ترکی مسلح افواج (ترکی زبان: Türk Silahlı Kuvvetleri)، جمہوریہ ترکی کی باقاعدہ افواج ہیں۔ ان میں بّری فوج، بحریہ اور فضائیہ شامل ہیں. گررمرمی اور کوسٹ گارڈ، دونوں کے پاس قانون نافذ کرنے والی اور فوجی افعال، اندرونی اجزاء کے طور پر کام کرتے ہیں۔ صدر ترکی، فوج کا مجموعی سربراہ ہے۔

ترکی مسلح افواج
Turkish Armed Forces
Türk Silahlı Kuvvetleri
ترک مسلح افواج کا نشان
(باب ترک مسلح افواج)
قیام
  • 209 ق م (علامتی طور پر)[1]
  • 3 مئی 1920[nb 1]
خدماتی شاخیں ترک بّری افواج
ترکی بحریہ
ترکی فضائیہ
Turkish Gendarmerie[nb 2]
ترکی کوسٹ گارڈ[nb 3]
صدر دفتر باکانلیکلر، چانکایا، انقرہ
قیادت
کمانڈر ان چیف صدر رجب طیب ایردوان
وزارتِ قومی دفاع وزیر نورالدین جانیکلی
چیف آف جنرل اسٹاف جنرل حلوصی آکار
افرادی قوت
عسکری مدت21
جبری بھرتی6 یا 12 سال (خواندگی کے مطابق)
دستیاب برائے
فوجی خدمت
21,079,077 males, age 16–49[4] (2010),
20,558,696 females, age 16–49[4] (2010)
Fit for
military service
17,664,510 males, age 16–49[4] (2010),
17,340,816 females, age 16–49[4] (2010)
فوجی عمر
سالانہ عمر
700,079 males (2010),
670,328 females (2010)
فعال اہلکارکُل 512,000 [2]
  • 355,800 فوج[nb 4]
  • 152,100 Gendarmerie
  • 4,700 کوسٹ گارڈ
ذخیرہ افواج378,700[3]
Expenditures
بجٹ18.2 بلین ڈالر(2017)
(15واں درجہ)[5]
Percent of GDP2.2%(2017)[5]
Industry
Domestic suppliersبڑے ملکی سپلائرز کی فہرست
غیر ملکی سپلائرزغیر ملکی سپلائرز کی فہرست
Annual imports$1,540 ملین (2014)[6]
Annual exports$1,647 ملین (2014)[7]
متعلقہ مضامین
تاریخ
درجےترکی کے عسکری مناصب

حواشی

ترمیم
  1. As the Army of the Grand National Assembly.[1]
  2. Under the Ministry of the Interior during peacetime.
  3. Under the Ministry of the Interior during peacetime.
  4. Turkish Land Forces, Turkish Air Force and Turkish Naval Forces.

حوالہ جات

ترمیم
  1. ^ ا ب "TSK Official History Information"۔ Turkish Armed Forces۔ Turkish Armed Forces۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اگست 2016 
  2. IISS Military Balance 2017
  3. IISS 2014, pp. 146
  4. ^ ا ب https://www.sipri.org/sites/default/files/2018-04/sipri_fs_1805_milex_2017.pdf
  5. "Türkiye'nin ihracatı arttı ithalatı azaldı"۔ TRT News۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 نومبر 2015 
  6. Ramazan Ercan۔ "Türk savunma sanayi ihracatta hız kesmedi"۔ Anadolu Agency Newspaper۔ 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 جنوری 2015 

بیرونی لنکس

ترمیم
  یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔