تنظیم تعاون اسلامی

بین الاقوامی اسلامی تنظیم ایم
(موتمر عالم اسلامی سے رجوع مکرر)

تنظیم تعاون اسلامی OIC (عربی: منظمة التعاون الإسلامي، انگریزی: Organisation of Islamic Cooperation، فرانسیسی: Organisation de la coopération islamique)ایک بین‌الاقوامی تنظیم ہے جس میں مشرق وسطی، شمالی، مغربی اورجنوبی افریقا، وسط ایشیا، یورپ، جنوب مشرقی ایشیا اور برصغیر اور جنوبی امریکا کے 57 مسلم اکثریتی ممالک شامل ہیں۔ او آئی سی دنیا بھر کے 1.2 ارب مسلمانوں کے مفادات کے تحفظ کے لیے کام کرتی ہے۔ لیکن افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا کہ اس تنظیم نے اپنے پلیٹ فارم سے اپنے قیام سے لے کر آج تک مسلمانوں کے مفادات کے تحفظ اور مسائل کے حل کے سلسلے میں سوائے اجلاسوں کے کچھ نہیں کیا۔

تنظیم تعاون اسلامی
منظمة التعاون الإسلامي  (عربی)
Organisation de la coopération islamique  (فرانسیسی)
پرچم OIC
شعار: 
  رکن ریاستیں   زیر غور ریاستیں   معطل ریاستیں
  رکن ریاستیں
  زیر غور ریاستیں
  معطل ریاستیں
انتظامی مرکز (ہیڈ کواٹر) جدہ، سعودی عرب
مقسمبین سرکاری تنظیم
رکن ریاستیں 57
Leaders
Hissein Brahim Taha
قیام
• Charter signed
25 ستمبر 1969؛ 52 سال قبل (1969-09-25)
آبادی
• 2018 تخمینہ
1.81 بلین
جی ڈی پی (پی پی پی)2019 تخمینہ
• کل
$27.949 ٹریلین
• فی کس
$19,451
جی ڈی پی (برائے نام)2019 تخمینہ
• کل
$9.904 ٹریلین
• فی کس
$9,361
ایچ ڈی آئی (2018)Increase 0.672
میڈیم · 122nd
ویب سائٹ
www.oic-oci.org
تنظیم تعاون اسلامی کا صدر دفتر، جدہ

تاریخترميم

21 اگست 1969ء کو مسجد اقصی پر یہودی حملے کے ردعمل کےطور پر 25 ستمبر 1969ء کو مراکش کے شہر رباط میں او آئی سی کا قیام عمل میں آیا۔۔

نیا نامترميم

28 جون، 2011ء کو آستانہ، قازقستان میں اڑتیسویں وزرائے خارجہ اجلاس کے دوران میں تنظیم نے اپنا پرانا نام تنظیم موتمر اسلامی (عربی: منظمة المؤتمر الإسلامي، انگریزی: Organisation of the Islamic Conference، فرانسیسی: Organisation de la Conférence Islamique) کو تبدیل کرکے نیا نام تنظیم تعاون اسلامی رکھا۔[1] اس وقت تنظیم نے اپنا لوگو بھی تبدیل کر لیا۔

ڈھانچہ و تنظیمترميم

اسلامی سربراہی کانفرنسترميم

او آئی سی میں پالیسی ترتیب دینے میں سب سے اہم کام رکن ممالک کے سربراہان کا اجلاس ہے، جو ہر تین سال بعد منعقد ہوتا ہے۔ مزید دیکھیے مکمل مضمون ؛

وزرائے خارجہ کا اجلاسترميم

سال میں ایک مرتبہ فیصلوں پر عملدرآمد کی صورتحال اور غور کے لیے وزرائے خارجہ کا اجلاس طلب کیا جاتا ہے۔ طالبان کے افغانستان میں برسر اقتدار آنے کے بعد ملک کی تشویشناک صورتحال اور سنگین انسانی بحران کے خدشے کے باعث پاکستان کی کوششوں سے سعودی عرب کی دعوت پر او آئی سی وزرائے خارجہ کا غیر معمولی اجلاس 19 دسمبر 2021 کو پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں ہوا۔

دفترترميم

او آئی سی کا مستقل دفتر سعودی عرب کے شہر جدہ میں قائم ہے۔ اس وقت او آئی سی کے سیکرٹری ایاد بن امین مدنی ہیں جن کا تعلق سعودی عرب سے ہے۔ وہ 31 جنوری 2014ء سے اس عہدے پر فائز ہیں۔

قائمہ کمیٹیاںترميم

  • القدس کمیٹی
  • اطلاعات و ثقافتی معاملات کی قائمہ کمیٹی COMIAC
  • اقتصادی و تجارتی معاملات کی قائمہ کمیٹی COMCEC
  • سائنس و ٹیکنالوجی کے شعبے میں تعاون کی قائمہ کمیٹی COMSTECH
  • اسلامی کمیٹی برائے اقتصادی، ثقافتی و سماجی معاملات
  • مستقل تجارتی کمیٹی

ذیلی بازوترميم

ملحقہ ادارےترميم

سیکرٹری جنرلترميم

رکن ممالکترميم

 
او آئی سی کے رکن ممالک؛ مکمل ارکان سبز اور مبصرین سرخ رنگ میں ظاہر کئے گئے ہیں
مکمل ارکان
  افغانستان 1969
  الجزائر 1969
  چاڈ 1969
  مصر 1969
  جمہوریہ گنی 1969
  انڈونیشیا 1969
  ایران 1969
  اردن 1969
  کویت 1969
  لبنان 1969
  لیبیا 1969
  ملائیشیا 1969
  مالی 1969
  ماریطانیہ 1969
  مراکش 1969
  نائجر 1969
  پاکستان 1969
  فلسطین 1969
  یمن 1969
  سعودی عرب 1969
  سینی گال 1969
  سوڈان 1969
  صومالیہ 1969
  تیونس 1969
  ترکی 1969
  بحرین 1970
  اومان 1970
  قطر 1970
  شام 1970
  متحدہ عرب امارات 1970
  سیرالیون 1972
  بنگلہ دیش 1974
  گیبون 1974
  گیمبیا 1974
  گنی بساؤ 1974
  یوگینڈا 1974
  برکینا فاسو 1975
  کیمرون 1975
  جزائر قمر 1976
  عراق 1976
  مالدیپ 1976
  جبوتی 1978
  بینن 1982
  برونائی 1984
  نائجیریا 1986
  آذربائجان 1991
  البانیہ 1992
  کرغزستان 1992
  تاجکستان 1992
  ترکمانستان 1992
  موزمبیق 1994
  قازقستان 1995
  ازبکستان 1995
  سورینام 1996
  ٹوگو 1997
  گیانا 1998
  آئیوری کوسٹ 2001
مبصر ممالک
  بوسنیا و ہرزیگووینا 1994
  وسطی افریقی جمہوریہ 1997
 ترک قبرص 1979
  تھائی لینڈ 1998
  روس 2005
مبصر مسلم تنظیمیں
مورو قومی محاذ آزادی (مورو اسلامک لبریشن فرنٹ) 1977
مبصر بین الاقوامی تنظیمیں
عرب لیگ 1975
اقوام متحدہ 1976
غیر وابستہ ممالک کی تحریک (نام) 1977
تنظیم افریقی اتحاد 1977
اقتصادی تعاون کی تنظیم (ای سی او) 1995

ماضی میں سربراہان کے اجلاسترميم

نمبر شمار تاریخ ملک مقام
پہلا 22–25 ستمبر 1969ء   مراکش رباط
دوسرا[2] 22–24 فروری 1974ء   پاکستان لاہور
تیسرا[3] 25–29 جنوری 1981ء   سعودی عرب مکہ اور طائف
چوتھا 16–19 جنوری 1984ء   مراکش دار البیضا
پانچواں[4] 26–29 جنوری 1987ء   کویت کویت شہر
چھٹا[5] 9–11 دسمبر 1991ء   سینیگال ڈاکار
ساتواں 13–15 دسمبر 1994ء   مراکش دار البیضا
پہلا غیر معمولی 23–24 مارچ 1997   پاکستان اسلام آباد
آٹھواں 9–11 دسمبر 1997ء   ایران تہران
نواں 12–13 نومبر 2000ء   قطر دوحہ
دوسرا غیر معمولی[6] 4–5 مارچ 2003ء   قطر دوحہ
دسواں 16–17 اکتوبر 2003ء   ملائیشیا پتراجایا
تیسرا غیر معمولی 7–8 دسمبر 2005ء   سعودی عرب مکہ
11واں [7] 13–14 مارچ 2008ء   سینیگال ڈاکار
چوتھا غیر معمولی[8] 14–15 اگست 2012ء   سعودی عرب مکہ
12واں [9] 6–7 فروری 2013ء   مصر قاہرہ
5واں غیر معمولی [10] 6–7 مارچ 2016ء   انڈونیشیا جکارتا
13واں [11] 14–15 اپریل 2016ء   ترکی استنبول
6واں غیر معمولی 13 دسمبر 2017ء   ترکی استنبول
7واں غیر معمولی 18 مئی 2018ء   ترکی استنبول
14واں [12] 31 مئی 2019ء   سعودی عرب مکہ
17واں غیر معمولی 19 دسمبر 2021ء   پاکستان اسلام آباد
وزرائے خارجہ کونسل کا 48 واں اجلاس 22 مارچ 2022ء   پاکستان اسلام آباد

دیگر تنظیموں کے ساتھ تعلقاتترميم

عرب لیگاو آئی سی رکن ممالک کا پارلیمانی اتحادتنظیم تعاون اسلامیمغرب عربی اتحاداغادیر معاہدہعرب اقتصادی اتحاد کونسلمجلس تعاون برائے خلیجی عرب ممالکمغربی افریقی اقتصادی و مالیاتی اتحاداقتصادی تعاون تنظیمترکی کونسللپتاکو-گوورما اتھارٹیلپتاکو-گوورما اتھارٹیاقتصادی تعاون تنظیمالبانیہملائیشیاافغانستانلیبیاالجزائرتونسمراکشلبنانمصرصومالیہآذربائیجانبحرینبنگلہ دیشبیننبرونائیبرکینا فاسوکیمرونچاڈاتحاد القمریجبوتیگیمبیاجمہوریہ گنیگنی بساؤگیاناانڈونیشیاایرانعراقکوت داوواغاردنقازقستانکویتکرغیزستانمالدیپمالیموریتانیہموزمبیقنائجرنائجیریاسلطنت عمانپاکستانقطرسوڈانفلسطینسرینامشامتاجکستانٹوگوترکیترکمانستانیوگنڈامتحدہ عرب اماراتازبکستانيمنسینیگالگیبونسیرالیونمغرب عربی اتحاداغادیر معاہدہسعودی عرب 
تنظیم تعاون اسلامی کے اندر مختلف کثیر القومی تنظیموں کے درمیان تعلقات۔ ایک کلک پزیر اویلر تصویر مبت


مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. OIC changes name, emblem آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ pakobserver.net (Error: unknown archive URL) پاکستانی مشاہد
  2. "Second Islamic summit conference" (PDF). Formun. 26 جون 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2013. 
  3. "Mecca Declaration". JANG. 26 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 مارچ 2013. 
  4. "Resolution of the Fifth Islamic Summit Conference". IRCICA. 26 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2013. 
  5. "Dakar Declaration" (PDF). IFRC. اخذ شدہ بتاریخ 6 فروری 2013. 
  6. Darwish، Adel (1 اپریل 2003). "OIC meet in Doha: mudslinging dominated the OIC conference in Qatar". اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2013. 
  7. Shah، S. Mudassir Ali (12 مارچ 2008). "Karzai flies to Senegal for 11th OIC summit". Pajhwok Afghan News. Kabul. اخذ شدہ بتاریخ 1 اپریل 2013. 
  8. Knipp, Kersten (15 اگست 2012). "16166602,00.html Islamic group hopes to limit Syrian conflict". Deutsche Welle. http://www.dw.de/dw/article/0,، 16166602,00.html. 
  9. Arrott، Elizabeth (6 فروری 2013). "Islamic Summit Leaders Urge Action on Mali, Syria". Voice of America. 9 فروری 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 6 فروری 2013. 
  10. Karensa، Edo (6 مارچ 2016). "OIC Extraordinary Summit on Palestine Kicks Off in Jakarta". Jakarta Globe. 7 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 6 مارچ 2016. 
  11. "Archived copy". 12 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 اپریل 2016. 
  12. Cooperation، Organization of Islamic (19 مئی 2019). "The Custodian of the Two Holy Mosques chairs the 14th ordinary Islamic Summit". The Custodian of the Two Holy Mosques chairs the 14th ordinary Islamic Summit. اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2019.