوشی کا اظہار کیا۔ گرجا گھروں کی گھنٹیاں بجائی گئیں اور تقریبات کا انعقاد کیا گیا۔ اس خبر کا اعلان وینس میں اس طرح کیا گیا: "لا گرانڈے ایکولا è مورتا!" ("عظیم عقاب مر گیا ہے!")[35][36]

محمد کی تیس سالہ حکمرانی اور متعدد جنگوں نے سلطنت عثمانیہ کو وسعت دی جس میں قسطنطنیہ، ترکی کی سلطنتیں اور ایشیا مائنر، بوسنیا، سربیا اور البانیہ کے علاقے شامل تھے۔ محمد نے اسلامی اور عیسائی دونوں دنیاؤں میں ایک شاندار شہرت چھوڑی۔ مورخ فرانز بابینگر کے مطابق، محمد کو عیسائی دنیا اور اس کی رعایا کا ایک حصہ خونخوار ظالم سمجھتا تھا۔ [37] استنبول کا فاتح سلطان محمد پل (مکمل 1988) جو آبنائے باسفورس کو عبور کرتا ہے، اس کا نام ان کے نام پر رکھا گیا ہے اور اس کا نام اور تصویر 1986 سے 1992 تک ترک 1000 لیرا نوٹ پر موجود تھی۔ [38]   

شخصیت ترمیم

محمد فاتح صرف اپنی فتوحات کی وجہ سے مشہور نہیں ہے بلکہ انتظام سلطنت اور اپنی حیرت انگیز قابلیت کے باعث بھی شہرہ رکھتا ہے۔ اس نے پہلی مرتبہ سلطنت عثمانیہ کے لیے باقاعدہ قوانین مرتب کیے ۔ ۔

محمد فاتح کے بعد اس کا بیٹا بایزید ثانی تخت نشین ہوا جس نے تیس سال حکومت کی۔

خاندان ترمیم

 
محمد ثانی کی تصویر، نکاش سینان بے

محمد ثانی کی کم از کم آٹھ معروف بیویاں تھیں، جن میں سے کم از کم ایک ان کی قانونی بیوی تھی۔

بیویاں ترمیم

محمد ثانی قانونی طور پر شادی کرنے والے آخری سلطان تھے جب تک کہ 1533/1534 سلیمان عظیم نے اپنی پسندیدہ حرم حریم سلطان سے شادی نہیں کی۔

محمد دوم کی آٹھ معروف بیویاں ہیں: [39]

  • گلبہار ہاتون ، بایزید دوم کی والدہ۔[40][41]
  • گلسہ ہاتون ، شہزادہ مصطفی کی والدہ۔
  • ست شاہ خاتون ،[42] بعض اوقات غلطی سے یہ خیال کیا جاتا ہے کہ وہ بایزید دوم کی ماں ہے۔ اسے سیٹی ہاتون بھی کہا جاتا ہے۔ دلکادر کے چھٹے حکمران دلکادیروگلو سلیمان بی کی بیٹی، وہ اس کی قانونی بیوی تھی، لیکن یہ شادی ناخوش تھی اور اس سے بے اولاد رہی۔ اس کی بھانجی عائشہ ہاتون، جو اس کے بھائی کی بیٹی تھی، بایزید دوم کی شریک حیات بن گئی۔
  • چیچک خاتون ، شہزادہ چیم کی ماں۔
  • انا خاتون، یونانی شہنشاہ طربزون ڈیوڈ دوم کومنیوس اور اس کی بیوی ہیلینا کانٹاکوزینوس کی بیٹی۔ اس شادی کی تجویز ابتدا میں اس کے والد نے پیش کی تھی، لیکن محمد نے انکار کر دیا۔ تاہم، 1461 میں طربزون کی فتح کے بعد، انا محمد کے حرم میں بطور "عظیم خراج" یا مہمان داخل ہوئی اور وہاں دو سال تک رہی، جس کے بعد محمد نے اس کی شادی زگانوس محمد پاشا سے کر دی۔ بدلے میں محمد نے زگانوس کی بیٹی کو اپنی بیوی بنا لیا۔
  • ہیلینا خا تون (1442-1469) موریہ ڈیمیٹریوس پیلیولوگوس کی مطلق العنان بیٹی محمد نے موریہ مہم کے بعد اس کی خوبصورتی کے بارے میں سن کر اس سے اپنے لیے پوچھا۔ تاہم، یہ اتحاد کبھی مکمل نہیں ہوا کیونکہ محمد کو خدشہ تھا کہ وہ اسے زہر دے سکتی ہے۔
  • ماریہ خاتون۔ ماریہ گیٹیلوسیو کے نام سے پیدا ہونے والی، وہ الیگزینڈر کومنیوس آسن (انا ہاتون کے والد کے بھائی) کی بیوہ تھیں۔ اس کے ذریعے ان کا ایک بیٹا، الیکسیوس ہوا، جسے محمد دوم نے قتل کیا۔ اسے اپنی عمر کی سب سے خوبصورت عورت قرار دیا گیا۔ [43]
  • خدیجہ خاتون۔ زگانوس محمد پاشا کی پہلی بیوی سیٹی نیفیس ہاتون کی بیٹی۔ وہ 1463 میں حرم میں داخل ہوئی۔ بدلے میں، اس کے والد محمد کی بیوی یا "عظیم مہمان" انا ہاتون سے شادی کرنے میں کامیاب ہو گئے۔ محمد کی موت کے بعد اس نے ایک سیاست دان سے دوبارہ شادی کی۔ [43]

بیٹے ترمیم

محمد ثانی کے چار بیٹے تھے: [44][45]

  • بایزید ثانی (3 دسمبر 1447-10 جون 1512) -گلبہار ہاتون کا بیٹا۔ وہ عثمانی سلطان کے طور پر اپنے والد کے جانشین بنے۔
  • شہزادہ مصطفی (1450، منیسا-25 دسمبر 1474، کونیا-گلسہ ہاتون کا بیٹا۔ اپنی موت تک کونیا کا گورنر۔ ان کا ایک بیٹا، احسان علی اور ایک بیٹی، نرگس زاد فرہشاد ہاتون (جس نے اپنے کزن شیخ عبد اللہ سے شادی کی، جو بایضد ثانی کے بیٹے تھے۔ وہ اپنے والد کا پسندیدہ بیٹا تھا۔
  • شہزادہ چیم (22 دسمبر 1459، قسطنطنیہ-25 فروری 1495) کیپوا نیپلس کی بادشاہی اٹلی-چیچک خاتون کا بیٹا۔ اپنے بھائی مصطفی کی موت کے بعد کونیا کے گورنر نے اپنے سوتیلے بھائی بایزید کے خلاف تخت کے لیے جنگ لڑی۔ وہ جلاوطنی میں فوت ہوا۔
  • شہزادہ نور الدین. غالبا بچپن میں ہی فوت ہو گیا۔

بیٹیاں ترمیم

محمد ثانی کی کم از کم چار بیٹیاں تھیں: [46][47]

  • گوہر خان سلطان (1446-قسطنطنیہ، 1514-گلبہار ہاتون کی بیٹی۔ وہ سلطان احمد بیگ کی ماں تھیں۔
  • اے خاتون۔
  • کامرہان خاتون۔ اس نے کینڈاروگلو اسماعیل بی کے بیٹے حسن بی سے شادی کی۔ ان کی ایک بیٹی تھی، ہنزاد خاتون۔
  • فلین خاتون۔

ذاتی زندگی ترمیم

محمد کو قدیم یونانی اور قرون وسطی کی بازنطینی تہذیب میں گہری دلچسپی تھی۔ اس کے ہیرو اچیلز اور سکندر اعظم تھے اور وہ کسی اختیار کے ساتھ عیسائی مذہب پر بات کر سکتا تھا۔ [48] وہ ترکی سربیائی عربی فارسی یونانی اور لاطینی سمیت متعدد زبانوں میں روانی کے لیے مشہور تھے۔ [49][50] بعض اوقات محمد چانی نے علما یا عالم مسلم اساتذہ کو جمع کیا اور انھیں اپنی موجودگی میں مذہبی مسائل پر بات کرنے پر زور دیا۔ اس کے دور حکومت میں، ریاضی، فلکیات اور الہیات عثمانیوں میں اپنے اعلی ترین درجے پر پہنچ گئے۔ ان کے سماجی حلقے میں متعدد انسان دوست اور سنت شامل تھے جیسے انکونا کے سیریکو ڈی پیزیکولی، فلورنس کے بینیڈیٹو دی اور امبروس کے مائیکل کریٹوبلس جو یونانی نوادرات اور آثار قدیمہ میں دلچسپی کی بدولت محمد کا بطور فللین ذکر کرتے ہیں۔[51] اس کے حکم پر پارتھینون اور دیگر ایتھنین یادگاروں کو تباہی سے بچایا گیا۔ اس کے علاوہ، محمد دوم خود "اونی" (مددگار) کے نام سے لکھنے والے شاعر تھے اور انھوں نے ایک کلاسیکی دیوان شاعری کا مجموعہ چھوڑا۔

مزید دیکھیے ترمیم

حوالہ جات ترمیم

  1. ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6000kq8 — بنام: Mehmed the Conqueror — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  2. فائنڈ اے گریو میموریل شناخت کنندہ: https://www.findagrave.com/memorial/16625827 — بنام: Fatih Sultan Mehmet — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/mehmed-mehmed-ii-fatih — بنام: Mehmed (Mehmed II. Fatih) — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  4. ^ ا ب Nicolle 2000, p. 91.
  5. ^ ا ب Stavrides 2001, p. 23.
  6. Arnold 2001, p. 111.
  7. Silburn, P. A. B. (1912).
  8. Silburn, P. A. B. (1912).
  9. "Milliyet İnternet – Pazar"۔ Milliyet.com.tr۔ 19 December 2004۔ 31 اکتوبر 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2017 
  10. "washingtonpost.com: Constantinople: City of the World's Desire, 1453–1924"۔ www.washingtonpost.com۔ 24 جولا‎ئی 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2017 
  11. Roger Crowley (2009)۔ Constantinople: The Last Great Siege, 1453 (بزبان انگریزی)۔ Faber & Faber۔ ISBN 978-0571250790 
  12. "List of Ecumenical Patriarchs – The Ecumenical Patriarchate"۔ www.patriarchate.org (بزبان انگریزی)۔ 02 جولا‎ئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2017 
  13. Lowry, Heath W. (2003).
  14. Michael Wood (1985)۔ In Search of the Trojan War۔ University of California Press۔ صفحہ: 38–۔ ISBN 978-0-520-21599-3۔ 12 اکتوبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مئی 2013 
  15. Kader Konuk (2010)۔ East West Mimesis: Auerbach in Turkey۔ Stanford University Press۔ صفحہ: 78–۔ ISBN 978-0-8047-7575-5۔ 12 اکتوبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مئی 2013 
  16. John Freely (2009)۔ The Grand Turk: Sultan Mehmet II – Conqueror of Constantinople and Master of an Empire۔ Overlook۔ صفحہ: 95–۔ ISBN 978-1-59020-449-8۔ 12 اکتوبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مئی 2013 
  17. William Miller (1896)۔ The Balkans: Roumania, Bulgaria, Servia, and Montenegro۔ London: G.P. Putnam's Sons۔ ISBN 978-0836999655۔ 29 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 فروری 2011 
  18. Babinger 1992, pp. 125–126.
  19. "Contemporary Copy of the Letter of Mehmet II to the Greek Archons 26 December 1454 (ASV Documenti Turchi B.1/11)" (PDF)۔ Angiolello.net۔ 27 جولا‎ئی 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2013 
  20. Babinger 1992, pp. 173–175.
  21. Fine 1994, pp. 575–581.
  22. ^ ا ب Setton 1978
  23. Finkel 2007
  24. Setton 1978
  25. Finkel 2007
  26. "1474 | George Merula: The Siege of Shkodra"۔ Albanianhistory.net۔ 05 اکتوبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2013 
  27. Conflict and Conquest in the Islamic World: Alexander Mikaberidze, p. 917, 2011
  28. The Encyclopedia of World History (2001) – Venice آرکائیو شدہ 5 جولا‎ئی 2007 بذریعہ وے بیک مشین "The great war against the Turks (See 1463–79). Negroponte was lost (1470). The Turks throughout maintained the upper hand and at times raided to the very outskirts of Venice. In the Treaty of Constantinople (1479), the Venetians gave up Scutari and other Albanian stations, as well as Negroponte and Lemnos. Thenceforth the Venetians paid an annual tribute for permission to trade in the Black Sea."
  29. Prof. Yaşar Yüce-Prof.
  30. Prof. Yaşar Yüce-Prof.
  31. "Karamanogullari Beyligi"۔ Enfal.de۔ 28 ستمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 ستمبر 2013 
  32. "Memlûkler"۔ Güncel Kaynağın Merkezi (بزبان ترکی)۔ 6 January 2015۔ 13 جنوری 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2017 
  33. "Fatih Mosque"۔ Islamic Landmarks (بزبان انگریزی)۔ 26 June 2014۔ 25 فروری 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 فروری 2020 
  34. Colin Heywood (2009)۔ "Mehmed II"۔ $1 میں Gábor Ágoston، Bruce Masters۔ Encyclopedia of the Ottoman Empire۔ صفحہ: 368 
  35. The Grand Turk: John Freely, p. 180, 2009
  36. Minorities and the destruction of the Ottoman Empire, Salâhi Ramadan Sonyel, p. 14, 1993
  37. Babinger 1992, p. 432.
  38. تاريخ الدولة العليّة العثمانية، تأليف: الأستاذ محمد فريد بك المحامي، تحقيق: الدكتور إحسان حقي، دار النفائس، الطبعة العاشرة: 1427 هـ – 2006 م، صفحة:178–177 آئی ایس بی این 9953-18-084-9
  39. Necdet Sakaoğlu (2008).
  40. Anna Edmonds (1997)۔ Turkey's Religious Sites۔ Damko۔ صفحہ: 1997۔ ISBN 975-8227-00-9۔ 12 اکتوبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2020 
  41. Babinger 1992, p. 51.
  42. Wedding portrait, Nauplion.net آرکائیو شدہ 4 مارچ 2016 بذریعہ وے بیک مشین
  43. ^ ا ب Babinger 1992, p. 230
  44. Uluçay 2011, p. 39, 42
  45. Alderson, The structure of the Ottoman Dynasty
  46. Leslie P. Peirce (1993).
  47. Alderson, The structure of the Ottoman Dynasty
  48. Nicolle 2000, p. 19.
  49. John Julius Norwich (1995)۔ Byzantium: The Decline and Fall۔ New York: Alfred A. Knopf۔ صفحہ: 81–82۔ ISBN 0-679-41650-1 
  50. Steven Runciman (1965)۔ The Fall of Constantinople: 1453۔ London: Cambridge University Press۔ صفحہ: 56۔ ISBN 0-521-39832-0 
  51. "Europe and the Turks: The Civilization of the Ottoman Empire | History Today"۔ www.historytoday.com۔ 12 مئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2017 

حوالہ جات ترمیم

بیرونی روابط ترمیم