منڈی بہاؤالدین، صوبہ پنجاب میں ایک قدیم اور تاریخی شہر ہے اور ضلعی صدر مقام بھی ہے۔ منڈی بہاؤالدین کا نام جو قدیم زمانے میں (چک نمبر 51) کے نام سے جانا جاتا تھا، دو ماخذوں سے نکلا، منڈی ایک سابقہ ​​تھا کیونکہ یہ غلہ منڈی تھا اور بہاؤالدین ایک صوفی تھا۔ جس کا مقبرہ پنڈی بہاؤالدین نام کے قدیم گاؤں میں یا اس کے قریب ہے۔[3] یہ شمالی پنجاب، پاکستان کا ایک شہر ہے۔ یہ ضلع منڈی بہاؤالدین کا دارالحکومت بھی ہے۔ منڈی بہاؤالدین 2017ء کی مردم شماری کے مطابق آبادی کے لحاظ سے پاکستان کا 41 واں بڑا شہر ہے۔ یہ شہر سطح سمندر سے تقریباً 220 میٹر بلند ہے اور وسطی پنجاب میں دریائے جہلم (شمال 12 کلومیٹر) اور چناب (جنوبی 39 کلومیٹر) کے درمیان واقع ہے۔

شہر
منڈی بہاؤالدین
Jamia Masjid Ghausia Rizvia.jpg
Mian Waheed Ud Din Park.jpg
GCT-Rasul (photo).jpg
Mandi Bahauddin (35001616).jpeg
Rasul Barrage at River Jhelum.jpg
Hakim Mall Mandi Bahauddin.jpg
اوپر سے گھڑی کی سمت:
جامع مسجد غوثیہ رضویہ، یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، رسول، رسول بیراج، حاکم مال، دریائے جہلم، میاں وحید الدین پارک
منڈی بہاؤالدین is located in پنجاب، پاکستان
منڈی بہاؤالدین
منڈی بہاؤالدین
منڈی بہاؤالدین is located in پاکستان
منڈی بہاؤالدین
منڈی بہاؤالدین
Location within Pakistan
متناسقات: 32°34′47″N 73°28′53″E / 32.57972°N 73.48139°E / 32.57972; 73.48139متناسقات: 32°34′47″N 73°28′53″E / 32.57972°N 73.48139°E / 32.57972; 73.48139
ملکFlag of Pakistan.svg پاکستان
صوبہFlag of پنجاب، پاکستان پنجاب
ڈویژنگوجرانوالہ
ضلعمنڈی بہاؤالدین
قائم شدہ1506ء
این اے/پی پی2/5 این اے (85,86) پی پی (65,66,67,68)
قصبوں کی تعداد
فہرست ..
  • پھالیہ پی50 تک: الگ الگ حصوں کو درج کرنے کے لیے-->
حکومت
 • قسممیونسپل کمیٹی
 • یونین کونسلیں27
بلندی204 میل (669 فٹ)
آبادی (2017)[1]
 • کل198,609
 • درجہ41ویں، پاکستان
نام آبادیمنڈی آلے
منطقۂ وقتPST (UTC+5)
ڈاک کوڈ50400
ڈائلنگ کوڈ0546
ویب سائٹwww.mbdin.com

تاریخترميم

جنگ ہائیڈاسپسترميم

تحریری ریکارڈ کے مطابق منڈی بہاؤالدین کی تاریخ 326 قبل مسیح کی ہے جب دریائے ہائیڈاسپس (دریائے جہلم) کی جنگ تاریخی شخصیت سکندر اعظم اور پورووا سلطنت کے مقامی حکمران راجہ پورس کے درمیان جہلم کے جنوبی کنارے پر واقع گاؤں مونگ میں لڑی گئی تھی۔[4] دریا (یونانی ہائیڈاسپس)، شہر منڈی بہاؤالدین سے تقریباً 8 کلومیٹر شمال مغرب میں۔ اگرچہ اس جنگ کے نتیجے میں یونانیوں کی فتح پھر بھی شدید مزاحمت کی وجہ سے ہوئی، لیکن یہ سکندر کے دور کی آخری بڑی لڑائی ثابت ہوئی۔ اس جنگ کے نتیجے میں سکندر نے جدید دور کے مونگ کے مقام پر دو شہروں نیکیا (فتح) کی بنیاد رکھی اور جدید دور کے پھالیہ کے مقام پر بوسیفالا۔ بوسیفالس سکندر کے پیارے گھوڑے کا نام تھا جو یا تو جنگ کے دوران یا تھکاوٹ اور بڑھاپے کے فوراً بعد مر گیا۔ یہ جنگ برصغیر پاک و ہند کو قدیم یونانی سیاسی (سیلیوسیڈ، گریکو-بیکٹرین، ہند-یونانی) اور ثقافتی اثرات (یونانی-بدھسٹ آرٹ) کے لیے کھولنے کے لیے تاریخی طور پر اہم ہے، جس کا اثر کئی صدیوں تک جاری رہا۔

جنگ چیلیانوالہترميم

ایک اور اہم جنگ 1849 میں سکھوں اور انگریز فوج کے درمیان چیلیانوالہ میں لڑی گئی۔[5] جو کہ موجودہ دور کے منڈی بہاؤالدین ضلع کا ایک قصبہ اور یونین کونسل ہے۔ اسے تاریخ میں دوسری اینگلو سکھ جنگ ​​کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اس جنگ کے بعد پورا پنجاب برطانوی راج کی زد میں آگیا۔ جنگی یادگار اب بھی وہاں موجود ہے جسے "گورا قبرستان" (برطانوی قبرستان) کے نام سے جانا جاتا ہے۔ چیلیانوالہ کے نزدیک رکھ مینار میں اس جنگ میں کام آنے والے کئی انگریز افسر اور سپاہی دفن ہیں۔

1506ء میں صوفی صاحب بہاؤالدین ، پنڈی شاہ جہانیاں سے اس علاقہ میں آئے تو انہوں نے ایک بستی کی بنیاد رکھی جس کا نام پنڈی بہاؤالدین رکھا گیا جسے اب پرانی پنڈی کے نام سے جانا جاتا ہے۔ انیسویں صدی میں یہ علاقہ برطانوی حکومت کے زیر تسلط آیا۔ اس علاقے میں کچھ زمین بنجر اور غیر آباد پڑی تھی۔

برطانوی نوآبادیاتی راج کے دوران پیش رفتترميم

ہندوستان میں مسلمانوں کے دور حکومت میں اس علاقے میں کوئی قابل ذکر پیش رفت نہیں ہوئی۔ برطانوی نوآبادیاتی حکمرانی کی طرف تیزی سے آگے بڑھتے ہوئے، انگریزوں نے پہلی جنگ عظیم کے بعد برصغیر میں نئی ​​آبادیاں دیں اور متعارف کروائیں۔ انہوں نے ریلوے کا ایک وسیع نیٹ ورک بچھایا اور آمدنی اور دفاعی مقاصد کے لیے کینال کالونیوں کی بنیاد رکھی۔ اس خطہ کے کچھ علاقے جنہیں گوندل بار بھی کہا جاتا ہے خشک اور بنجر پڑے تھے۔ اس لیے اس قابل کاشت زمین کی زرخیزی اور دولت کو بحال کرنے اور محصولات میں اضافے کے لیے ایک عظیم آبپاشی کے منصوبے کا سروے کیا گیا اور دستی کام کے ذریعے اس پر عمل کیا گیا۔ نہر لوئر جہلم کا مرکزی راستہ 1902ء میں کھودا گیا اور اس میں پانی چھوڑا گیا اور اس سے علاقے کو سیراب کیا گیا۔ علاقے کی چک بندی کی گئی۔ اکاون چک بنائے گئے اور زمین ان لوگوں میں تقسیم کی گئی جنہوں نے سلطنت برطانیہ کے لیے کام کیا تھا۔ علاقے کو گوندل بار کا نام دیا گیا۔ چک نمبر51 مرکزی چک قرار پایا جو کہ آج منڈی بہاؤالدین کے نام سے مشہور ہے۔ پلان کے مطابق اس کی تعمیر کی گئی اور یہاں پر غلہ منڈی قائم کی گئی۔ بیسویں صدی کے اغاز میں مسلمان، ہندو اور سکھ تاجر و زمیندار یہاں آ کر آباد ہونے لگے۔ اس کے علاوہ انگریزوں نے 1916 میں جدید دور کے شہر منڈی بہاؤالدین کے مرکز میں پنڈی بہاؤالدین ریلوے اسٹیشن قائم کیا۔ مذکورہ ریلوے نظام شمال سے ان کی برطانوی سلطنت کے دفاع کے لیے بنایا گیا تھا۔ اس لیے اسے نارتھ ویسٹرن ریلوے (NWR) کے نام سے بھی جانا جاتا تھا۔

1916ء میں حکومت برطانیہ نے اپنے دفاعی اور تجارتی مفاد میں پنڈی بہاؤالدین ریلوے سٹیشن قائم کیا۔ 1920ء میں چک نمبر 51 کو منڈی بہاؤالدین (مارکیٹ بہاؤالدین) کا نام دینے کا اعلان کیا گیا۔ 1923ء میں قصبہ کی ماسٹر پلان کے مطابق دوبارہ تعمیر کرتے ھوئے گلیوں اور سڑکوں کو سیدھا اور کشادہ کیا گیا۔ 1924ء میں پنڈی بہاؤالدین ریلوے سٹیشن کا نام منڈی بہاؤالدین رکھا گیا۔ 1937ء میں ٹاؤن کمیٹی کا درجہ دیا گیا اور 1941ء میں میونسپل کمیٹی بنا دیا گیا۔ 1946ء میں نو دروازے اور چار دیواری تعمیر کی گئی۔

قیام پاکستان کے بعدترميم

تقسیم کے بعد جب سکھ اور ہندو بھارت ہجرت کر گئے تو مسلمانوں کی بڑی آبادی ہجرت کر کے یہاں آکر آباد ہوئی۔ 1960ء میں اس شہر کو سب ڈویژن کا درجہ دیا گیا۔ 1963ء میں سندھ طاس آبپاشی منصوبے کے تحت رسول بیراج اور رسول قادرآباد لنک کینال منصوبے کا آغاز ہوا۔ اس منصوبے کا انتظام واپڈا نے کیا اور منڈی بہاؤالدین سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر سرکاری ملازمین اور غیر ملکی ٹھیکیداروں کے لیے ایک بڑی کالونی تعمیر کی گئی۔ یہ منصوبہ 1968ء میں انجینئر ریاض الرحمن شریف نے بطور ہدایت کار یہ منصوبہ مکمل کیا۔ اس منصوبے نے منڈی بہاؤالدین کو روشنی کیا اور شہر کو تجارتی طور پر بڑھنے میں مدد دی۔ آخر کار اس وقت کے وزیر اعلی پنجاب میاں منظور احمد خان وٹو کے دور میں یکم جولائی 1993ء کو اسے علیحدہ ضلع کا درجہ دیا گیا۔

موجودہ صورت حالترميم

تقسیم کے بعد ہندوستان کے ہزاروں مہاجرین سکھ اور ہندو جاگیرداروں کی خالی ہونے والی جائیدادوں پر دوبارہ آباد ہوئے۔ حال ہی میں، رسول بیراج کی تعمیر کے بعد، سالٹ رینج کے جنوبی کنارے کے ساتھ پٹی سے پنڈ دادنخان تک اور دریائے جہلم کے اس پار کے دیگر علاقوں کے لوگ قصبے میں آکر آباد ہوئے۔ نقل مکانی اور کاروباری سرگرمیوں میں اضافے کی وجہ سے یہ قصبہ ہر طرف پھیل گیا ہے۔ نتیجہ یہ ہے کہ آدھی سے زیادہ آبادی بلدیاتی حدود سے باہر کسی شہری سہولت کے بغیر رہ رہی ہے۔ روزانہ مزید غیر منصوبہ بند علاقے اور کچی آبادیاں سامنے آ رہی ہیں۔ دیہی علاقوں سے شہری مراکز کی طرف جانے کا رجحان بڑھ رہا ہے۔

ملحقہ دیہات کے لوگ اپنی ضروریات زندگی کی خرید وفروخت کے لیے شہر کا رخ کرتے ہیں اور اس گرد آلود شہر میں ’روشن روشنیاں‘ دیکھتے ہیں۔ گدھا گاڑیوں سے لے کر بھاری گاڑیاں کسی بھی سڑک پر اندھا دھند دوڑتی نظر آتی ہیں۔ تجاوزات اور تیزی سے بڑھتی ہوئی ٹریفک کی وجہ سے راستہ سکڑ گیا ہے۔ زیادہ تر کراس جنکشن جیسے ہسپتال چوک، گڑھا چوک، ست سرا چوک، کالج چوک اور دو ریلوے کراسنگ ہمیشہ مصروف رہتے ہیں اور ٹریفک سگنل نہیں ہیں۔

شوگر ملوں نے ’’فارم ٹو مل‘‘ سڑک بنائی جسے شہر سے تعلق نہ رکھنے والی ٹریفک کے لیے بائی پاس کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔ لیکن اس سے استفادہ نہیں کیا جا رہا ہے کیونکہ بھاری ٹریفک کو 20 فٹ چوڑی میٹلک روڈ کی طرف موڑنے کا کوئی انتظام نہیں ہے۔ اس زرعی منڈی والے قصبے میں سست اور تیز چلنے والی ٹریفک کے مرکب، فٹ پاتھوں کی کمی، پارکنگ کی سہولیات، بس اور ویگن ٹرمینلز کی موجودگی اور کئی رکشہ سٹینڈ نے صورتحال کو مزید خراب کر دیا ہے۔ یہ گرینڈ ٹرنک روڈ سے دور واقع ہے لیکن پنڈ دادنخان، جہلم، کھاریاں، لالہ موسیٰ، گجرات، گوجرانوالہ اور سرگودھا کے ساتھ ریلوے اور اچھے روڈ نیٹ ورک سے منسلک ہے۔

لالہ موسی-سرگودھا-خانیوال ریلوے ایک منافع بخش راستہ ہے۔ اس وقت اس روٹ پر صرف ایک پشاور-کراچی ٹرین چناب ایکسپریس چلتی ہے۔ مسافروں کے لیے کم از کم ایک اور پشاور-کراچی ایکسپریس ٹرین متعارف کروانا مفید ہو سکتا ہے، علاقے میں پیدا ہونے والی زرعی مصنوعات اور سالٹ رینج سے حاصل ہونے والی چند معدنیات۔ یہ ٹریک کھیوڑہ نمک کی کانوں سے بھی منسلک ہے۔ مزید برآں، پشاور-لاہور-کراچی مین ریلوے ٹریک کو کسی بھی خطرے کی صورت میں یہ ٹریک تزویراتی طور پر اہم ہے۔ اس صورت میں لالموسہ-سرگودھا-خانیوال ریل روٹ تمام ریل ٹریفک کو لے جا سکتا ہے۔

جغرافیہترميم

یہ ضلع چاج دوآب کا ایک مرکزی حصہ بناتا ہے جو دریائے جہلم اور چناب کے درمیان واقع ہے۔ یہ 30° 8' سے 32° 40' این اور 73° 36' سے 73° 37' ای تک واقع ہے۔ تحصیل ہیڈ کوارٹر پھالیہ اور ملکوال کے شہر منڈی بہاؤالدین سے بالترتیب 22.5 اور 28.5 کلومیٹر (14.0 اور 17.7 میل) کے فاصلے پر ہیں۔ اس کی سرحد شمال میں دریائے جہلم سے ہے، جو اسے ضلع جہلم سے الگ کرتی ہے۔ مغرب میں ضلع سرگودھا؛ جنوب میں دریائے چناب کے کنارے (جو اسے گوجرانوالہ اور حافظ آباد اضلاع سے الگ کرتا ہے)؛ اور مشرق میں ضلع گجرات۔ ضلع کا کل رقبہ 2,673 مربع کلومیٹر (1,032 مربع میل) ہے۔ یہ ضلع منڈی بہاؤالدین، تحصیل پھالیہ اور تحصیل ملکوال پر مشتمل ہے۔

آبادیترميم

پاکستان کی 1998ء کی مردم شماری کے مطابق، شہر کی آبادی 1,160,552 ریکارڈ کی گئی جبکہ 2017ء کی پاکستان کی مردم شماری کے مطابق، شہر کی آبادی 19 سالوں میں 99.62 فیصد سے زیادہ کے اضافے کے ساتھ 198,609 ہو گئی۔ منڈی بہاؤالدین ضلع کی آبادی 2017ء کی مردم شماری کے مطابق 1,593,292 ریکارڈ کی گئی تھی۔[6] منڈی بہاؤالدین میں مرد ووٹرز کی کل تعداد 370,528 اور خواتین ووٹرز کی تعداد 278,521 ہے۔ ضلع کی سالانہ آبادی میں اضافے کی شرح 1.87 فیصد اور شہری تناسب 15.2 فیصد ہے۔ منڈی بہاؤالدین کی کل آبادی کا تقریباً 99.1 فیصد مسلمان، 0.6 فیصد عیسائی اور 0.2 فیصد احمدی ہیں۔ یہاں پر گوندل، رانجھا اور گجر برادری کی اکثریت ہے ان کے ساتھ ساتھ آرائیں، مغل، رانا، شیخ اور جٹ برادری بھی آباد ہے۔

آب و ہواترميم

اس ضلع کی آب و ہوا معتدل ہے، گرمیوں میں گرم اور سردیوں میں سرد۔ گرمیوں میں دن کے وقت درجہ حرارت 48 سینٹی گریڈ (118 فارن ہائیٹ) تک بڑھ سکتا ہے، لیکن سردیوں کے مہینوں میں کم از کم درجہ حرارت 3 سینٹی گریڈ (37 فارن ہائیٹ) سے نیچے گر سکتا ہے۔ ضلع میں اوسط بارش 388 ملی میٹر (15.3 انچ) ہے اور بنیادی طور پر یہاں کا موسم اسلام آباد کے ساتھ ہے۔[7]

انتظامیہترميم

ضلع کا صدر مقام منڈی بہاؤالدین تحصیل ہیڈ کوارٹر بھی ہے۔ منڈی بہاؤالدین کو 1941ء میں میونسپل کمیٹی کی سطح تک بڑھایا گیا۔ پنجاب لوکل گورنمنٹ آرڈیننس 2001ء کے نفاذ کے بعد اسے میونسپل کمیٹی کا درجہ دیا گیا۔ تحصیل منڈی بہاؤالدین کی میونسپل کمیٹی کو تین تحصیلوں اور 80 یونین کونسلوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔:[8]

تحصیل یونین کونسل کی تعداد[8]
ملکوال 20
منڈی بہاؤالدین 30
پھالیہ 30
کل 80

زبانترميم

ضلع کی اہم زبانیں ہیں: پنجابی، 97% آبادی کی پہلی زبان[9]؛ اردو - 2.5%، پشتو 0.5% اور سرائیکی 0.5%[10]

معیشتترميم

ضلع کے اہم پیشوں میں 40.7 فیصد زراعت کارکن شامل ہیں۔ ابتدائی پیشے 40 فیصد؛ سروس ورکرز 6.5 فیصد، دستکاری اور متعلقہ تجارت 4.2 فیصد؛ پیشہ ور افراد 3.1 فیصد اور مشین آپریٹرز 2.4 فیصد۔

زراعتترميم

یہاں کی زمین بہت زرخیز ہے۔ اور نہری نظام بھی بہت بہتر ہے۔ یہاں کے زیادہ تر لوگ کاشتکاری سے وابستہ ہیں۔ اہم فصلیں گندم، دھان، گنا، آلو، تمباکو ہیں جبکہ چارہ کے لیے جوار، باجرہ، مکئ اور برسیم وغیرہ کی کاشتکاری بھی ہوتی ہے۔

صنعت و حرفتترميم

شاہ تاج شوگر ملز پاکستان کے بڑے شوگر پلانٹس میں سے ایک ہے۔ یہ شہر سے تقریباً 2 کلومیٹر مغرب میں واقع ہے۔ اس کے ذیلی دفاتر لاہور اور کراچی میں ہیں۔ کمپنی کو پاکستان سٹاک ایکسچینج نے 1982ء، 1984ء اور 1988ء میں تین بار ٹاپ کمپنی کا اعزاز دیا تھا۔[11]

اس کے علاؤہ ضلع بھر میں سینکڑوں فلور ملز اور رائس ملز ہیں جہاں سے پورے پاکستان میں چاول اور گندم کا آٹا بھیجا جاتا ہے۔

تعلیمی ادارےترميم

اس شہر کو وکیلوں اور ججوں کا شہر بھی کہا جاتا ہے کیوں کہ یہاں زیادہ تر طالب علم وکالت کی طرف رغبت رکھتے ہیں اور اس شہر کے وکیل آپ کو تقریباً ہر جگہ ملیں گے۔ اس شہر میں ویسے تو بہت سے پرائیویٹ اور سرکاری تعلیمی ادارے موجود ہیں لیکن گورنمنٹ کالج آف ٹیکنالوجی جو اس شہر کے ساتھ ہی رسول کے مقام پر موجود ہے وہ جگہ کے لحاظ سے بھی سب سے بڑا اور قدیم کالج ہے جو پاکستان بننے سے بھی پہلے وجود میں آیا تھا۔

شہر کے چند قابل ذکر تعلیمی ادارے درج ذیل ہیں جن میں سرکاری اسکول، جزوی سرکاری اسکول، خیراتی اسکول اور نجی اسکول شامل ہیں:

اہم شخصیاتترميم

طبی سہولیاتترميم

  • ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال منڈی بہاؤالدین [12]
  • گورنمنٹ چلڈرن ہسپتال منڈی بہاؤالدین [13]

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. "Ten major cities' population up by 74pc (from 1998 to 2017)". Pakistan Today (newspaper). Associated Press of Pakistan. 29 August 2017. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  2. "MANDI BAHAUDDIN DISTRICT AT A GLANCE". Census.gov.pk website. 25 September 2011. 27 دسمبر 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  3. "District overview". District Police office Mandi Bahauddin website. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  4. Kaushik Roy, India's historic battles: from Alexander the great to Kargil, Delhi: Permanent Black, 2004, p. 11
  5. Major A. H. Amin (retd.) Orbat.com آرکائیو شدہ 7 اکتوبر 2007 بذریعہ وے بیک مشین
  6. "DISTRICT WISE CENSUS RESULTS CENSUS 2017" (PDF). pbscensus.gov.pk. 29 اگست 2017 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  7. "Average Rainfall & Temperature in Mandi Bahauddin". World Weather Online website. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  8. ^ ا ب "Tehsils & Unions in the District of Mandi Bahauddin". 2 August 2007. 22 ستمبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2021. 
  9. "Mother tongue": defined as the language of communication between parents and children, but still everyone can speak اردو language easily.
  10. 1998 District Census report of Mandi Bahauddin. Census publication. 117. Islamabad: Population Census Organization, Statistics Division, Government of Pakistan. 2000. 
  11. "Welcome to Shahtaj Sugar Mills". Shahtaj Sugar Mills Limited. 
  12. Government of Punjab. "Medical Departments". DHQ Hospital Mandi Bahauddin. 
  13. "Govt Children Hospital". Cybo.