مرکزی مینیو کھولیں

انقرہ (Ankara) ترکی کا دار الحکومت اور استنبول کے بعد ملک کا دوسرا سب سے بڑا شہر ہے۔ 2005ء کے مطابق شہر کی آبادی 4،319،167 ہے۔ شہر پہلے انگورہ کے نام سے جانا جاتا تھا۔ انقرہ اناطولیہ کے وسط میں واقع ایک اہم تجارتی و صنعتی مرکز ہونے کے ساتھ ساتھ ترک سیاست کا گہوارہ بھی ہے۔ ترکی کے عین وسط میں واقع ہونے کے باعث یہ سڑکوں اور پٹریوں کے جال کے ذریعے ملک بھر سے منسلک ہے۔

انقرہ
شہر
Ankara
Ankara collage3.jpg
انقرہ
شعار ہائے انقرہ میٹروپولین
عرفیت: قلبِ ترکی
ملک Flag of Turkey.svg ترکی
خطہ وسطی انطالیہ
صوبہ انقرہ
رقبہ
 • کل 24,521 کلو میٹر2 (9,468 مربع میل)
آبادی (2014)[1]
 • کل 4,587,558
منطقۂ وقت EET (UTC+2)
 • گرما (گرمائی وقت) EEST (UTC+3)
پوسٹل کوڈ 06xxx
ٹیلی فون کوڈ 312

فہرست

تاریخترميم

 
عثمانی طرز تعمیر کی بنائی گئی شہر کی ایک جدید مسجد

کوجا تپپے جامع

189 قبل مسیح میں یہ شہر رومی سلطنت میں شامل ہوا اور رومی علاقے کی حیثیت سے یہ سلطنت کے مشرقی حصے کا دروازہ بن گیا۔ دار الحکومت قسطنطنیہ ہونے کے باوجود بازنطینی سلطنت میں بھی اس کی اہمیت مسلمہ تھی۔ یہ شہر 11 ویں صدی تک مسلم افواج کا گہوارہ بنتا رہا اور بالآخر 1071ء میں سلجوق سلطان الپ ارسلان نے جنگ ملازکرد میں بازنطینیوں کو شکست دے کر اناطولیہ کی فتح کا دروازہ کھول دیا۔ پہلی صلیبی جنگ کے دوران صلیبیوں نے اس پر قبضہ کر لیا۔ عثمانی سلطنت کے دوسرے فرمانروا اورخان اول نے 1356ء میں شہر پر قبضہ کر لیا جبکہ 1403ء میں تیمور لنگ نے انقرہ کے مقام پر بایزید یلدرم کو شکست دے کر عثمانی سلطنت کو زبردست نقصان پہنچایا لیکن 1403ء میں عثمانیوں نے دوبارہ شہر کو حاصل کر لیا۔

جنگ عظیم اول کے بعد 1919ء میں بیرونی قبضے کے خلاف مصطفی کمال اتاترک نے انقرہ کو اپنا مرکز بنایا اور بعد ازاں فتح کے بعد دار الحکومت قسطنطنیہ سے انقرہ منتقل کر دیا۔

جڑواں شہرترميم

نگار خانہترميم

حوالہ جاتترميم

  1. "Turkey: Major cities and provinces"۔ citypopulation.de۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2015-02-08۔