پاکستان کے چاروں صوبے، دارالحکومت کا علاقہ اور دو خود مختار علاقے 37 انتظامی "ڈویژن" میں تقسیم ہیں، جو مزید اضلاع ، تحصیلوں اور آخر میں یونین کونسلوں میں تقسیم ہیں۔ یہ تقسیم 2000ء میں ختم کر دی گئی تھیں، لیکن 2008ء میں بحال کر دی گئیں۔

پاکستان کے ڈویژن
Blank Divisions of Pakistan.svg
زمرہSecond-level انتظامی تقسیم
مقامپاکستان کی انتظامی تقسیم
شمار37
ذیلی تقسیماتضلع، تحصیل، پاکستان کی یونین کونسلیں

ان ڈویژنوں میں اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری یا وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے شامل نہیں ہیں، جن کا شمار صوبوں کی سطح پر کیا جاتا تھا، لیکن 2018ء میں، وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں کو صوبہ خیبر پختونخواہ میں شامل کر کے اس کے پڑوسی ڈویژنوں کو مختص کر دیا گیا تھا۔

تاریخترميم

نوآبادیاتی دور سے انتظامی تقسیم نے حکومت کا ایک لازمی درجہ تشکیل دیا تھا۔ برطانوی ہندوستان کے گورنر کے صوبوں کو ڈویژنوں میں تقسیم کیا گیا تھا، جو خود اضلاع میں تقسیم تھے۔ 1947ء میں آزادی کے وقت، پاکستان کی نئی قوم دو بازوؤں پر مشتمل تھی - مشرقی اور مغربی، جو ہندوستان نے الگ کیے تھے۔ پاکستان کے تین صوبوں کو دس انتظامی ڈویژنوں میں تقسیم کیا گیا۔ مشرقی ونگ میں واحد صوبہ، مشرقی بنگال ، کے چار ڈویژن تھے - چٹاگانگ ، ڈھاکہ ، کھلنا اور راجشاہی ۔ صوبہ مغربی پنجاب کے چار ڈویژن تھے - لاہور ، ملتان ، راولپنڈی اور سرگودھا ۔ شمال مغربی سرحدی صوبہ (جیسا کہ اس وقت اسے کہا جاتا تھا) کے دو ڈویژن تھے - ڈیرہ اسماعیل خان اور پشاور ۔ کچھ مستثنیات کے ساتھ زیادہ تر ڈویژنوں کا نام ڈویژنل دارالحکومتوں کے نام پر رکھا گیا تھا۔

1955ء سے 1970ء تک ون یونٹ پالیسی کا مطلب یہ تھا کہ صرف دو صوبے تھے - مشرقی اور مغربی پاکستان ۔ مشرقی پاکستان میں وہی تقسیم تھے جو مشرقی بنگال پہلے تھی، لیکن مغربی پاکستان نے آہستہ آہستہ سات نئے ڈویژن حاصل کر لیے تاکہ اصل چھ میں اضافہ ہو سکے۔ بلوچستان اسٹیٹس یونین قلات ڈویژن بن گیا، جبکہ سابق چیف کمشنر بلوچستان کوئٹہ ڈویژن بن گیا۔ سابقہ صوبہ سندھ کا بیشتر حصہ حیدرآباد ڈویژن بن گیا، جس کے کچھ حصے خیرپور کی ریاستی ریاست میں شامل ہو کر خیرپور ڈویژن بنا۔ بہاولپور کی سابقہ ریاست بہاولپور ڈویژن بن گئی، اس لیے مغربی پنجاب میں شامل ہو گیا۔ وفاقی دارالحکومت کا علاقہ 1961ء میں مغربی پاکستان میں ضم ہو گیا اور کراچی-بیلا ڈویژن بنانے کے لیے ریاست لاس بیلہ کے ساتھ ضم ہو گیا۔ 1969ء میں چترال ، دیر اور سوات کی شاہی ریاستوں کو ملاکنڈ کے ڈویژن کے طور پر مغربی پاکستان میں شامل کیا گیا اور سیدو کو ڈویژنل ہیڈ کوارٹر بنایا گیا۔

نئے ڈویژنترميم

جب مغربی پاکستان تحلیل ہو گیا تو ان ڈویژنوں کو دوبارہ چار نئے صوبوں میں تقسیم کر دیا گیا۔ آہستہ آہستہ 1970ء کی دہائی کے اواخر میں، نئی تقسیمیں تشکیل دی گئیں۔ ہزارہ اور کوہاٹ ڈویژن کو پشاور ڈویژن سے الگ کر دیا گیا۔ گوجرانوالہ ڈویژن لاہور اور راولپنڈی ڈویژن کے کچھ حصوں سے تشکیل دیا گیا تھا۔ ڈیرہ غازی خان ڈویژن کو ملتان ڈویژن سے الگ کر دیا گیا۔ فیصل آباد ڈویژن کو سرگودھا ڈویژن سے الگ کر دیا گیا۔ سبی ڈویژن قلات اور کوئٹہ ڈویژن کے کچھ حصوں سے تشکیل دیا گیا تھا۔ ضلع لسبیلہ کو کراچی ڈویژن سے قلات ڈویژن میں منتقل کر دیا گیا۔ مکران ڈویژن قلات ڈویژن سے الگ ہوگیا۔ خیرپور ڈویژن کا نام بدل کر سکھر ڈویژن رکھ دیا گیا۔ شہید بینظیر آباد بھی سندھ میں ایک نیا ڈویژن ہے۔

جنرل ضیاء الحق کے فوجی دور میں اسلامائز آئیڈیالوجی کی مشاورتی کونسل (جس کے سربراہ جسٹس تنزیل الرحمن تھے) کو اسلامی ملک کے راستے تلاش کرنے کا کام سونپا گیا۔ اس کی سفارشات میں سے ایک یہ تھی کہ موجودہ چاروں صوبوں کو تحلیل کر کے بیس انتظامی ڈویژنوں کو زیادہ سے زیادہ اختیارات کی منتقلی کے ساتھ وفاقی ڈھانچے میں نئے صوبے بنائے جائیں، لیکن اس تجویز پر کبھی عمل نہیں ہوا۔

ماضی قریب میں (یعنی پچھلی تین دہائیوں میں) نصیر آباد ڈویژن کو سبی ڈویژن سے الگ کر دیا گیا تھا۔ ژوب ڈویژن کو کوئٹہ ڈویژن سے الگ کر دیا گیا۔ بنوں ڈویژن کو ڈیرہ اسماعیل خان ڈویژن سے الگ کر دیا گیا۔ مردان ڈویژن کو پشاور ڈویژن سے الگ کر دیا گیا۔ لاڑکانہ ڈویژن اور شہید بینظیر آباد ڈویژن [1] کو سکھر ڈویژن سے الگ کر دیا گیا تھا۔ حیدرآباد ڈویژن سے میرپورخاص ڈویژن اور بنبھور ڈویژن [2] کو الگ کر دیا گیا۔ ساہیوال ڈویژن لاہور اور ملتان ڈویژن کے کچھ حصوں سے تشکیل دی گئی ہے جبکہ شیخوپورہ ڈویژن لاہور اور فیصل آباد ڈویژن سے تشکیل دی گئی ہے۔ قلات ڈویژن کا دارالحکومت قلات سے خضدار منتقل کر دیا گیا۔ رخشان ڈویژن کو حال ہی میں بلوچستان میں شامل کیا گیا ہے جو کوئٹہ اور قلات ڈویژن کے کچھ حصوں پر مشتمل ہے جس کا دارالحکومت خاران ہے۔

حال ہی میں جون 2021ء میں لورالائی ڈویژن کو ژوب ڈویژن سے الگ کرکے بلوچستان میں شامل کیا گیا۔ حال ہی میں 17 اگست 2022ء کو گجرات ڈویژن کو پنجاب میں شامل کیا گیا [3]

خاتمہترميم

اگست 2000ء میں، مقامی حکومتی اصلاحات نے "ڈویژن" کو ایک انتظامی درجے کے طور پر ختم کر دیا اور 2001ء میں ہونے والے پہلے انتخابات کے ساتھ، مقامی حکومتی کونسلوں کا نظام متعارف کرایا۔ اس کے بعد مقامی حکومتوں کے نظام کی بنیادی تنظیم نو کی گئی تاکہ " سبسیڈیریٹی کے اصول کو لاگو کیا جا سکے، جس کے تحت مقامی سطح پر مؤثر طریقے سے انجام پانے والے تمام افعال کو اس سطح پر منتقل کر دیا جاتا ہے"۔ اس کا مطلب بہت سے کاموں کی اضلاع اور تحصیلوں میں منتقلی تھی، جو پہلے صوبائی اور ڈویژنل سطح پر سنبھالے جاتے تھے۔ خاتمے کے وقت، پاکستان میں چھبیس ڈویژن مناسب تھے - سندھ میں پانچ، بلوچستان میں چھ، خیبرپختونخوا میں سات اور پنجاب میں آٹھ۔ خاتمے سے آزاد کشمیر کے تین ڈویژنوں پر کوئی اثر نہیں پڑا، جو حکومت کے دوسرے درجے کی تشکیل کرتے ہیں۔

بحالیترميم

2008ء میں عوامی انتخابات کے بعد نئی حکومت نے تمام صوبوں کی تقسیم بحال کرنے کا فیصلہ کیا۔ [4]

سندھ میں 2010ء میں لوکل گورنمنٹ باڈیز کی مدت ختم ہونے کے بعد ڈویژنل کمشنرز کا نظام بحال ہونا تھا۔ [5] [6] [7]

جولائی 2011ء میں، کراچی شہر میں حد سے زیادہ تشدد کے بعد اور سندھ میں حکمران پیپلز پارٹی اور اکثریتی جماعت کے درمیان سیاسی تقسیم کے بعد، ایم کیو ایم اور ایم کیو ایم کے گورنر سندھ کے استعفیٰ کے بعد، پی پی پی اور حکومت کے درمیان سیاسی تقسیم کے بعد، جولائی 2011ء میں۔ سندھ حکومت نے صوبے میں کمشنری نظام بحال کرنے کا فیصلہ کرلیا۔ اس کے نتیجے میں، سندھ کے پانچ ڈویژنوں یعنی کراچی، حیدرآباد، سکھر، میرپورخاص اور لاڑکانہ کو ان کے متعلقہ اضلاع کے ساتھ بحال کردیا گیا ہے۔ جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے کہ سندھ میں دو نئے ڈویژن شامل کیے گئے یعنی بھنبور اور شہید بینظیر آباد ڈویژن۔ [8]

کراچی ضلع کو اس کے 5 اصل جزوی اضلاع یعنی کراچی ایسٹ ، کراچی ویسٹ ، کراچی سینٹرل ، کراچی جنوبی اور ملیر میں ضم کردیا گیا ہے۔ حال ہی میں کورنگی کو کراچی کے چھٹے ضلع کا درجہ دیا گیا ہے۔ یہ چھ اضلاع اب کراچی ڈویژن تشکیل دیتے ہیں۔ [9]

موجودہ ڈویژنترميم

مندرجہ ذیل جدولوں میں پاکستان کی 2017ء کی مردم شماری کے مطابق صوبے کے لحاظ سے موجودہ 37 ڈویژنوں کو ان کی متعلقہ آبادی کے ساتھ دکھایا گیا ہے۔ [10]

صوبےترميم

بلوچستان کے ڈویژن
ڈویژن رقبہ (کلومیٹر2) آبادی
1998 مردم شماری
آبادی
2017 مردم شماری
دارالحکومت
قلات ڈویژن 140,612 1,443,727 2,509,230 خضدار
مکران ڈویژن 52,067 832,753 1,489,015 تربت
نصیر آباد ڈویژن 16,946 988,109 1,591,144 ڈیرہ مراد جمالی
کوئٹہ ڈویژن 64,310 1,713,952 4,174,562 کوئٹہ
سبی ڈویژن 27,055 630,901 1,038,010 سبی
ژوب ڈویژن 46,200 956,443 1,542,447 ژوب
لورالائی ڈویژن ضلع لورالائی
رخشان ڈویژن 89,013 409,473 737,162 خاران
خیبرپختونخوا کے ڈویژن
ڈویژن رقبہ (کلومیٹر2) آبادی
1998 مردم شماری
آبادی
2017 مردم شماری
دارالحکومت
بنوں ڈویژن 4,391 1,165,692 2,044,074 بنوں
ڈیرہ اسماعیل خان ڈویژن 9,005 1,091,211 2,019,017 ڈیرہ اسماعیل خان
ہزارہ ڈویژن 17,194 3,505,581 5,325,121 ایبٹ آباد
کوہاٹ ڈویژن 7,012 1,307,969 2,218,971 کوہاٹ
مالاکنڈ ڈویژن 29,872 4,262,700 7,514,694 سیدو شریف
مردان ڈویژن 3,046 2,486,904 3,997,677 مردان
پشاور ڈویژن 4,001 3,923,588 7,403,817 پشاور
پنجاب کے ڈویژن
ڈویژن رقبہ (کلومیٹر2) آبادی
1998 مردم شماری
آبادی
2017 مردم شماری
دارالحکومت
گجرات - - - گجرات
بہاولپور ڈویژن 45,588 7,635,591 11,464,031 بہاولپور
ڈیرہ غازی خان ڈویژن 38,778 6,503,590 11,014,398 ڈیرہ غازی خان
فیصل آباد ڈویژن 17,917 9,885,685 14,177,081 فیصل آباد
گوجرانوالہ ڈویژن 17,206 11,431,058 16,123,984 گوجرانوالہ
لاہور ڈویژن 11,727 8,694,620 19,581,281 لاہور
ملتان ڈویژن 17,935 8,447,557 12,265,161 ملتان
راولپنڈی ڈویژن 22,255 6,659,528 10,007,821 راولپنڈی
ساہیوال ڈویژن 10,302 5,362,866 7,380,386 ساہیوال
سرگودھا ڈویژن 26,360 5,679,766 8,181,499 سرگودھا
سندھ کے ڈویژن
ڈویژن رقبہ (کلومیٹر2) آبادی
1998 مردم شماری
آبادی
2017 مردم شماری
دارالحکومت
بنبھور ڈویژن 28,171 2,585,417 3,566,300[11] ٹھٹہ
حیدر آباد ڈویژن 33,527 4,610,071 7,026,335 حیدرآباد، سندھ
کراچی ڈویژن 3,528 9,856,318 16,051,521 کراچی
سکھر ڈویژن 24,505 3,447,935 5,538,555 سکھر
لاڑکانہ ڈویژن لاڑکانہ
میرپور خاص ڈویژن 28,171 2,585,417 4,228,683 میرپور خاص
شہید بینظیر آباد ڈویژن 18,175 3,510,036 5,282,277 نوابشاہ

زیر انتظام علاقےترميم

آزاد کشمیر کے ڈویژن
ڈویژن رقبہ (کلومیٹر2) آبادی
1998 مردم شماری
آبادی
2017 مردم شماری
دارالحکومت
میرپور 4,388 1,198,249 1,651,018 میرپور
مظفرآباد 6,117 745,733 1,072,150 مظفرآباد
پونچھ 2,792 1,028,541 1,322,198 راولاکوٹ
گلگت بلتستان کے ڈویژن
ڈویژن رقبہ (کلومیٹر2) آبادی
1998 مردم شماری
آبادی
2017 مردم شماری
دارالحکومت
گلگت - گلگت
بلتستان - سکردو
دیامر - چلاس

آبادی کے لحاظ سے تقسیمترميم

ڈویژن آبادی-1998 آبادی-1981 رقبہ
(کلومیٹر²)
دار الحکومت
آزاد کشمیر 2,800,000 1,980,000 11,639 مظفرآباد
بہاولپور 7,635,591 4,668,636 45,588 بہاولپور
بنوں 1,165,692 710,786 4,391 بنوں
ڈیرہ غازی خان 6,503,590 3,746,837 38,778 ڈیرہ غازی خان
ڈیرہ اسماعیل خان 1,091,211 635,494 9,005 ڈیرہ اسماعیل خان
فیصل آباد 2,885,685 6,667,425 17,917 فیصل آباد
قبائلی علاقہ جات 3,176,331 2,198,547 27,220 اسلام آباد
گوجرانوالہ 4,431,058 7,522,352 17,206 گوجرانوالہ
ہزارہ 3,505,581 2,701,257 17,194 ایبٹ آباد
حیدرآباد 6,829,537 4,678,290 48,670 حیدرآباد
اسلام آباد 805,235 204,364 906 اسلام آباد
قلات 1,457,722 1,044,174 140,612 خضدار
کراچی 15,856,318 5,437,984 3,528 کراچی
کوہاٹ 1,307,969 758,772 7,012 کوہاٹ
لاہور 4,248,641 8,670,358 16,104 لاہور
لاڑکانہ 4,233,076 2,746,201 15,543 لاڑکانہ
مکران 832,753 652,602 52,067 تربت
مالاکنڈ 4,262,700 2,466,767 29,872 سیدو
مردان 2,486,904 1,506,500 3046 مردان
میر پور خاص 3,936,349 2,419,745 38,421 میر پور خاص
ملتان 11,577,431 7,533,710 21,137 ملتان
نصیر آباد 1,076,708 699,669 16,946 نصیر آباد
شمالی علاقہ جات 910,000 562,000 72,520 گلگت
پشاور 3,923,588 2,281,752 4,001 پشاور
کوئٹہ 1,699,957 880,618 64,310 کوئٹہ
راولپنڈی 6,659,528 4,552,495 22,255 راولپنڈی
سرگودھا 5,679,766 3,930,628 26,360 سرگودھا
ساہیوال 6,271,247 10,302 ساہیوال
سبی 494,894 305,768 27,055 سبی
سکھر 5,584,613 3,746,446 34,752 سکھر
ژوب 1,003,851 749,545 46,200 لورالائی

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. Correspondent، The Newspaper's (25 May 2014). "Shaheed Benazirabad made division". 
  2. "Bhanbhore made sixth division of Sindh". www.thenews.com.pk. 
  3. Correspondent، The Newspaper's Staff (2021-06-30). "New division, two districts created in Balochistan". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022. 
  4. "Commissionerate system restored". 09 جنوری 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 اپریل 2010. 
  5. "502 Bad Gateway". www.emoiz.com. 
  6. "Commissioner system to be restored soon: Durrani". 31 جولا‎ئی 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  7. "Sindh: Commissioner system may be revived today". 06 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 اپریل 2010. 
  8. "Commissioners, DCs posted in Sindh". 13 جولا‎ئی 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 13 جولا‎ئی 2011. 
  9. anjum. "Sindh back to 5 divisions after 11 years | Pakistan Today" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 05 مئی 2022. 
  10. "DISTRICT WISE CENSUS RESULTS CENSUS 2017" (PDF). www.pbscensus.gov.pk. 29 اگست 2017 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  11. "Block Wise Provisional Summary Results of 6th Population & Housing Census-2017 [As on January 03, 2018] | Pakistan Bureau of Statistics". 07 مئی 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 اگست 2022. 

بیرونی روابطترميم